Urdu-Raw-Page-128

ਮਾਝਮਹਲਾ੩॥
maajh mehlaa 3.
Maajh Raag, by the Third Guru:

ਮਨਮੁਖਪੜਹਿਪੰਡਿਤਕਹਾਵਹਿ॥
manmukh parheh pandit kahaaveh.
The self-conceited persons study the scriptures and are called Pandits-scholars. ਆਪਣੇਮਨਦੇਪਿੱਛੇਤੁਰਨਵਾਲੇਮਨੁੱਖਵੇਦਆਦਿਕਧਰਮਪੁਸਤਕਾਂਪੜ੍ਹਦੇਹਨਤੇਆਪਣੇਆਪਨੂੰਪੰਡਿਤਵਿਦਵਾਨਅਖਵਾਂਦੇਹਨ l
منمُکھپڑہِپنّڈِتکہاۄہِ॥
منھکھ۔ مرید من ۔ پڑیہہ۔ پڑھتا ہے ۔ پنڈت ۔ عالم ۔ دوبے بھائے ۔ دوسروں کی محبت ۔کھیا ۔ زہر ۔ دولت
مرید من پڑھتے ہیں عالم فاضل کہلاتےہیں

ਦੂਜੈਭਾਇਮਹਾਦੁਖੁਪਾਵਹਿ॥
doojai bhaa-ay mahaa dukh paavahi.
But they are in love with duality, and they suffer in terrible pain.
ਪਰਉਹਮਾਇਆਦੇਪਿਆਰਵਿਚਟਿਕੇਰਹਿੰਦੇਹਨ, ਧਰਮ-ਪੁਸਤਕਾਂਪੜ੍ਹਦੇਹੋਏਭੀਹਉਮੈਆਦਿਕਦਾਵੱਡਾਦੁੱਖਸਹਿੰਦੇਰਹਿੰਦੇਹਨ।
دوُجےَبھاءِمہادُکھُپاۄہِ
بھاوے۔ چاہتا ہے ۔ دئے ۔ دیتا ہے ۔ جاتا ۔ سمجھنا
دنیاوی دولت کی محبت میں بھاری عذاب پاتے ہیں ۔

ਬਿਖਿਆਮਾਤੇਕਿਛੁਸੂਝੈਨਾਹੀਫਿਰਿਫਿਰਿਜੂਨੀਆਵਣਿਆ॥੧॥
bikhi-aa maatay kichh soojhai naahee fir fir joonee aavani-aa. ||1||
Engrossed in the poison of worldly wealth, they understand nothing about spiritual life and keep going in the cycle of birth and death.
ਮਾਇਆਦੇਮੋਹਵਿਚਮਸਤਰਹਿਣਕਰਕੇਉਹਨਾਂਨੂੰ (ਆਤਮਕਜੀਵਨਦੀ) ਕੁਝਭੀਸਮਝਨਹੀਂਪੈਂਦੀ, ਉਹਮੁੜਮੁੜਜੂਨਾਂਵਿਚਪਏਰਹਿੰਦੇਹਨl
بِکھِیاماتےکِچھُسوُجھےَناہیِپھِرِپھِرِجوُنیِآۄنھِیا॥੧॥
۔ دنیاوی ۔ ماتے ۔ وجد ۔ مستی
دنیاوی زہر بھری دولت کی مستی میں سمجھ نہیں پاتے تناسخ میں پڑے رہتے ہیں ۔

ਹਉਵਾਰੀਜੀਉਵਾਰੀਹਉਮੈਮਾਰਿਮਿਲਾਵਣਿਆ॥
ha-o vaaree jee-o vaaree ha-umai maar milaavani-aa.
I dedicate my life to those who subdue their ego and unite with God. ਮੈਂਉਹਨਾਂਮਨੁੱਖਾਂਤੋਂਸਦਾਸਦਕੇਕੁਰਬਾਨਜਾਂਦਾਹਾਂ, ਜੇਹੜੇਹਉਮੈਦੂਰਕਰਕੇ (ਵਾਹਿਗੁਰੂਨਾਲ) ਮਿਲੇਰਹਿੰਦੇਹਨ।
ہءُۄاریِجیِءُۄاریِہئُمےَمارِمِلاۄنھِیا॥
قربان ہوں ان انسانوں پر جو خودی ختم کرکے مرشد کے وسیلے سے خدا دل میں بساتے ہیں۔

ਗੁਰਸੇਵਾਤੇਹਰਿਮਨਿਵਸਿਆਹਰਿਰਸੁਸਹਜਿਪੀਆਵਣਿਆ॥੧॥ਰਹਾਉ॥
gur sayvaa tay har man vasi-aa har ras sahj pee-aavni-aa. ||1|| rahaa-o.
Because they follow Guru’s teachings, God comes to dwell in their mind and they intuitively relish the elixir of Naam.
ਗੁਰੂਦੀਸਰਨਪੈਣਦੇਕਾਰਨਪਰਮਾਤਮਾਉਹਨਾਂਦੇਮਨਵਿਚਆਵੱਸਦਾਹੈ, ਆਤਮਕਅਡੋਲਤਾਵਿਚਟਿਕਕੇਉਹਪਰਮਾਤਮਾਦੇਮਿਲਾਪਦਾਆਨੰਦਮਾਣਦੇਹਨ
گُرسیۄاتےہرِمنِۄسِیاہرِرسُسہجِپیِیاۄنھِیا॥੧॥رہاءُ॥
گرسیوا ۔ خدامت مرشد ۔ سہج ۔ سکون رہاؤ ۔
مرشد کی خدمت سے خدا کو دل میں بسا کرا لہٰی لطف لیتے اور سکون پاتے ہیں ۔

ਵੇਦੁਪੜਹਿਹਰਿਰਸੁਨਹੀਆਇਆ॥
vayd parheh har ras nahee aa-i-aa.
The Pandits study the scriptures but do not obtain any divine joy.
ਪੰਡਿਤਵੇਦਤਾਂਪੜ੍ਹਦੇਹਨ, ਪਰਉਹਨਾਂਨੂੰਪਰਮਾਤਮਾਦੇਮਿਲਾਪਦਾਆਨੰਦਨਹੀਂਆਉਂਦਾ।
ۄیدُپڑہِہرِرسُنہیِآئِیا॥
رس ۔ لطف ۔مزہ ۔
ویدوں کے مطالعہ سے الہٰی ملاپ کا لطف نہیں آتا ۔

ਵਾਦੁਵਖਾਣਹਿਮੋਹੇਮਾਇਆ॥
vaad vakaaneh mohay maa-i-aa.
Allured by Maya they argue and debate.
ਧਰਮ-ਚਰਚਾ, ਬਹਸਹੀ (ਹੋਰਨਾਂਨੂੰ) ਸੁਣਾਂਦੇਹਨ, ਆਪਉਹਮਾਇਆਦੇਮੋਹਵਿਚਹੀਟਿਕੇਰਹਿੰਦੇਹਨ।
ۄادُۄکھانھہِموہےمائِیا॥
واد ۔ جھگڑا ۔ بحث ۔ مباحثہ ۔
اس میں صرف بحث مباحثہ اور دنیاوی دولت کی محبت ہی ہے ۔

ਅਗਿਆਨਮਤੀਸਦਾਅੰਧਿਆਰਾਗੁਰਮੁਖਿਬੂਝਿਹਰਿਗਾਵਣਿਆ॥੨॥
agi-aanmatee sadaa anDhi-aaraa gurmukh boojh har gaavani-aa. ||2||
The foolish intellectuals are forever in spiritual darkness. The Guru’s followers understand, and sing the Glorious Praises of God.
ਉਹਨਾਂਦੀਆਪਣੀਮਤਿਬੇਸਮਝੀਵਾਲੀਹੀਰਹਿੰਦੀਹੈ, ਉਹਨਾਂਦੇਅੰਦਰਮਾਇਆਦੇਮੋਹਦਾਹਨੇਰਾਟਿਕਿਆਰਹਿੰਦਾਹੈ।ਗੁਰੂਦੀਸਰਨਪੈਣਵਾਲੇਮਨੁੱਖ (ਹੀਗੁਰੂਪਾਸੋਂ) ਮਤਿਲੈਕੇਪਰਮਾਤਮਾਦੀਸਿਫ਼ਤ-ਸਾਲਾਹਕਰਸਕਦੇਹਨ l
اگِیانمتیِسداانّدھِیاراگُرمُکھِبوُجھِہرِگاۄنھِیا॥੨॥
اگیان ۔ لا علمی ۔ بے سمجھی (2)
لا علمی اور ناشناسی میں ہمیشہ اندھیرا اور جہالت ہے مرید مرشد کے سبق سے ہی صفت صلاح خدا ہوتی ہے (2)

ਅਕਥੋਕਥੀਐਸਬਦਿਸੁਹਾਵੈ॥ਗੁਰਮਤੀਮਨਿਸਚੋਭਾਵੈ॥
aktho kathee-ai sabad suhaavai. gurmatee man sacho bhaavai.
If we keep describing the praises of the indescribable God through the pleasing words of the Guru.Then, through the Guru’s Teachings, God becomes pleasing to the mind.
(ਜਿਸਹਿਰਦੇਵਿਚ) ਅਕੱਥਪਰਮਾਤਮਾਦੀਸਿਫ਼ਤ-ਸਾਲਾਹਹੁੰਦੀਰਹੇ, ਗੁਰੂਦੇਸ਼ਬਦਦੀਬਰਕਤਿਨਾਲ (ਪਰਮਾਤਮਾ) ਮਨਵਿਚਪਿਆਰਾਲੱਗਣਲੱਗਪੈਂਦਾਹੈ।ਸੋਹਣਾਲੱਗਣਲੱਗਪੈਂਦਾਹੈ।
اکتھوکتھیِئےَسبدِسُہاۄےَ
گُرمتیِمنِسچوبھاۄےَ
اکھتو ۔ ناقابل بیان ۔ سہاوے ۔ اچھا لگتا ہے ۔ سچو ۔ سچ کو ۔ خدا (3)
نا قابل بیان خدا اچھے کلام سے بیان کرنے سے انسانی من خوب صورت ہو جاتا ہے ۔ اچھا لگنے لگتا ہے ۔ سبق مرشد سے من کو سچ اور سچا خدا پیارا لگنے لگتا ہے۔

ਸਚੋਸਚੁਰਵਹਿਦਿਨੁਰਾਤੀਇਹੁਮਨੁਸਚਿਰੰਗਾਵਣਿਆ॥੩॥
sacho sach raveh din raatee ih man sach rangaavin-aa. ||3||
Those who always meditate on God’s Name, their minds remain imbued with the Truth (eternal God).
(ਗੁਰੂਦੀਸਰਨਪੈਣਵਾਲੇਮਨੁੱਖ) ਦਿਨਰਾਤਸਦਾ-ਥਿਰਪਰਮਾਤਮਾਨੂੰਹੀਸਿਮਰਦੇਰਹਿੰਦੇਹਨ, (ਉਹਨਾਂਦਾ) ਇਹਮਨਸਦਾ-ਥਿਰਪ੍ਰਭੂ (ਦੇਪ੍ਰੇਮਰੰਗ) ਵਿਚਰੰਗਿਆਰਹਿੰਦਾਹੈ
سچوسچُرۄہِدِنُراتیِاِہُمنُسچِرنّگاۄنھِیا॥੩॥
۔ سچو ۔ سچ کو ۔ خدا
وہ ہمیشہ روز و شب سچے سچ کا دلدادہ ہوکر سچ کا پریمی ہو جاتا ہے (3)

ਜੋਸਚਿਰਤੇਤਿਨਸਚੋਭਾਵੈ॥
jo sach ratay tin sacho bhaavai.
Those who are attuned to Truth, love the Truth.
ਜੇਹੜੇਮਨੁੱਖਸਦਾ-ਥਿਰਰਹਿਣਵਾਲੇਪਰਮਾਤਮਾ (ਦੇਪ੍ਰੇਮਰੰਗ) ਵਿਚਰੰਗੇਰਹਿੰਦੇਹਨ, ਉਹਨਾਂਨੂੰਉਹਸਦਾਕਾਇਮਰਹਿਣਵਾਲਾਪ੍ਰਭੂਪਿਆਰਾਲੱਗਦਾਹੈ।
جوسچِرتےتِنسچوبھاۄےَ॥
تس بھاوے ۔ اسے اچھا لگاتا ہے ۔
سچے خدا کی پریمی اور پیار کرنیوالوں کو سچ ہی پیارا لگتا ہے ۔

ਆਪੇਦੇਇਨਪਛੋਤਾਵੈ॥
aapay day-ay na pachhotaavai.
God Himself bestows this gift, and never regrets.
(ਇਹਦਾਤਪਰਮਾਤਮਾ) ਆਪਹੀ (ਉਹਨਾਂਨੂੰ) ਦੇਂਦਾਹੈ, (ਇਹਦਾਤਦੇਕੇਉਹ) ਪਛੁਤਾਂਦਾਨਹੀਂ।
آپےدےءِنپچھوتاۄےَ॥
خدا خدہی تحفے عطا کرتا ہے اور کبھی پچھتاوا نہیں کرتا۔

ਗੁਰਕੈਸਬਦਿਸਦਾਸਚੁਜਾਤਾਮਿਲਿਸਚੇਸੁਖੁਪਾਵਣਿਆ॥੪॥
gur kai sabad sadaa sach jaataa mil sachay sukh paavni-aa. ||4||
Through the Guru’s word , they realize the eternal God. Uniting with Him, they always live in spiritual peace.
ਕਿਉਂਕਿਇਸਦਾਤਦੀਬਰਕਤਿਨਾਲ) ਗੁਰੂਦੇਸ਼ਬਦਵਿਚਜੁੜਕੇਉਹਸਦਾ-ਥਿਰਪ੍ਰਭੂਨਾਲਡੂੰਘੀਸਾਂਝਪਾਈਰੱਖਦੇਹਨ, ਤੇਸਦਾ-ਥਿਰਪ੍ਰਭੂ (ਦੇਚਰਨਾਂ) ਵਿਚਮਿਲਕੇਆਤਮਕਆਨੰਦਮਾਣਦੇਹਨ
گُرکےَسبدِسداسچُجاتامِلِسچےسُکھُپاۄنھِیا॥੪॥
جاگے۔ بیدار ۔ ہوشیار
سبق مرشد سے سچ کی پہچان اور سمجھ آتی ہے اور سچے کے ملاپ سے سکھ ملتا ہے ۔(4)

ਕੂੜੁਕੁਸਤੁਤਿਨਾਮੈਲੁਨਲਾਗੈ॥
koorh kusattinaa mail na laagai.
The filth of fraud and falsehood does not stick to those,
(ਅਜੇਹੇਮਨੁੱਖਾਂਦੇਹਿਰਦੇਨੂੰ) ਝੂਠਪੋਹਨਹੀਂਸਕਦਾ, ਠੱਗੀਪੋਹਨਹੀਂਸਕਦੀ, ਵਿਕਾਰਾਂਦੀਮੈਲਨਹੀਂਲੱਗਦੀ।
کوُڑکُستُتِنامیَلُنلاگےَ॥
تربدھ۔ تین وصفوں والی
انہیں جھوٹ اور کفر کی ناپاکیزگی ان پر اثر انداز نہیں ہو سکتی

ਗੁਰਪਰਸਾਦੀਅਨਦਿਨੁਜਾਗੈ॥
gur parsaadee an-din jaagai.
who, by Guru’s Grace, always remain vigilant against the allurement of Maya.
ਉਹਗੁਰੂਦੀਕਿਰਪਾਨਾਲਹਰਵੇਲੇ (ਮਾਇਆਦੇਹੱਲਿਆਂਵਲੋਂ) ਸੁਚੇਤਰਹਿੰਦਾਹੈ।
گُرپرسادیِاندِنُجاگےَ॥
وہ ہمیشہ روز و شب رحمت مرشد سے ذہنی بیدار رہتے ہیں۔

ਨਿਰਮਲਨਾਮੁਵਸੈਘਟਭੀਤਰਿਜੋਤੀਜੋਤਿਮਿਲਾਵਣਿਆ॥੫॥
nirmal naam vasai ghat bheetar jotee jot milaavani-aa. ||5||
The Immaculate Naam, the Name of God, dwells deep within their hearts; their light (soul) merges into the Light (Primal Soul).
ਉਸਮਨੁੱਖਦੇਹਿਰਦੇਵਿਚਪਵਿਤ੍ਰ-ਸਰੂਪਪਰਮਾਤਮਾਦਾਨਾਮਵੱਸਦਾਹੈ, ਉਸਦੀਸੁਰਤਪਰਮਾਤਮਾਦੀਜੋਤਿਵਿਚਮਿਲੀਰਹਿੰਦੀਹੈ
نِرملنامُۄسےَگھٹبھیِترِجوتیِجوتِمِلاۄنھِیا॥੫॥
پاک نام انکے دل میں بستا ہے اور نور سے نور مل کر یکسو ہا جاتے ہیں (5)

ਤ੍ਰੈਗੁਣਪੜਹਿਹਰਿਤਤੁਨਜਾਣਹਿ॥
tarai gun parheh har tat na jaaneh.
Those who always study the scriptures motivated by the three modes of Maya,remain deprived of the essential reality of God.
ਜਿਹੜੇਸਦਾਤ੍ਰਿਗੁਣੀਮਾਇਆਦੇਲੇਖੇਹੀਪੜ੍ਹਦੇਰਹਿੰਦੇਹਨ, ਉਹ (ਜਗਤਦੇ) ਮੂਲ-ਪਰਮਾਤਮਾਤੋਂਖੁੰਝੇਰਹਿੰਦੇਹਨ।
ت٘رےَگُنھپڑہِہرِتتُنجانھہِ॥
تت۔ اصلیت۔ حقیقت ۔
وہ لوگ جو مایا کے تین طریقوں سے ہمیشہ متاثرصحیفوں کا مطالعہ کرتے ہیں وہ خدا کی لازمی حقیقت سے محرم رہتے ہیں۔

ਮੂਲਹੁਭੁਲੇਗੁਰਸਬਦੁਨਪਛਾਣਹਿ॥
moolhu bhulay gur sabad na pachhaaneh.
They have gone astray from the very fundamentals, and they do not understand the true meaning of the Guru’s word.
ਉਹ (ਮਨੁੱਖਜਗਤਦੇ) ਮੂਲ-ਪਰਮਾਤਮਾ (ਦੀਯਾਦ) ਤੋਂਖੁੰਝੇਰਹਿੰਦੇਹਨ, ਜੋਗੁਰੂਦੇਸ਼ਬਦਨਾਲਸਾਂਝਨਹੀਂਪਾਂਦੇ।
موُلہُبھُلےگُرسبدُنپچھانھہِ॥
۔ گر سبد۔ کلام ۔ مرشد
انسان تینوں اوصاف ، حکومتی یا ترقی سچائی ، صفائی اور لالچ کی باتیں پڑھتے ہیں ۔ حقیقت اور اصلیت کیس مجھ اور پہچان نہیں ۔

ਮੋਹਬਿਆਪੇਕਿਛੁਸੂਝੈਨਾਹੀਗੁਰਸਬਦੀਹਰਿਪਾਵਣਿਆ॥੬॥
moh bi-aapay kichh soojhai naahee gur sabdee har paavni-aa. ||6||
Engrossed in love of worldly wealth, they do not understand that God can be realized only through the Guru’s teachings .
ਮਾਇਆਦੇਮੋਹਵਿਚਗ਼ਲਤਾਨਉਹਨਾਂਮਨੁੱਖਾਂਨੂੰ (ਪਰਮਾਤਮਾਦੀਭਗਤੀਕਰਨਬਾਰੇ) ਕੁਝਭੀਨਹੀਂਸੁੱਝਦਾ। (ਹੇਭਾਈ!) ਗੁਰੂਦੇਸ਼ਬਦਦੀਬਰਕਤਿਨਾਲਹੀਪਰਮਾਤਮਾਦੀਪ੍ਰਾਪਤੀਹੋਸਕਦੀਹੈ॥
موہبِیاپےکِچھُسوُجھےَناہیِگُرسبدیِہرِپاۄنھِیا॥੬॥
۔ گر سبد۔ کلام ۔ مرشد
بنیاد اور حقیقت کو بھلا کر کلام مرشد کی سمجھ نہیں دنیاوی دولت کی محبت میں مستفرق الہٰی پریم کی کوئی سمجھ نہیں
۔ کلام مرشد سے ہی الہٰی ملاپ حاصل ہو سکتا ہے

ਵੇਦੁਪੁਕਾਰੈਤ੍ਰਿਬਿਧਿਮਾਇਆ॥
vayd pukaarai taribaDh maa-i-aa.
The pundit who reads Vedas loudly, but he himself remains under the influence of three modes of Maya.
(ਪੰਡਿਤ) ਵੇਦ (ਧਰਮ-ਪੁਸਤਕ) ਨੂੰਉੱਚੀਉੱਚੀਪੜ੍ਹਦਾਹੈ, (ਪਰਉਸਦੇਅੰਦਰ) ਤ੍ਰਿਗੁਣੀਮਾਇਆ (ਦਾਪ੍ਰਭਾਵਬਣਿਆਰਹਿੰਦਾਹੈ)।
ۄیدُپُکارےَت٘رِبِدھِمائِیا॥
مولہو۔ اصل ۔ بنیاد۔ حقیقت
ویدصرف تینوں اوصاف والی دنیاوی دولت کا علم ہی بتاتے اور سمجھاتے ہیں۔ ۔

ਮਨਮੁਖਨਬੂਝਹਿਦੂਜੈਭਾਇਆ॥
manmukh na boojheh doojai bhaa-i-aa.
The self-willed manmukh, in love with duality, do not understand spirituality.
ਮਨਮੁਖਆਤਮਕਜੀਵਨਨੂੰਨਹੀਂਸਮਝਦੇਉਹਨਾਂਦਾਮਨਮਾਇਆਦੇਪਿਆਰਵਿਚਹੀਟਿਕਿਆਰਹਿੰਦਾਹੈ।
منمُکھنبوُجھہِدوُجےَبھائِیا॥
فکر تربگن۔ تین اوصاف ۔
مرید من کو دنیاوی دولت کے پیار کی وجہ سے سمجھ نہیں

ਤ੍ਰੈਗੁਣਪੜਹਿਹਰਿਏਕੁਨਜਾਣਹਿਬਿਨੁਬੂਝੇਦੁਖੁਪਾਵਣਿਆ॥੭॥
tarai gun parheh har ayk na jaaneh bin boojhay dukh paavni-aa. ||7||
Motivated by the three traits of Maya, they read the scriptures but do not realize God, and without realizing Him they suffer in misery.
ਉਹ (ਇਹਨਾਂਧਰਮ-ਪੁਸਤਕਾਂਨੂੰ) ਤ੍ਰਿਗੁਣੀਮਾਇਆ (ਕਮਾਣ) ਦੀਖ਼ਾਤਰਪੜ੍ਹਦੇਹਨ, ਇੱਕਪਰਮਾਤਮਾਨਾਲਸਾਂਝਨਹੀਂਪਾਂਦੇ (ਧਰਮ-ਪੁਸਤਕਾਂਪੜ੍ਹਦੇਹੋਏਭੀਇਸਭੇਤਨੂੰ) ਸਮਝਣਤੋਂਬਿਨਾਦੁੱਖ (ਹੀ) ਪਾਂਦੇਰਹਿੰਦੇਹਨ l
ت٘رےَگُنھپڑہِہرِایکُنجانھہِبِنُبوُجھےَدُکھُپاۄنھِیا॥੭॥
تینوں اوصاف والی دنیاوی دولت کی کہانیاںپڑھتا ہے اور اسی کے لئے پڑھتا ہے واحد خدا سے بے نیاز ہے سمجھتا نہیں ۔ اس لئے عذاب پاتا ہے (7)

ਜਾਤਿਸੁਭਾਵੈਤਾਆਪਿਮਿਲਾਏ॥
jaa tis bhaavai taa aap milaa-ay.
When it pleases God, He unites us with Himself.
ਜਦੋਂਪਰਮਾਤਮਾਦੀਆਪਣੀਰਜ਼ਾਹੁੰਦੀਹੈ, ਤਦੋਂਉਹਆਪ (ਹੀਜੀਵਾਂਨੂੰਆਪਣੇਚਰਨਾਂਵਿਚ) ਮਿਲਾਂਦਾਹੈ,
جاتِسُبھاۄےَتاآپِمِلاۓ॥
جب الہٰی رضا ہوتی ہے تو آپ ہی ملاتا ہے ۔

ਗੁਰਸਬਦੀਸਹਸਾਦੂਖੁਚੁਕਾਏ॥
gur sabdee sahsaa dookh chukaa-ay.
Through the Guru’s word, skepticism and suffering are dispelled
ਗੁਰੂਦੇਸ਼ਬਦਦੀਰਾਹੀਂਵਾਹਿਗੁਰੂਉਸਦਾਸਹਮਤੇਦੁੱਖਦੂਰਕਰਦਾਹੈ।
گُرسبدیِسہسادوُکھُچُکاۓ॥
سہسا ۔ غم
سبق مرشد سے انسان کی بے چینی ، غم و فکر دور ہو جاتا ہے ۔ (8)

ਨਾਨਕਨਾਵੈਕੀਸਚੀਵਡਿਆਈਨਾਮੋਮੰਨਿਸੁਖੁਪਾਵਣਿਆ॥੮॥੩੦॥੩੧॥
naanak naavai kee sachee vadi-aa-ee naamo man sukh paavni-aa. ||8||30||31||
O’ Nanak, eternal is the glory of Naam. Believing in Naam, peace is obtained.
ਹੇਨਾਨਕ! ਸੱਚੀਹੈਵਾਹਿਗੁਰੂਦੇਨਾਮਦੀਵਡਿਆਈ, ਨਾਮਅੰਦਰਭਰੋਸਾਰੱਖਣਦੁਆਰਾਇਨਸਾਨਆਤਮਕਆਨੰਦਪਾਉਂਦਾਹੈ।
نانکناۄےَکیِسچیِۄڈِیائیِنامومنّنِسُکھُپاۄنھِیا
اے نانک نام کی عظمت سچی ہے نام کو ماننے اور تسلیم کرنے سے سکھ ملتا ہے

ਮਾਝਮਹਲਾ੩॥
maajh mehlaa 3.
Raag Maajh, by the Third Guru:
ماجھمہلا੩॥

ਨਿਰਗੁਣੁਸਰਗੁਣੁਆਪੇਸੋਈ॥
nirgun sargun aapay so-ee.
God Himself is the one without any attribute, and He Himself is the one with all the attributes.
ਉਹਪਰਮਾਤਮਾਆਕਾਰਤੋਂਰਹਿਤਭੀਆਪਹੀਹੈ, ਤੇਇਹਦਿੱਸਦਾਆਕਾਰਰੂਪਭੀਆਪਹੀਹੈ।
نِرگُنھُسرگُنھُآپےسوئیِ
نرگن۔ بلا اوصاف ۔ سرگن۔ با اوصاف ۔ آپے سوئی ۔ خدا بلا اوصاف بھی ہے اور با اوصاف بھی
خدا خود ہی بلا اوصاف بلا وجود اور خود ہی با اوصاف باوجود ہے

ਤਤੁਪਛਾਣੈਸੋਪੰਡਿਤੁਹੋਈ॥
tat pachhaanai so pandit ho-ee.
One who understand this essential reality becomes a the true Pandits.
ਜੇਹੜਾਮਨੁੱਖਉਸਅਸਲੇਨੂੰਪਛਾਣਦਾਹੈ (ਉਸਅਸਲੇਨਾਲਸਾਂਝਪਾਂਦਾਹੈ), ਉਹਪੰਡਿਤਬਣਜਾਂਦਾਹੈ।
تتُپچھانھےَسوپنّڈِتُہوئیِ॥
۔ تت ۔ حقیقت ۔ اصلیت ۔ پنڈت ۔ با علم ، عالم ۔
جو حقیقت اور اصلیت کو سمجھے وہی عالم فاضل ہے ۔ وہ خود کا میاب ہوتا ہے ۔

ਆਪਿਤਰੈਸਗਲੇਕੁਲਤਾਰੈਹਰਿਨਾਮੁਮੰਨਿਵਸਾਵਣਿਆ॥੧॥
aap tarai saglay kul taarai har naam man vasaavani-aa. ||1||
He saves himself and all his lineage by enshrining God’s Name in his mind. ਉਹਸਦਾਪਰਮਾਤਮਾਦੇਨਾਮਨੂੰਆਪਣੇਮਨਵਿਚਵਸਾਈਰੱਖਦਾਹੈਉਹਮਨੁੱਖਆਪ (ਸੰਸਾਰ-ਸਮੁੰਦਰਤੋਂ) ਪਾਰਲੰਘਜਾਂਦਾਹੈ, ਅਪਣੀਆਂਸਾਰੀਆਂਕੁਲਾਂਨੂੰਭੀਪਾਰਲੰਘਾਲੈਂਦਾਹੈ l
آپِترےَسگلےکُلتارےَہرِنامُمنّنِۄساۄنھِیا॥੧॥
آپ ترئے ۔ کامیاب ہو۔ سگلے کل۔ سارے خاندان ۔ ساد۔ مزہ
بلکہ سارے خاندان کو کامیاب بنا دیتا ہے ۔ اور ہمیشہ الہٰی نام سچ حق و حقیقت دل میں بسائے رکھتا ہے

ਹਉਵਾਰੀਜੀਉਵਾਰੀਹਰਿਰਸੁਚਖਿਸਾਦੁਪਾਵਣਿਆ॥
ha-o vaaree jee-o vaaree har ras chakh saad paavni-aa.
I dedicate my life to those who upon relishing the elixir of Naam, enjoy bliss.
ਮੈਂਉਹਨਾਂਮਨੁੱਖਾਂਤੋਂਸਦਾਕੁਰਬਾਨਜਾਂਦਾਹਾਂਜੇਹੜੇਪਰਮਾਤਮਾਦੇਨਾਮਦਾਰਸਚੱਖਕੇ (ਉਸਦਾਆਤਮਕ) ਆਨੰਦਮਾਣਦੇਹਨ।
ہءُۄاریِجیِءُۄاریِہرِرسُچکھِسادُپاۄنھِیا॥
۔ ہر رس۔ الہٰی لطف
قربان ہوں قربان ان انسانوں پر جو الہٰی لطف کا مزہ لیتے ہیں ۔

ਹਰਿਰਸੁਚਾਖਹਿਸੇਜਨਨਿਰਮਲਨਿਰਮਲਨਾਮੁਧਿਆਵਣਿਆ॥੧॥ਰਹਾਉ॥
har ras chaakhahi say jan nirmal nirmal naam Dhi-aavani-aa. ||1|| rahaa-o.
They who relish the elixir of Naam are the immaculate beings. They alwaysmeditate on the immaculate God with loving devotion.
ਜੇਹੜੇਮਨੁੱਖਹਰਿ-ਨਾਮਦਾਰਸਚੱਖਦੇਹਨ, ਉਹਪਵਿਤ੍ਰਆਤਮਾਹੋਜਾਂਦੇਹਨ, ਉਹਪਵਿਤ੍ਰਪ੍ਰਭੂਦਾਨਾਮਸਦਾਸਿਮਰਦੇਹਨ
ہرِرسُچاکھہِسےجننِرملنِرملنامُدھِیاۄنھِیا॥੧॥رہاءُ॥
۔ نرمل۔ پاک ۔ نرمل ہنسا۔ پاک ہیں۔ یعنی پاک انسان ۔
جو انسان الہٰی نام کا لطف لیتے ہیں وہ پاک روح کر لیتے ہیں۔ وہ پاک خدا کا نام یاد کرتے رہتے ہیں۔ رہاؤ

ਸੋਨਿਹਕਰਮੀਜੋਸਬਦੁਬੀਚਾਰੇ॥
so nihkarmee jo sabad beechaaray.
The person who reflects upon the holy word of the Guru, does deeds without any selfish motive.
ਜੇਹੜਾਮਨੁੱਖਗੁਰੂਦੇਸ਼ਬਦਨੂੰਆਪਣੇਮਨਵਿਚਵਸਾਂਦਾਹੈਉਹਦੁਨੀਆਦਾਕਾਰ-ਵਿਹਾਰਵਾਸਨਾਰਹਿਤਹੋਕੇਕਰਦਾਹੈ,
سونِہکرمیِجوسبدُبیِچارے॥
۔ نیہکرمی ۔ بیلاگ۔ گناہ و ثواب سے بالا (2)
جو انسان کلام مرشد دل میں بساتا ہے اس پر غورو خوض کرتا ہے وہی الہٰی رضا پر راضی رہتا ہے اسکے خیالات تینوں اوصافو ں رجو ۔ ستو اور طمو سے بلند ہیں۔ وہ بلا غرض و غایت کام کرتا ہے ۔

ਅੰਤਰਿਤਤੁਗਿਆਨਿਹਉਮੈਮਾਰੇ॥
antar tat gi-aan ha-umai maaray.
Within him is the essence of divine wisdom, by which he destroys his ego.
ਉਸਦੇਅੰਦਰਜਗਤਦਾਮੂਲਪ੍ਰਭੂਪਰਗਟਹੋਜਾਂਦਾਹੈ, ਉਹਗਿਆਨਦੀਸਹਾਇਤਾਨਾਲ (ਆਪਣੇਅੰਦਰੋਂ) ਹਉਮੈਦੂਰਕਰਲੈਂਦਾਹੈ।
انّترِتتُگِیانِہئُمےَمارے॥
جس کے دل میں حقیقت اور اصلیت کی سمجھ ہے ۔ اور خودی کو دور کرتا ہے

ਨਾਮੁਪਦਾਰਥੁਨਉਨਿਧਿਪਾਏਤ੍ਰੈਗੁਣਮੇਟਿਸਮਾਵਣਿਆ॥੨॥
naam padaarath na-o niDh paa-ay tarai gun mayt samaavani-aa. ||2||
He obtains the precious Naam, which is as valuable as the nine treasures of the world. Rising above the three traits of Maya, he merges with God.
نامُپدارتھُنءُنِدھِپاۓت٘رےَگُنھمیٹِسماۄنھِیا॥੨॥
۔ اسے نام کی بیش قیمت نعمت ملتی ہے ۔ اور وہ الہٰی صفت صلاح کرتا رہتا ہے (2)

ਹਉਮੈਕਰੈਨਿਹਕਰਮੀਨਹੋਵੈ॥
ha-umai karai nihkarmee na hovai.
The one who indulges in ego can never do anything without selfish motive.
ਜੇਹੜਾਮਨੁੱਖ ‘ਮੈਂਕਰਦਾਹਾਂਮੈਂਕਰਦਾਹਾਂ’ ਦੀਰਟਲਗਾਈਰੱਖਦਾਹੈ, ਉਹਵਾਸਨਾਰਹਿਤਨਹੀਂਹੋਸਕਦਾ।
ہئُمےَکرےَنِہکرمیِنہوۄےَ॥
جس میں خودی ہے وہ الہٰی رضا پر راضی نہیں ہو سکتا ۔ بلا خواہشات نہیں ہو سکتا ۔

ਗੁਰਪਰਸਾਦੀਹਉਮੈਖੋਵੈ॥
gur parsaadee ha-umai khovai.
It is only by Guru’s Grace that one gets rid of ego.
ਗੁਰੂਦੀਕਿਰਪਾਨਾਲਹੀ (ਕੋਈਵਿਰਲਾਮਨੁੱਖ) ਹਉਮੈਦੂਰਕਰਸਕਦਾਹੈ।
گُرپرسادیِہئُمےَکھوۄےَ॥
اگر رحمت مرشد سےخودی مٹاے

ਅੰਤਰਿਬਿਬੇਕੁਸਦਾਆਪੁਵੀਚਾਰੇਗੁਰਸਬਦੀਗੁਣਗਾਵਣਿਆ॥੩॥
antar bibayk sadaa aap veechaaray gur sabdee gun gaavani-aa. ||3||
He develops the sense of differentiating good from bad. He always reflects upon the self, and through Guru’s teachings he keep singing the praises of God.
ਉਸਦੇਅੰਦਰਚੰਗੇਮੰਦੇਕੰਮਦੀਪਰਖਦੀਸੂਝਪੈਦਾਹੋਜਾਂਦੀਹੈ, ਉਹਸਦਾਆਪਣੇਆਤਮਕਜੀਵਨਨੂੰਵਿਚਾਰਦਾਰਹਿੰਦਾਹੈ
انّترِبِبیکُسداآپُۄیِچارےگُرسبدیِگُنھگاۄنھِیا॥੩॥
ببیک ۔ نیک و بد کی تمیز کی توفیق(3)
(5)۔ خد ا رسیدہ پاکدامن انسان مرشد کی وساطت سے الہٰی نام کے قیمتی موتیوں جیسے اوصاف اپناتے ہیں

ਹਰਿਸਰੁਸਾਗਰੁਨਿਰਮਲੁਸੋਈ॥
har sar saagar nirmal so-ee.
God is like a vast immaculate ocean full of virtues.
ਉਹਪਰਮਾਤਮਾਹੀਪਵਿਤ੍ਰਮਾਨਸਰੋਵਰਹੈਪਵਿਤ੍ਰਸਮੁੰਦਰਹੈ (ਪਵਿਤ੍ਰਤੀਰਥਹੈ),
ہرِسرُساگرُنِرملُسوئیِ॥
ہر سر سرماگر
خدا ہی ایک پاک سمندر اور مانسردور جھیل اور متبرک زیارت گاہ ہے

ਸੰਤਚੁਗਹਿਨਿਤਗੁਰਮੁਖਿਹੋਈ॥
sant chugeh nit gurmukh ho-ee.
Following the Guru’s teachings, the holy people keep acquiring these virtues.
ਸੰਤਜਨਗੁਰੂਦੀਸਰਨਪੈਕੇ (ਉਸਵਿਚੋਂ) ਸਦਾ (ਪ੍ਰਭੂਨਾਮ-ਮੋਤੀ) ਚੁਗਦੇਰਹਿੰਦੇਹਨ।
سنّتچُگہِنِتگُرمُکھِہوئیِ॥
جسے کامل مرشد نے اپنے کلام سبق سنایا اسے اپنے قلب دل میں ہی قیمتی نعمتیں حاصل ہو گئیں

ਇਸਨਾਨੁਕਰਹਿਸਦਾਦਿਨੁਰਾਤੀਹਉਮੈਮੈਲੁਚੁਕਾਵਣਿਆ॥੪॥
isnaan karahi sadaa din raatee ha-umai mail chukaavani-aa. ||4||
These saintly people always remain immersed in this immaculate ocean of Naam and wash away the filth of ego.
ਸੰਤਜਨਸਦਾਦਿਨਰਾਤ (ਉਸਸਰੋਵਰਵਿਚ) ਇਸ਼ਨਾਨਕਰਦੇਹਨ, ਤੇ (ਆਪਣੇਅੰਦਰੋਂ)ਹਉਮੈਦੀਮੈਲਉਤਾਰਦੇਰਹਿੰਦੇਹਨ l
اِسنانُکرہِسدادِنُراتیِہئُمےَمیَلُچُکاۄنھِیا॥੪॥
۔ خدا ایک سمندر ہے اہنس۔ روز و شب ۔ دن رات ۔ ساپے ۔ خدا (5)
خودی پسند ۔ من کا مرید وہ بگلے کی مانند ہمیشہ نا پاک ہے اسے خودی کی غلاظت لگی ہوئی ہے ۔ غسل تو کرتا ہے مگر غلاظت دور نہیں ہوتی ۔ سبق مرشد سے زندگی کی منزل مقصود کے بدلے خودی ختم کرکے عاجزی و انکساری میں بدلنے سے جو دی ختم ہوتی ہے

ਨਿਰਮਲਹੰਸਾਪ੍ਰੇਮਪਿਆਰਿ॥
nirmal hansaa paraym pi-aar.
He, who is always absorbed in love and devotion for God, is like a pure swan.
ਉਹਮਨੁੱਖ, ਮਾਨੋ, ਸਾਫ਼ਸੁਥਰਾਹੰਸਹੈ, ਜੇਹੜਾਪ੍ਰਭੂਦੇਪ੍ਰੇਮ-ਪਿਆਰਵਿਚ (ਟਿਕਿਆਰਹਿੰਦਾ) ਹੈ।
نِرملہنّساپ٘ریمپِیار॥
وہ انسان ایک ہنس کی مانند ہے جس میں الہٰی پریم پیار ہے وہ خود مٹا کر الہٰی سمندر میں سکون پذیر ہے وہ الہٰی کلام کے ذریعے دن رات خدا سے پیار کرتا ہے

ਹਰਿਸਰਿਵਸੈਹਉਮੈਮਾਰਿ॥
har sar vasai ha-umai maar.
Who, shedding his ego, dwells in the divine pool of Naam.
ਉਹ (ਆਪਣੇਅੰਦਰੋਂ) ਹਉਮੈਦੂਰਕਰਕੇਪਰਮਾਤਮਾ-ਸਰੋਵਰਵਿਚਵਸੇਬਾਰੱਖਦਾਹੈ।
ہرِسرِۄسےَہئُمےَمارِ॥
جو اپنی اناکو پھیرتا ہے وہ نام کے الیہ تالاب میں رہتا ہے