Urdu-page-3

ਸੁਣਿਐ ਦੂਖ ਪਾਪ ਕਾ ਨਾਸੁ ॥੯॥
سُنھِئےَ دوُکھ پاپ کا ناسُ
suni-ai dookh paap kaa naas. ||9||
سننے سے عذاب مٹ جاتے ہیں
By listening to God’s word with love and devotion, all the pain, sorrows and sins are erased. ||9||
خلاصہ :
جیسے جیسے انسانی ذہن پر الہٰی نام اثر انداز ہو جاتا ہے انسانی اعمال بدچہوڑ کر الہٰی صفت صلاح میں مشغول ہو جاتا ہے اور اِحساسات بد مٹتے جاتے ہیں اور انسان اِنسانیت اور علم و ذہانت کا دلداوہ ہو جاتا ہے ۔۔

Stanza 10
پچھلے دو پیراگراف کی طرح اس پیراگراف کی ہر لائن بھی‘‘سنیئے’’ سے ہی شروع ہوتی ہے سنیئےکا مطلب ہے توجہ اور غور اور انہماک کے ساتھ سننااور جو کچھ آپ سن رہے ہیں اسے قبول کرنے میں قطعی طور پر کسی قسم کی کوئی ہچکچاہٹ نہیں ہے۔
As in the previous two stanzas, every line in this stanza starts with the word ’Sunjae’. This word ‘Sunjae’ means listening with complete focus, ultimate devotion and having absolutely no apprehension about accepting what you are listening.

ਸੁਣਿਐ ਸਤੁ ਸੰਤੋਖੁ ਗਿਆਨੁ ॥
سُنھِئےَ ستُ سنّتوکھُ گِیانُ ॥
suni-ai sat santokh gi-aan.
سنتو کہہ ۔ مبر۔
By listening to God’s word with love and devotion, one acquires truthfulness, contentment and spiritual knowledge.
نام الہی سننے سے علم ۄ صبر کا درس ملتا ہے

ਸੁਣਿਐ ਅਠਸਠਿ ਕਾ ਇਸਨਾਨੁ ॥
سُنھِئےَ اٹھسٹھِ کا اِسنانُ
suni-ai athsath kaa isnaan.
اٹھ سٹھ ۔ اڑھزیارت گاہیں۔
By listening to God’s word with love and devotion, one becomes pious.
نام الہٰی سُننا اڑسٹھ یترھتوں کا اَشنان ہے۔

ਸੁਣਿਐ ਪੜਿ ਪੜਿ ਪਾਵਹਿ ਮਾਨੁ ॥
سُنھِئےَ پڑِ پڑِ پاۄہِ مانُ
suni-ai parh parh paavahi maan.
مان ۔ وقار ۔ عزت
By listening to God’s word with love and devotion, one receives Divine knowledge and true honor.
تام الہی ُسننے سے پڑھنے سے ِعزت ملے وقار ملے

ਸੁਣਿਐ ਲਾਗੈ ਸਹਜਿ ਧਿਆਨੁ ॥
سُنھِئےَ لاگےَ سہجِ دھِیانُ ॥
suni-ai laagai sahj Dhi-aan.
۔ سہج ۔ پرسکو ن۔دھیان ۔ بلا جہد توجہ ۔ مدت ۔ سچ ۔حقیقت ۔ اصلیت ۔
By listening to God’s word with love and devotion, one’s mind is effortlessly attuned to intuitive meditation.
نام الہٰی سُننے سے رُوحانی سکُون آسانی ملے۔

ਨਾਨਕ ਭਗਤਾ ਸਦਾ ਵਿਗਾਸੁ ॥
نانک بھگتا سدا ۄِگاسُ ॥
naanak bhagtaa sadaa vigaas.
O’ Nanak, the devotees of God are forever in the state of joy and bliss.
نانک بھگتی والے ہروم خوشی منانے ہیں۔

ਸੁਣਿਐ ਦੂਖ ਪਾਪ ਕਾ ਨਾਸੁ ॥੧੦॥
سُنھِئےَ دوُکھ پاپ کا ناسُ
suni-ai dookh paap kaa naas. ||10||
By listening to God’s word with love and devotion, all pain, sorrows and sins are erased. ||10||
نام الہٰی سُننے سے عذاب سبھی مِٹ جاتے ہیں۔

Stanza 11
یہ پیرا گراف مزید اس بات پر زور دیتا ہے کہ گرو کی بات کو غور اور توجہ سے سنا جائے اور بغیر کسی ہچکچاہٹ کے اس پر عمل کیا جائے۔
This stanza further emphasizes the importance of listening with concentration and accepting Guru’s word completely, without hesitation.

ਸੁਣਿਐ ਸਰਾ ਗੁਣਾ ਕੇ ਗਾਹ ॥
سُنھِئےَ سرا گُنھا کے گاہ
suni-ai saraa gunaa kay gaah.
گنا کے گاہ ۔ نیکی کے دریاؤں کا راستہ کا پتہ ۔
By listening to God’s word with love and devotion, one becomes immensely virtuous.
نام الہٰی سُننے سے نیکی کے دریاؤ ں کا پتہ چلے۔

ਸੁਣਿਐ ਸੇਖ ਪੀਰ ਪਾਤਿਸਾਹ ॥
سُنھِئےَ سیکھ پیِر پاتِساہ
suni-ai saykh peer paatisaah.
By listening to God’s word with love and devotion, one attains spiritual bliss.
نام الہٰی سُننے سے ۔ شیخ پیر اور شاہ ہو جاتا ہے۔

ਸੁਣਿਐ ਅੰਧੇ ਪਾਵਹਿ ਰਾਹੁ ॥
سُنھِئےَ انّدھے پاۄہِ راہُ
suni-ai anDhay paavahi raahu.
By listening to God’s word with love and devotion, even a spiritually ignorant person becomes enlightened and finds the right path.
نام الہٰی سُننے سے اندھے کو راستہ مل جاتا ہے۔۔

ਸੁਣਿਐ ਹਾਥ ਹੋਵੈ ਅਸਗਾਹੁ ॥
سُنھِئےَ ہاتھ ہوۄےَ اسگاہُ ॥
suni-ai haath hovai asgaahu.
اُسکاہ ۔ انہائی گہرائیوں کا پتہ چلتا ہے۔۔
Listening-the Unreachable comes within your grasp.
نام الہٰی سُننے سے لا محدود عالم کا اندازہ ہوجاتا ہے ۔

ਨਾਨਕ ਭਗਤਾ ਸਦਾ ਵਿਗਾਸੁ ॥
نانک بھگتا سدا ۄِگاسُ ॥
naanak bhagtaa sadaa vigaas.
O’ Nanak, the devotees of God are forever in the state of joy and bliss.
اے نانک عاشقان الہٰی ہردم خوشیاں خوب منانے ہیں

ਸੁਣਿਐ ਦੂਖ ਪਾਪ ਕਾ ਨਾਸੁ ॥੧੧॥
سُنھِئےَ دوُکھ پاپ کا ناسُ
suni-ai dookh paap kaa naas. ||11||
By listening to God’s word with love and devotion, all pain, sorrows and sins are erased.||11||
نام الہٰی سُننے سے سارے عذاب مٹ جاتے ہیں۔۔

Stanza 12
یہ پیرا گراف اور اس سے اگلے تین پیرا گراف خدا پر مکمل یقین رکھنے کے بارے میں ہیں۔
لفظ ‘‘ماننے’’ کا مطلب ہے کہ خدا کی مرضی کو بغیر کسی ہچکچاہٹ کے قبول کیا جائے۔ کسی بھی شخص کی روحانیت کا درجہ الفاظ سے بیان نہیں کیا جا سکتا۔ یعنی اسے خدا کے ہر کام پر مکمل یقین ہو ۔
اس کا مطلب یہ ہے کہ صرف اس کے معنی پر ہی نظر نہ ہو بلکہ زندگی بھی اسی کے مطابق بسر ہو۔
● This stanza and the three stanzas that follow, are about having total faith in the Almighty God.
● The word ‘Mannay’ means completely accepting God’s will with no exception. The spiritual level of a person in the state of ‘Mannay’ is so high that no words can explain it. It means one having complete trust in whatever God Almighty does.
● It also means living the faith and not just being aware of it.

ਮੰਨੇ ਕੀ ਗਤਿ ਕਹੀ ਨ ਜਾਇ ॥
منّنے کیِ گتِ کہیِ ن جاءِ ॥
mannay kee gat kahee na jaa-ay.
مَنے۔ الہّٰی ہَستی کو ماننا ۔
The spiritual state of a mind with complete faith in God’s Name is so high that no words can describe it.
جو یقین و ایمان خدا میں لاتا ہے اُس کی حالت بیان سے باہر ہے

ਜੇ ਕੋ ਕਹੈ ਪਿਛੈ ਪਛੁਤਾਇ ॥
جے کو کہےَ پِچھےَ پچھُتاءِ ॥
jay ko kahai pichhai pachhutaa-ay.
One who tries to describe it, shall regret the attempt.
۔ اگر جُرات بیان کی کرتا ہے تو آخر پچھتاتا رہتا ہے

ਕਾਗਦਿ ਕਲਮ ਨ ਲਿਖਣਹਾਰੁ ॥ਮੰਨੇ ਕਾ ਬਹਿ ਕਰਨਿ ਵੀਚਾਰੁ ॥
کاگدِ کلم ن لِکھنھہارُ ॥ منّنے کا بہِ کرنِ ۄیِچارُ ॥
kaagad kalam na likhanhaar. mannay kaa bahi karan veechaar.
لکھنہار ، لکھنے سے قاصِرّ ،
People tend to value the spiritual state of such an elevated soul but no one is able to capture it and pen it down.
۔ (دل سے ) کاغذ اَور قلم بھی اُسکی حالت لکھنے سےہے قاصِرّ ۔ ایمان لانے والے پر غور و خوض ہی ہو سکتا ہے

ਐਸਾ ਨਾਮੁ ਨਿਰੰਜਨੁ ਹੋਇ ॥ ਜੇ ਕੋ ਮੰਨਿ ਜਾਣੈ ਮਨਿ ਕੋਇ ॥੧੨॥
ایَسا نامُ نِرنّجنُ ہوءِ ॥ جے کو منّنِ جانھےَ منِ کوءِ
aisaa naam niranjan ho-ay, jay ko man jaanai man ko-ay. ||12||
نِرنجن ۔ پاک ۔ بیداغ۔
God’s Naam is completely pure but only the one who has full faith in it and who lives according to Guru’s advice can experience the taste of His Divine Purity. ||12||
اَیسا ہے پاک بیداغ نام اَگر دِدل و جان سے ایمان لائے کوئی

Stanza 13
سابقہ پیرا گراف میں لفظ ‘‘ماننے’’ استعمال ہوا تھا جس کا مطلب تھا کہ جو خدا سے سچی محبت کرتا ہے وہ اس پر مکمل یقین رکھتا ہے۔ اس پیرا گراف اور اس سے اگلے دو پیراگراف میں ہر لائن ‘‘منائے’’ سے شروع ہوتی ہے جس کا مطلب ہے خدا پر یقین رکھنا اور اسے اپنی ساری زندگی پر لاگو کرنا۔ اس پیرا گراف میں اس اعتقاد پر پختہ رہنے کے فوائد کا علم ہوتا ہے۔
In the previous stanza, the word ‘Mannay’ was used, which meant one who loves God dearly and has full faith in Him. In this stanza and in the two stanzas that follow, every line starts with the word ‘Mannai’ which stands for ‘By the act of having complete faith in God and living that faith earnestly’. The stanza also gives us the benefits of living that faith.

ਮੰਨੈ ਸੁਰਤਿ ਹੋਵੈ ਮਨਿ ਬੁਧਿ ॥
منّنےَ سُرتِ ہوۄےَ منِ بُدھِ ॥
mannai surat hovai man buDh.
سرت۔ ہوش، بُدھ ۔ سمجھّ
By having complete faith in God, one acquires intuitive awareness and becomes spiritually enlightened
ایمان خُدا پر لانے سے ۔ ہوش ۔ سَمجھّ بیدار ہو جاتی ہے

ਮੰਨੈ ਸਗਲ ਭਵਣ ਕੀ ਸੁਧਿ ॥
منّنےَ سگل بھۄنھ کیِ سُدھِ ॥
mannai sagal bhavan kee suDh.
سگل ۔ سارے ۔ بہون ، عالم ۔ سُدھ ۔ ہوش سَمجھّ۔
By having complete faith in God, one attains spiritual understanding that God is all-pervading.
۔ ایمان خدا پر لانے سارے عالم کی سَمجھّ ہو جاتی ہے

ਮੰਨੈ ਮੁਹਿ ਚੋਟਾ ਨਾ ਖਾਇ ॥
منّنےَ مُہِ چوٹا نا کھاءِ ॥
mannai muhi chotaa naa khaa-ay.
By having complete faith in God, one does not suffer from the pain of worldly evils.
۔ ایمان خُدا پر لانےوالا بچ جاتا ہے گُناہوں کی سزاؤں سے ۔

ਮੰਨੈ ਜਮ ਕੈ ਸਾਥਿ ਨ ਜਾਇ ॥
منّنےَ جم کےَ ساتھِ ن جاءِ ॥
mannai jam kai saath na jaa-ay.
By having complete faith in God, one’s cycle of birth and death ends.
ایمان خُدا پر لانے والے کو کو توال الہّٰی نہ ساتھ لیجائیگا

ਐਸਾ ਨਾਮੁ ਨਿਰੰਜਨੁ ਹੋਇ ॥ਜੇ ਕੋ ਮੰਨਿ ਜਾਣੈ ਮਨਿ ਕੋਇ ॥੧੩॥
ایَسا نامُ نِرنّجنُ ہوءِ ॥ جے کو منّنِ جانھےَ منِ کوءِ
aisaa naam niranjan ho-ay. jay ko man jaanai man ko-ay. ||13||
God’s Naam is completely pure but only the one who has full faith in it and who lives according to Guru’s advice can experience the taste of His Divine Purity. ||13||
ایسا پاک نام ہے خُدا کا اگر کوئی دل و جان سے اُسکو مانےگا ۔

Stanza 14
پچھلے پیراگراف کی طرح اس پیراگراف میں بھی لفظ ‘‘ماننے’’ استعمال ہوا ہے جس کا مطلب ہےکہ جو خدا سے سچی محبت کرتا ہے وہ اس پر مکمل یقین رکھتا ہے۔ اس پیرا گراف اور اس سے اگلے دو پیراگراف میں ہر لائن ‘‘منائے’’ سے شروع ہوتی ہے جس کا مطلب ہے خدا پر یقین رکھنا اور اسے اپنی ساری زندگی پر لاگو کرنا۔ اس پیرا گراف میں اس اعتقاد پر پختہ رہنے کے فوائد کا علم ہوتا ہے۔
As in the previous stanza, in this stanza and in the next one also, every line starts with the word ‘Mannai’ which stands for ‘By the act of having complete faith in God and living that faith earnestly’. The stanza also gives us the benefits of living that faith.

ਮੰਨੈ ਮਾਰਗਿ ਠਾਕ ਨ ਪਾਇ ॥
منّنےَ مارگِ ٹھاک ن پاءِ
mannai maarag thaak na paa-ay.
مارک ۔ راستہ ۔ ٹھاک ۔ روک
By having complete faith in God, the spiritual path of the faithful will never be hindered (by any kind of vices etc).
یقین لائے جو دل و جان سے خُدا پر زندگی کے سفر میں روک نہ آئیگی

ਮੰਨੈ ਪਤਿ ਸਿਉ ਪਰਗਟੁ ਜਾਇ ॥
منّنےَ پتِ سِءُ پرگٹُ جاءِ
mannai pat si-o pargat jaa-ay.
۔ پت سیئو۔ باعزت ۔ پرگٹ ، شُہرَتّ ۔
By having complete faith in God, The faithful will depart (from the world) in a high spiritual state.
۔ دل وجان سے ایمان لائے جو خُدا پر عِزت و حَشمت اَور شہرت پائیگا

ਮੰਨੈ ਮਗੁ ਨ ਚਲੈ ਪੰਥੁ ॥
منّنےَ مگُ ن چلےَ پنّتھُ
mannai mag na chalai panth.
By having faith in God, one does not follow the path of ritualistic religious sects.
۔ ایمان لانے خُدا پر ۔

ਮੰਨੈ ਧਰਮ ਸੇਤੀ ਸਨਬੰਧੁ ॥
منّنےَ دھرم سیتیِ سنبنّدھُ ॥
mannai Dharam saytee san-banDh.
سنبزھ ، رشتہ ۔
By having faith in God the faithful are firmly bound to the path of truth and righteousness.
یَقین خُدا پر لانے فَرض منصبی جو انسانی اس سے رشتہ ہو جائیگا

ਐਸਾ ਨਾਮੁ ਨਿਰੰਜਨੁ ਹੋਇ ॥ਜੇ ਕੋ ਮੰਨਿ ਜਾਣੈ ਮਨਿ ਕੋਇ ॥੧੪॥
ایَسا نامُ نِرنّجنُ ہوءِ ॥ جے کو منّنِ جانھےَ منِ کوءِ
aisaa naam niranjan ho-ay. jay ko man jaanai man ko-ay. ||14||
God’s Naam is completely pure but only the one who has full faith in it and who lives according to Guru’s advice can experience the taste of His Divine Purity. ||14|
۔ اَیسا پاک نام خُدا کا ہے ۔ دل و جان سے جو اُسکو اَپناّئے گا۔

Stanza 15
یہ ان تینوں پیراگراف میں سے آخری ہے جہاں ہر سطر کا آغاز لفظ ’’ مننا ’‘ ‘سے ہوتا ہے جس کا مطلب ہے‘ خدا پر مکمل یقین رکھنا اور اس عقیدے کے مطابق زندگی بسر کرنا۔ یہ پرا گراف اس ایمان کے ساتھ زندگی بسر کرنے کے فوائد بھی بتاتا ہے۔
This is the last of the three stanzas where every line starts with the word ‘Mannai’ which stands for ‘By the act of having complete faith in God and living that faith earnestly’. The stanza also shows us the benefits of living that faith.

ਮੰਨੈ ਪਾਵਹਿ ਮੋਖੁ ਦੁਆਰੁ ॥
منّنےَ پاۄہِ موکھُ دُیارُ ॥
mannai paavahi mokh du-aar.
موکہہ دوآر ۔ دَرِنجات
By having full faith in God, one attains liberation by becoming free from the cycle of birth and death.
جو ایمان خُدا پر لا تا ہے نجات کا دروازہ پاتا ہے

ਮੰਨੈ ਪਰਵਾਰੈ ਸਾਧਾਰੁ ॥
منّنےَ پرۄارےَ سادھارُ ॥
mannai parvaarai saaDhaar.
By having full faith in God, one engages all his sensory organs in meditation on Naam.
۔ جو ایمان خُدا پر لاتا ہے خود کامیابی پاتا ہے

ਮੰਨੈ ਤਰੈ ਤਾਰੇ ਗੁਰੁ ਸਿਖ ॥
منّنےَ ترےَ تارے گُرُ سِکھ ॥
mannai tarai taaray gur sikh.
By having faith in God, one crosses over the world-ocean of vices and also helps other disciples of the Guru to get liberated from the cycle of birth and death.
اور مریدوں کو کامیاب بناتا ہے

ਮੰਨੈ ਨਾਨਕ ਭਵਹਿ ਨ ਭਿਖ ॥
منّنےَ نانک بھۄہِ ن بھِکھ ॥
mannai naanak bhavahi na bhikh.
۔ بَھوّہ۔ بھَٹکنا ۔ بھِکہہ ۔ بھیک ۔
By having faith in God, O’ Nanak, one does not wander around fulfilling his needs from anyone else.
۔ نانک خُدا کو ماننے سے بھیک کے چکر سے بچ جاتا ہے

ਐਸਾ ਨਾਮੁ ਨਿਰੰਜਨੁ ਹੋਇ ॥ ਜੇ ਕੋ ਮੰਨਿ ਜਾਣੈ ਮਨਿ ਕੋਇ ॥੧੫॥
ایَسا نامُ نِرنّجنُ ہوءِ ॥ جے کو منّنِ جانھےَ منِ کوءِ
aisaa naam niranjan ho-ay. jay ko man jaanai man ko-ay. ||15||
God’s Name is completely pure but only the one who has full faith in it and who lives according to the Guru’s advice can taste His Divine Purity. ||15||
۔ ایسا ہے پاک نام خُدا کا اگر دل وجان سے اسکو دل میں بٹھاتا ہے

Stanza 16
اس پیرا گراف میں ، لفظ ’’ پنچ ‘‘ کئی بار استعمال ہوا ہے۔ پنچ کا مطلب ہے ’منتخب شدہ‘۔ ہندوستان میں پرانے وقتوں میں ، لوگوں کے درمیان تنازعات کو حل کرنے اور مناسب فیصلے کرنے کے لئے ایک گاؤں میں پانچ قابل احترام اور ذمہ دار افراد کا انتخاب کیا جاتا تھا۔ انہیں ’’ پنچ ‘‘ کہا جاتا تھا۔ یہاں گرو نانک نے پنچ کا انتخاب ان منتخب لوگوں کے طور پر کیا ہے جو سنیآ‘ (محبت اور عقیدت کے ساتھ خدا کا نام سننے) اور ‘مننائیآ’ (خدا پر مکمل یقین رکھتے ہیں) پر عمل کرتے ہیں۔ آخری پیرا گرافوں میں ’’ سنائی اور منائی ‘‘ کی وضاحت کی گئی ہے۔
In this stanza, the word ‘Panch’ has been used several times. Panch means ‘the chosen one’. In old times in India, five respectable and responsible people in a village were chosen to resolve disputes among people and make proper decisions. They were called ‘Panch’ – the chosen ones. Here Guru Nanak refers to Panch as the chosen ones who practice ‘Suni-ai’ (listening to God’s Name with love and devotion) and ‘Mannai’ (having complete faith in God). ‘Suni-ai’ and ‘Mannai ‘‘have been explained in the last stanzas.

ਪੰਚ ਪਰਵਾਣ ਪੰਚ ਪਰਧਾਨੁ ॥ ਪੰਚੇ ਪਾਵਹਿ ਦਰਗਹਿ ਮਾਨੁ ॥
پنّچ پرۄانھ پنّچ پردھانُ ॥ پنّچے پاۄہِ درگہِ مانُ ॥
panch parvaan panch parDhaan panchay paavahi dargahi maan.
پنچ۔ وُہ انسان جس نے نام کی سماعَت کی قبول کیا۔ دل میں بسائیا اور اُس میں یقین واثق کیا۔
پروان ۔ جو قبول ہو گیا۔ پردھان ۔ رہبر ۔ ، پنچ۔سنت ۔ درگارہ ، دربار الہّٰی ، بارگاہ الہّٰی ۔ عدالت الہّٰی
Those imbued in the Name of God are blessed to be spiritually escalated and honored.
جن کے دل میں نام بستا ہے اُنکے دل میں اِلہّٰی عشق پیدا ہو جاتا ہے وہی جنکو خدا میں ایمان اور یقین واثق ہوتا ہے۔وہ دُنیا میں رُوحانی رہبر ہو جاتے ہیں۔ اَور بارگاہِ الہّٰی میں بھی عزت و حشمت پاتے ہیں

ਪੰਚੇ ਸੋਹਹਿ ਦਰਿ ਰਾਜਾਨੁ ॥ ਪੰਚਾ ਕਾ ਗੁਰੁ ਏਕੁ ਧਿਆਨੁ ॥
پنّچے سوہہِ درِ راجانُ پنّچا کا گُرُ ایکُ دھِیانُ
panchay sohahi dar raajaan. panchaa kaa gur ayk Dhi-aan.
۔ سوہے۔ اچھے لگتے ہیں ۔۔ دھیان تو جو ۔ ہوش کا ٹھکانے لگانا
Those very souls, imbued in the Name of God are the distinguished ones and their focus is always on the Divine word of God.
۔ اور شاہی دربارمیں بھی انہیں دھیان لگانا ہوتا ہے

ਜੇ ਕੋ ਕਹੈ ਕਰੈ ਵੀਚਾਰੁ ॥ ਕਰਤੇ ਕੈ ਕਰਣੈ ਨਾਹੀ ਸੁਮਾਰੁ ॥
جے کو کہےَ کرےَ ۄیِچارُ ॥ کرتے کےَ کرنھےَ ناہیِ سُمارُ
jay ko kahai karai veechaar. kartay kai karnai naahee sumaar.
If one tries to describe Him, it will be clear that it is impossible to describe Him because there is no end to His creation.
مگر تاہم اگر کوئی سمجھے یا خیال کرے الہّٰی قدرت کا شمار یا حساب نہیں لگاسکتا

ਧੌਲੁ ਧਰਮੁ ਦਇਆ ਕਾ ਪੂਤੁ ॥
دھوَلُ دھرمُ دئِیا کا پوُتُ ॥
Dhoul Dharam da-i-aa kaa poot.
۔ فرض ۔ دھرم ۔ جس کے دل میں مہربانی ۔ رَحمَتّ ۔ رحم سے دَھرم یا فرض بیدار ہوتا ہے
Righteousness (or Religion) is an offspring of compassion; This force of righteousness is the mythical bull that supports the world.
۔ قانون قدرت ہی خیالی بیل ہے۔ یا دھرم ہے جو رَحّم یا مہربانی سے پیدا ہو تا ہے

ਸੰਤੋਖੁ ਥਾਪਿ ਰਖਿਆ ਜਿਨਿ ਸੂਤਿ ॥
سنّتوکھُ تھاپِ رکھِیا جِنِ سوُتِ
santokh thaap rakhi-aa jin soot.
۔ سنتوکہہ ، صَبرّ۔ قائم ۔ تھاپ ٹِکانہ ۔ ، سوت ، زیر نظام
The balance in nature is maintained by righteousness, compassion and contentment. These three virtues keep the world in perfect order like beads in a thread.
اور دھرم سے صبر پیدا ہوتا ہے

ਜੇ ਕੋ ਬੁਝੈ ਹੋਵੈ ਸਚਿਆਰੁ ॥ ਧਵਲੈ ਉਪਰਿ ਕੇਤਾ ਭਾਰੁ ॥
جے کو بُجھےَ ہوۄےَ سچِیارُ ॥ دھۄلےَ اُپرِ کیتا بھارُ
jay ko bujhai hovai sachiaar. Dhavlai upar kaytaa bhaar.
۔ دَھّرم ۔ قانو ، قدرت ، الہّٰی قانون ، سچیار ، سچا نور
One who understands this balance of virtues, becomes the true one; It is the Divine Laws that keep the universe in balance (and not the bull as per old Hindu belief).
۔ اگر کوئی اس سمجھ کو سمجھ لے اورخیال کرے تو وہ اس قابل ہو جائیگا کہ اُس میں نور الہّٰی سما جائے۔ ورنہ بیل پر کوئی بوجھ ہے

ਧਰਤੀ ਹੋਰੁ ਪਰੈ ਹੋਰੁ ਹੋਰੁ ॥ ਤਿਸ ਤੇ ਭਾਰੁ ਤਲੈ ਕਵਣੁ ਜੋਰੁ ॥
دھرتیِ ہورُ پرےَ ہورُ ہورُ ॥ تِس تے بھارُ تلےَ کۄنھُ جورُ
Dhartee hor parai hor hor. tis tay bhaar talai kavan jor.
So many worlds there are beyond this world, so very many! And beyond them, more and more! What power holds them, and supports their weight?
زمیں اسکے علاوہ اور بہت سی زمیں ہیں تو وہ کس کےسہارے قائم ہیں۔ اور یہ خیالی بیل کس کے سہارے ہے

ਜੀਅ ਜਾਤਿ ਰੰਗਾ ਕੇ ਨਾਵ ॥ ਸਭਨਾ ਲਿਖਿਆ ਵੁੜੀ ਕਲਾਮ ॥
جیِء جاتِ رنّگا کے ناۄ ॥ سبھنا لِکھِیا ۄُڑیِ کلام
jee-a jaat rangaa kay naav. sabhnaa likhi-aa vurhee kalaam.
، جیئہ ۔ جاندار ،
The names and the colors of the many varieties of common species were all inscribed by the Ever-flowing Pen of God.
کئی قسموں کئی رنگو ں کتنی ہی ذاتوں کے جاندار اس عالم میں موجود ہیں۔ حساب کرنیوالے محاسب نے قلم رواں سے سب کے نام لکھ دیئے

ਏਹੁ ਲੇਖਾ ਲਿਖਿ ਜਾਣੈ ਕੋਇ ॥ ਲੇਖਾ ਲਿਖਿਆ ਕੇਤਾ ਹੋਇ ॥
ایہُ لیکھا لِکھِ جانھےَ کوءِ ॥ لیکھا لِکھِیا کیتا ہوءِ
ayhu laykhaa likh jaanai ko-ay. laykhaa likhi-aa kaytaa ho-ay.
How can anyone ever write an account of this?
It would be an account with no end!
۔ کوئی شاذ و نادرہی یہ حساب جانتا ہوگا کیونکہ نا معلوم یہ کتنا بڑا حساب ہو گا

ਕੇਤਾ ਤਾਣੁ ਸੁਆਲਿਹੁ ਰੂਪੁ ॥ ਕੇਤੀ ਦਾਤਿ ਜਾਣੈ ਕੌਣੁ ਕੂਤੁ ॥
کیتا تانھُ سُیالِہُ روُپُ ॥ کیتیِ داتِ جانھےَ کوَنھُ کوُتُ
kaytaa taan su-aalihu roop. kaytee daat jaanai koun koot.
سوآپہو، خوبصورت۔ کوت اندازہ
How great His power! How fascinating His beauty! And how great the gifts! (nature’s bounties); Who can know their extent?
خدا لا انتہاقوتوں کا مالک ہے نہایت خوبصورت شکل و صورت ہے

ਕੀਤਾ ਪਸਾਉ ਏਕੋ ਕਵਾਉ ॥ਤਿਸ ਤੇ ਹੋਏ ਲਖ ਦਰੀਆਉ ॥
کیِتا پساءُ ایکو کۄاءُ ॥ تِس تے ہوۓ لکھ دریِیاءُ
keetaa pasaa-o ayko kavaa-o. tis tay ho-ay lakh daree-aa-o.
You created the vast expanse of the Universe with One Word! And, hundreds of thousands of lives emerged.
ایک ہی الہّٰی حرف سے یہ عالم وَجُود میں آگیا اوراُس ایک ہی کلام سے لاکھو ں دَریائے زِندگی وَجُود میں آئے

ਕੁਦਰਤਿ ਕਵਣ ਕਹਾ ਵੀਚਾਰੁ ॥ ਵਾਰਿਆ ਨ ਜਾਵਾ ਏਕ ਵਾਰ ॥
کُدرتِ کۄنھ کہا ۄیِچارُ ॥ ۄارِیا ن جاۄا ایک ۄار
kudrat kavan kahaa veechaar. vaari-aa na jaavaa ayk vaar.
I have no power to even begin to describe your creation; I have nothing to offer that befits your greatness, not even my life.
سمجھ میں کہاں ہے طاقَت ہے کہ میں تیری اِس بیشمار پھیلاؤ کے بارے کوئی خیال کروں ۔مجھ میں کوئی قوت ہے کہ تجھ پر جان قربان کر سکوں

ਜੋ ਤੁਧੁ ਭਾਵੈ ਸਾਈ ਭਲੀ ਕਾਰ ॥ ਤੂ ਸਦਾ ਸਲਾਮਤਿ ਨਿਰੰਕਾਰ ॥੧੬॥
جو تُدھُ بھاۄےَ سائیِ بھلیِ کار ॥ توُ سدا سلامتِ نِرنّکار
jo tuDh bhaavai saa-ee bhalee kaar. too sadaa salaamat nirankaar. ||16||
O’ God, whatever pleases you is good for us. You are the Eternal and Formless One. ||16||
کام وہی اُچھا ہے جسےتو اَچھاّ سمجھے۔ تو ہی دائم صحیح سلامت پاک بے وَجُود ہے خُدا

Stanza 17
اگلی تینوں پیراگراف میں ہر سطر کا لفظ ’’ آسنکھ ‘‘ سے شروع ہوتا ہے ، جس کا مطلب ہے ان گنت یا لامحدود۔ گرو نانک ان پیراگراف میں خدا کی تخلیق کی وسعت پر حیرت اور تعریف کا اظہار کررہے ہیں۔
Every line in the next three stanzas starts with the word ‘Asankh’, which means countless or infinite. Guru Nanak is expressing astonishment and admiration of the vastness of God’s Creation in these stanzas.

ਅਸੰਖ ਜਪ ਅਸੰਖ ਭਾਉ ॥ ਅਸੰਖ ਪੂਜਾ ਅਸੰਖ ਤਪ ਤਾਉ ॥
اسنّکھ جپ اسنّکھ بھاءُ ॥ اسنّکھ پوُجا اسنّکھ تپ تاءُ
asaNkh jap asaNkh bhaa-o. asaNkh poojaa asaNkh tap taa-o.
اسنکہہ ۔ بیشمار ۔جپ کلام ۔ بھاؤ ۔ پریمی ۔ پوجا ۔ پرستش ۔ تَپ ، رِیاضت ۔ تپسیا۔
Countless meditate on Your Name with Love. Countless are those who worship You and exercise countless austere disciplines.
اِس عالم میں بیمشار ریاضت کرتے ہیں ۔اَور بیشمار مشغول عِشق محبت ہیں ۔بیشمار پرستش کرتے ہیں اَور بیمشار تپسیّا کرتے ہیں ۔

ਅਸੰਖ ਗਰੰਥ ਮੁਖਿ ਵੇਦ ਪਾਠ ॥ ਅਸੰਖ ਜੋਗ ਮਨਿ ਰਹਹਿ ਉਦਾਸ ॥
اسنّکھ گرنّتھ مُکھِ ۄید پاٹھ ॥ اسنّکھ جوگ منِ رہہِ اُداس
asaNkh garanth mukh vayd paath. asaNkh jog man rahahi udaas.
مکہہ ، زبانی ۔ جوگ ، یوگ آسن۔ من اُداس
Countless are the scriptures and the ritual recitations of the Vedas. Countless are the Yogis, whose minds remain detached from the world.
بیشمار کرتے ہیں پاٹھ ویدوں کا بیشمار تارک الدنیا ہیں۔