Urdu-Master-22

SGGS p. 667-
دھناسریِ مہلا ੪॥
ہم انّدھُلے انّدھ بِکھےَ بِکھُ راتے کِءُ چالہ گُر چالیِ ॥
ستگُرُ دئِیا کرے سُکھداتا ہم لاۄےَآپنپالیِ॥੧॥
گُرسِکھ میِت چلہُ گُر چالیِ ॥
جو گُرُ کہےَ سوئیِ بھل مانہُ ہرِ ہرِ کتھا نِرالیِ ॥੧॥ رہاءُ ॥
ہرِ کے سنّت سُنھہُ جن بھائیِ گُرُ سیۄِہُبیگِبیگالیِ॥
ستگُرُ سیۄِکھرچُہرِبادھہُمتجانھہُآجُکِکال٘ہ٘ہیِ॥੨॥
ہرِ کے سنّت جپہُ ہرِ جپنھا ہرِ سنّتُ چلےَ ہرِ نالیِ ॥
جِن ہرِ جپِیا سے ہرِ ہوۓہرِ مِلِیا کیل کیلالیِ ॥੩॥
ہرِ ہرِ جپنُ جپِ لوچ لد਼چانیِ ہرِ کِرپا کرِ بنۄالیِ॥
جن نانک سنّگتِ سادھ ہرِ میلہُ ہم سادھ جنا پگ رالیِ ॥੪॥੪॥
لفظی معنی:
انّدھُلے ۔ بے علم۔ بِکھُ راتے ۔ زہریلے لطف میں محوومجذوب۔ چالہ گُر چالیِ ۔ مرشد کے سبق پر کیوں چلتے ہیں۔ پالیِ ۔پلے ۔ دامن (1) میِت ۔ دوست۔ بھل۔ اچھا۔ نیک ۔نرالی ۔اوکھی ۔ رہاؤ۔ بیگِ بیگالیِ ۔ فورآ ۔ ستگُرُ سیۄِ۔مرشد کی خدمت (2) ہرِ سنّتُ چلےَ ہرِ نالیِ ۔ الہٰی دلی رضائے الہٰیمیں رہتا ہے ہرِ جپِیا ۔ الہٰی ریاض کی ۔ سے ہرِ ہوۓ۔ خدا کی مانند ہوگئے ۔ ہرِ مِلِیا ۔ الہٰی وصل حاصل ہوا۔ کیل کیلالیِ ۔ انوکھے کام کرنے والا خدا (3) جپنُ جپِ ۔ الہٰی ریاض و عبادت سے ۔ لوچ لد਼چانیِ ۔ پیار کی خواہش ۔ بنۄالیِ ۔ خدا ۔ جنگلوں کے مالک۔ سنّگتِ سادھ ۔ صحبت و قربت پاکدامناں ۔ والی اللہ ۔ پگ رالیِ ۔ دہول یا خاک پا۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے مریدان مرشد دوست مرشد کے بتاے ہوئے سبق مرشد پر زندگی کے طور طریقوں پر عل کرؤ۔ جو مرشد بتاتا ہے اسے اچھا اور نیک سمجھو خیال کرؤ الہٰی ذکر ذکار اورکہانی انوکھی ونرالی ہے ۔ رہاؤ۔ ہم لا علم بے بہرہ لا علمی میں زہریلی لذتوں میں ملو ث ہیں کیسے سبق مرشد پر عمل پیرا ہوئیں۔ سچا مرشد ہم پرکرم و عنایت فرمائے اور ہمیں اپنا دامن پکڑائے (1) اے خادمان خدا ولی اللہ الہٰی ریاض وعبادت کیجیئے یہ سنہو اور فورا کرؤ یہ خیال نہ کرؤ ان یا کل کریں گے ۔ سچے مرد کی خدمت مراد اسکے بتائے ہوئے طرز زندگی اختیار کرکے عاقبت کے لئے سرمایہ اکھٹا کرؤ تاکہ دوران سفر زندگی کام آئے (2) اے ولی اللہ خدا کو یاد کرؤ الہٰی ولی اللہ الہٰیرضا کا قابل ہو جاتا ہے ۔ جو ریاض خدا کرتے ہیںخدا جیسے ہو جاتے ہیں۔خدا جو کھیل تماشے کرنے والا خوش مزاج ہے کا وصل وملا پاتے ہیں (3) اے خدا کرم و عنایت فرمایئے میرے دلمیں تیری ریاضت وعبادت کی بھاری خواہش ہے چاہلگی ہوئی ہے ۔ اے نانک مجھے صحبت و قربت پاکدامناں عنایت کرتاکہ دہول پائے والی اللہ ملتی رہے ۔

دھناسریِ مہلا ੪॥
ہرِ ہرِ بوُنّد بھۓہرِسُیامیِہمچات٘رِکبِللبِللاتیِ॥
ہرِ ہرِ ک٘رِپاکرہُپ٘ربھاپنیِمُکھِدیۄہُہرِنِمکھاتیِ॥੧॥
ہرِ بِنُ رہِ ن سکءُ اِک راتیِ ॥
جِءُ بِنُ املےَ املیِ مرِ جائیِ ہےَ تِءُ ہرِ بِنُ ہم مرِ جاتیِ ॥ رہاءُ ॥
تُم ہرِ سرۄراتِاگاہہملہِنسکہِانّتُماتیِ॥
توُ پرےَ پرےَ اپرنّپرُ سُیامیِ مِتِ جانہُ آپن گاتیِ ॥੨॥
ہرِ کے سنّت جنا ہرِ جپِئو گُر رنّگِ چلوُلےَ راتیِ ॥
ہرِ ہرِ بھگتِ بنیِ اتِ سوبھا ہرِ جپِئو اوُتم پاتیِ ॥੩॥
آپے ٹھاکُرُ آپے سیۄکُآپِبناۄےَبھاتیِ॥
نانکُ جنُ تُمریِ سرنھائیِ ہرِ راکھہُ لاج بھگاتیِ ॥੪॥੫॥
لفظی معنی:
بوُنّد۔ آسمانی قطرہ آب۔ چات٘رِک ۔ پپیہا۔ بنییہا۔ سارنگ۔ بلل بلاتی ۔ چیخ پکار۔ آہ وزاری۔ ہرِ ۔ خدا ۔ نِمکھاتیِ۔ آنکھ جھپکنے کے عرصے کے لئے ۔ تھوڑی سی دیر کے لئے (1) راتیِ ۔ رتی بھر۔ جیؤ۔ جیسے ۔ املےَ ۔ نشے ۔ املیِ ۔ نشئی ۔ تیؤ۔ تییے ۔ رہاو۔ سرور۔ سمندر۔ اتِ اگاہ ۔ گہرے ۔ لہِ ن سکہِ انّتُ ماتیِ ۔ تیری اخرت کا اندازہ نہیں لگا سکتے ۔ اپرنّپرُ . اعاد و شمار۔ اندازہ۔ مت ۔ منتی ۔ اندازہ ۔ شمار ۔ گاتی ۔گتی ۔ الت۔مراد عظمت و حشمت (2) رنگ چلوے ۔ گل لالہ کے شوخ رنگ کی مانند۔ راتی۔ مح ومجذوب۔ مست ۔ اُتم پاتی ۔ اُتم پاتی ۔باری عزت (3) بھاتی ۔ بھانت ۔ قسم ۔ طریقہ ۔ بھگاتی ۔ بھگتی ۔ الہٰی عشق ۔ پریم ۔
ترجمہ معہ تشریح:
خدا کے بغیر انسان تھوڑے سے وقفے کے لئے بھی رہ نہیں سکتا جیسے نشے کے بغیر نشئی رہ نہیں سکتا نشیئی مرجاتا ہے ایسے ہی ہمخدا کے بغیر ہم مرجاتے ہیں۔ رہاؤ۔ تم ایک سمندر ہو جو نہایت گہرا ہے ہم اسکا اندازہ نہیں لگا سکتے ۔ اے خدا تو اتنا وسیع ہے کہ تیرا کوئی کناا نہیں اپنے حالات اے خدا تو خود ہی جانتا اور سمجھتا ہے (2)
اے خدا اے مالک تیرے الہٰی نام سچ وحقیقت کے ایک قطرے کے لئے پپیہے کی مانند چیخ و پکار کر رہا ہوں اے خدا کرم وعنایت فرماؤ کہ میری زبان سے یا منہ (سے) میں تیرا نام ہو آنکھ جھپکنے کے عرصے کے لئے (1) اے بھائی جن ولی اللہ یا سنتو نے الہٰی حمدوثناہ کی وہ گل لالہ کی مانند الہٰی پریم کے شوخ رنگ میں رنگے گئے ۔ انکے دلمیں الہٰی پیار نے اپنا گھر بنا لیا انہیں دنیا میں عزت و حشمت حاصلہوئی ۔ (3) خدا خود ہی آقا خود ہی خدمتگار اور خود ہی طریقہ کار بناتا ہے اے خدا خادم نانک۔ تیرے زیر سایہ آئیا ہے توخؤد ہیی اپے پریمیوں کی عزت رکھتا ہے ۔

دھناسریِ مہلا ੪॥
کلِجُگ کا دھرمُ کہہُ تُم بھائیِ کِۄچھوُٹہہمچھُٹکاکیِ॥
ہرِ ہرِ جپُ بیڑیِ ہرِ تُلہا ہرِ جپِئو ترےَ تراکیِ ॥੧॥
ہرِ جیِ لاج رکھہُ ہرِ جن کیِ ॥
ہرِ ہرِ جپنُ جپاۄہُاپناہمماگیِبھگتِاِکاکیِ॥ رہاءُ ॥
ہرِ کے سیۄکسےہرِپِیارےجِنجپِئوہرِبچناکیِ॥
لیکھا چِت٘رگُپتِجولِکھِیاسبھچھوُٹیِجمکیِباکیِ॥੨॥
ہرِ کے سنّت جپِئو منِ ہرِ ہرِ لگِ سنّگتِ سادھ جنا کیِ ॥
دِنیِئرُ سوُرُ ت٘رِسنااگنِ بُجھانیِ سِۄچرِئوچنّدُچنّداکیِ॥੩॥
تُم ۄڈپُرکھۄڈاگماگوچرتُمآپےآپِاپاکیِ॥
جن نانک کءُ پ٘ربھکِرپاکیِجےَکرِداسنِداسدساکیِ॥੪॥੬॥
لفظی معنی:
ہم چھُٹکاکیِ ۔ ہم کیسے چھوٹیں گے ۔ ہرِ ہرِ جپُ ۔ الہٰی ریاض۔ بیڑیِ ۔کشتی۔ تُلہا۔ عارضی۔ بیڑی ۔ تراکیِ ۔ تیرا کی ۔ تیرالیوالا(1) لاج ۔ عزت۔ بھگتِ اِکاکیِ ۔ صرف الہٰی عشق الہٰی محبت ۔ رہاؤ جپِئو ہرِ بچناکیِ ۔ الہٰیریاض بذریعہ کلام ۔ لیکھا ۔ حساب۔ باتی ۔بچت (2) سنّگتِ سادھ ۔محبت و قربت پاکدامن۔ دِنیِئرُ ۔سورج۔ سور۔ سورج ۔ ت٘رِسنااگنِ۔ خواہشات کی آگ۔ سو۔ خدا۔ چرِئو ۔ چڑھا۔ چنّدُ چنّداکیِ ۔ روشنی والا چاند۔ مراد سانت کرنے والا خواہشات کی آگ کو (3)ۄڈپُرکھ۔ بلند عظمت۔ اگم۔ انسانی عقل و ہوش سے اوپر ۔ اگوچر۔بیان مرادکہنے سے بعید۔ اپاکیِ ۔ واحد ۔ اپنے آپ ۔ داسنِ داس دساکیِ ۔ خدمتگار ۔ غلام۔
ترجمہ معہ تشریح:
کلجگ ۔ دؤر جہاد۔ دھرم ۔ فرض۔ کو ۔کیسے ۔ چھوٹیہہ۔ نجات۔ آزادی۔ چھٹکا کی ۔ نجات یا آزادی کے خواہشمند۔ بیڑی ۔ کشتی ۔ تلہا۔ عارضی کشتی ۔ ترے ۔تیرے ۔ تراکی ۔تیراک (1) لاج ۔ عزت۔ ہرجن۔ خادم خدا ۔ بھگت ۔ عشق۔ اکاکی ۔ صرف۔ واحد ۔ رہاؤ۔ سیوک ۔ خادم۔ ہر پیارے ۔ الہٰی پریمی ۔ ہر بچنا کی ۔ الہٰی کلام ۔ لیکھا ۔حساب ۔ چترگپت ۔ الہٰی جا سوس۔ خفیہ ۔ الہٰی منشی ۔باقتی ۔ جو بوقت حساب ذمے نکلتا ہے (2) ہر کے سنت الہٰی والی اللہ ۔ لگ سنگت سادھ جنا کی ۔ پکدامنوں کی صحبت وقربت اختیار ککرے ۔دنیئر ۔ دن بنانے والا۔ سور ۔ سورج ۔ تشنا اگن ۔ خواہش کی آگ ۔ سو ۔ چریؤ چند چندا کی ۔ مراد الہٰی ریاض وکلام سے خواہشات کی آگ بجھی اور زندگی روشن کرنے والا کلام یعنی چاند جس کی روشنی ٹھنڈک پہنچاتی ہے ۔ طلوع ہوا اورآگ برسانے والا سورج غروب ہوا مراد ہکتے دلوں کو تسکین ملتی (3) اے خدا تو عظیم ہستی ہے تو انسانی رسائی سے بلند اور بیان سے باہر ہے ۔ تو احد ہستی ہے ۔ اپنے خادم نانک پر کرم فرمائی کر اپنے خادموں کا خادمبنالے ۔

دھناسریِ مہلا ੪ گھرُ ੫ دُپدے
ੴ ستِگُر پ٘رسادِ॥
اُر دھارِ بیِچارِ مُرارِ رمو رمُ منموہن نامُ جپیِنے ॥
اد٘رِسٹُاگوچرُاپرنّپرسُیامیِگُرِپوُرےَپ٘رگٹکرِدیِنے॥੧॥
رام پارس چنّدن ہم کاسٹ لوسٹ ॥
ہرِ سنّگِ ہریِ ستسنّگُ بھۓہرِکنّچنُچنّدنُکیِنے॥੧॥ رہاءُ ॥
نۄچھِءکھٹُبولہِمُکھآگرمیراہرِپ٘ربھُاِۄنپتیِنے॥
جن نانک ہرِ ہِردےَ سد دھِیاۄہُاِءُہرِپ٘ربھُ میرا بھیِنے ॥੨॥੧॥੭॥
لفظی معنی:
اُر دھارِ ۔ دلمیں بساؤ۔ وچار۔ سمجھو ۔خیا ل کرؤ۔ مُرارِ ۔ خدا۔ رمو رمُ ۔ خدا میں محو ومجذوب ہوجاؤ۔ منموہن۔ دل کو لبھانے والے ۔ نامُ ۔ سچ وحقیقت۔ اد٘رِسٹُ۔ دکھائی نہ دینے والا۔ اگوچرُ ۔ ناقابل بیان ۔ اپرنّپر ۔ لا محدود۔ سُیامیِ۔ آقا۔ گُرِ پوُرےَ ۔ کامل مرشد۔ ٘رگٹ ۔ ظاہر (1) رام پارس چنّدن ۔ خدا ایسی ہستی ہے جس کی سے انسان پاکدامن اور روحآنی ہوجاتا ہے جیسے لوہا پارس کی چھوہ سے سونا ہو جاتا ہے ۔ چنّدن ۔ خوشبودار لکڑی۔کاسٹ۔ لکڑی ۔ لوسٹ۔ لوہا۔ سنگ ۔ ساتھ ۔ ستسنّگُ۔ پاک ساتھ ۔ سچا ساتھ ۔ کنّچنُ چنّدنُ کیِنے ۔ سونا اور چندن بنائے ۔پاک دامنی اور شہرت عنایت کی ۔ رہاؤ۔ تو ۔نوگرائمر۔ چھٹ ۔ چھ شاشتر۔ بولیہہ۔ بتاتے ہیں۔ مُکھ آگر ۔ منہ زبانی۔ اِۄنپتیِنے۔ اسطرح خوش نہیں ہوتا ۔ بھیِنے ۔ خوش ہوتا ہے ۔
ترجمہ معہ تشریح:
انسان لوہے کی مانند ہے اورخدا ہے پارس ۔ خدا ہے چندن انسان ہے لکڑی ۔ جسکا ساتھ سچا سچے خدا سے ہو جائے تو خدا لوہے سے سونا بنا دیتا ہے ۔لکڑی سے چندن بناتا ہے (1) رہاؤ۔ کامل مرشد نے اسے ظہور پذیر کیا جو آنکھوں سے اوجھل ہے جو انسانی رسائی سے بعید ہے لا محدود ہے جو بیان نہیں ہو سکتا اور سب کا مالک ہے اس دل پسند کے نام سچ وحقیقت جو صدیوی ہے اسے دلمیں بساؤ اور ذہن میںٹکاؤ (1) بہت سے زبان سے تو یاد کرنوں اور چھ شاشتروں معہ کو زبانی سناتے ہیں۔ مگر اس سے الہٰی خوشنودی حاصل ہیں ہو سکتی ۔ اے خادم نانک۔ اسے دل میں بساؤ ار دھیان لگاو توجہ دو اس طرح سے الہٰی خوشنودی حاصل ہوتی ہے ۔

دھناسریِ مہلا ੪॥
گُن کہُ ہرِ لہُ کرِ سیۄاستِگُراِۄہرِہرِنامُدھِیائیِ॥
ہرِ درگہ بھاۄہِپھِرِجنمِنآۄہِہرِہرِہرِجوتِسمائیِ॥੧॥
جپِ من نامُ ہریِ ہوہِ سرب سُکھیِ ॥
ہرِ جسُ اوُچ سبھنا تے اوُپرِ ہرِ ہرِ ہرِ سیۄِچھڈائیِ॥ رہاءُ ॥
ہرِ ک٘رِپانِدھِکیِنیِگُرِبھگتِہرِدیِنیِتبہرِسِءُپ٘ریِتِبنِآئیِ॥
بہُ چِنّت ۄِساریِہرِنامُاُرِدھاریِنانکہرِبھۓہےَسکھائیِ॥੨॥੨॥੮॥
لفظی معنی:
گُن کہُ ۔ اوصاف کہہ۔ ہر لہو۔ خدا کو سمجھ ۔ سیوا خدمت۔ اِۄ۔ اس طرح سے ۔ ہرِ نامُ دھِیائیِ ۔ الہٰی نام سچ و حقیقت میں اپنا دھیان لگا ۔ توجہ دے ۔ ہرِ درگہ بھاۄہِ۔ الہٰی عدالت میں نیکی پائے گا۔ نیکنامی پائے گا۔ جنمِ ن آۄہِ۔ تناسخ میں پڑے گا ۔ ہرِ ہرِ جوتِ سمائیِ ۔ الہٰی نور میں مجذوب ہوجائیگا (1) ہرِ جسُ ۔ الہٰی حمدوثناہ ۔ ہرِ سیۄِچھڈائیِ۔ الہٰی خدمت سے نجات یا ذہنی آزادی حاصل ہوتی ہے ۔ ک٘رِپانِدھِ۔ مہربانی کا خزانہ ۔ رحمان الرحیم ۔ گُرِ بھگتِ ۔ پیار مرشد۔ ہرِ سِءُ ۔ خدا کے ساتھ پریت۔ پریم پیار ۔ بہُ چِنّت ۄِساریِ۔ تشویش ختم ہوئی ۔ ہرِ نامُ اُرِ دھاریِ ۔ الہٰی نام دلمیں بسائیا ۔ ہرِ بھۓہےَسکھائیِ ۔ خدا ساتھی ہو۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے دل الہٰی نام سچ وحقیقت کی ریاض کرتا کہ تمام آرام و آسائش حاصل ہو ۔ الہٰی حمدوثناہ عظیم رتبہ رکھی ہے اور اعلے کام ہے الہٰی خدمت سے نجات ار ذہنی آزادی حاصل ہوتی ہے ۔ رہاؤ۔ اے انسان الہٰی حمدوچناہ کرخدا کو وصل کے لے کوشش کر ۔ سچے مرشد کی خدمت کرتاکہ بارگاہ الہٰی کا پسندیدہ ہوجائے پھر تناسخ میں نہ پڑناپڑے اورالہٰی وصل حاصل ہو جائے (1) خدا کرم وعنایت فرمائی مرشد الہٰی پریم کی نعمت بخشی ۔تب خدا سے پیار پیدا ہوا ۔ اے نانک جس نے خدا دلمیں بسالیا اسکی فکر مندی و تشویش ختم ہوئی خدا اسکا ساتھی اور دوست ہوگیا۔

دھناسریِ مہلا ੪॥
ہرِ پڑُ ہرِ لِکھُ ہرِ جپِ ہرِ گاءُ ہرِ بھئُجلُ پارِ اُتاریِ ॥
منِ بچنِ رِدےَ دھِیاءِ ہرِ ہوءِ سنّتُسٹُ اِۄبھنھُہرِنامُمُراریِ॥੧॥
منِ جپیِئےَ ہرِ جگدیِس ॥
مِلِ سنّگتِ سادھوُ میِت ॥
سدا اننّدُ ہوۄےَدِنُراتیِہرِکیِرتِکرِبنۄاریِ॥ رہاءُ ॥
ہرِ ہرِ کریِ د٘رِسٹِتببھئِئومنِاُدمُہرِہرِنامُجپِئوگتِبھئیِہماریِ॥
جن نانک کیِ پتِ راکھُ میرے سُیامیِ ہرِ آءِ پرِئو ہےَ سرنھِ تُماریِ ॥੨॥੩॥੯॥
لفظی معنی:
ہرِ پڑُ ۔ ملطب خدا کو سمجھ پہچان۔ ہرِ لِکھُ ۔ اسی کی پہچان تحریر کر۔ ہرِ جپِ ۔ الہٰیریاض کر۔ ہرِ گاءُ ۔ حمدوثناہ کر۔ بھؤجل۔ دنیاوی زندگی کا خوفناک سمندر۔ منِ بچنِ رِدےَ ۔ کلام۔ دلمیں بسائے ۔ سنّتُسٹُ۔ تسلی ۔ ِاۄ۔ اس طرح۔ بھن۔ کہہ۔ بول۔ ہر نام۔ الہٰی نام۔ سچ و حقیقت (1) جگدیِس ۔ دنیا کے مالک ۔ خدا۔ سنّگتِ سادھوُ میِت ۔ پاکدامن دوستوں اور ساتھیوں ۔ انند۔ پر سکون ۔ کیِرتِ۔ حمدوثناہ۔ بنۄاریِ ۔خدا۔ رہاؤ۔ د٘رِسٹِ۔نگاہ شفقت۔ ادم۔ کوشش۔ گت۔ بلند روحانی واخلاقی حالت۔ پت۔ عزت ۔ سوامی ۔ مالک ۔ آقا
ترجمہ معہ تشریح:
اے دل خدا کی ریاضت و عبادت کر پاکدامن دوستوں کی صحبت و قبت میں۔ خدا کی صفت صلاح کر تاہ روز و شب روحانی سکون حاصل ہو ۔ ہرآو۔ الہٰی نام سچ وحقیقت پڑھ سچ وحققتی لکھ خدا کو یاد کر اور اسکی حمدوثناہ کرتا کہ دنیاوی زندگی پر عبوعر حاصل ہو۔ دلمیں زبان سے الہٰی نا م سچ و حقیقت کی ریاض کر بلا تشکین با صبر وتحمل الہٰی نام بیان کیا کر۔ جب خدا نے نگاہ شفقت و عنایت کی تب دلمیں جوش پیدا ہو اس سے الہٰی نام سچ و حقیقت کی ریاض کی اور ہماری بلند روحانی واخلاقی حالت پیدا ہوئی ۔ اے میرے آقا خادم نانک کی عزت رکھ اے خدا تیرے زیر سایہ و پناہ آئیا ہوں۔

دھناسریِ مہلا ੪॥
چئُراسیِہ سِدھ بُدھ تیتیِس کوٹِ مُنِ جن سبھِ چاہہِ ہرِ جیِءُ تیرو ناءُ ॥
گُر پ٘رسادِکوۄِرلاپاۄےَجِنکءُلِلاٹِلِکھِیادھُرِبھاءُ॥੧॥
جپِ من رامےَ نامُ ہرِ جسُ اوُتم کام ॥
جو گاۄہِسُنھہِ تیرا جسُ سُیامیِ ہءُ تِن کےَ سد بلِہارےَ جاءُ ॥ رہاءُ ॥
سرنھاگتِ پ٘رتِپالکہرِسُیامیِجوتُمدیہُسوئیِہءُپاءُ॥
دیِن دئِیال ک٘رِپاکرِدیِجےَنانکہرِسِمرنھکاہےَچاءُ॥੨॥੪॥੧੦॥
لفظی معنی:
سدھ بدھ ۔ جنہوں نے روحانی صراط مسقیم پا لیا ہے ۔ ایسے عالم و عاقل ۔ کوٹ ۔ کردڑ۔ من جن۔ رشی۔ ولی اللہ ۔ چہاے ۔ چاہتے ہیں۔ ناوں۔ اسلیت ۔ سچ وحقیقت ۔ گرپرساد۔ رحمت مرشد سے ۔ للاٹ ۔ پیشانی پر تحریر ۔ دھر بھاؤ۔ الہٰی عدالت سے پریم پیار (1) جپ من رامے نام۔ اے دل الہٰی نام سچ وحقیقت کی ریاض کر۔ ہر جس۔ الہٰی صفت صلاح ۔ اُتم کام۔ بلند رتبہ کار۔ سدبلہانے ۔ ہمیشہ قربان۔ جوتم دیہو۔ جو آپ عنایت کرتے ہو۔ سوئی ۔ وہی ۔ ہؤ۔ پاو۔ وہی مجھے ملتا ہے ۔ دین دیال۔ غریب پرور۔ ہر سمرن ۔ الہٰی یاد ۔ چاؤ۔ خوشی۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے دل الہٰی حمدوثناہ کر یہی نیک کام ہے خدا کی صفت صلاح کرتا ہے اور سنتا ہے میں ان کے اوپر سو بار قربان ہوں۔ رہاؤ۔ اے خدا۔ وراسی خدا رسیدہ خدا یافتہ اور تیتیس کروڑ رشی فرشتے ، دیوتے اے خدا سارے تیرا نام سچ وحقیقت چاہتے ہیں مگر کسی کو ہی رحمت مرشد سے ملتا ہے ۔ جس کی پیشانی پر الہٰی عدالت و خدا کی طرف سے تحریر ہے الہٰی عشق الہٰی پریم پیار ۔ اے پناہ گیروں کی پرورش کرنے والے خدا جو تو عنایت کرتا ہے وہی لے سکتا ہوں۔ اے غریب پرور اپنی کرم وعنایت سے الہٰی نام سچ و حقیقت نانک کو عنایت کر نانک کو الہٰی یاد کرنے کی جوش و خوشی ہے ۔

دھناسریِ مہلا ੪॥
سیۄکسِکھپوُجنھسبھِآۄہِسبھِگاۄہِہرِہرِاوُتمبانیِ॥
گاۄِیاسُنھِیاتِنکاہرِتھاءِپاۄےَجِنستِگُرکیِآگِیاستِستِکرِمانیِ॥੧॥
بولہُ بھائیِ ہرِ کیِرتِ ہرِ بھۄجل تیِرتھِ ॥
ہرِ درِ تِن کیِ اوُتم بات ہےَ سنّتہُ ہرِ کتھا جِن جنہُ جانیِ ॥ رہاءُ ॥
آپے گُرُ چیلا ہےَ آپے آپے ہرِ پ٘ربھُچوجۄِڈانیِ॥
جن نانک آپِ مِلاۓسوئیِہرِمِلسیِاۄرسبھتِیاگِاوہاہرِبھانیِ ॥੨॥੫॥੧੧॥
لفظی معنی:
سیوک ۔ خدمتگار۔ سکھ ۔ مرید۔ پوجن۔ پرستش۔ گاویہہ۔حمدوثناہ ۔ صفت۔ صلاح۔ اُتم بانی۔ بلند رتبہ کلام ۔ تھائے ۔ ٹھیکانے ۔آگیا ۔ فرمان۔ حکم۔ ست ست۔ ٹحیک درست۔ مای تسلیم کی (1) ہر کیرت۔ الہٰی صفت صلاح۔ ہر بھوجل۔ الہٰی زندگی کی خوفناک سمندر۔ تیرتھ ۔ زیارت گاہ۔ ہر در۔ بارگاہ الہٰی۔ برکتھا۔ الہٰی علم ۔ جانی ۔ سمجھی ۔ رہاؤ۔ ہر پربھ جوج وڈائی ۔ حیران کرنے والا کرشمہ ۔ سوئی ۔ وہی اور سب تیاگ۔ سارا چھوڑ کر ۔ اوہا۔ وہی ۔ ہر بھانی ۔ خدا کو پسند ہے
ترجمہ معہ تشریح:
اے انسانوں الہٰی صفت صلاح کرو جو دنیاوی زندگی کے سمندر کو عبور کرنے کے لئے زیارت گاہ ہے کی زیر قیادت جس سے بارگاہ الہٰی میں عظمت وحشمت حاصل ہوتی ہے ۔ رہاؤ۔ خادمان خدا مرید سارے اس اعلے کلام الہٰی کی پرستش اور پریم کے لئے اور صفت صلاح کے لئے آتے ہیں مگر ان کا کلام سننا اور گانا قبول ہوتا ہے ۔ جنہوں نے سے مرشد (کی) کا فرمان وحکم کو صبح ہو بہو درست سمجھ کر اس پر عمل کیا (1) خدا خود ہی مرید ہے اور خود ہی مرشد خود ہی حیران کرنے والے کرشمے کرنے والا ہے ۔ اے خادم نانک۔ اسی کا ملاپ ہو سکتا ہے اور اسے ہی وصل نصیب ہوتا ہے ۔ جیسے خدا خودملاتا ہے ۔ جو سب کچھ چھوڑ کر اسی کو پیار کرتا ہے ۔

دھناسریِ مہلا ੪॥
اِچھا پوُرکُ سرب سُکھداتا ہرِ جا کےَ ۄسِہےَکامدھینا॥
سو ایَسا ہرِ دھِیائیِئےَ میرے جیِئڑے تا سرب سُکھ پاۄہِمیرےمنا॥੧॥
جپِ من ستِ نامُ سدا ستِ نامُ ॥
ہلتِ پلتِ مُکھ اوُجل ہوئیِ ہےَ نِت دھِیائیِئےَ ہرِ پُرکھُ نِرنّجنا ॥ رہاءُ ॥
جہ ہرِ سِمرنُ بھئِیا تہ اُپادھِ گتُ کیِنیِ ۄڈبھاگیِہرِجپنا॥
جن نانک کءُ گُرِ اِہ متِ دیِنیِ جپِ ہرِ بھۄجلُترنا॥੨॥੬॥੧੨॥
لفظی معنی:
اچھا پورک ۔ تمام خواہشات پوریاں کرنے والا۔ سرب۔ سکھداتا ۔ اور ہر قسم کے آرام و آسائش پہنچانے والا۔ کام دھنا۔ بہشت کی گائے ۔ جو تمام خواہشات اور مرادیں پوری کرتی ہے ۔ جیڑے ۔ اے دل (1) حلت پلت۔ اس عالم میں اور عاقبت میں۔ اجل۔ روشن۔ سرخرو۔ نت دھیایئے ۔ ہر روز توجہ دیں۔ جیٹھ کے دل ۔ (1) ست ۔ نام ۔ سچا الہٰی نام۔ سچ وحقیقت۔ نرنحبا ۔ بیداغ۔ رہاؤ۔ جیہہ۔جہاں۔ ہر سمرن ۔ الہٰی یاد۔ ۔ بھیا۔ ہوا۔ ہوتا ہے ۔ اپاد گت۔ جھگڑے و مصیبت کے بغیر حالت۔ جپ ہر بھو جل ترنا۔ الہٰی یاد و عشق سے اس دنیاوی زندگی کے خوفناک سمندر کو عبور کیا جاسکتا ہے ۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے دل صدیوی سچے الہٰی نام سچ وحقیقت کی یاو و ریاض کر ۔ تاکہ ہر دو عالموں میں سرخروئی روشن چہرہ ہو اور ہر روز اس بیداغ پاک خدا میں دھیان لگائیں۔ رہاؤ۔ اے میری جان جو خدا تمام خواہشات پوریاں کرنے والا ہے ہر قسم کے آرام و آسائش پہنچانے والا ہے ۔ جس کے دل میں خیالی گائے جو بہشت میں ہے جس کے اختیار میں جو تمام مرادیں پوری کرنے والی ہے ایسے باتوفیق خدا کی عبادت وریاضت کرنی چاہیے تب تجھے تمام آرام و آسائش حاصل ہونگی ۔ اے دل (1) جس کے دل میں الہٰی عشق و پریم پیار ہوتا ہے اسکے ہر قسم کے جھگڑے اور مصیبتیں ختم ہوجاتی ہے ۔ بلند قسمت سے ہی الہٰی یادوریاض ہو سکتی ہے ۔ خادم خدا نانک ۔کو یہ سمجھائیا ہے مرشد نے کہ الہٰی عشق و ریاض سے اس خوفناک زندگی کے سمندر کو عبور کیا جا سکتا ہے ۔

دھناسریِ مہلا ੪॥
میرے ساہا مےَ ہرِ درسن سُکھُ ہوءِ ॥
ہمریِ بیدنِ توُ جانتا ساہا اۄرُکِیاجانےَکوءِ॥ رہاءُ ॥
ساچا ساہِبُ سچُ توُ میرے ساہا تیرا کیِیا سچُ سبھُ ہوءِ ॥
جھوُٹھا کِس کءُ آکھیِئےَ ساہا دوُجا ناہیِ کوءِ ॥੧॥
سبھنا ۄِچِتوُۄرتداساہاسبھِتُجھہِ دھِیاۄہِدِنُراتِ॥
سبھِ تُجھ ہیِ تھاۄہُمنّگدےمیرےساہاتوُسبھناکرہِاِکداتِ॥੨॥
سبھُ کو تُجھ ہیِ ۄِچِہےَمیرےساہاتُجھتےباہرِکوئیِناہِ॥
سبھِ جیِء تیرے توُ سبھس دا میرے ساہا سبھِ تُجھ ہیِ ماہِ سماہِ ॥੩॥
سبھنا کیِ توُ آس ہےَ میرے پِیارے سبھِ تُجھہِ دھِیاۄہِمیرےساہ॥
جِءُ بھاۄےَتِءُرکھُتوُمیرےپِیارےسچُنانککےپاتِساہ॥੪॥੭॥੧੩॥
لفظی معنی:
ساہا۔ شاہ۔ مالک ۔ آقا۔ ہر درسن ۔ دیدار خدا۔ بیدن۔ مصیبت۔ اور۔ دوسرا۔ رہاؤ۔ ساچا صاحب۔ سچا مالک۔ سچ ۔ صدیوی ۔ سچ ۔ حقیقت (1) درتد۔ بستا ۔ تھادہو ۔ تیرے پاسوں۔ تجھ سے ۔ تو سبھنا کریہہ اک دات۔ تو ہی واحد میں جو سب کو نعمتیں بخشتا ہے ۔ سبھ کو تجھ ہی وچ ہے میرے ساہا۔ اے میرے آقا سارے تیرے زیر اختیارات اور تو ہی پیدا کرنے والا ہے ۔ تجھ ہی ماہے سماہے ۔ سارے تجھ میں مجذوب ہو جاتے ہیں (3) آس۔ اُمید۔ بھاوے ۔ چاہے ۔ رکھ ۔ حفاظت کر۔ سچ ۔ صدیوی خدا۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے میرے آقا تیرے دیدار سے مجھے آرام و آسائش محسوس ہوتا ہے اے خدا میرے عذاب و مصائ کو تو ہی سمجھتا ہے تیرے علاوہ اے خدا کوئی نہیں سمجھتا ۔ رہاؤ۔ اے سچے آقا تو صدیوی سچا مالک ہے ۔ اے خدا تیرا کیا ہوا سچا ار صدیوی ہے ۔ اےخدا جھوٹا کسے کہیں جبکہ تیرے عالوہ دوسر کوئی ہستی ہی نہیں (1) اے خدا تو سب میں بستا ہے سب میںتیرا نور ہے سارے روز و شب تجھ میں دھیان لگاتے ہیں اور تیرے فرمان و اختیار سے کوئی باہر نہیں۔ سارے جاندار تیرے ہیں اور تو سب کا ہے تیرے اختیار سے کوئی باہر نہیں اور تجھ میں مجذوب ہوتے ہیں۔سارے تجھ سے ہی مانکتے تو ہی سب کی اُمیدیں تجھ پر ہیں۔ اور سارے تجھے ہی یاد کرتے ہیں۔ اے نانک کے شہنشاہ ۔ جیسے تیری رضا ہے اسی حالت میں مجھے رکھ اے صدیوی سچ سچے خدا۔

دھناسریِ مہلا ੫ گھرُ ੧ چئُپدے
ੴ ستِگُر پ٘رسادِ॥
بھۄکھنّڈندُکھبھنّجنس٘ۄامیِبھگتِۄچھلنِرنّکارے॥
کوٹِ پرادھ مِٹے کھِن بھیِتِر جاں گُرمُکھِ نامُ سمارے ॥੧॥
میرا منُ لاگا ہےَ رام پِیارے ॥
دیِن دئِیالِ کریِ پ٘ربھِکِرپاۄسِکیِنےپنّچدوُتارے॥੧॥ رہاءُ ॥
تیرا تھانُ سُہاۄاروُپُسُہاۄاتیرےبھگتسوہہِدربارے॥
سرب جیِیا کے داتے سُیامیِ کرِ کِرپا لیہُ اُبارے ॥੨॥
تیرا ۄرنُنجاپےَروُپُنلکھیِئےَتیریِکُدرتِکئُنُبیِچارے॥
جلِ تھلِ مہیِئلِ رۄِیاس٘ربٹھائیِاگمروُپگِردھارے॥੩॥
کیِرتِ کرہِ سگل جن تیریِ توُ ابِناسیِ پُرکھُ مُرارے ॥
جِءُ بھاۄےَتِءُراکھہُسُیامیِجننانکسرنِدُیارے॥੪॥੧॥
لفظی معنی:
بھوگھنڈن۔ تناسخ مٹانے والا۔ دکھ بھنجن۔ دکھ مٹانے والا۔ بھگت وچھل۔ الہٰی پریمی سے پیار کرنے والا۔ نرنکارے ۔ پاک بیداگ۔ کوٹ۔ کروڑوں۔ پرادھ۔ پاپ۔ گناہ۔ کھن بھیتتر۔ معمولی سے وقفے میں۔ جاں۔ اگر۔ گورمکھ ۔ مرشد کے وسیلے سے ۔ نام سمارے ۔ الہٰی نام سچ وحقیقت سمارے سمرے ۔ یاد کرے (1) دین دیال۔ غربت پرور۔ رحمان الرحیم۔ پنچ دوتارے ۔ پانچ روحانی یااخلاقی دشمن (1) رہاؤ۔ تھان ۔ ٹھکانہ ۔ سہاروا۔ سندر۔ خوبصورت ۔ روپ ۔ شکل۔ بھگت ۔ پریمی پیارے ۔ سرب جیا کے دانے ۔ سب کو دینے والے ۔ ابارے ۔بچاؤ (2) ورن۔ رنگ ۔ جاپے ۔ پتہ نہیں لگتا۔ سمجھ ہیں آتی ۔ لکھیئے ۔ اندازہ۔ قدرت ۔ قوت ۔ طاقت ۔ وچارے ۔ سمجھے ۔ خیال کرے ۔ سرب ٹھائی۔ ہرجگہ ۔ اگم ۔ جس تک رسائی حاصل نہیں ہوسکتی ۔ گروھارے ۔ پہاڑوں کے مالک ۔ خدا (3) کیرت۔ صفت صلاح۔ حمدوثناہ۔ سگل جن۔ ساری خلقت ۔ ابناسی۔ لافناہ۔ جیؤ بھاوے ۔ جیسے تیری رضا۔ جس طرح چاہتا ہے ۔ سرن دوآرے ۔ تیرے در پر تیری پناہ میں ہے ۔
ترجمہ معہ تشریح:
میرے دل میں خدا سے رغبت اور لگن ہوگئی ہے ۔ رحما ن الرحیم غریب پرور خدا نے کرم وعنایت فرمائی پانچوں روحانی واخلاقی دشمن میرے زیر کر دیئے (1) رہاؤ۔ تناسخ متانے والے مصیبتیں ختم کرنے والے آقا اپنے پریمی پیاروں سے پیار کنے والے پاک بیداغ خدا جو مرید مرشد ہوکر الہٰی نام سچ وحقیقت دل میں بساتا ہے ۔ اسکے کروڑوں گناہ معمو لی وقفے کے اندر مٹ جاتے ہیں (1) اے خدا تیرا ٹھکانہ اچھا ہے تیری شکل وصورت اچھی ہے ۔ تیرے پریمیتیرے دربار سوہنے لگتے ہیں۔ اے سارے جانداروں کے سخی دانے مالک اپنی کرم وعنایت سے بد احساسات دشمنوں سے روحانی اخلاقی انسانیت دشمن ہیں بچاییئے (2) اے خدا تیری شکل و صورت نہ کوئی رنگ دکھائی دیتا ہے نہ تیری طاقت کا اندازہ ہو سکتا ہے ۔ تو انسانی سوچ سمجھ اور رسائی سے باہر ہے ۔ اے خدا تو زمین ۔ سمندر آسمان غرض یہ کہ ہر جگہ موجود ہے اور تیرے اندر بے پناہ قوت موجود ہے (3) اے خدا تو لافناہ ہے سارا علام تیری حمدوثناہ کرتا ہے۔ اے خدا جیسے تیری رضا و رغبت ہے جیسے تو اہتا ہے اسی اپنے خدمتگار نانککی حفاظت کر تیرے سرن آئیا ہے ۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
بِنُ جل پ٘رانتجےہےَمیِناجِنِجلسِءُہیتُبڈھائِئو॥
کمل ہیتِ بِنسِئو ہےَ بھۄرااُنِمارگُنِکسِ ن پائِئو ॥੧॥
اب من ایکس سِءُ موہُ کیِنا ॥
مرےَ ن جاۄےَسدہیِسنّگےستِگُرسبدیِچیِنا॥੧॥ رہاءُ ॥
کام ہیتِ کُنّچرُ لےَ پھاںکِئو اوہُ پر ۄسِبھئِئوبِچارا॥
ناد ہیتِ سِرُ ڈارِئو کُرنّکا اُس ہیِ ہیت بِدارا ॥੨॥
دیکھِ کُٹنّبُ لوبھِ موہِئو پ٘رانیِمائِیاکءُلپٹانا॥
اتِ رچِئو کرِ لیِنو اپُنا اُنِ چھوڈِ سراپر جانا ॥੩॥
بِنُ گوبِنّد اۄرسنّگِنیہااوہُجانھہُسدادُہیلا॥
کہُ نانک گُر اِہےَ بُجھائِئو پ٘ریِتِپ٘ربھوُسدکیلا॥੪॥੨॥
لفظی معنی:
جل۔ پانی ۔ پران۔ زندگی۔ تجے ۔ چھوڑ دینا۔ مینا ۔ مچھلی ۔ ہیت۔ پیار۔ کمل۔ کنول کا پھول۔ ونسیؤ۔ ختم ہوا۔ بھور ۔ ان ۔ اسنے ۔ مارگ۔ راستہ۔ نکس نہ پائیو۔ نکلنے کا نہ ملا (1) ایکس سیؤ موہ کیتا۔ واحد سے محبت کرتاہوں۔ سدہی سنگے ۔ صدیوی ساتھی ۔ ستگر سبدی چینا۔ کلام مرشد سے سمجھ آئی ہے (1) رہاؤ۔ کام ہیت ۔ شہوت سے محبت۔ کیچر ۔ ہاتھی ۔ پھانکیؤ۔ پھنس گیا۔ پروس۔ دوسروں کے اختیار مین۔ بھیؤ ۔ ہوا۔ ناد۔ گھنڈا ہیڑا۔ گھڑیال۔ گھنٹا ۔ آواز۔ کرنکا۔ ہرن ۔ دیدار۔ مارا گیا (2) کٹب ۔ قبیلہ ۔ لوبھ ۔ لالچ۔ پٹانا۔ ملوث ۔ ملحوظ حاطر۔ لاگت لپٹ۔ ات رچیؤ۔ نہایت مجذوب۔ ان۔ اس نے ۔ سراپر ۔ ضرور (3) بن گوبند۔ خدا کے عالوہ ۔ اور سنگ نیہا۔ دوسروں سے محبت۔ دہیلا۔ مصیبت زدہ ۔ بجھایؤ۔ سمجھائیا۔ پریت پر بھ سد کیلا۔ الہٰی محبت ۔ صدیوی سکون خوشیاں۔
ترجمہ معہ تشریح:
اب مجھے واحد خدا سے محبت ہو گئی ہے جو لافناہ ہے صدیوی ساتھی ہے کلام مرشد سے اسکی سمجھ آئی ہے ۔ رہاؤ۔ مچھلی پانی کے بغیر جان گنوا دیتی ہے کیونکہ اس نے پانی سے زیادہ واسطہ اور محبت بنا رکھی ہے ۔ کنول کے پھول کی محبت میں بھنور مرتا ہے کیونکہ وہ نوکل کے پھول سے باہر نکلنے کا راستہ کا پتہ نہں (1) شہوت کی محبت میں ہاتھی پھنس جاتا ہے اور غیرون ک زیر اختیار ہو جاتا ہے ۔ گھنڈ ہیڑا یا گھڑیال کی آواز کی محبت میں اپنی جان گنوا لیتا ہے (2) انسان اپنے پریوار قبیلہ کو دیکھ کر اسکے لالچ اور محبت میں گرفتار یوجاتا ہے اور اس دنیاوی دولت میں محو و مجذوب ہوجاتا ہے اور اسے اپنا سمجھنے لگتا ہے ۔ جبکہ لازماً اس نے چھوڑ کر چلے جانا ہے (3)
جو انسان خدا کو چھوڑ کر غیروں سے محبت کرتا ہے سمجھ لو وہ ہمیشہ یقیناً عذاب پاتا ہے ۔ اے نانک ۔ بتادے کہ مرشد بنائیا اور سمجھائیا ہے الہٰی محبت سے صدیوی روحانی واخلاقی و ذہنی سکون حاصل ہوتا ہے ۔

دھناسریِ مਃ੫॥
کرِ کِرپا دیِئو موہِ ناما بنّدھن تے چھُٹکاۓ॥
من تے بِسرِئو سگلو دھنّدھا گُر کیِ چرنھیِ لاۓ॥੧॥
سادھسنّگِ چِنّت بِرانیِ چھاڈیِ ॥
اہنّبُدھِ موہ من باسن دے کرِ گڈہا گاڈیِ ॥੧॥ رہاءُ ॥
نا کو میرا دُسمنُ رہِیا ن ہم کِس کے بیَرائیِ ॥
ب٘رہمُپسارُپسارِئوبھیِترِستِگُرتےسوجھیِپائیِ॥੨॥
سبھُ کو میِتُ ہم آپن کیِنا ہم سبھنا کے ساجن ॥
دوُرِ پرائِئو من کا بِرہا تا میلُ کیِئو میرےَ راجن ॥੩॥
بِنسِئو ڈھیِٹھا انّم٘رِتُۄوُٹھاسبدُلگوگُرمیِٹھا॥
جلِ تھلِ مہیِئلِ سرب نِۄاسیِنانکرمئیِیاڈیِٹھا॥੪॥੩॥
لفظی معنی:
ناما۔ الہٰی نام۔ سچ و حقیقت جو صدیوی ہے ۔ بندھن۔ ذہنی غلامی ۔ چھٹکائے ۔ نجات دلائی۔ وسریؤ۔ بھولے سگلو وھند۔ سارے دنیاوی جھگڑے دوڑ دہوپ۔ گرکی چرنی لاتے ۔ مرید مرشد ہوئے (1) چنت۔ فکر تشویش۔ ہرانی ۔ بیگانی ۔ اینبدھ۔ مغروری ۔ موہ من باسن ۔ دیگر گڈیا گاڈی ۔ دلی خواہشا کی محبت گڑھا کھود کر دیا دیا ۔ رہاؤ۔ بیرائی ۔ دہری ۔ دشمن۔ برہم۔ خدا۔ پسارا۔ پھیلاؤ۔ سوجہی ۔ علم ۔ سمجھ (2) میت۔ دوست۔ ساجن۔ دوست۔ من کا برہا۔ دلی جدائی۔ میرے راجن۔ میرے شہنشاہ (3) ونسیؤ ۔مٹا ۔ ختم ہوا۔ ڈھیٹھا۔ برائی ۔ انمرت دوٹھا۔ نیکی ۔ روحانی اخلاقی زندگی کا آب حیات بسا۔ سبد۔ کلام۔ جل تھل مہئل ۔ زمین آسمان سمندر۔ سرب نواسی۔ سب میں بسنے والا ۔ رمئیا ڈیٹھا۔ دیدار خدا پائیا۔
ترجمہ معہ تشریح:
صحبت و قربت پاکدامناں اپنا کر دوسروں کی فکر و تشیو چھوڑ دی ۔ تکبر والی سمجھ مراد مغروری دنیاوی محبت اور دلی خواہشات گہر گڑھا کھود کردفنا دیں (1) رہاو۔ اے اپنی کرم و عنیات یا مہربانی سے مجھے نام یعنی سچ وحقیقت دیجیئے تاکہ ذہنی غلامی سے نجات حاصل ہو جائے ۔ دل و دماغ سے تمام دنیاوی کاروبار بھلائے سایہ مرشد حاصل ہوا (1) اب کوئی میرا دشمن نہیں سچے مرشد نے یہ سمجھائیا ہے کہ یہ سارا عالم الہٰی پھیلاؤ ہے اور سب میں وہی بستاہے اب میں کسی کا دشمن نہیں ہوں (2) اب میں سب کو دوست بنا لیا اور میں سب کا دوست بن گیا ۔ اب خدا سے میری دوری جدائی ختم ہوگئی اور میرے شہنشاہ نے اپنا وصل و ملاپ عنایت کر دیا (3) میری برائیاں ختم ہوئیں او رنیکیاں جو زندگیں کے لئے آبحیات کا درجہ رکھتی ہیں بس کہیں کلام مرشد یا سبق مرشد سے انس پیدا ہوگئی۔ اے نانک۔ اس خدا کا دیدار حاصل ہوا جو زمین و آسمان اور سمندر غرض یہ کہ ہرجگہ بستا ہے ۔

دھناسریِ مਃ੫॥
جب تے درسن بھیٹے سادھوُ بھلے دِنس اوءِ آۓ॥
مہا اننّدُ سدا کرِ کیِرتنُ پُرکھ بِدھاتا پاۓ॥੧॥
اب موہِ رام جسو منِ گائِئو ॥
بھئِئو پ٘رگاسُسداسُکھُمنمہِستِگُرُپوُراپائِئو॥੧॥ رہاءُ ॥
گُنھ نِدھانُ رِد بھیِترِ ۄسِیاتادوُکھُبھرمبھءُبھاگا॥
بھئیِ پراپتِ ۄستُاگوچررامنامِرنّگُلاگا॥੨॥
چِنّت اچِنّتا سوچ اسوچا سوگُ لوبھُ موہُ تھاکا ॥
ہئُمےَ روگ مِٹے کِرپا تے جم تے بھۓبِباکا॥੩॥
گُر کیِ ٹہل گُروُ کیِ سیۄاگُرکیِآگِیابھانھیِ॥
کہُ نانک جِنِ جم تے کاڈھے تِسُ گُر کےَ کُربانھیِ ॥੪॥੪॥
لفظی معنی:
درسن بھیٹے ۔ دیدار کیا۔ سادہو۔پاکدامن ۔ جس نے زندگی کی رہایں درست کرلیں۔ اوئے ۔ وہ ۔ بدھاتا۔ منصوبہ ساز ۔ جس نے علامکی پالننگ تیار کی ہے (1) رام جسومن گاہو۔ اب میں دل سے الہٰی حمدوثناہ کرتا ہو۔ پرگاس۔ علم کی روشنی ۔ رہاؤ۔ گن ندھان ردبھیتر۔ اوصاف کا خزانہ دلمیں۔ دکھ بھرم بھؤ۔ وہم وگمان و خوف کا عذاب ۔پراپت۔ حاصل ۔ اگم اگوچر۔ انسانی عقل و ہوش سے بعید اور ناقابل بیان ۔ رام نام رنگ لاگا۔ الہٰی نام سچ وحقیقت سے پریم پیار بنا (2) چنت اچنتا۔ فکر سے بیفکری ۔ سوچ اسوچا۔ ذہنی کوفت سے مبرا۔ جسم تے بھیئے سباکا۔گناہوں اور گناہگاریوں کا حساب ۔جس کی بابتکتوال خدا طب کرتا ہے طلبی ختم ہوئی (3) گر کی ٹہل۔ گرور کی سیوا۔ خدمت مرشد۔ گر کی آگیا۔فرمان مرشد۔ بھانی ۔ پیاری لگنے لگی۔
ترجمہ معہ تشریح:
صحبت و قربت پاکدامن کی برکت و عنایت س دوسروں کی تشویش ختم کی ۔خودی ۔خود پسندی ۔ دنیاوی محبت اور دلی خواہشات گڑھا کھود کر دبادیں ۔ر ہاؤ۔ جب سے دیدار خدا رسیدہ پاکدامن کا دیدار و وصل حاصل ہوا ہے میرے لئے اچھے دن آئے بھاری روحانی وذہنی سکون ملا الہٰی صفت صلاح کرنے سے میراے دل کو سکنو میسر ہوا۔ اور منصوبہ ساز خڈا کا وصل حاصل ہوا (1) اوصاف کا خزانہ خدا دلمیں بسایا ۔ عذآب اور گمراہی ختم ہوئی ۔ ایسی نرالی اشیا حاصل ہوئی جو انسانی ذہن دل ودماغ سے بعید سوچ اور رسائی سے باہر اور نقابل بیان ، حاصل ہوئی اور الہٰی نام سچ و حقیقت سے پریم پیار اور دلچسپی پپیدا ہوگئی (2) فکر سے بیفکری ہوئی اور سچ و تشویش ختم ہوئی خودی اور خود پسندی کی بیماری الہٰی کرم وعنایت سے ختم ہوئی ۔ اور کوتوالی الہٰی حسابات اعمال کا حساب بیباق ہوا۔ افسوس۔ لالچ اور دنیاوی محبت ختم ہوئی (3) خدمت مرشد و فرمان مرشد اچھی لگی ۔ اے نانک۔جس مرشد نے فرشتہموت سے بچائیا قربان ہوں اس مرشد پر۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
جِس کا تنُ منُ دھنُ سبھُ تِس کا سوئیِ سُگھڑُ سُجانیِ ॥
تِن ہیِ سُنھِیا دُکھُ سُکھُ میرا تءُ بِدھِ نیِکیِ کھٹانیِ ॥੧॥
جیِء کیِ ایکےَ ہیِ پہِ مانیِ ॥
اۄرِجتنکرِرہےبہُتیرے تِن تِلُ نہیِ کیِمتِ جانیِ ॥ رہاءُ ॥
انّم٘رِتنامُنِرمولکُہیِراگُرِدیِنومنّتانیِ॥
ڈِگےَ ن ڈولےَ د٘رِڑُکرِرہِئوپوُرنہوءِت٘رِپتانیِ॥੨॥
اوءِ جُ بیِچ ہم تُم کچھُ ہوتے تِن کیِ بات بِلانیِ ॥
النّکار مِلِ تھیَلیِ ہوئیِ ہےَ تا تے کنِک ۄکھانیِ॥੩॥
پ٘رگٹِئوجوتِسہجسُکھسوبھاباجےانہتبانیِ॥
کہُ نانک نِہچل گھرُ بادھِئو گُرِ کیِئو بنّدھانیِ ॥੪॥੫॥
لفظی معنی:
سگھڑ ۔ دانشمند ۔ عاقل۔ سجان ۔ سجانی ۔ ہوشمند۔ باہوش ۔ توبدھ۔ اس طرح سے ۔ نیکی کھٹانی ۔ اچھی حالت ہوئی (1) جیئہ ۔ دل ۔ من ۔ ماتی ۔ تسلی ۔ اور جتن ۔ دوسری کوشش۔ بہترے ۔ بہت سے ۔ تل ۔ تھوڑا۔ قیمت ۔ ندر۔ جانی ۔ سمجھی ۔ رہاؤ۔ نرمولک۔ جس کی یقمت تعین نہ کی جا سکے ۔ اندازہ نہ ہو سکے ۔ منتانی ۔ منتر۔ عقل۔ ڈگے نہ ڈوجے ۔ ڈگمگائے ۔ درڑ ۔ مستقل مزاج۔ ترپتانی۔ تسلی (2) روئے جو بیچ۔ وہ جو درماین ۔ بات بلاتی ۔ وہ بات ختم ہوئی ۔ النکار۔ دیور۔ تھیلی ۔ ڈلی ۔ کنک۔ سونا۔ (3) پرگٹیو ۔ ظاہر۔ جوت۔ نور۔ سہج سکھ ۔ روحانی واخلاقی سکون کا آرام و آسائش۔ سوبھا۔نیک شہرت۔ باجے انھت بانی۔لگاتار ۔ سبد ہو رہا ہے ۔ نہچل۔ مستقل ۔ بندھانی ۔ پابندی۔
ترجمہ معہ تشریح:
زندگی کے لئے عرض و گذارش سننے والا وحد ہستی و توفیق رکھنے والی ہتی واحد خدا ہے اور یہی ایک اکائی ہے ۔ اسکے علاوہ بہت سی دوسری کوشش کرتے کرتے ماند پ ڑگئے ان کی قیمت تل کے برابر نہیں ہوئی نہ سمجھی گئی ۔ رہاؤ۔ جس خدا نے یہ من جسم بخشا ہے یہ تمام دولت اور نعمتیں اسی کی عنایت کردہ ہیں وہی نیک و دانشمند ہے اسی نے ہی میرای حالت زندگی سنے تب ہی حالات بہتر ہوئے ۔ (1) آب حیات الہٰی نام سچ وحقیقت عنایت کیا جس سے انسان برائیاں اختیار نہیں کرتا حقیقت کو سمجھتا ہے یہ ایک بیش قیمت ہیرا ہے جس کی قیمت اندازے سے باہر ہے مقرر نہیں کی جا سکتی ۔ مرشد اسکا منتر و اعظ و پند کی ہے ۔ ایسا انسان ڈگمگاتا نہیں مستقل مزاج ہو جاتا ہے اور مکمل طور پر صابر ہوجاتا ہے (2) انکے دل سے تمام تفکرات مٹ جاتے ہیں جیسے بیشمار زیور ملکر سونے کی شکل اختیار کر لیتے ہیں تو زیروروں کی بجائے سونا دکھائی دینے لگاتا ہے یعنی زیور پگھلا کر سونے سے بنے ہوئے پھر سونا ہو جاتے ہیں مراد حقیقت ساہمنے آجاتی ہے (3) انکے دل میں الہٰی نور ظہور پذیر وہ اتا ہے اچھی نیک شہرت ملتی ہے لوگ ستائش کر تے ہیں دلمیں الہام پیدا ہوتا ہے ۔ اے نانک۔ مرشد انکے لئے ایسا انتظام کرتا ہے کہ وہ مستقل طور پر خدا پرست ہو جائے ہیں۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
ۄڈےۄڈےراجنارُبھوُمن تا کیِ ت٘رِسننبوُجھیِ॥
لپٹِ رہے مائِیا رنّگ ماتے لوچن کچھوُ ن سوُجھیِ ॥੧॥
بِکھِیا مہِ کِن ہیِ ت٘رِپتِنپائیِ॥
جِءُ پاۄکُایِدھنِنہیِدھ٘راپےَبِنُہرِکہااگھائیِ॥ رہاءُ ॥
دِنُ دِنُ کرت بھوجن بہُ بِنّجن تا کیِ مِٹےَ ن بھوُکھا ॥
اُدمُ کرےَ سُیان کیِ نِیائیِ چارے کُنّٹا گھوکھا ॥੨॥
کامۄنّتکامیِبہُناریِپر گ٘رِہجوہنچوُکےَ॥
دِن پ٘رتِکرےَکرےَپچھُتاپےَسوگلوبھمہِسوُکےَ॥੩॥
ہرِ ہرِ نامُ اپار امولا انّم٘رِتُایکُنِدھانا॥
سوُکھُ سہجُ آننّدُ سنّتن کےَ نانک گُر تے جانا ॥੪॥੬॥
لفظی معنی:
راجن۔ راجے ۔ بھومن۔ زمیندار۔ برسنا۔ نرسن۔ خواہش ۔ چاہ۔ نہ بجھی ۔ پوری نہیں ہوئی۔ لپٹ ۔ ملوچ ۔ چمڑے ۔ مائیا رنگ راتے ۔ دولت کی محبت پریم پیار میں محبوس ۔ لوچن کچھو نہ ۔ سوجہی ۔ آنکھوں سے کچھ دکھائی نہیں دیتا (1) وکھیا۔ برائیون ۔ بدکاریوں۔ ترپت۔ تسلی ۔ صبر۔ پاوک ۔ آگ۔ ایندھن ۔ لکڑیوں ۔ آگ ۔ جلانے کے سامان۔ دھرابے ۔ تسلی نہیں ہوتی ۔ صبر نہیں ہوتا اگھائی ۔ تسلی ۔ سیر۔ رہاؤ۔ پنجن۔ لذیر پر لطف ۔ ادم ۔ کشش۔ سوآن ۔ کنے ۔ چارے کنٹا۔ چارون طرف۔ گھوکھا۔ پتال۔ کھوج (2) کامونت ۔ شہوت پرست۔ کامی ۔ شہوتی ۔ ہر گریہہ۔ بیگانہ ۔ گھر ۔ جوہے ۔ چوکتا نہیں۔ نگاہ کرتی ۔ چوکے ۔ اکتائی نہیں کرتا۔ سوگ۔ لوبھ مہیہہ سوکے ۔ افسوس۔لالچ میں غمگین رہتا ہے ۔ (3) اپار امولا۔ بے انداز بیش قیمت ۔ انمرت۔ ایک ندھانا۔ ابحیات کا ایک خزانہ ۔ سوکھ سہج ۔ روحانی سکون کا آرام گرتے جانتا ۔ مرشد سے سمجھ آئی ۔
ترجمہ معہ تشریح:
برائیوں بداعمالوں اور دنیاوی دولت کی محبت سے کسی کی تسلی نہیں ہوئی ۔ جس طرح سے آگ کی ایندھن سے خواہ ڈھیرون کو تھوڑے سے عرصے میں جلا ڈالتی ہے جیسے شیخ سعدی نے ایک حکایت میں فرمائیزرہ آتش چوں شدافروشتہ دم عالم راسوختہ۔ تو خدا کے بغیر کیسے تسلی حاصل ہوگی ۔ رہاو۔ ہر روز لذیز کھانے کھانے والا کی بھوک ختم نہیں ہوتی وہ کتے کی طرح چاروں طرف گھومتا اور کھوج اور تلاش کرتا ہے (2) جیسے شہوت پرست شہوت کا دلدادہ خواہ کتنی ہی عورتیں کیوں نہ ہوں اسکی نگاہ بد نہیں کرتی ۔ ہر روز کرتا ہے پچھتاتا ہے افسوس و لالچ میں روحانی واخلاقی طور پر غمگین رہتا ہے (3) الہٰی نام ایک بیش قیمت خزانہ ہے جو روحانی وخلاقی حقیقت پسند نہ نزدیگ عنایت کرتا ہے ۔ آرام روحانی وزہنی سکون خدا رسیدہ روحانی رہنماوں (سنتوں ) کے دل میں بستاہے ۔ جس کی سمجھ مرشد سے ملتی ہے اے نانک۔

دھناسریِ مਃ੫॥
لۄےَنلاگنکءُہےَکچھوُئےَجاکءُپھِرِاِہُدھاۄےَ॥
جا کءُ گُرِ دیِنو اِہُ انّم٘رِتُتِسہیِکءُ بنِ آۄےَ॥੧॥
جا کءُ آئِئو ایکُ رسا ॥
کھان پان آن نہیِ کھُدھِیا تا کےَ چِتِ ن بسا ॥ رہاءُ ॥
مئُلِئو منُ تنُ ہوئِئو ہرِیا ایک بوُنّد جِنِ پائیِ ॥
برنِ ن ساکءُ اُستتِ تا کیِ کیِمتِ کہنھُ ن جائیِ ॥੨॥
گھال ن مِلِئو سیۄنمِلِئومِلِئوآءِاچِنّتا॥
جا کءُ دئِیا کریِ میرےَ ٹھاکُرِ تِنِ گُرہِ کمانو منّتا ॥੩॥
دیِن دیَیال سدا کِرپالا سرب جیِیا پ٘رتِپالا॥
اوتِ پوتِ نانک سنّگِ رۄِیاجِءُماتابال گد਼پالا ॥੪॥੭॥
لفظی معنی:
کوکے ۔ برابر۔ دھاوے ۔ دوڑتا ہے ۔ تس ہی ۔ اسے ہی ۔ بن آوے ۔ اچھا لگتا ہے (1) ایک رسا ایک لطف ۔ مزہ ۔ کھدیا۔ بھوک۔ چت۔ دلمیں۔ رہاو۔ مولیؤ ۔ خوشی ۔ من تن۔ دل و جان ۔ بوند۔ قطرہ۔ چرن ۔ بیان۔ آن۔ اور ۔ دوسری ۔ استت۔۔صفت ۔ تعریف (2) گھال ۔ محنت ۔ مشقت۔ اچنتا۔ اچانک ۔ قدرتی طور پر ۔ ٹھاکر۔ آقا۔ مالک۔ تن۔ اس نے ۔ گریہہ کمانومنتا۔ واعظ۔ نصٰحت۔ سبق پر عمل (3) دین دیال۔ رحمان الرحیم ۔ غریب پرور۔ کرپا لا۔ مرہبان۔ سرب۔ جیہہ پرتپال۔ سب جانداروں کی پرورش کرنے والا۔ اوت پوت۔ تانے پیٹے کی مانند۔ماتا بال۔ جیے ماں بچے سے ۔
ترجمہ معہ تشریح:
جس نے الہٰی عشق و محبت پیارکا لطف آنے لگا ہے ۔ اسے کھانے پینے کی بھوک اسکے دلمیں نہیں بستی ۔ رہاؤ۔ جس کے لئے انسان دوڑ دہوپ کوئی بھی چیز اسکے برابر بالمقابل نہیں ہے جسے مرشد نے یہ آبحیات عنایت کرتا ہے ۔ اس کی قدرو قیمت بھی وہی سمجھتا ہے (1) جس نے الہٰی نام کی آبحیات کا ایک قطرہ حاصل کر لیا اسکے دل وجان تروتازہ ہو جاتے ہیں۔ اسکے تعریف بیان سے باہر ہے اور قدرقیمت بتائی نہیں جا سکتی (2) الہٰی نام سچ وحقیقت کا لطف نہ محنت و مشقت سے حاصل ہو سکتا ہے نہ خدمت کی برکت سے حاصل ہو سکتا ہے جس پر خڈا کی رحمت و عنیات ہوتی ہے وہ مرشد کے سبق واعظ پر عمل جس نے کیا اسے قدرتی طور پر حاسل ہوگیا (3) اے نانک۔ خدا غریب پرور رحمان الرحیم سب جانداروں کی پرروش کرتا ہے ۔ جیسے ماں اپنے بچے کو اپنے دلمیں بساتی ہے ۔ اس طرح خڈاوند کریم اپنی خلقت و مخلوقات میں تانے پیٹے کی مانند بستا رہتا ہے ۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
بارِ جاءُ گُر اپُنے اوُپرِ جِنِ ہرِ ہرِ نامُ د٘رِڑ٘ہ٘ہازا॥
مہا اُدِیان انّدھکار مہِ جِنِ سیِدھا مارگُ دِکھازا ॥੧॥
ہمرے پ٘ران گُپال گوبِنّد ॥
ایِہا اوُہا سرب تھوک کیِ جِسہِ ہماریِ چِنّد ॥੧॥ رہاءُ ॥
جا کےَ سِمرنِ سرب نِدھانا مانُ مہتُ پتِ پوُریِ ॥
نامُ لیَت کوٹِ اگھ ناسے بھگت باچھہِ سبھِ دھوُریِ ॥੨॥
سرب منورتھ جے کو چاہےَ سیۄےَایکُ نِدھانا ॥
پارب٘رہماپرنّپرسُیامیِسِمرتپارِپرانا॥੩॥
سیِتل ساںتِ مہا سُکھُ پائِیا سنّتسنّگِ رہِئو اول٘ہ٘ہا॥
ہرِ دھنُ سنّچنُ ہرِ نامُ بھوجنُ اِہُ نانک کیِنو چول٘ہ٘ہا॥੪॥੮॥
لفظی معنی:
بار جاؤ۔ قربان ہو۔ صدقے جاؤ۔ ہر نام درڑائیا ۔ الہٰی نام ۔ سچ وحقیقت دلمیں پختہ بنا دیا۔ پختہ طور پر بسادیا۔ بھٹادیا۔ مہااویان۔ بھاری سنسان جنگل میں۔ گھنے جنگل میں۔ سیدھا مارگ ۔ صراط مسقتیم (1) پران۔ زندگی۔ جان۔ گوپال۔ مالک ۔ عالم ۔ ایہا اوہا۔ یہاں ۔ وہاں۔ سرب تھوک۔ سب جگہ۔ پتہ ۔ فکر ۔ تشویش ۔ رہاؤ۔ سمرن۔ یاد وریاض ۔ سرب ندھانا۔ سارے خزانے ۔ مان۔ وقار۔ مہت۔ عظمت۔ پت۔ پوری ۔ کامل عزت۔ اگھ ۔ گناہ ۔ ناسے ۔ مٹے ۔ باچھیہہ۔ چاہتے ہیں۔ دہوری ۔ دہول (2) سرب منورتھ ۔ سارے مقصد ۔ پاربرہم۔ پار لگانے والا۔ کامیابی عنایت کرنے والا ۔ اپرنپر۔ لا محدود۔ پارپرانا۔ کامیاب (3) سیتل ۔ ٹحنڈک۔ سنت سنگ۔ صحبت خدارسیدہ روحانی رہنما۔ اولا ۔ آسرا۔ سنچن۔ اکھٹا کرنا۔ چوہلا۔ پر لطف مزیردار کھانا۔
ترجمہ معہ تشریح:
جسے یہاں اور وہاں ہر دو عالموں میں ہر قسم کی ضرورتوں کی فکر ہے ۔ وہی ہماری زندگی کا آسرا ہے ۔ رہاؤ۔ قربان ہوں اپنے مرشد پر جس نے الہٰی نام میرے دل پر مکمل طور پر مسلط کرادیا ۔ جس نے اس دنیاوی گھنے جنگل میں مجھے صراط مستقیم (سے) دکھادیا۔ (1) جس کی یاد کی توفیق سے دنیا کے تمام خزانے حاصل ہوجاتے ہیں ۔ جس کی یاد کی توفیق سے عظمت و حشمت حاصل ہوتی ہے ۔ جس کی یاد کی برکات سے کروڑوں گناہ عافو ہو جاتے ہیں سارے عاشقان الہٰی اسکے پاؤں کی خاک مانگتے ہیں (2) اگر کوئی اپنی تمام مرادیں حاصل کرنا چاہتا ہے اسے خدمت خدا کرنی چاہیے جو تمام نعتموں کا خزانہ ہے ۔ کامیابایں عنایت کرنے والا لا محڈود طاقتوں کے مالک کی یادوریاض سے زندگی کا سفر کامیاب ہو جاتا ہے (3) اے نانک۔ جسنے الہٰی نام کی دولت اکھٹی کی سچ و حقیقت اپنائیا اور اسے اپنی خوراک یا روزمرہ کا طریقہ کار بنائیا وہ سکون پاتا ہے راحت ملتی ہے مریدان مرشد کی صحبت و قربت میں سکون و راحت پاتا ہے ۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
جِہ کرنھیِ ہوۄہِسرمِنّدااِہاکمانیِریِتِ॥
سنّت کیِ نِنّدا ساکت کیِ پوُجا ایَسیِ د٘رِڑ٘ہ٘ہیِبِپریِتِ॥੧॥
مائِیا موہ بھوُلو اۄرےَہیِت॥
ہرِچنّدئُریِ بن ہر پات رے اِہےَ تُہارو بیِت ॥੧॥ رہاءُ ॥
چنّدن لیپ ہوت دیہ کءُ سُکھُ گردھبھ بھسم سنّگیِتِ ॥
انّم٘رِتسنّگِناہِرُچآۄتبِکھےَٹھگئُریِپ٘ریِتِ॥੨॥
اُتم سنّت بھلے سنّجوگیِ اِسُ جُگ مہِ پۄِتپُنیِت॥
جات اکارتھ جنمُ پدارتھ کاچ بادرےَ جیِت ॥੩॥
جنم جنم کے کِلۄِکھدُکھبھاگےگُرِگِیانانّجنُنیت٘ردیِت॥
سادھسنّگِ اِن دُکھ تے نِکسِئو نانک ایک پریِت ॥੪॥੯॥
لفظی معنی:
کرنی ۔ کار ۔ ایہا ۔ یہی ۔ ریت۔ رسم۔ رواج۔ سنت ۔ خدا رسیدہ ر ہنمائے روحانی واخلاقی ۔ نندا۔ بدگوئی ۔ ساکت۔ مادہ پرست۔ پوجا۔ پرستش ۔ درڑی ۔ پختہ کی ۔ ہیریت۔ الٹی رسم (1) اور ئے ہیت۔ غیرووں سے محبت ۔ ہر چندوری ۔ خلائی خیالی شہر۔ بن ہر پات۔ جنگل کے ہرے پتے ۔ اہے تہاروہیت۔ یہی تیرے ساتھ گذرتی ہے ۔ تیری حالت ہے (1) رہاو۔ سکھ گردبھ بھسم۔ سنگیت ۔ مگر ۔ گدھا رکاھ سے آرام محسوس کرتا ہے ۔ رچ۔ رچی ۔ دتی محبت۔ دکھے ٹھگوری پریت زہریلی بوٹی سے محبت (2) اتم سنت۔ بلند عظمت خدا رسیدہ روحانی رہنما۔ بھلے سنجوگی ۔ خوش قسمتی سے ۔ پوت نیت ۔نہایت پاک۔ جات اکارتھ ۔ بے فائدہ جاتا ہے ۔ جنم پدارتھ ۔ زندگی کی نعمت۔ کاچ یادرے جیت۔ جھوٹ اور کفر کے بدلے جیتا جا راہ ہے (3) کل وکھ ۔ گناہگاریاں۔ گرگیان انجن۔ علم مرشد کا سرمیہ۔ نیتر۔ آنکھوں۔ سادھ سنگ۔ صحبت یا ساھت پاکدامن ۔ نکسو۔ نجات۔ چٹکارہ ۔ آزادی ایک پری ۔ وحدت سے محبت۔
ترجمہ معہ تشریح:
دنیاوی دلوت کی محبت کی بھول میں غیروں سے محبت کرکے خلائی شہر اور ہرے پتے جو صرف یا محض خیالی یا قیاسی اور دیرپا نیہں کی سی اے انسان تیری اوقات ہے ۔رہاؤ۔
جن اعمالوں سے یا کارکردگی سے شرمندہ ہونا پڑتا ہے ۔ ویسے تیرے اعمال ہیں ۔ خدا رسیدہ روحانی رہنماؤں کی بدگوئی اور مادہ پرست کی ستائش و پرستش ایسے تیرے الٹ یا مخلاف اعمال تیرے دل میں گھر کر چکے ہیں (1) جیے گدھا راکھ بدن پر لا کر یا لیٹ کر سکھ محسوس کرتا ہے خواہ اسکے جسم پر لندن کا لیپ کیا جائے اب حیات سے محبت نہیں جس سے روحانی واخلاقی بنتی ہے ۔۔ برائیوں اور بد کاریوں سے محبت ہے ۔ جس سے زندگی زیر آلودہ ہوجاتی ہے (2) نیک سیرت خدا ریسدہ بلند اخلاق روحانی رہنما ہی اس عالم میں پاک و پائس رہتے ہیں جن کا ملاپ خوش قسمتی سے ہی ہو سکتا ہے اے انسان یہ زندگی کا قیمتی تحفے کی نعمت بیکار جا رہی ہے اور یہ کاج کے عوض جیتا جا رہا ہے (3 ) اے نانک جس انسان کی آنکھوں میں روحانی واخلاقی سمجھ کا سرمیہ ڈال دیا اسکے دیرینہ کئے ہوئے گناہوں کو مٹا دیا ۔ پاکدامنوںکی صحبت و قربت میں ان عذابوں سے بچ گیا اور واحد خدا سے محبت بنالی ۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
پانیِ پکھا پیِسءُ سنّت آگےَ گُنھ گوۄِنّدجسُگائیِ ॥
ساسِ ساسِ منُ نامُ سم٘ہ٘ہارےَاِہُبِس٘رامنِدھِپائیِ॥੧॥
تُم٘ہ٘ہکرہُدئِیامیرےسائیِ॥
ایَسیِ متِ دیِجےَ میرے ٹھاکُر سدا سدا تُدھُ دھِیائیِ ॥੧॥ رہاءُ ॥
تُم٘ہ٘ہریِک٘رِپاتےموہُمانُچھوُٹےَ بِنسِ جاءِ بھرمائیِ ॥
اند روُپُ رۄِئوسبھمدھےجتکتپیکھءُجائیِ॥੨॥
تُم٘ہ٘ہدئِیالکِرپالک٘رِپا نِدھِ پتِت پاۄنگوسائیِ॥
کوٹِ سوُکھ آننّد راج پاۓمُکھتےنِمکھبُلائیِ॥੩॥
جاپ تاپ بھگتِ سا پوُریِ جو پ٘ربھکےَمنِبھائیِ ॥
نامُ جپت ت٘رِسناسبھبُجھیِہےَنانکت٘رِپتِاگھائیِ॥੪॥੧੦॥
لفظی معنی:
پانی پکھا پیسو سنت اغے ۔ خد رسیدہ روحانی رہنما کی کدمت میں پانی لانے ۔پنکھا جھولنے اور اپینے کی خدمت کرؤں۔ نام سمارے ۔ الہٰی نام سچ وحقیقت یا د کر وں۔ بسرام۔ سکھ ۔ آرام (1) غھاکر۔ آقا۔ مالک۔ رہاؤ۔ بھرمائی ۔ وہم وگمان ۔ جہات (2) کرپاندھ ۔ رحمان الرحیم ۔ مہربانی کا خزانہ ۔ پتت۔ جھپکنے کے عرصے کے لئے (3) جاپ تاپ۔ ریاضت وعبادت تپسیا۔ بھگت پیار۔ پریم۔ ساپوری ۔ وہ مکمل۔ بھائی۔ اچھی لگی ۔ ترشنا۔ خواہشات کی تکمیل کی بھوک یا پیاس ۔ ترپت اگھائی ۔ مکمل تسلی ہوئی ۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے میرے آقا کرم و عنیات فرمان مہربانی کر جھے ایسی عقل بدیہہ میرے موالا کہ میرا دھیان ہمیشہ تجھ میں رہے (1) رہاؤ۔ پانی لاؤں پنکھا کھنچوں اور آٹا پیسوں پاکدامن خدا رسیدہ رہنما اخلاقی و روحانی کے آگے اور اے خدا تیری حمدوچناہ وصف و صلاح کرتا رہوں۔ اور سانس تیری یاد ہے کا رہے اور تیرا نام سچ وحقیقت حاصل کرلوں جو روحانی و زہنی سکون کا خزانہ ہے ۔ اے خدا تیری کرم وعنایت سے دنیاوی دلوتکی محبت غرور و تکبر اور وہم گمان مٹ جائے ۔ میں جہاںکہیں نظر ڈوراوں سب میں تیرا ہی نور اور شکل و صورت دکھائی دے (2) اے خدا تو رحمان الرحیم ہے مہربانیوں کا خزانہ ہے ۔ ناپاک کو پاک و پائس بنانے والا ہے ۔ جب بھی آنکھ جھپکنے کے وقفے کے لئے زبان سے تجھے یاد کرتا ہوں تو ایسا معلوم ہوتا ہے کہ میں نے حکمرانی و حکومت کے کروڑوں لذتیں حاسل کر لی ہیں (3) الہٰی ریاضت و عبات و تپسیا وہی مکمل ہے اگر رضائے الہٰی اور چاہت میں ہے ۔ الہٰی نام سچ وحقیقت کی ریاض و یاد سے تمام خواہشات مٹ جاتی ہیں اور انسان مکمل طور پر ہر طرح سے سیر ہوجاتا ہے مراد صابر ہوجاتا ہے ۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
جِنِ کیِنے ۄسِاپُنےَت٘رےَگُنھبھۄنھچتُرسنّسارا॥
جگ اِسنان تاپ تھان کھنّڈے کِیا اِہُ جنّتُ ۄِچارا॥੧॥
پ٘ربھکیِاوٹگہیِتءُچھوُٹو॥
سادھ پ٘رسادِہرِہرِہرِگاۓبِکھےَبِیادھِ تب ہوُٹو ॥੧॥ رہاءُ ॥
نہ سُنھیِئےَ نہ مُکھ تے بکیِئےَ نہ موہےَ اُہ ڈیِٹھیِ ॥
ایَسیِ ٹھگئُریِ پاءِ بھُلاۄےَمنِسبھکےَلاگےَمیِٹھیِ॥੨॥
ماءِ باپ پوُت ہِت بھ٘راتااُنِگھرِگھرِمیلِئودوُیا॥
کِس ہیِ ۄادھِ گھاٹِ کِس ہیِ پہِ سگلے لرِ لرِ موُیا ॥੩॥
ہءُ بلِہاریِ ستِگُر اپُنے جِنِ اِہُ چلتُ دِکھائِیا ॥
گوُجھیِ بھاہِ جلےَ سنّسارا بھگت ن بِیاپےَ مائِیا ॥੪॥
سنّت پ٘رسادِمہاسُکھُپائِیاسگلےبنّدھنکاٹے॥
ہرِ ہرِ نامُ نانک دھنُ پائِیا اپُنےَ گھرِ لےَ آئِیا کھاٹے ॥੫॥੧੧॥
لفظی معنی:
جن۔ جسنے ۔ دس۔ زیر ۔ تابعہ۔ تریگن۔تین اوصاف۔ حکمرانی تاترقی ۔ ستو۔ طاقت۔ قوت۔ تمو ۔ لالچ۔ بھون چتر سنسار۔ چاوں طرفوں والا علام۔ جگ اسنان۔ تیرتھ ۔ زیارت گاہیں۔ تاپ تھان۔ پیسیا والی جگہیں۔ گھنڈے ۔ فتح کر لئے ۔ جنت۔ جاندار انسان ۔ وچار۔ نحیف ۔ کمزور (1) اوٹ۔ آسرا۔ سادھ پر ساد۔ پداکمن کی رحمت س ۔ وکھے بیادھ ۔ زہریلی بدکاریؤں کی بیماری تب ہوٹو۔ تب ختم ہوتے ہیں (1) رہاؤ۔ بلبے ۔ بولے ۔ ٹھگوری ۔ نشہ اور ٹھگنے یاد ہوکا دینے والی۔ بھلادے ۔ بھول ۔ گمراہی (2) دوآ۔ دوئش ۔ دوسرا پن ۔ جدائی ۔ سگل ۔ سارے (3) چلت ۔ کھیل۔ تماشا۔ گوجہی بھائے ۔۔ پوشیدہ آگ۔ بھگت۔ الہٰی عاشق۔ رب پریمی۔ ویاپے ۔ اثر انداز (4) کھاٹے ۔ کماکے ۔ بطور ۔ منافع۔
ترجمہ معہ تشریح:
انسان کو ذہنی نجات تب حاصل ہوتی ہے ۔ جب پانی تمام توقعات خدا کے سہارے چھوڑ دیتا ہے ۔ اسکا آسرا لیتا ہے ۔ پاکدامن خدا رسیدہ کی رحمت سے الہٰی حمدوثناہ صفت صلاح کرتا ہے تو بدکاریوں گناہگاریوں کی بیماری سے نجات پاتاہے ۔ رہاؤ۔ جس دنیاوی دولت نے چاروں طرفوں والا علام جو تینوں اوصاف پر انحصار رکھتا ہے اسے اپنے زیر اور تابع کر رکھا ہے ۔ جس نے زیارت گاہیں بگئہ کی شگلیں اور تپسیا گاہیں فتح کر رکھتی ہے ۔ اس غریب انسان کی اسکا مقابلہ کرنے کی کیا جرات اور طاقت کہاں ہے (1) اے انسان یہ دنیاوی دؤلت جب انسان کو گمراہ کرتی ہے تونہ زباں سے کچھ کہتی ہے نہ اسکی کوئی آواز سنائی دیتی ہے نہ انکھوں سے دکھائی دیتی ہے مگر ایسی نشہ اور ہے کہ سب کے دل کو لبھاتی اور اچھی محسوس ہوتی ہے (2) ماں باپ بیٹے بھائی ان سب کے دل میں تفرقات اور دوئی دوئش پیدا کر دیتی ہے اور اپنت اور خویشتا نہیں رہنے دیتی ہے ۔ کسی کے پاس کم کسی کے بیش سارے آپس میں لڑتے جھگڑے اور برباد ہوتے ہیں (3) قربان ہوں اس سچے مرشد پر جس نے یہ دنیاوی کھیل اور تماشا دکھا دیا۔ کہ سارا عالم اس پوشیدہ آگ میں جل رہا ہے ۔ مگرا لہٰی عاشق ربی پریمی پر اسکا اثر نہیں ہوتا (4) روحاننی رہنما پاکدامن خدا رسیدہ کی رحمت و عنایت مراد (سنت ) ساری ذہنی و روحانی غلامی ختم ہوئی ۔ الہٰی نام سچ وحقیقت کی دولت کا سرامیہ بطور منافع دلمیں بسائیا ۔ اے نانک۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
تُم داتے ٹھاکُر پ٘رتِپالکنائِککھسمہمارے॥
نِمکھ نِمکھ تُم ہیِ پ٘رتِپالہُ ہم بارِک تُمرے دھارے ॥੧॥
جِہۄاایککۄنگُنکہیِئےَ॥
بیسُمار بیئنّت سُیامیِ تیرو انّتُ ن کِن ہیِ لہیِئےَ ॥੧॥ رہاءُ ॥
کوٹِ پرادھ ہمارے کھنّڈہُ انِک بِدھیِ سمجھاۄہُ॥
ہم اگِیان الپ متِ تھوریِ تُم آپن بِردُ رکھاۄہُ॥੨॥
تُمریِ سرنھِ تُماریِ آسا تُم ہیِ سجن سُہیلے ॥
راکھہُ راکھنہار دئِیالا نانک گھر کے گولے ॥੩॥੧੨॥
لفظی معنی:
داتے ۔ سخی۔ پرتپاک۔ پرورش کرنے والے ۔ رہنما۔ خصم۔ مالک ۔ نمکھ نمکھ ۔ آنکھ جھپکنے کے وقفے کے اندر۔ بارک۔ بچے ۔ ترے دھارے ۔ تمہارے آسرے (1) چہوا۔ زبان ۔ کون گن۔ کونسے اوصاف ۔ انت۔ آخر (1) رہاؤ۔ پرادھ ۔ گناہ۔ کھنڈ ہو۔مٹاؤ۔ انک بدھی ۔ بیشمار طریقوں سے ۔ اگیان ۔ بے علم ۔ مٹاؤ۔ انک پدھی۔ بیشمار طریقوں سے ۔ اگیان ۔ بے علم۔ الپ مت۔ کم عقل۔ نادان۔ پردھ۔ قدیمی عادت (2) آسا ۔ امید۔ سرن۔ پناہ ۔ زیر سایہ۔ سجن۔ سوہیلے ۔ آرام و آسائشا مہیا کرنے والے دوست۔ گھر کے گولے ۔ گھر کے غلام خادم۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے خدا تو بیشمار اوصاف کا مالک ہے جبکہ زبان ایک ہے لہذا ایک زبان سے تیرے کون کونسے اوصاف بیان کئے جا سکتے ہیں۔ تیرے اوصاف شمار اور اندازہ کسی نے نہیں لگائیا ۔ (1) رہاو۔ اے خدا تو سخاوت کرنے والا سخی ہے اور پروش کرنے والا رہنما ہے ۔ ہر وقت ہر لمحہ پرورش کرتے ہو ہم تیرے بچے ہیں اور تیرے آسرا ہیں (1) اے خڈا تو کروڑون گناہوں کو معاف کرنے والا ہے ۔ ہم کم عقل نادان ہیں تاہم تو اپنا قدیمی رحمان الرحیم ہونے کی عادت رکھتا ہے (2) اے خدا ہماراانحصار تجھ پر ہی ہے اور ہماری اُمیدیں تجھ سے ہی وابسطہ ہیں تو ہی ہمیں آرام و آسائش پہنچا نے والا دوست ہے ۔ اے رحمان الرحیم آپ میں حفاظت کرنے کی توفیق ہے ہم نانک کے اس گھر کے غلام ہیں۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
پوُجا ۄرتتِلکاِسناناپُنّندانبہُدیَن ॥
کہوُنّ ن بھیِجےَ سنّجم سُیامیِ بولہِ میِٹھے بیَن ॥੧॥
پ٘ربھجیِکونامُجپتمنچیَن॥
بہُ پ٘رکارکھوجہِسبھِتاکءُبِکھمُنجائیِلیَن॥੧॥ رہاءُ ॥
جاپ تاپ بھ٘رمنبسُدھاکرِاُردھتاپلےَگیَن॥
اِہ بِدھِ نہیِ پتیِیانو ٹھاکُر جوگ جُگتِ کرِ جیَن ॥੨॥
انّم٘رِتنامُنِرمولکُہرِجسُتِنِپائِئوجِسُکِرپیَن॥
سادھسنّگِ رنّگِ پ٘ربھبھیٹےنانک سُکھِ جن ریَن ॥੩॥੧੩॥
لفظی معنی:
پوجا۔ پرستش۔ ورت۔ پرہیز ۔ تلک۔ پیشانی پر چندن یا کیسر کا ٹیکہ لگانا۔۔ بن۔ کار ثواب۔دان ۔ سخاوت۔ بھیجے ۔ خو ش نہیں ہوتا۔ کہو۔ کسی طرح۔ بین ۔ بول۔ کلام۔ نام جپت۔ الہٰی نام سچ وحقیقت ۔ من چین۔ دل آرام محسوس کرتا ہے ۔ بہو پرکار۔ بہت سے طریقوں سے ۔ کھوجے ۔ تلاش کرتا ہے ۔ وکھم۔ مشکل ۔ رہاؤ۔ جاپ تاپ۔ عبادت وریاضت۔ بھر من بسد۔ زمین کا سفر اردھ تاپ۔ الٹا ہوکر تپسیا کرنا۔ گین ۔ ذہن۔ آسمان۔ پتیانو ۔ خوش۔ جین ۔ جیتو کے طرز زندگی سے ۔ جوگ جگت۔ جگیوں کے طریقوں سے (2) انمرت نام۔ آبحیات الہٰینام سچ وحقیقت ۔ نہ مولک ۔ جس کی قیمت مقرر نہ کی جائے سکے ۔ ہر جس ۔الہٰی صفت صلاح ۔ حمدوثناہ ۔ سادھ سنگ۔ صحبت پاکدامن ۔ رنگ پربھ۔ الہٰی عشق۔ رین ۔ رات
ترجمہ معہ تشریح:
الہٰی نام سچ و حقیقت کی ریاض سے دل تسکین حاصل کرتا ہے سارے لوگ بہت سے طریقوں سے اسکی تلاش میں مصروف ہیں مگر اسکا حصول دشوار ہے ۔ رہاؤ۔ دیوتاؤں یا ولی اللہ کی پرستش پرہیز گار پیشانی پر کیسر یا چندن کا غیکا لگانا ۔ غسل۔ ثواب خیرات دینا کثر ت سے زبان سے میٹھا بولنا۔ اسطرح سے الہٰی خوشنودی حاصل نہیں ہوتی (1) عبادت وریاضت سارے عالم کا سفر ۔ الٹا ہوکر مرادد سر کے بھار کھڑا ہوکر تپسیا کرنا۔ جگیوں کے خیال کے مطابق جین مذہب کی مطابق ان تمام طریقوں سے الہٰی خوشنودی حاصل نہیں ہو سکتی (2) الہٰی نام سچ وحقیقت آبحیات ہے اس سے روحانی واخلاقی زندگی حاصل ہوتی ہے ۔ الہٰی حمدوثناہ ایک اسیا یقمتی شے جس کی قیمت طے نہیں کی جا سکتی ۔ جس نے حاصل کی اس پر الہٰی کرم و عنایت ہے ۔ اے نانک۔ جسے صحبت پاکدامن کی اسکی زندگی کی رات آرام و آسائش میں گذری ۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
بنّدھن تے چھُٹکاۄےَپ٘ربھوُمِلاۄےَہرِہرِنامُسُناۄےَ॥
استھِرُ کرے نِہچلُ اِہُ منوُیا بہُرِ ن کتہوُ دھاۄےَ॥੧॥
ہےَ کوئوُ ایَسو ہمرا میِتُ ॥
سگل سمگ٘ریِجیِءُہیِءُدیءُارپءُاپنوچیِتُ॥੧॥ رہاءُ ॥
پر دھن پر تن پر کیِ نِنّدا اِن سِءُ پ٘ریِتِنلاگےَ॥
سنّتہ سنّگُ سنّت سنّبھاکھنُ ہرِ کیِرتنِ منُ جاگےَ ॥੨॥
گُنھ نِدھان دئِیال پُرکھ پ٘ربھسربسوُکھدئِیالا॥
ماگےَ دانُ نامُ تیرو نانکُ جِءُ ماتا بال گُپالا ॥੩॥੧੪॥
لفظی معنی:
بندھن۔ غلامی ۔ چھٹکارے ۔ آزاد کرائے ۔ استھر۔ مستقل ۔ نہچل۔ مستقل۔ دھاوے بھٹکے ۔ دوڑے (1) سگل سمگری ۔ سارا سامان۔ ہیؤ۔ پروا۔دل۔ اریؤ۔ حؤالے ۔ چیت ۔ دل ۔ رہاؤ ۔ پردھن۔ دوسروں کا سرمایہ۔ نندا۔ بدگوئی ۔ سنتیہہ سنگ۔ صحبت روحانی رہنما۔ سنت ۔ سبھا کھن۔ روحانی رہنماؤں سے گفتار گوشی ۔ جاگے بیداری ۔ گن ندھان۔ اوصاف کا خزانہ ۔ دیال۔ رحمدل۔
ترجمہ معہ تشریح:
اگر کوئی ایسا دؤست ہو میں سارا سامان اور دل و دماغ اسے بھینٹ کردوں۔ رہاؤ۔ جو ذہنی اور دنیاوی دولت کی غلامی سے نجات دلائے خدا سے ملاپ کرائے اور خدا کا نام وکلام سنائے اور اس دل کو ڈگمگانے سے بچا کر مستقل مزاج بنائے تاکہ یہ دوبارہ بھٹک میں نہ پڑے (1) بیگانہ سرمایہ بیگانی عورت اور دوسروں کی بدگوئی کرنے میں میری دلچسپی نہ رہے ۔ میری پاکدامن خدا رسیدہ روحانی رہنماؤں سے میری صحبت و قربت حآصل اور ان سے میری گفتار اور پیار بنا رہے اور میرے دل میں الہٰی حمدوچناہ کی بیداری رہے (2) اے اوصاف کے خزانے رحمان الرحیم ہرجائی خدا سب کو آرام پہنچانے والے ۔ جیسے بچہ ماں سے مانگتا ہے ۔ ایسے ہی نانک تجھ سے تیرا نام سچ وحقیقت مانگتا ہے ۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
ہرِ ہرِ لیِنے سنّت اُبارِ ॥
ہرِ کے داس کیِ چِتۄےَبُرِیائیِ تِس ہیِ کءُ پھِرِ مارِ ॥੧॥ رہاءُ ॥
جن کا آپِ سہائیِ ہویا نِنّدک بھاگے ہارِ ॥
بھ٘رمتبھ٘رمتاوُہاںہیِموُۓباہُڑِگ٘رِہِنمنّجھارِ॥੧॥
نانک سرنھِ پرِئو دُکھ بھنّجن گُن گاۄےَسدااپارِ॥
نِنّدک کا مُکھُ کالا ہویا دیِن دُنیِیا کےَ دربارِ ॥੨॥੧੫॥
لفظی معنی:
ابار۔ بچائے ۔ ہرکے داس۔ خادماں خدا۔ تس۔ اسے ۔ جتوے ۔ سوچتا ہے ۔ رہاؤ۔ جن۔ خادم۔ خدمتگار ۔ کہانی ۔ مددگار۔ نندک۔ بدگئوی کرنے والے ۔ بھرمت بھرمت۔ بھٹکتے بھٹکتے ۔ بہوڑ۔ دوبارہ۔ گریہہ مجھار ۔ گھر میں ہی (1) دین دنیا کے دربار ۔ عالمی و الہٰی در بار میں ۔ دکھ بھن۔ دکھ مٹانے والا اپار۔ لا محدود۔
ترجمہ معہ تشریح:
خدا ہمیشہ خدا رسیدہ پاکدامن روحانی رہنماؤں کو بچاتا ہے ۔ جو خادمان خدا کی برائی سوچتے ہیں تو انکی روحانی موت ہو جاتی ہے ۔ رہاؤ۔ خادمان خدا کا خدا خود مددگار ہوتا ہے اور بدگوئی کرنے والے ہمیشہ شکشت کھاتے ہیں۔ بھٹکتے بھٹکتے اسی میں ہی روحانی واخلاقی طور پر ختم ہوجاتے ہیں اور دوبارہ حقیقت (ٹھیک ) مقام حاصل نہیں ہوتا (1) اے نانک جو انسان عذاب مٹانے والے خدا کا دامن گیر ہوتا ہے ۔وہ اس لا محڈود خدا کے عشق مین محو ومجذوب ہوکر اسکی حمدوثناہ کرتا رہتا ہے مگر اسکی بدگوئی کرنے والا ہر دو عالموں میں بے عزت و شرمسار ہوتا ہے ۔

دھناسِریِ مہلا ੫॥
اب ہرِ راکھنہارُ چِتارِیا ॥
پتِت پُنیِت کیِۓکھِنبھیِترِسگلاروگُبِدارِیا ॥੧॥ رہاءُ ॥
گوسٹِ بھئیِ سادھ کےَ سنّگمِ کام ک٘رودھُلوبھُمارِیا॥
سِمرِ سِمرِ پوُرن نارائِن سنّگیِ سگلے تارِیا ॥੧॥
ائُکھدھ منّت٘رموُلمنایکےَمنِبِس٘ۄاسُپ٘ربھدھارِیا॥
چرن رین باںچھےَ نِت نانکُ پُنہ پُنہ بلِہارِیا ॥੨॥੧੬॥
لفظی معنی:
چتاریا ۔ یاد کیا۔ پتت۔ ناپاک ۔ پنیت۔ پاک ۔ طن بھیر ۔ آنکھ جھپکنے کے عرصے میں۔ بل بھرمیں۔ روگ بداریا۔ مٹائیا۔ رہاؤ۔ گوسٹ۔ تبادلہ خیالت۔ کام ۔ شہوت ۔ کرودھ ۔ غصہ ۔ لوبھ ۔لالچ۔ سمر سمر۔ یاد تا کر پورن ۔ نارائن۔ کامل۔ خدا۔ سنگی ۔ ساتھی ۔ سارے (1) اوکھد ۔ دوائی ۔ مول۔ بنیاد۔ وشواش۔ یقین ۔ دھاریا۔ بسائیا۔ چرن رین ۔ خاک پا۔ بانچھے ۔ پینیہہ ۔ پنیہہ۔ با بار۔ (2)
ترجمہ معہ تشریح:
اے انسانوں جنہوں انسان کے محافظ عدا کی یاد وریاض کی خدا نے اسے بل بھر میں ناپاک سے پاک زندگی بسر کرنے والے بنادیا اور اسکی تمام ہر قسم کی بیاریاں مٹا دیں ۔ رہاؤ۔ جنہوںنے پاکدامن (سادھ) جس نے طرز زندگی پاک بنالی ہے ۔ صحبت و قربت حاصل کی اس نے شہوت غسہ لالچ پر قابو پائیا اور گتار و سبق حاصل کرکے اسکے نتیجہ کے طورپر ۔ خدا کی یادوریاض سے ساتھیوں کو بھی کامیاب بنائیا (1) من کے لئے دوائی مول منتر ہی واحد دوائی ہے وحدت ہی کی وجہ سے یقین دلائیا ہے ۔ ہر روز نانک الہٰی خاک پا مانگتا ہے اور بار بار قربان جاتا ہے ۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
میرا لاگو رام سِءُ ہیتُ ॥
ستِگُرُ میرا سدا سہائیِ جِنِ دُکھ کا کاٹِیا کیتُ ॥੧॥ رہاءُ ॥
ہاتھ دےءِ راکھِئو اپُنا کرِ بِرتھا سگل مِٹائیِ ॥
نِنّدک کے مُکھ کالے کیِنے جن کا آپِ سہائیِ ॥੧॥
ساچا ساہِبُ ہویا رکھۄالاراکھِلیِۓکنّٹھِلاءِ॥
نِربھءُ بھۓسداسُکھمانھے نانک ہرِ گُنھ گاءِ ॥੨॥੧੭॥
لفظی معنی:
ہیت۔ محبت۔ پیار۔ سہائی ۔ مددگار۔ امدادی ۔ کیت۔ منحوس۔ جھنڈا (1) برتھا۔ درد۔ نندک۔ بدگو۔ کالے کینے ۔ بے عزت کئے (1) اکھوالا۔ محافظ ۔ کنٹھ لائے ۔ گلے لگا کر ۔ نربھیؤ۔ ۔بیخوف۔
ترجمہ معہ تشریح:
(مجھے) میری خدا سے محبت ہوگئی ۔ سچے مرشد نے میری منحوس عذاب مٹادیئے ۔ رہاؤ۔ اپنے ذاتی امداد سے میرے تمام درد دور کئے ۔ بدگوئی کرنے والے کو بے عزت کیا اور خدا مددگار ہوا۔ (1) سچا خدا محافظ ہوا اور اپنے گلے لگائیا۔ ہمیشہ آرام و آسائش حاصل ہوئی بیخوف ہوئے ۔ اے نانک الہٰی حمدوثناہ سے ۔

دھناسِریِ مہلا ੫॥
ائُکھدھُ تیرو نامُ دئِیال ॥
موہِ آتُر تیریِ گتِ نہیِ جانیِ توُنّ آپِ کرہِ پ٘رتِپال॥੧॥ رہاءُ ॥
دھارِ انُگ٘رہُسُیامیِمیرےدُتیِیابھاءُنِۄارِ॥
بنّدھن کاٹِ لیہُ اپُنے کرِ کبہوُ ن آۄہہارِ॥੧॥
تیریِ سرنِ پئِیا ہءُ جیِۄاںتوُنّسنّم٘رتھُپُرکھُمِہرۄانُ॥
آٹھ پہر پ٘ربھکءُآرادھیِنانکسدکُربانُ॥੨॥੧੮॥
لفظی معنی:
دیال۔مہربان۔ آتر۔ مصیبت زدہ۔ گت۔ حالت ۔ روحانی حالت۔ قوت۔ پرتپال۔ پرورش ۔رہاؤ۔ دھار انگریہہ۔ کرم وعنایت فرما۔ دتیا بھاؤ۔ دوئی دؤئش۔ لینا پرائیا۔ بھاو۔ محبت۔ نوار۔ مٹا۔ بندھن۔غلامی ۔ ہار شکست۔ (1) سمرتھ ۔ توفیق والا۔ ارادھی ۔ ریاضت۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے مہربان تیرا نام ایک دوائی ہے میں مصیبت زدہ تیری روحانی حالت ہیں سمجھ سکا تو خؤد پرورش کرنے والا ہے ۔ رہاؤ۔ اے میرے آقا کرم وعنایت فرمر میری دوئی دوئش اپنا پرائیا پن مٹا۔ میری ذہنی غلام مٹا کر پانا لے تاکہ کبھی شکست نہ ملے روحانی طور پر (1) تیری پناہ اور یزر سایہ رہنے سے مجھے روحانی زندگی حاصل ہوتی ہے ۔ تومہربان ہے تو ہر طرح سے باتوفیق اور تمام تر طاقتور کا مالک ہے ۔ ہر وقت یاد خڈا مصروف رہوں اور اس پر قربان ہوں۔

راگُ دھناسریِ مہلا ੫
ੴ ستِگُر پ٘رسادِ॥
ہا ہا پ٘ربھراکھِلیہُ॥
ہم تے کِچھوُ ن ہوءِ میرے س٘ۄامیِکرِکِرپااپُنا نامُ دیہُ ॥੧॥ رہاءُ ॥
اگنِ کُٹنّب ساگر سنّسار ॥
بھرم موہ اگِیان انّدھار ॥੧॥
اوُچ نیِچ سوُکھ دوُکھ ॥
دھ٘راپسِناہیِت٘رِسنابھوُکھ॥੨॥
منِ باسنا رچِ بِکھےَ بِیادھِ ॥
پنّچ دوُت سنّگِ مہا اسادھ ॥੩॥
جیِء جہانُ پ٘راندھنُتیرا॥
نانک جانُ سدا ہرِ نیرا ॥੪॥੧॥੧੯॥
لفظی معنی:
ہاہا۔ ہائے ۔ ہائے ۔ رکاھ لیہو۔ بچاؤ۔ کچھو ۔ کچھ ۔ نام۔ ست۔ سچ ۔ حقیقت۔ رہاؤ۔ اگن۔ آگ۔ کٹب۔ قبیلہ ۔ پروار۔ ساگر۔ سمندر۔ بھرم۔ بھٹگن ۔ تک و دو۔ دوڑ دہوپ۔ سنسار۔ علام ۔ جہان۔ دنیا۔ موہ۔محبت پیار۔ اگیان۔ لا علمی ۔ نادانی ۔ جہالت ۔ اندھار۔ اندھیرا (1) اوچ نیچ۔ نشیب و فراز۔ پستی و بلندی ۔ سوکھ دوکھ ۔ عذآب و اسائش ۔ دھرا پس۔ تسکین ۔ تسلی ۔ ترسنا بھوکھ ۔ خواہشات کی بھوک (2) من باسنا۔ ولی خواہشات ۔ رچ ۔محو ومجذوب ۔ وکھے بیادھ ۔ زہریلی بیماری ۔ مرا۔ شہوت۔ غصہ ۔ لالچ ۔ محبت ۔ع شق ۔ غرور میں ملوچ۔ پنچ دوت۔ پانچوں احساسات بد۔ سنگ ۔ ساتھ مہا۔ سادھ۔ جن کی درستی یا پخ کنی نہ ہوسکے (3) جیئہ ۔ زندگی ۔ جہاں ۔ دنیا۔ پران۔ سانس زندگی ۔ دھن۔ دولت۔ سرمایہ ۔ تیرا۔ نزدیک۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے خدا بچاؤ بچاؤ۔ ہمارے اند رکچھ کرنے کی توفیق نہیں اپنی کرم وعنیات سے الہٰی نام سچ وحقیقت عنایت کیجیئے (1) رہاؤ۔ اے خدا یہ عالم اور قیبلہ آگ کا سمندر ہے ۔ وہم وگمان بھٹکن اور دنیاوی دؤلت کی محبت روحانیت واخلاق سے بے بہرہ ہونا بے سمجھی گہر اندھیرا پن یا ذہنی بے سمجھی ہے (1) نشین و فراز پستی و بلندی عذاب و آسائش کی حالت میں انسان کو تکسین حاصل نہیں ہوتی ۔ اسے دنیاوی دولت کی بھوک لگتی رہتی ہے (2) دل خواہشات میں محبوس ہو کر بدکاریوں گناہگاریوں میں مقید ہوجاتا ہے اور پانچوں روحانی واخلاقی دشمنوں جو یا جنکی درستی بھاری دشوار ہے ساتھی ہو جاتے ہیں (3) اے نانک۔ خدا کو ہمیشہ نزدیک اور ساتھ سمجھ ساری خلقت مخلوقات عالم اور قائنات تیرا پیدا کیا ہوا ہے اور یہ زندگی بھی تیری ہی ہے ۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
دیِن درد نِۄارِٹھاکُرراکھےَجنکیِ آپِ ॥
ترنھ تارنھ ہرِ نِدھِ دوُکھُ ن سکےَ بِیاپِ ॥੧॥
سادھوُ سنّگِ بھجہُ گُپال ॥
آن سنّجم کِچھُ ن سوُجھےَ اِہ جتن کاٹِ کلِ کال ॥ رہاءُ ॥
آدِ انّتِ دئِیال پوُرن تِسُ بِنا نہیِ کوءِ ॥
جنم مرنھ نِۄارِہرِ جپِ سِمرِ سُیامیِ سوءِ ॥੨॥
بید سِنّم٘رِتِکتھےَساستبھگتکرہِبیِچارُ॥
مُکتِ پائیِئےَ سادھسنّگتِ بِنسِ جاءِ انّدھارُ ॥੩॥
چرن کمل ادھارُ جن کا راسِ پوُنّجیِ ایک ॥
تانھُ مانھُ دیِبانھُ ساچا نانک کیِ پ٘ربھٹیک॥੪॥੨॥੨੦॥
لفظی معنی:
دین۔ غریب۔ بے سہارا۔ نوار۔ دور کر ۔ جن۔ خدمتگار۔ ترن تارن ۔ کامیاب بنانے والا (1) سادہوسنگ۔ صحبت و قربت پاکدامن۔ بھوگوپال۔ حمدوچناہ کرؤ مالک زمین کی ۔ آن سنجم اور کوشش۔ جتن ۔ کوشش۔ کل ال۔ کلیش یا جھگڑے کا دور۔ رہاؤ۔ آد انت۔ اول اورآخر۔ دیال پورن ۔ مکمل طور پر مہربان ۔ تس منا۔ اسکے بغیر (2) وید۔ سمرت ۔ کھنے ۔ بیان کرتے ہیں۔ مکت ۔ نجات زہنی آزادی۔ سادھ سنگت ۔صحبت و قربت پاکدامناں۔ اندھار۔ لا علمی (3) چرن کمل۔ پائے پاک۔ ادھار۔ آسرا۔ راس پونجی ۔ سرمایہ ۔ تان۔ طاقت۔ مان۔ وقار۔ عزت ۔ دیبان ساچا۔ سچا دربار۔ پربھ نیک۔ الہٰی آسرا۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے انسان صحبت پاک دامن میں خدا کومالک عالم ہے یاد کیا کر۔ اسکے بغیر دوسر اکوئی طریقے سمجھ نہیں آتا اسی کوشش سے ہی دنیاوی کشمکش سے کامیابی حاصل کی جا سکتی ہے ۔ رہاؤ۔خدا بے سہارا بے مالکوں کے عذاب مٹا کر اپنے خدمتگاروں کی عزت کی بچاتا ہے ۔ کامیابیوں کے لئے جہاز ہے دنیا کے تمام آرام و آسائش کاخذانہ ہے اسکے زیر سایہ عذاب اپنا تاثر ڈال نہیں سکتا (1) اول و آخر رحمان الرحیم ہے اسکے بغیر دوسری کوئی ہستی نہیں اس مالک کی یاد وریاض سے تناسخ مٹانے (3) اے انسان زاد وید سمرتیاں اور شاشتر اور تمام مذہبی کتابیں اس خدا کا ہی ذکر کری ہیں الہٰی عاشق و پریمی اسی کی سوچ وچار کرتے ہیں صحبت و قربت پاکدامنوں سے ذہنی غلامی سے نجات ملتی ہے اور ذہنی خیالات سوچ سمجھ کا اندھیرا دور ہوتا ہے انسان آزاد خیال ہوجاتا ہے روحانی واخلاقی تقویت حاصل ہوتا ہے (3) اے نانک پائے پاک ہی انسان کے لئے ایک سرمایہ ہے یہی طاقت کا منبع وقار و عزت سہار اور صدیوی آسرا ہے ۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
پھِرت پھِرت بھیٹے جن سادھوُ پوُرےَ گُرِ سمجھائِیا ॥
آن سگل بِدھِ کاںمِ ن آۄےَہرِہرِنامُدھِیائِیا॥੧॥
تا تے موہِ دھاریِ اوٹ گوپال ॥
سرنِ پرِئو پوُرن پرمیسُر بِنسے سگل جنّجال ॥ رہاءُ ॥
سُرگ مِرت پئِیال بھوُ منّڈل سگل بِیاپے ماءِ ॥
جیِء اُدھارن سبھ کُل تارن ہرِ ہرِ نامُ دھِیاءِ ॥੨॥
نانک نامُ نِرنّجنُ گائیِئےَ پائیِئےَ سرب نِدھانا ॥
کرِ کِرپا جِسُ دےءِ سُیامیِ بِرلے کاہوُ جانا ॥੩॥੩॥੨੧॥
لفظی معنی:
پھرت پھرت۔ ڈہونڈتے ڈہونڈتے ۔ بھیٹے جن سادہو۔ خدائی خدمتگار خدا رسیدہ ۔ پاکدامن سے ملاپ وہا۔ پورے گر۔ کامل مرشد ۔ بن سگل بدھ۔ دوسرے سارے طریقے (1) تاتے اس لئے ۔ موہ ۔ میں۔ دھاری۔ اپنائی۔ ونسے ۔ مٹے ۔ سگل جنجال۔ سارے مخمسے ۔ جھمیلے ۔ الجھنیں ۔ رہاؤ۔ سورگ۔ بہشت۔ جنت۔ مرت۔ دوعالم جہاں لوگ پیدا ہوئے ہیں مرتے ہیں۔ پیال زیر زمین۔ بھو منڈل ۔تمام زمینیں۔ ۔ جیہئ ادھارن ۔ زندگی کے آسرے یا سہارے کے لئے ۔ سب کل تارن۔ سارے خاندان کی کامیابی کے لئے (2) نام نرنجن۔ بیداغ نام سچ وحقیقت ۔ سرب ندھانا۔ سارے خزانے ۔ ورے ۔شاذ و نادر۔ کسی نے ہی ۔ جانا۔ سمجھا۔
ترجمہ معہ تشریح:
تلاش کرتے کرتے جستجو سے خادم کا مل مرشد پاکدامن سے شرف ملاقات حاصل ہوا تو اس نے سمجھائیا کہ کوئی دوسرا طریقہ کام نہیں دیتا ما سوائے الہٰی نام سچ وحقیقت کی یادوریاض کے (1) اس لئے میں مالک عالم کا آسرا لیا ۔ کامل خدا کی پناہ حاصل کی اور سارے جھمیلے الجھیں کشمکش ختم کر دیں۔رہاؤ۔سارے عالم جنت۔ اس دنیا غرض یہ کہ پاتال اس دنیاوی دولت کی محبت میں گرفتار ہے ۔ روحانی واخلایق حفاظت اور سارے خاندان کی کامیابی کے لئے الہٰینام سچ وحقیقت کی ریاض کیجیئے (2) اے نانک۔ بیداغ پاک نام سچ وحقیقت کی حمدوچناہ ہی سارے خزانے ہیں۔ جس پر الہٰی کرم وعنیات ہو شاذ و نادر ہی کوئی اسکو سمجھتاہے ۔

دھناسریِ مہلا ੫ گھرُ ੨ چئُپدے
ੴ ستِگُر پ٘رسادِ॥
چھوڈِ جاہِ سے کرہِ پرال ॥
کامِ ن آۄہِسےجنّجال॥
سنّگِ ن چالہِ تِن سِءُ ہیِت ॥
جو بیَرائیِ سیئیِ میِت ॥੧॥
ایَسے بھرمِ بھُلے سنّسارا ॥
جنمُ پدارتھُ کھوءِ گۄارا॥ رہاءُ ॥
ساچُ دھرمُ نہیِ بھاۄےَڈیِٹھا॥
جھوُٹھ دھوہ سِءُ رچِئو میِٹھا ॥
داتِ پِیاریِ ۄِسرِیاداتارا॥
جانھےَ ناہیِ مرنھُ ۄِچارا॥੨॥
ۄستُ پرائیِ کءُ اُٹھِ روۄےَ॥
کرم دھرم سگلاایِ کھوۄےَ॥
ہُکمُ ن بوُجھےَ آۄنھجانھے॥
پاپ کرےَ تا پچھوتانھے ॥੩॥
جو تُدھُ بھاۄےَسوپرۄانھُ॥
تیرے بھانھے نو کُربانھُ ॥
نانکُ گریِبُ بنّدا جنُ تیرا ॥
راکھِ لےءِ ساہِبُ پ٘ربھُمیرا॥੪॥੧॥੨੨॥
لفظی معنی:
پرال۔ لکھے ۔ بیفائدہ بے نتیجہ ۔ جنجال۔ زندگی کے لئے جال یا پھندہ۔ ہیت۔ پیار بیرائی ۔ دشمن (1) بھرم۔ بھٹکن ۔ دور دہوپ۔ بھولے ۔ گمراہی ۔ پدارتھ۔ نعمت۔ کھوئے گوارا۔ جاہل ضائع کرتا ہے ۔ رہاؤ۔ سچا دھرم۔ سچا انسانی فرض ۔ بھاوے ۔ اچھا نہیں لگتا ۔ جھوٹ دہو۔ جھوٹے اور دہوکا دہی ۔ دات۔ دہی ہوئی ۔ داتار۔ دینے والا۔ مرن وچار۔ موت کا خیال (2) سادھ ۔ جس نے طرز زندگی پاک بنالی پادکامن ۔ سنت۔ خدا رسیدہ ۔ پاکدامن روحانی رہنما۔ وست پرائی ۔ دوسروں کی ملکیت کی ایشا۔ داتار۔ دینے والا ۔ مرن وچار۔ موت کا خیال (2) سادھ ۔ جس نے طرز زندگی پاک بنالی پاکدامن ۔ سنت ۔ خدا رسیدہ ۔ پاکدامن ۔ روحانی رہنما۔ دست پرائی ۔ دوسروں کی ملکیت کی ایشا۔ کرم دھرم۔ اعمال و فرائض۔ حکم ۔ رضا۔ فرمان۔ آون جانے ۔ تناسخ(3) ۔ بھاو ۔ رضا ۔ چاہتا ہے ۔ پروان۔ منظور ۔ قببول۔ غریب ۔ عاجز ۔ لاچار۔ مجبور۔ بندہ۔ غلام۔ جن۔ خدمتگار ۔
ترجمہ معہ تشریح:
سارا عالم وہم وگمان میں گمراہ ہے یہ زندگی کی نعمعت جہا لت میں ضائع کر رہا ہے ۔ رہاؤ۔ وہ بے نتیجے ۔ بیکار کام کرتا ہے جس نے آخر چوڑ کر چلے جانا ہے ۔ جس نے ساتھ نہیں جانا ان سے پیار ہے اور جو دشمن نہیں ان کو دوست بنا تااور سمجھتا ہے (1) سچا صدیوی انسانی فرض آنکھوں سے دیکھنا ت پسند نہیں۔ جھوٹ دہوکا فریب میں اچھا سمجھ محو ومجذوب رہتا ہے ۔ خدا کی دی ہوئی نعمت و اشیا سے محبت ہے اور دینے والے داتار داتا خدا کو بھلاتا ہے اور موت کا خیال تک نہیں (2) انسانی اعمال و فرائض چھوڑ دیئے ہیں نہ رضا الہٰی سمججھتا ہے اور دوسروں کی ملکیتی اشی اکے لئے دوڑ دہوپ کرتا ہے اور گناہ کرنے کے بعد پچھتاتا ہے (3) اے خدا تیری رضا ہی قابل قبول ہے قربان ہوں تیری رضا و رغبت پر ۔ عاجز نانک۔ تیرا غلام ہے محافظ ہے میرا مالک میرا آقا میرا۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
موہِ مسکیِن پ٘ربھُنامُ ادھارُ ॥
کھاٹنھ کءُ ہرِ ہرِ روجگارُ ॥
سنّچنھ کءُ ہرِ ایکو نامُ ॥
ہلتِ پلتِ تا کےَ آۄےَکام॥੧॥
نامِ رتے پ٘ربھرنّگِ اپار ॥
سادھ گاۄہِگُنھایکنِرنّکار॥ رہاءُ ॥
سادھ کیِ سوبھا اتِ مسکیِنیِ ॥
سنّت ۄڈائیِہرِجسُچیِنیِ॥
اندُ سنّتن کےَ بھگتِ گوۄِنّد॥
سوُکھُ سنّتن کےَ بِنسیِ چِنّد ॥੨॥
جہ سادھ سنّتن ہوۄہِاِکت٘ر॥
تہ ہرِ جسُ گاۄہِنادکۄِت॥
سادھ سبھا مہِ اند بِس٘رام॥
اُن سنّگُ سو پاۓجِسُمستکِکرام॥੩॥
دُءِ کر جوڑِ کریِ ارداسِ ॥
چرن پکھارِ کہاں گُنھتاس ॥
پ٘ربھدئِیالکِرپال ہجوُرِ ॥
نانکُ جیِۄےَسنّتادھوُرِ॥੪॥੨॥੨੩॥
لفظی معنی:
مسکین ۔ عاجز۔ نام آدھار۔ نام۔ سچ وحقیقت کا آسرا۔ کھاٹن ۔ منافع۔ ہر ہر روز گار۔ روزی کمانے کے لئے خدا خدا۔ سنچں ۔ جمع کرنے کے لئے ۔ اکھٹا کرنے کے لئے ۔ ہلت پلت۔ ہر دو عالموں میں۔ (1) نام رے ۔ الہٰی نام سچے محبت۔ اپار۔ لا محدود۔ نرنکار۔ خدا جسکی کوئی شکل و صورت و حجم نہیں۔ آکار۔ نہیں۔ رہاؤ۔ سادھ کی سوبھا۔ نیک شہرت پاکدامن۔ مسکینی ۔ بوجہ نہایت عاجزی ۔ صفت وڈائی ۔ سنت کی عظمت ۔ ولی اللہ کی عظمت۔ ہر جس ۔ الہٰی صفت صلاح۔ چینی ۔ سمجھی ۔ ناد۔ ساز۔ کوت۔ الہٰی نظمیں ۔ اتدروسرام۔ روحانی سکون و آرام۔ مستک کرام۔ جن کی پیشای پر انکے اعمال تحریر ہوں (3) دوئے کر جوڑ ۔ دونوں ہاتھو باندھ کر ۔ ارداس۔ عرض ۔ گذارش ۔ چرن پگھارا۔ پاؤن۔ جھاڑ کر۔ گن تاس۔ اوصاف کا خزانہ ۔ حضور۔ حاضری میں۔ سنتا دہور ۔ دہول پائے سفت۔
ترجمہ معہ تشریح:
الہٰی نام سچ وحقیقت میں محو ومجذوب ہونے سے خدا سے بیمار محبت ہو جااتا ہے ۔ پاکدامن واحد خدا کی جو بلااکار و شکل و صورت حمدوچناہ کرتا ہے ۔ رہاؤ۔ مجھ عاجز و لاچار کو الہٰی نام سچ وحقیقت کا ہی آسرا ہے ۔ میرے لئے منافع کمانے کے لئے الہٰی نام ہی روزی ہے ۔ جو ہر دو عالموں میں کام آتا ہے ۔ جمع کرنے اکھٹا کرنے کے لئے بھی نام ہے (1) پاکدامنی کی عظمت وشہرت عاجزی و انکساری میں مضمر ہے ۔ الہٰی صفت صلاح ہی اسکی عظمت ہے ۔ الہٰی پیار سے سنت کے دل کو روحانی سکون ملتا ہے اور فکر و تشویش مٹ جاتی ہے (2) جہاں پاکدامن اور روحانی رہنما اکھٹے ہوتے ہیں وہان ساز بجتے ہیںا ور الہٰی حمدوثناہ کی نظمیں اور الہٰی تعریف کے نغمے گائے جاتے ہیں (3) اے نانک ان سنتوں کے پائے خاک سے روحانی زندگی حاصل ہوتی ہے جو رحمان الرحیم کی حضوری میں رہتے ہیں۔

دھناسریِ مਃ੫॥
سو کت ڈرےَ جِ کھسمُ سم٘ہ٘ہارےَ॥
ڈرِ ڈرِ پچے منمُکھ ۄیچارے॥੧॥ رہاءُ ॥
سِر اوُپرِ مات پِتا گُردیۄ॥
سپھل موُرتِ جا کیِ نِرمل سیۄ॥
ایکُ نِرنّجنُ جا کیِ راسِ ॥
مِلِ سادھسنّگتِ ہوۄتپرگاس॥੧॥
جیِئن کا داتا پوُرن سبھ ٹھاءِ ॥
کوٹِ کلیس مِٹہِ ہرِ ناءِ ॥
جنم مرن سگلا دُکھُ ناسےَ ॥
گُرمُکھِ جا کےَ منِ تنِ باسےَ ॥੨॥
جِس نو آپِ لۓلڑِلاءِ॥
درگہ مِلےَ تِسےَ ہیِ جاءِ ॥
سیئیِ بھگت جِ ساچے بھانھے ॥
جمکال تے بھۓنِکانھے॥੩॥
ساچا ساہِبُ سچُ دربارُ ॥
کیِمتِ کئُنھُ کہےَ بیِچارُ ॥
گھٹِ گھٹِ انّترِ سگل ادھارُ ॥
نانکُ جاچےَ سنّت رینھارُ ॥੪॥੩॥੨੪॥
لفظی معنی:
گت ۔ کس طرح ۔ سمارے ۔ یاد کرتا ہے ۔ پچے ۔ کھپتا ۔ عذآب پاہے ۔ منمکھ ۔ مرید من ۔ خودی پسند ۔ رہاؤ۔ سر اوپر۔ محافظ ۔ سپھل محورت۔ کامیاب شخص۔ نرمل۔ پاک سیو۔ خدمت۔ نرنجن۔ بیداگ۔ پاک۔ راس۔ پونجی سرمایہ۔ سادھ سنگت ۔ صحبت و قربت پاکدامن ۔ پرگاس۔ روشنی (1) جیئن کاداتا۔ جانداروں کو دینے والا۔ پورن ۔ مکمل۔ سب ٹھائے ۔ سب جگہ ۔ کوٹ کلیس۔ کو وڑوں جھگڑے ۔ جنم مرن۔ تناسخ۔ دکھ ۔ عذاب۔ گورمکھ ۔ مرشدد کے وسیلے سے (2) لڑ۔ دامن پلے ۔ دریگہہ۔ دربار خدائی ۔ بھگت پریمی ۔ الہٰی عاشق۔ ساچے بھانے ۔ سچے صدیوی خدا کی چاہ و رضا میںہیں۔ جمکال۔ موت۔ بھیئے ۔ ہوئے ۔نکانے ۔ بے محتاج ۔ بیخوف ساچا۔ سچا صدیوی سچ ۔ دربار۔ عدالت ۔ کچہری ۔ قیمت ۔ قدرومنزلت۔ گھٹ گھٹ ۔ انتر۔ ہر دلمیں۔ سگل آدھار۔ سب کا آسرا۔ جاچے ۔ مانگتا ہے ۔ ست رینار۔ سنت کے پاؤں تلے کی خاک یا دہول ۔
ترجمہ معہ تشریح:
جس کے دلمیں ہے دھیان مالک اسے ہے ڈرکیسا ۔ خوف میں زلیل و خوار دہی ہوتا ہے ۔ جو مرید من اور خود پسند ہے ۔ رہاؤ۔ جس کا محافظ ماتا پتا اور ہے مرشد جن کی خدمت پاک ہے وہ کامیاب شخصیت ہے جس کا سرمایہ واحد خدا ہے ۔محبت و قربت پاکدامناں سے ذہنی روشنی ملتی ہے ۔ زندگی پر نور ہوجاتی ہے (1) پروردگار خڈا جو ہر جابستا ہے ۔ جس کے نام سچ وحقیقت کروڑوں عذب اور جھگڑے دھیان لگانے سے ختم ہو جاتے ہیں۔ مرشد کے وسیلے سے جس کے دلمیں بس جاتا ہے ۔ اسکا زندگی اورموت کا سارا عذابمٹ جاتا ہے (2) جسے خدا خدا اپنا دامن دے دیتا ہے دربارالہٰی میں اسے ٹھکانہ ملتا ہے ۔ وہی ہیں الہٰی عاشق و پریمی اور ولی اللہ جو پسندیدہ خدا ہیں۔ ان کا موت کا خؤف ختم ہوجاتا ہے (3) سچا صدیوی سچ مالک عدالت بھی اسکی سچی ہے اسکی قدرومنزلت کو کون سمجھ سکتا ہے ۔ سب کے دل میں بستا ہے اور سب کو اسکا آسرا و سہارا ہے ۔ نانک اس خڈا کے روحانی رہنماؤں سنتوں ولی اللہ کی دہول یا خدا مانگتا ہے ۔

دھناسریِ مہلا ੫
ੴ ستِگُر پ٘رسادِ॥
گھرِ باہرِ تیرا بھرۄاساتوُجنکےَہےَسنّگِ॥
کرِ کِرپا پ٘ریِتمپ٘ربھاپُنےنامُجپءُہرِرنّگِ॥੧॥
جن کءُ پ٘ربھاپنےکاتانھُ ॥
جو توُ کرہِ کراۄہِسُیامیِسامسلتِپرۄانھُ॥ رہاءُ ॥
پتِ پرمیسرُ گتِ نارائِنھُ دھنُ گُپال گُنھ ساکھیِ ॥
چرن سرن نانک داس ہرِ ہرِ سنّتیِ اِہ بِدھِ جاتیِ ॥੨॥੧॥੨੫॥
لفظی معنی:
بھرواسا۔ بھروسا ۔ آسرا۔ سنگ۔ ساتھ۔ پریتم پربھ۔ پیارے خدا۔نا م جیؤ۔ سچ وحقیقت میں دھیان و کہو۔ رنگ۔ پریم۔ پیار۔ تان۔ طاقت۔ آسرا۔ مسلت۔ صلاح۔ مشورہ ۔ پروان۔ منظور۔ قبول۔ پت۔ عزت۔ گت ۔ حالت۔ دھن۔ دولت ۔ سرمایہ۔ سکاھی ۔ گواہ۔ گن۔ وصف۔ چرن سرن ۔ پناہ۔ بدتھ جاتی ۔ یہ طریقہ سمجھا
ترجمہ معہ تشریح:
خادم خدا کو خدا پر بھروسا ہوتا ہے ۔ اے خدا جو تو کرتا ہے اور کرواتا ہے وہ صلاح مشورہ منظور اور قبول ہوتاہے ۔ رہاؤ۔ ہر درودں بروں تیرا بھروسا ہے تو اپنے خدمتگاروں کا ساتھی اور ساتھ دیتا ہے میرے پیارے مہربان مہربانی کر اپنا نام سچ وحقیقت تیرا نام چپتا رہون (1) خدا ہی وقار اور عزت ہے اور الہٰی نام ہی بلند روحانی حالت خدا ہی دولت اور اسکے اوصاف شاعر ہیں۔ اے نانک۔ خادمان خدا خدا کی پناہ اور یزر سایہ رہتے ہیں۔ ولی اللہ اور سنت اسے ہی بہترین طرز زندگی سمجھتے ہیں۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
سگل منورتھ پ٘ربھ تے پاۓکنّٹھِلاءِگُرِراکھے॥
سنّسار ساگر مہِ جلنِ ن دیِنے کِنےَ ن دُترُ بھاکھے ॥੧॥
جِن کےَ منِ ساچا بِس٘ۄاسُ॥
پیکھِ پیکھِ سُیامیِ کیِ سوبھا آندُ سدا اُلاسُ ॥ رہاءُ ॥
چرن سرنِ پوُرن پرمیسرُ انّترجامیِ ساکھِئو ॥
جانِ بوُجھِ اپنا کیِئو نانک بھگتن کا انّکُرُ راکھِئو ॥੨॥੨॥੨੬॥
لفظی معنی:
منورتھ ۔ مقصد ۔ مدعا۔ ولی منشا۔ کنٹھ۔ گلے ۔ کنے ۔ کسے ۔ دتر۔ نا قابل عبور۔ ۔ بھاکھے ۔ بتائیا (1) بسواس۔ بھروسا۔ پیکھ ۔ پیکھ ۔ دیکھ دیکھ ۔ سوبھا۔ شہرت۔ آند۔ سکو۔ الاس۔ خوشی۔ جوش۔ چاؤ۔ رہاؤ۔ انتر جامی۔ اندرونی راز جاننے والا ساکھیؤ۔ ظاہر۔ جان۔ سمجھ کر۔ بوجھ ۔ سمجھ کر ۔ انکر۔ پھٹارا۔ راکھیؤ۔ بچائیا۔
ترجمہ معہ تشریح:
جن کے دل میں سچا یقین ہوتا ہے ۔ مالک کی عظمت و حشمت اور شہر ت دیکھ کر انکے دل کو سکون ملتاہے اور خوش ہوتے ہیں ۔ رہاؤ ۔ خدا نے انے تمام مقاصد اور خواہشات پوری کیں اور مرشد نے گلے لگا کر بچائیا ۔ دنیاوی سمندر میں سڑنے سے بچائیا ۔ کسی نے یہ بتائیا یہ دنیاوی زندگی کے سمندر کو عبور کرنا دشوار ہے (1) کامل خداکی پناہ میں جو اندرونی راز اور بھید جانتا ہے ظاہر دیکھ لیا ۔ سمجھ سوچ کر اپنائیا۔ اے نانک اور الہیی پیار کا پھوٹتا اورنکاتا اپنے پریمیوں کے پیار کی شاخ کو خدا نے بچائیا۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
جہ جہ پیکھءُ تہ ہجوُرِ دوُرِ کتہُ ن جائیِ ॥
رۄِرہِیاسربت٘رمےَمن سدا دھِیائیِ ॥੧॥
ایِت اوُت نہیِ بیِچھُڑےَ سو سنّگیِ گنیِئےَ ॥
بِنسِ جاءِ جو نِمکھ مہِ سو الپ سُکھُ بھنیِئےَ ॥ رہاءُ ॥
پ٘رتِپالےَاپِیاءُدےءِکچھُاوُننہوئیِ॥
ساسِ ساسِ سنّمالتا میرا پ٘ربھُسوئیِ ॥੨॥
اچھل اچھید اپار پ٘ربھاوُچاجاکاروُپُ॥
جپِ جپِ کرہِ اننّدُ جن اچرج آنوُپُ ॥੩॥
سا متِ دیہُ دئِیال پ٘ربھجِتُتُمہِارادھا॥
نانکُ منّگےَ دانُ پ٘ربھرینپگسادھا॥੪॥੩॥੨੭॥
لفظی معنی:
جیہہ جیہہ۔ جہاں جہاں۔ پیکھؤ۔ دیکھتا ہوں۔ شیہہ حضور ۔ وہاں ۔ حاضر۔ کتیہہ۔ کہیں۔ ردرہیا۔ بستا ہے ۔ سر بتر۔ سب میں (1) ایت۔ اوت۔ یہاں وہاں ۔ ہر دو عالموں میں۔ بچھڑ کے جدا نہیں ہوتا۔ ، سو ، است ، سنگی ۔ ساتھی ۔ گیئے ۔ سمجھو ۔ ونس۔ فناہ۔ مٹ جائے ۔نمکھ میہہ۔ انکھ جھپکنے کے عرصے میں۔ الپ سکھ ۔ بیکار سکھ ۔ بھنیئے ۔ کہیئے ۔رہاؤ۔ پرتپالے ۔ پرورش کرتا ہے ۔ اپیاؤ۔ خوراک ۔ اون کمی ۔ سمالتا ۔ سنبھالتا (2) اچھل ۔ جو چھلیا نہ جا سکے ۔ دہوکا نہ دیا جا سکے ۔ اچھید ۔ چھید کیا جا سکے ۔ اپار۔ نا قابل عبور۔ روپ ۔ خوبصورتی ۔ شکل ۔ ہستی ۔ اچرج۔ حیران گن۔ انوپ۔ اتنا خوبصورت کہ بیان نہ ہو سکے (3) سامت ۔ وہ سمجھ ۔ عقل۔ جت۔ جس سے ۔ ارادھا۔ یاد کروں۔ دان۔ بھیک۔ رین پگ سادھا۔سادہوں پاکدامن کی خاک پا۔
ترجمہ معہ تشریح:
اسے ہی حقیقی ساتھی سمجھنا چاہیے جو نہ یاہں نہ وہاں جدا ہو مراد ہر دو عالموں میں ساتھ رہے ۔ جو جلدی مٹ جانے والا وہ آرام و آسائش بیکار کہنا چاہیے ۔ رہاؤ۔ جہان نظر جاتی ہے حاضر ناطر ہے خدا ہمیشہ ساتھ رہتا ہے جاہں نظر جاتی ہے حاجر ناطر ہے خدا ہمیشہ ساتھ رہتا ہے جاتا نہیں دور کبھی اور سب یں بستا ہے اے دل سدا یاد کر اسے (1) اپناتا ہے پرورش کرتا ہے کھلاتا ہے کوئی کمی واقع نہیں ہوتی ۔ جو ہر سانس محافظ ہے وہ خدا (2) جسے دہوکا نہیں دیا جاسکتا ۔ ایز رسانی نہیں کی جا سکتی ۔جس کی ہستی نہایت بلند ہے حیران کن ے جس کا کوئی ثانی ہیں الہٰی عاشق پریمی اسکے نام سچ وحقیقت کی یادوریاض سے روحانی سکون پاتے ہیں (3) اے رحمان الرحیم خدا ہمیںہوش سمجھ ار عقل عنایت کر جس کی برکت و عنایت سے تجھے یاد کرتارہوں ۔ اے خدا نانک تجھ سے بھیک مانگتا ہے پاکدامنوں کے پاؤں کی خاک کی ۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
جِنِ تُم بھیجے تِنہِ بُلاۓسُکھسہجسیتیِگھرِآءُ॥
اند منّگل گُن گاءُ سہج دھُنِ نِہچل راجُ کماءُ ॥੧॥
تُم گھرِ آۄہُمیرےمیِت॥
تُمرے دوکھیِ ہرِ آپِ نِۄارےاپدابھئیِبِتیِت॥ رہاءُ ॥
پ٘رگٹکیِنے پ٘ربھکرنیہارےناسنبھاجنتھاکے॥
گھرِ منّگل ۄاجہِنِتۄاجے اپُنےَ کھسمِ نِۄاجے॥੨॥
استھِر رہہُ ڈولہُ مت کبہوُ گُر کےَ بچنِ ادھارِ ॥
جےَ جےَ کارُ سگل بھوُ منّڈل مُکھ اوُجل دربار ॥੩॥
جِن کے جیِء تِنےَ ہیِ پھیرے آپے بھئِیا سہائیِ ॥
اچرجُ کیِیا کرنیَہارےَ نانکُ سچُ ۄڈِیائیِ॥੪॥੪॥੨੮॥
لفظی معنی:
سکھ سہج۔ روحانی سکون سے ۔ سنگل۔ خوشی۔ سہج دھن۔ آہستہ میٹھی سر مے ۔ نہچل۔ مستقل (1) دوکھی ۔ دکھدینے والے دشمن۔ نوارے ۔ مٹانے ۔ اپدا۔ مصیبت ۔ تیت۔ گذر گئی ۔ رہاؤ۔ پرگٹ ۔ ظاہر۔ کرنہارے ۔ جس میں کرنے کی توفیق ہے ۔ ناسن۔ بھاجن۔ دوڑ دہوپ ۔ تھاکے ۔ ختمہوئے ۔ خصم۔ مالک۔ نواجے ۔ عزت و قار بخش کیا (2) استھر۔ مستقل ۔ ڈولہومت۔ ڈگمگاؤ نہ ۔ ادھار۔ آسرا۔ جے جے کار ۔ نیک شہرت۔ سگل بھومنڈل۔ سارا عالم ۔ اجل ۔ سرخرو (3) جن کے جیئہ ۔ جو زندگی کا مالک ہے ۔ پھیرے ۔ بدلے ۔ سہائی مددگار۔ اچرج ۔ چران۔ کرنہارے ۔ جمیں ۔ کرنے کی توفیق ۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے دوست میرے دل میں بس ۔ تمہارے دشمن ایذا ارسال خدا نے خود ختم کر دیئے اور مصیبت ختم ہوئی ۔ رہاؤ۔ جس نے تمہیں اس عالم میں بھیجا خود ہی بلائیا پانائیا تو اے جان (چند) پر سکون اپنے دلمیں بس۔ روحانی سکون اور خوش مزاجی سے الہٰی حمدوچناہ کر اس طرح سے ان اخلاقی دشمنوں پر حکومت ار حکمرانی کر ۔ ہر طرح کرنے اور کروانے کی توفیق رکھنے والے نے اپنا آپ ظہور پذیر کی اجن کے دل میں مشکلیں ان کی حل ہوئیں دوڑ دہوپ اور تدو ختم ہوا۔ اور انکے دلمیں روحانی سنگیت ہونے لگتا ہے ۔ اور اپنے آقانے عزت افزائی کی (2) کلام و سبق مرشد اپنا آسرا یا بنیاد بنا کر اس پر عمل پیرا ہوکر مستقبل مزاج رہو ڈگمگاو نہ کبھی تمام روئے زمین پر شہرت و کامرانی حاصل ہوگی اورخداکے دربار میں سرخرو ہوگئے (3) جس نے تمہیں زندگی عنایت فرمائی ہے وہی مددگار ہوکر بدلاؤ لاتا ہے ۔ برائیوں سے ۔ کرنے اور کرانے کی توفیق رکھنے والے نے عجیب کھیل بنائیا ہے ۔ اے نانک ۔ اس کی عظمت سچی اور صدیوی ہے ۔

دھناسریِ مہلا ੫ گھرُ ੬
ੴ ستِگُر پ٘رسادِ॥
سُنہُ سنّت پِیارے بِنءُ ہمارے جیِءُ ॥
ہرِ بِنُ مُکتِ ن کاہوُ جیِءُ ॥ رہاءُ ॥
من نِرمل کرم کرِ تارن ترن ہرِ اۄرِجنّجالتیرےَکاہوُنکامجیِءُ॥
جیِۄندیۄاپارب٘رہمسیۄااِہُاُپدیسُموکءُگُرِدیِناجیِءُ॥੧॥
تِسُ سِءُ ن لائیِئےَ ہیِتُ جا کو کِچھُ ناہیِ بیِتُ انّت کیِ بار اوہُ سنّگِ ن چالےَ ॥
منِ تنِ توُ آرادھ ہرِ کے پ٘ریِتمسادھجاکےَسنّگِتیرےبنّدھنچھوُٹےَ॥੨॥
گہُ پارب٘رہمسرنہِردےَکملچرناۄرآسکچھُپٹلُنکیِجےَ॥
سوئیِ بھگتُ گِیانیِ دھِیانیِ تپا سوئیِ نانک جا کءُ کِرپا کیِجےَ ॥੩॥੧॥੨੯॥
لفظی معنی:
نیؤ۔ عرض۔ ارداس۔ گذارش۔ مکت ۔نجات۔ آزادی ۔ کاہو ۔ کہیں۔ کبھی ۔ رہاؤ۔ نرمل۔ پاک ۔ درست۔ تارن ترن۔ کامیابی دینے والا۔ عبور کرانے والا۔ اور جنجال۔ دوسرے دنیاوی جھمیلے مخمسے ۔ الجھاؤ۔ کاہو ۔ کسی ۔ جیون دیو۔ زندگی عنایت کرنے والا۔ پار پریم سیوا۔ الہٰی خدمت۔ اپدیس ۔ نصیحت (1) بیت ۔ پیار۔ بیت ۔ ہیست۔ توفیق ۔ قدروقیمت۔ انت کی بار۔ بوقت آخرت ۔ من تن ۔ دل وجان۔ آرادھ ۔ یادوریاض کر۔ ہرکے پریتم ۔ خدا کے پیارے ۔ سادھ ۔ پاکدامن ۔ جنہوں نے اپنی طرز زندگی آراستہ درست کرلی ہے ۔ جاکے سنگ۔ جس کے ساتھ و صحبت سے ۔ بندھن۔ چھوٹے ۔ غلامی سے آزادی ملے (2) گیہہ ۔ پکڑ ۔اختیار کر۔ اور آس۔ دوسری۔ امیدیں۔ پٹل۔ نہکیجے ۔ بھرسا کر ۔ بھگت عاشق۔ پریمی ۔ پیار۔ گانی ۔ عالم۔ جاننے والا۔ دھیانی ۔ دھیان یا توجہ دینے والا۔ تپا۔ تپسوی ۔ کرپا کیجے ۔ جس پر الہٰی کرم وعنایت ہے ۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے روحانی رہنماؤ میری گذارش سنیئے کہ خدا کے بغیر نجات حاصل نہیں ہو سکتی ۔ رہاؤ۔ اے دل ایسے اعمال کر جس سے تیری زندگی پاک ہو جائے ۔ الہٰی نام کا میابی کے لئے ایک جہاز ہے دوسرے دنایوی جھمیلے تیرے کسی کام آنے والے نہیں۔ زندگی عنایت کرنے والے کامیابی بخشنے والے خدا کی خدمت کی نصٰحت مرشد نے کی ہے (1) اسے پیار اور پریم نہیں کرنا چاہیے جس کی کوئی ہستی ل ہیسئت اور قدرومنزلت نہیں ہے ۔ جو بوقت آخرت ساتھ نہیں جاتا ۔ اے انسان دل وجان سے الہٰی نام سچ وحقیقت دل میں بسا اور یاد کر ۔ خدا سے محبت کرنے والے پاکدامن جنہوں نے اپنی طرز زندگی پاکیزیگی سے آراستہ کر لی ہے ان خدا رسیدہ رہنمانے روحانی جن کی صحبت و قربت سے تیری ذہنی غلامی سے نجات حاصل ہوجاتی ہے ذہن آزاد ہوجاتا ہے (2) اس کامیابی عنیات کرنے والے خدا پناہ و سایہ اور دل میں بسا دوسری تمام اُمیدیں ختم کر دہ اور اسکا بھروسا نہ کر۔ الہٰی عاشق ۔پریم پیار دھیان دینے والا توجہ دینے والا اور تپسوی وہی ہے ۔ اے نانک جس پر الہٰی رحمت ہے ۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
میرے لال بھلو رے بھلو رے بھلو ہرِ منّگنا ॥
دیکھہُ پسارِ نیَن سُنہُ سادھوُ کے بیَن پ٘رانپتِچِتِ راکھُ سگل ہےَ مرنا ॥ رہاءُ ॥
چنّدن چویا رس بھوگ کرت انیکےَ بِکھِیا بِکار دیکھُ سگل ہےَ پھیِکے ایکےَ گوبِد کو نامُ نیِکو کہت ہےَ سادھ جن ॥
تنُ دھنُ آپن تھاپِئو ہرِ جپُ ن نِمکھ جاپِئو ارتھُ د٘ربُدیکھُکچھُسنّگِناہیِچلنا॥੧॥
جا کو رے کرمُ بھلا تِنِ اوٹ گہیِ سنّت پلا تِن ناہیِ رے جمُ سنّتاۄےَسادھوُکیِسنّگنا॥
پائِئو رے پرم نِدھانُ مِٹِئو ہےَ ابھِمانُ ایکےَ نِرنّکار نانک منُ لگنا ॥੨॥੨॥੩੦॥
لفظی معنی:
میرے لال ۔ میرے پیارے ۔ بھلو۔ اچھا۔ نیک۔ دیکھو پسار نین ۔ آنکھوں کھول کر۔ سادہو کے بین۔ کلام پاکدامن ۔ پرانپت۔ زندگی کا مالک ۔ چت راکھ ۔ دلمیں بسا۔ سگل سے مرنا۔ سب نے مرنا ہے ۔ رہاؤ۔ چوآ۔ عطر۔ رس ۔ لطف ۔ مزہ ۔ بھوگ۔ لینا۔ برتنا ۔ وکار۔ بیفائدہ ۔ وکھیا۔ زیر آلودہ ۔ پھیکے ۔ بدمزہ ۔ گوبند۔ مالک۔ اراضی ۔ زمین ۔ نام نیکو ۔ الہٰی نام سچ وحقیقت ۔ آپن۔ تھاپیؤ۔ سمجھو۔ نمکھ ۔ تھوڑے سے وقفے کے لئے ۔ ارتھ دربھ ۔ سرمایہ و دولت (1) کرم بھلا۔ اعمال نیک اوٹ۔ آسرا۔ گہی ۔ لی ۔ سنت پلہ ۔ دامن رہنمائے روحانی ۔ جم فرشتہموت۔سادہو کی سنگتا۔ نیک انسانوں کی صحبت کی وجہ سے ۔ پرم ندھان۔ بھاری خزانہ ۔ ابیمان ۔ غررو۔تکبر۔ ایکے نرنکار۔ واحد خدا۔ من لگنا۔ دل کو لبھانیا۔
ترجمہ معہ تشریح:
خدا سے اے میرے پیارے نیکی مانگنا ہی نیک کام ہے ۔انکھیں کھول کر دیکھو پاکدامن انسان کا کلام سنو جو زندگی کا مالک ہے دل میں بساو۔ سب نے مرنا ہے ۔ رہاؤ۔ اے دوست و عطر قلیل ۔ مراد خوبودار تیل بدن پر لگاتا ہے ۔ پر لطف لذیز کھانے کھاتا ہے ۔ مگرسمجھ اس سے گناہگاریاں اور وکار پیدا کرتے ہیں اور بدمزہ ہیں ماسوائے الہٰی نام سچ اور حقیقت کے جو صدیوی ہے خدا رسیدہ پاکدامنوںکی یہ نصیحت اور کتھن و فرمان ہے ۔ یہ جسم اور سرامیہ جسے تو اپنا خیال کرتا ہے اور الہٰی نام کو تھوڑے سے وقفے کے لئے بھی یاد نہیں کرتا یہ سرمایہ اور دنیاوی دولت کچھ بھی تیرے ساتھ نہیں جائیگی (1) جو خوش قسمت ہیں انہیوں نے روحانی رہنماؤں سنتوں کا دامن تھاما اور آسرا لیا انہیں فرشتہ موت عذاب ازیت نہیں پہنچاتا جو صحبت و قربت پاکدامن سادہو میں رہتے ہیں۔ اے نانک۔ اسے اعلے خزانہ پا لیا غرور اور تکبر مٹالیا جس نے واحد خداس اپنا رشتہ ناطہ قائم کر لیا۔

دھناسریِ مہلا ੫ گھرُ ੭
ੴ ستِگُر پ٘رسادِ॥
ہرِ ایکُ سِمرِ ایکُ سِمرِ ایکُ سِمرِ پِیارے ॥
کلِ کلیس لوبھ موہ مہا بھئُجلُ تارے ॥ رہاءُ ॥
ساسِ ساسِ نِمکھ نِمکھ دِنسُ ریَنِ چِتارے ॥
سادھسنّگ جپِ نِسنّگ منِ نِدھانُ دھارے ॥੧॥
چرن کمل نمسکار گُن گوبِد بیِچارے ॥
سادھ جنا کیِ رین نانک منّگل سوُکھ سدھارے ॥੨॥੧॥੩੧॥
لفظی معنی:
سمر۔ یاد کر۔ کل۔ عذاب ۔ کللیس ۔ جھگڑے ۔ بھوجل۔ خوفناک سمندر۔ رہاؤ۔ نمکھ ۔ آنکھ جھپکنے کے عرصے میں۔ دنس رین ۔ روز و شبد۔ دن رات۔ چتارے یاد کر۔سادھ سنگ۔ صحبت پاکدامن ۔ جپ تسنگ۔ بیخوف ہوکر ۔ یادوریاض کر ۔ اور اس خزانے کو دلمیں بسا۔ من ندھان۔ دھارے (1) گمسکار۔ سجدہ کر ۔ سر جھکا ۔ گن گوبن وچارے ۔ الہٰی اوصاف کو سمجھ خیال کر سادھ جان کی رین ۔ خاک پاکدامناں ۔ منگل خوشی۔ سوکھ ۔ آرام و آسائش ۔سدھارے ۔ سنوارتی ہے ۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے میرے پیارے ہمیشہ یاد خدا کو کیا کر ۔ تاکہ تیرا عذاب اور جھگرے لالچ و دنیاوی محبت اور زندگی کے خوفناک سمندر کو عبور کرنے اورمٹائے خدا۔ ہاؤ ۔ ہر سانس ہر پل ہر گھڑی ہر تھوڑے سے وقفے کے لئے روز و شب دن رات یاد خدا کو کر اور بیخوف ہوکر سادھ کی صحبت و قربت اور ساتھ ہوکر یاد وریآض کر اور اس خزانے کو دلمیں بسا (1) پائے پا ک پر سجدہ کر سرجھکا اور اوصاف الہٰی ذہن میں بسا ۔ اے نانک۔ خاک پائے پاکدامناں خوشیاں اور روحانی سکون دیتی ہے ۔

دھناسریِ مہلا ੫ گھرُ ੮ دُپدے
ੴ ستِگُر پ٘رسادِ॥
سِمرءُ سِمرِ سِمرِ سُکھ پاۄءُساسِساسِسمالے॥
اِہ لوکِ پرلوکِ سنّگ سہائیِ جت کت موہِ رکھۄالے॥੧॥
گُر کا بچنُ بسےَ جیِء نالے ॥
جلِ نہیِ ڈوُبےَ تسکرُ نہیِ لیۄےَبھاہِنساکےَجالے॥੧॥ رہاءُ ॥
نِردھن کءُ دھنُ انّدھُلے کءُ ٹِک مات دوُدھُ جیَسے بالے ॥
ساگر مہِ بوہِتھُ پائِئو ہرِ نانک کریِ ک٘رِپاکِرپالے॥੨॥੧॥੩੨॥
لفظی معنی:
سمرؤ۔ یاد کرتا ہوں۔ پاوؤ۔ پاتاہوں۔ سمالے ۔ بسا کے ۔ سنگ سہائی۔ ساتھی و مددگار۔ جت کت۔ ہرجگہ۔ رکھوالے ۔ حفاظت کرتا ہے (1) گرکا بچن۔ کلام مرشد۔ بسے جیئہ نالے ۔ روح وذہن میں بیٹھے یا بسے ۔ تسکر ۔ چور۔ لٹیرا۔ بھاہے ۔ آگ۔ رہاؤ۔ نردھن۔ کنگال۔ اندھلے ۔ اندھے ۔ ٹک۔ ٹیک۔ آسرا۔ باے ۔ بچے ۔ ساگر۔ سمندر۔ بوہتھ۔ جہاز۔ کرپاے ۔ رحمان الرحیم۔ مہربان۔
ترجمہ معہ تشریح:
کلام مرشد میرے ذہن روح اور دل و دماغ میں بسے لٹیرا لوٹ نہیں سکتا اور آگ جلا نہیں سکتی ۔ رہاؤ۔ یہ غریب کنگال کے لئے سرمایہ اندھےکے لئے آسرا ڈنگوری بچےکے لئے ماں کا دودھ ہے ۔ اے نانک۔ جس پر خدا نے کرم وعنایت فرمائی اسکے لئے ایسے ہے جیسے سمندر میں بحری جہاز۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
بھۓک٘رِپالدئِیالگوبِنّداانّم٘رِتُرِدےَسِنّچائیِ॥
نۄنِدھِرِدھِسِدھِہرِلاگِرہیِجنپائیِ॥੧॥
سنّتن کءُ اندُ سگل ہیِ جائیِ ॥
گ٘رِہِباہرِٹھاکُرُبھگتنکارۄِرہِیاس٘ربٹھائیِ॥੧॥ رہاءُ ॥
تا کءُ کوءِ ن پہُچنہارا جا کےَ انّگِ گُسائیِ ॥
جم کیِ ت٘راسمِٹےَجِسُسِمرتنانکنامُدھِیائیِ॥੨॥੨॥੩੩॥
لفظی معنی:
گوبندا۔ مانک۔ زمین۔ انمرت۔ آب حیات۔ روے ۔ دلمیں۔ سچائی۔ آبپاشی ۔ روحانیت و روحانی طرز زندگی جو آبحیات ہے دل وذہن کو ترتر مراد مکمل طورپر دلمیں بسائیا۔ لو ندھ ۔نوخزانے ۔ ردھ سدھ۔ کراماتی یا معجزے ۔ لاگ ہے ۔ جن پائی۔ خادمان خدا کےپاؤں چومتے ہیں (1) سگل سارے ۔ جائی ۔ جگہ ۔ رورہیا۔ بستا ہے ۔ رہاؤ۔ پہنچنہارا۔ برابری۔ انگ گواسائیں۔ جس کا ساتھی خدا۔ جسمکا تراس۔ فرشتہموتکا خوف۔ نامدھیائی ۔ سچ اورحقیقت دھیان لگائیں
ترجمہ معہ تشریح:
دوحانی رہنما ولی اللہ سنت ہر جگہ خوشیاں اور سکون پاتے ہیں۔ گھر باہر خدا اپنے پیارون کا ہے جو ہر جگہ بستا ہے (1) رہاؤ۔ مالک عالم مہربان ہوئے آب حیات سے دل کی آبپاشی کی ۔ دنیاوی نو خزانے معجزے کرنےکی طاقت روحانی رہنماؤں ولی اللہ وسنتوں کے پاوں پڑے رہتے ہیں۔ جس کی یادوریاض فرشتہ محبت کا خوف مٹ جاتا ہے (1) جا سکا ساتھی ہو خود خدا اسکی برابری کیا کوئی کرسکتا ہے ۔ اےنانک اسکا نام یاد کیا کرؤ۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
دربۄنّتُدربُدیکھِگربےَبھوُمۄنّتُابھِمانیِ॥
راجا جانےَ سگل راجُ ہمرا تِءُ ہرِ جن ٹیک سُیامیِ ॥੧॥
جے کوئوُ اپُنیِ اوٹ سمارےَ ॥
جیَسا بِتُ تیَسا ہوءِ ۄرتےَاپُنابلُنہیِہارےَ॥੧॥ رہاءُ ॥
آن تِیاگِ بھۓاِکآسرسرنھِسرنھِکرِآۓ॥
سنّت انُگ٘رہبھۓمننِرملنانکہرِگُنگاۓ॥੨॥੩॥੩੪॥
لفظی معنی:
دربھ ونت۔ سرمایہ دار ۔ گربھے ۔ غرور و تکبر کرتا ہے ۔ بھوم ونت۔ زمیندار۔ ابھیمانی ۔ تکبر۔ مغرور۔ سگل۔ راج۔ ساری ریاست ۔ ہرجن۔ خادم خدا۔ ٹیک سوامی ۔ خدا کا آسرا (1) اوٹ۔ آسرا۔ سمارے ۔ یاد کرتے ۔تیاگ۔ چھوڑ کر۔ اک ۔ واحد۔ آسرا ۔ آسرے ۔ انگریہہ۔ مہربانی۔ بیئے ۔ ہوئے۔ نرمل۔ پاک ۔ ہرگن گائے ۔ الہٰی صفت صلاح سے ۔
ترجمہ معہ تشریح:
اگر کوئی اپنا آسرا و سہارا قائم رکھتا ہے تو جیسی اس میں توفیق ہے ویسا ہی استعمال کرتا ہے اپنی طاقت ضائع نہیں کرتا گنوا اتا نہیں مراد ڈگمکاتا نہیں (1) رہاو۔ سرمایہ دار اپنے سرمایہ کو دیکھ رک اس پر ناز کرتا ہے اور زمیندار اپنی مزین پر فخر کرتا ہے اور حکمران اپنی حکومت اور سلطت پر ناز فخر ار غرورکرتا ہے ایسے ہی الہٰی خدمتار کو خدا پر بھروسا و آصرا ہے (1)اے نانک جو تمام سہارے اور آسرے چھوڑ کر صرف خدا کو ہی اپنا آسر اور سہارا بن التے ہیں اور اسکی پناہ میں آجاتے ہیں۔ رہنمائے روحانی (سنت) کی کرم وعنایت سے الہٰی حمدوچناہ سے اپنے دل پاک بنا لیتے ہیں۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
جا کءُ ہرِ رنّگُ لاگو اِسُ جُگ مہِ سو کہیِئت ہےَ سوُرا ॥
آتم جِنھےَ سگل ۄسِتاکےَجاکاستِگُرُپوُرا॥੧॥
ٹھاکُرُ گائیِئےَ آتم رنّگِ ॥
سرنھیِ پاۄننامدھِیاۄنسہجِسماۄنسنّگِ॥੧॥ رہاءُ ॥
جن کے چرن ۄسہِمیرےَہیِئرےَسنّگِپُنیِتادیہیِ॥
جن کیِ دھوُرِ دیہُ کِرپا نِدھِ نانک کےَ سُکھُ ایہیِ ॥੨॥੪॥੩੫॥
لفظی معنی:
ہر رنگ۔ الہٰی عشق۔ پیار پریم ہوگیا ۔ جگ ۔ زمانے میں۔ سورا۔ بہادر۔ فاتح۔ آٹم ہے ۔ جس نے اپنی روح پر فتح حآصل کر لی ۔ سبگرپور۔ کامل مرشد (1) ٹھاکر۔ مالک ۔خدا ۔ آتم رنگ۔ دلی پریم سے ۔ سرنی باون ۔ پناہ لینا۔ نام دھیاون ۔ سچ وحقیقت میں دھیان لگانا ۔ سچ شمان۔ روحانی سکون (1) رہاؤ۔ جن کے چرن۔ پائے خادم خدا۔ ہیرے ۔ دل ودماغ میں۔ ذہن نشین ۔ پنیتا ۔ پاک ۔ کرپابندھ ۔مہربان و مشفق ۔ رحمان الرحیم ۔
ترجمہ معہ تشریح:
الہٰی صفت صلاح ولی پیار سے کرنی چاہیے ۔ اسکے زیر سایہ رہنے اسکے نام کی یادوریاض سے روحانی سکون اور ساتھ حاصل ہوتاہے ۔ رہاؤ۔ خادم خدا کی خدمت کرنی دلمیں بستی ہے ۔ جسے خدا سے پیار ہوگیا وہ بہادر کہلاتا ہے اس زمانے میں جسکا مرشد کامل ہو وہی دل کو زیر کرنا ہے اس پر فتح حآصل کرتا ہے ۔ سارا عالم اسکے زیر ہوجاتا ہے (1) اگرخادم خدا کے پاؤں میرے دلمیں بس جائیں تو انکی صحبت و قربتمیں یرا جسم پاک ہو جائے ۔ کے رحمان الرحیم مہربنایوں کے خزانے خدا اپنے خادموں کے پاؤں کی پاک دہول عنایت کرنانک کے لئے یہی بھاری آرام و آسائش پہنچانے والی نعمت ہے ۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
جتن کرےَ مانُکھ ڈہکاۄےَاوہُانّترجامیِجانےَ॥
پاپ کرے کرِ موُکرِ پاۄےَبھیکھکرےَنِربانےَ॥੧॥
جانت دوُرِ تُمہِ پ٘ربھنیرِ॥
اُت تاکےَ اُت تے اُت پیکھےَ آۄےَلوبھیِپھیرِ॥ رہاءُ ॥
جب لگُ تُٹےَ ناہیِ من بھرما تب لگُ مُکتُ ن کوئیِ ॥
کہُ نانک دئِیال سُیامیِ سنّتُ بھگتُ جنُ سوئیِ ॥੨॥੫॥੩੬॥
لفظی معنی:
جتن۔ کوشش۔ ڈہکاوے ۔ دہوکا دیتا ہے ۔ انتر جامی ۔ اندرونی راز جاننے والا۔ پاپ۔ گناہ ۔ موکر۔ منکر۔ انکار۔ بھیکھ ۔ دکھاوا۔ نربانے ۔ پاکیزہ انسانوں کے (1) جانت دور۔ دور سمجھتا ہے ۔ نیر۔ نزدیک ۔ ات ۔ ادھر۔ تاکے ۔ طاق۔ نظر رھتا ہے ۔ لوبھی ۔لالچی ۔پھیر ۔ دوبارہ۔ رہاؤ۔ بھرما۔ شک و شبہات۔ مکت ۔ آزادی۔ نجات۔ دیال سوآمی ۔ جس پر ہے مہربان خدا۔ سنت۔ روحانی رہنما۔ بھگت ۔ الہٰی عاشق۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے خدا تو ساتھ ہے نزدیک ہے مگر تجھے دور سمجھتا ہے انسان ادھر اُدھر نظر دوڑاتا ہے طاق لگاتاہے ۔ اور لالچ کے چکر میں پھنسا رہتا ہے ۔ رہاؤ۔ بیشمار کوشش کرتا ہے دہوکا دیتا ہے ۔ پاکیزہ انسان ہونیکا دکھاوا اور بھیس بناتا ہے ۔ گناہ کرتا ہے ارو منکر ہوتا ہے (1) جب تک دل سے وہم وگمان دورنہیں ہوتا ذہنی غلامی سے نجات نہیںملتی اے نانک بتادے کہ جس پر مالک عالم خدا مہربان ہوتا ہے وہی روحانی رہنما ولی اللہ سنت الہٰیعاشق اور پربھو پریمی ہے ۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
نامُ گُرِ دیِئو ہےَ اپُنےَ جا کےَ مستکِ کرما ॥
نامُ د٘رِڑاۄےَنامُجپاۄےَتاکا جُگ مہِ دھرما ॥੧॥
جن کءُ نامُ ۄڈائیِسوبھ॥
نامو گتِ نامو پتِ جن کیِ مانےَ جو جو ہوگ ॥੧॥ رہاءُ ॥
نام دھنُ جِسُ جن کےَ پالےَ سوئیِ پوُرا ساہا ॥
نامُ بِئُہارا نانک آدھارا نامُ پراپتِ لاہا ॥੨॥੬॥੩੭॥
لفظی معنی:
مستک کرما۔ جس کی پیشانی پر اسکے مقدر میں تحریر ہے ۔ نام سچ وحقیقت و حق۔ درڑااوے ۔ دلمیں مکمل اور پختہ طور پر بسائے ۔نام جپاوے ۔ دوسروں کو اسکی ٹرغیب دے ۔ اس پر عمل کے لئے آمادہ کرنے کی کوشش کرے ۔ جگ ۔ زمانے میں۔ دھرما۔ فرض انسانی ۔ ثواب (1) جن ۔ الہٰی خدمتگار ۔ سوبھ ۔ شہرت ۔ گت۔ روحانی عظمت ۔ پت ۔ عزت۔ آبرو۔ مانے ۔ مانتا ہے ۔ جو جو ہوگ ۔ جو جو ہوتا ہے (1) رہاؤ۔ نام دھن۔ سچ وحقیقت و حق کی دولت و سرمایہ ۔پالے ۔ دامن۔ پورا ساہا۔ مکمل ساہوکار۔ بیوہار۔ روز مرہ کا کام ۔ آدھار۔ آسرا ۔ لاہا۔ منافع۔ پراپت۔ حاصل۔
ترجمہ معہ تشریح:
خادم خدا کے لئے الہٰی نام سچ حق وحقیقت ہی عطمت حشمت و شہرت ہے ۔ نام سے ہی روحانی عظمت نام سے ہی عزت اور رضائے اہٰی ہی تسلیم کرتا ہے خادم خدا ۔ رہاؤ۔ جس کی پیشانی یہ ابھر آئی اس کی قسمت الہٰی نام سچ حق وحقیقت دیتا ہے مرشد پختہ کراتا ہے دل میں اور دوسروں کو واعظ کراتا ہے زمانے میں ہے یہ فرض اسکا (1) جس کے دامن سچ حق و حقیقت نام کا مل ہے شاہوکار وہ ۔ اے نانک۔ جس شخس کی دامن میں سچ حق وحقیقت سے ہوکاروبار اور بیوہار اور اسی کا آسرا اور سہارا ہو وہ سچ حق وحقیقت کا ہی منافع کماتاہے ۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
نیت٘رپُنیِتبھۓدرسپیکھےماتھےَپرءُرۄال॥
رسِ رسِ گُنھ گاۄءُٹھاکُرکےمورےَہِردےَبسہُگوپال॥੧॥
تُم تءُ راکھنہار دئِیال ॥
سُنّدر سُگھر بیئنّت پِتا پ٘ربھہوہُپ٘ربھوُکِرپال॥੧॥ رہاءُ ॥
مہا اننّد منّگل روُپ تُمرے بچن انوُپ رسال ॥
ہِردےَ چرنھ سبدُ ستِگُر کو نانک باںدھِئو پال ॥੨॥੭॥੩੮॥
لفظی معنی:
پنت۔ پاک ۔ صاف۔ درس۔ دیدار۔ پیکھے ۔ دیکھ کر ۔ماتھے پیشانی ۔ روال۔ دہول۔ رس رس۔ پر لطف۔ مزے سے ۔ ہر وے ۔ دلمیں۔ ذہن نشین (1) راکھنہار۔ حفاظت کی توفیق رکھنے والے ۔ سندر سگھر ۔ اچھے دانشمدن ۔ رہاؤ۔مہا۔ بھاری۔ انند سنگل روپ۔ سکون ذہنی بھری خوشی ۔ بچن انوپ رسال۔ انوکھا پر لطف کلام۔ ہروے چرن۔ دلمیں عاجزی اور عاجزانہ کلام ۔ باندھو پال۔ دامن۔ باندھا ۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے رحمان الرحیم خدوند کریم تو حفاظت کی توفیق رکھنے والے ہے ۔ آپ اعداد و شمار سے بعید دانشمند اور سندیہ ہو مجھ پر مہربانی کیجیئے (1) رہاؤ۔ اے خدا میرے دل میں بس تاکہ مزے سے میری صفت صلاح کرو ۔میری پیشانی پر دہول پڑے تیری اور تیرے دیدار سے آنکھوں کو کہو پاکیزگی نصیب (1) اے خدا تو سکون ہے تو خوشی ہے تیرا کلام انوکھے لطف سے بھرا ہواہے ۔ جسنے اے نانک۔ کلام مرشد تھام لیا اپنے دامن اسکے دلمیں عاجزناہ محبت و عشق الہٰی بس گیا۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
اپنیِ اُکتِ کھلاۄےَبھوجناپنیِاُکتِکھیلاۄےَ ॥
سرب سوُکھ بھوگ رس دیۄےَمنہیِنالِسماۄےَ॥੧॥
ہمرے پِتا گوپال دئِیال ॥
جِءُ راکھےَ مہتاریِ بارِک کءُ تیَسے ہیِ پ٘ربھپال॥੧॥ رہاءُ ॥
میِت ساجن سرب گُنھ نائِک سدا سلامتِ دیۄا॥
ایِت اوُت جت کت تت تُم ہیِ مِلےَ نانک سنّت سیۄا॥੨॥੮॥੩੯॥
لفظی معنی:
اکت۔ طریقہ ۔ ڈھنگ۔ کھلاوے ۔ کھلاتا ہے ۔ سب سارے ۔ بھوگ رس لذیز نعمتیں۔ من ہی نال سماوے ۔ ہمارے دل کے ساتھ موجود رہتا ہے ۔ (1) مہتاوی ۔ ماں۔ بارک بچے ۔ تیے ۔ اسی طرح ۔ رہاؤ۔ سرب گن نانک۔ سارے اوصاف والا رہنما۔ سدا سلامت۔ ہمیشہ زندہ رہنے والا۔ دیوا۔ فرشتہ۔ ایتے اوت۔ یہاں وہاں۔ جت ۔ کت ۔ تت۔ جہاں ۔کہیں۔وہاں۔ سنت سیوا۔ روحانہ رہنمائی کی خدمت سے ۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے ہمارے والد پتا پروردگار رحمان الرحیم جیسے ماں اپنے بچے کی پرورش کرتی ہے ویسے ہی خدا پرورش کرتا ہے ۔ رہاؤ۔ خدا پانے ڈھنگ طریقوں سے کھانے کھلاتا ہے ۔ کھیلاتا ہے ہر طرح کی آرام و آسائ اور پر لطف لذیز نعمتیں عنایت کرتا ہے اور ہر وقت ساتھ موجود رہتا ہے (1) ہر قسم کے اوصاف والا رہنما صدیوی زندہ موجود ہے ہر جگہ جہاں کہاں وہیں موجو اے نانک خدمت روحانی رہنما (سنت) مرشد سے ملتا ہے ۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
سنّت ک٘رِپالدئِیالدمودرکامک٘رودھبِکھُجارے॥
راجُ مالُ جوبنُ تنُ جیِئرا اِن اوُپرِ لےَ بارے ॥੧॥
منِ تنِ رام نام ہِتکارے ॥
سوُکھ سہج آننّد منّگل سہِت بھۄنِدھِپارِاُتارے॥ رہاءُ ॥
دھنّنِ سُ تھانُ دھنّنِ اوءِ بھۄناجامہِسنّتبسارے॥
جن نانک کیِ سردھا پوُرہُ ٹھاکُر بھگت تیرے نمسکارے ॥੨॥੯॥੪੦॥
لفظی معنی:
سنت۔ خدا رسیدہ روحانی رہنما۔ کرپال دیال۔ رحمان الرحیم ۔ دمودر۔ کرشن۔ کام کرودھ ۔ شہوت اور غسہ ۔وکھ ۔ زہر۔ جارے ۔ جلائے (1) راج ۔ حکومت۔ ۔ مال۔ زر سرمایہ ۔ جوبن۔ جوانی ۔ تن ۔ جسم مارے وارے ۔ قربان کرے (1) ۔ من تن ۔ دلو جان سے ۔ رام نام۔ الہٰی نام۔ بتکارے ۔ پیار کے ۔ سوکھ سہج ۔ روحانی یا ذہنی سکون کا آرام انند۔ سنگل۔ سکون بھری خویش۔ سہت ۔ساتھ ۔ بھوندھ ۔ خوفناک زندگی کا دریا ۔ رہاؤ۔ دھ۔ مبارک۔ بھونا۔ بھون۔ مکان۔ سردھا۔ خواہش ۔ نمسکارے ۔ سجدہ ۔ سرجھکانا۔
ترجمہ معہ تشریح:
جن کے دل میں الہٰی نام سچ حق وحقیقت سے محبت ہے وہ آرام و آسائش روحانی و ژہنی سکون اور خوشیوں بھرے ماحول میں اس خوفناک زندی جو ایک سمندر کی مانند ہے عبور کر دیتے ہیں ۔ رہاؤ۔ روحانی واخلاقی رہنما سنت خادم خدا جو رحمان الرحیم جنہوں نے شہوت اور غصہ مٹادیا ہوتا ہے ۔ ایسے روحانی رہنماوں مراد سنتوں ولی اللہ پر حکموت سرمایہ جوانی اور دل و جان قربان کر دینی چاہیے ۔ (1) اے خدا خآدم نانک کی یہ خواہش پوری کیجیئے کہ تیرے عاشقوں پرمییوں کو سجدہ و سر جھکاتا رہوں۔ وہ جگہ وہ مقام خوش نصیب ہے جن میں خدا رسیدہ روحانی رہنما ولیان خدا بستے ہیں۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
چھڈاءِ لیِئو مہا بلیِ تے اپنے چرن پراتِ ॥
ایکُ نامُ دیِئو من منّتا بِنسِ ن کتہوُ جاتِ ॥੧॥
ستِگُرِ پوُرےَ کیِنیِ داتِ ॥
ہرِ ہرِ نامُ دیِئو کیِرتن کءُ بھئیِ ہماریِ گاتِ ॥ رہاءُ ॥
انّگیِکارُ کیِئو پ٘ربھِاپُنےَبھگتنکیِراکھیِپاتِ॥
نانک چرن گہے پ٘ربھاپنےسُکھُپائِئودِنراتِ ॥੨॥੧੦॥੪੧॥
لفظی معنی:
مہابلی ۔ بھاری طاقت والے ۔ اپنے چرن پرات ۔ اپنے پاؤں پڑکر ۔ نام ۔ الہٰی نام۔ سچ حق و حقیقت ۔ منتا۔ منتر۔ واعظ ۔ پندونصیحت ۔ ونس۔ مٹا ۔ کتہو ۔کہیں۔ جات۔ حاتا۔ دات۔ بخشش۔ گات۔ بلند ذہنی و روحانی حالت۔ رہاؤ۔ انگیکار۔ ساتھی ۔ بنائیا۔ منظور کیا۔ پات۔ عزت۔ چرن گہے ۔پاوں پکڑے ۔
ترجمہ معہ تشریح:
سچے کامل مرشد نے کرم وعنیات فرمائی بخشش کی الہٰی نام سچ حق وحقیقت برائے صفت صلاح عنیات کیا جس سے روحانی وزہنی بلند حالات زندگی حاصلہوئے ۔رہاؤ۔ اپنے پاؤں کا گرویدہ کرکے بلند طاقتی دنیاوی دولت سے بجائیا ۔ واحد نام کا منتر یعنی سچ حق وحقیقت اپنانے کی واعظ و نصیحت فرمائی جو کبھی ضائع نہیں ہوتا۔ ہرآو۔ خدا ہمیشہ اپنے عاشقوں و پریمیوں کو ساتھ دیتا ہے ۔اور عزت بچاتاہے ۔ اے نانک۔ جس نے خدا کو اپنا وت اسرا اورپناہ لی روز و شب روحانی و زہنی سکون اور آرام و آسائش پائی ۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
پر ہرنا لوبھُ جھوُٹھ نِنّد اِۄہیِکرتگُداریِ॥
م٘رِگت٘رِسناآسمِتھِیامیِٹھیِاِہٹیکمنہِسادھاریِ॥੧॥
ساکت کیِ آۄرداجاءِب٘رِتھاریِ॥
جیَسے کاگد کے بھار موُسا ٹوُکِ گۄاۄتکامِنہیِگاۄاریِ॥ رہاءُ ॥
کرِ کِرپا پارب٘رہمسُیامیِاِہبنّدھنچھُٹکاریِ॥
بوُڈت انّدھ نانک پ٘ربھکاڈھتسادھجناسنّگاریِ॥੨॥੧੧॥੪੨॥
لفظی معنی:
پرہرنا۔ دوسروں کی چوری۔ لوبھ ۔لالچ۔ نند۔ بدگوئی ۔ گداری ۔ گذاری۔ میرگ ترشنا۔ سراب ۔ آس۔ اُمید ۔ متھیا۔ جھوتی ۔ ٹیک۔ آسرا۔ منہہ سادھاری ۔ دل کا آسرا و سہارا بنائیا (1) ساکت ۔ مادہ پرست۔ اود۔ عمر۔ برتھاری ۔ بیکار۔ کاگد ۔ کاغذ۔ موسا۔ چوہا۔ توک گواوت۔ کتر کتر ضائع کر دیتا ہے ۔ رہاؤ۔ بندھن۔ غلامی ۔ چھٹکاری ۔ نجات دینا۔ آزادی ۔ بوڈت۔ دوبے کا ڈھت ۔لکالتا ہے ۔ سادھ جتا۔ ان خادمان خدا کو جنہوں نے طرز زندگی درست کرلی ۔
ترجمہ معہ تشریح:
مادہ پرست منکر کی عمر بیکار ضائع ہو جاتی ہے ۔ جیسے کاغذوں کے انبار چوہا کتر کر ضائع کر دیتا ہے ۔ مگر وہ انبار اسکے کام نہیں آتے ۔ رہاو۔ دوسروں کا سرامیہ چرانا لٹنا لالچ جھوٹ بدگوئی کرنے میں زندگی ضائع کر دی گذاردی ۔ جیسے سراب اور جھوٹی اُمیدیں باندھنا اسکے دل کو اچھا لگتا ہے اور اپنے دل کا سہار ا بناتا ہے (1) خدا خود ہی اپنی کرم وعنایت سے ایسی غلامیوں سے آزاد کرتا ہے ۔ اے نانک۔ ایسے اندھے کو ڈوبتے ہوئے کو صحبت و قربت پاکدامنوں سے بچاتا ہے خود ہی ۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
سِمرِ سِمرِ سُیامیِ پ٘ربھُ اپنا سیِتل تنُ منُ چھاتیِ ॥
روُپ رنّگ سوُکھ دھنُ جیِء کا پارب٘رہممورےَجاتیِ॥੧॥
رسنا رام رسائِنِ ماتیِ ॥
رنّگ رنّگیِ رام اپنے کےَ چرن کمل نِدھِ تھاتیِ ॥ رہاءُ ॥
جِس کا سا تِن ہیِ رکھِ لیِیا پوُرن پ٘ربھکیِبھاتیِ॥
میلِ لیِئو آپے سُکھداتےَ نانک ہرِ راکھیِ پاتیِ ॥੨॥੧੨॥੪੩॥
لفظی معنی:
سیتل ۔ ٹھنڈا۔ چھانی ۔ دل ۔ روپ ۔ شکل۔ صورت۔ دھن۔ سرمایہ۔ جیئہ کا ۔ زندگی کے واسطے (1) رسنا۔ زبان۔ مانی ۔ محو۔ چرن کمل۔ پائے پاک۔ ندھ۔ خزانہ ۔ تھائی۔ اکھٹا کیا ۔ رہاؤ۔ بھاتی طریقہ ۔ سکھداتے ۔ آرام و آسائش عنایت کرنے والے ۔ پائی ۔ عزت۔
ترجمہ معہ تشریح:
جس انسان کی زبان الہٰی نام کی نعمت مین محؤ ومجذوب ہے اور الہٰی عشق و محبت سے متاثر ہوگئی ہے اس نے الہٰی یادوریاض کا خزناہ پا لیا ۔ رہاؤ۔ الہٰی یادوریاض سے دل کو سکنو اور ٹحنڈک محصوس ہوتی ہے ۔ میرے لئے الہٰی نام ہی شکل و صورت سرمایہ اور خدا ہی میری ذات و خاندان ہے (1) خدا انسان کو اچھے بلند اور کامل طریقوں سے بچاتا ہے جو اسکے ہوجاتے ہیں۔ اسے بچاتا ہے ۔ اے نانک۔ خدا اسے خدا اپنا ملاپ ہمیشہ خود بخشش کرتا ے ۔ اور عزت بجاتا ہے ۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
دوُت دُسمن سبھِ تُجھ تے نِۄرہِپ٘رگٹپ٘رتاپُتُمارا॥
جو جو تیرے بھگت دُکھاۓاوہُتتکالتُممارا॥੧॥
نِرکھءُ تُمریِ اورِ ہرِ نیِت ॥
مُرارِ سہاءِ ہوہُ داس کءُ کرُ گہِ اُدھرہُ میِت ॥ رہاءُ ॥
سُنھیِ بینتیِ ٹھاکُرِ میرےَ کھسمانا کرِ آپِ ॥
نانک اند بھۓدُکھبھاگےسداسدا ہرِ جاپِ ॥੨॥੧੩॥੪੪॥
لفظی معنی:
دوت۔ بدروح ۔ جن ۔ دشمن ۔ توریہہ۔ ختم کئے ۔ پرتاپل۔ توفیق ۔ برکت۔ عنایت۔ دکھاوے ۔ ایزا رسائی کی ۔ اشکال ۔ فورا۔ مارا۔ ختم کئے (1) نرکھؤ۔ دھیان ۔ توجو۔ تمری اور تمہارے طرف۔ ہرتیت۔ ہر روز خدا مراد ۔ خدا ۔ سہائی۔ مددگار۔ داس۔ خدمتگار ۔ خادام گر ۔ ہاتھ ۔ گیہہ۔ پکڑ ۔ ادھرے ۔ بچاتا ہے ۔ میت ۔ دوست۔ رہاؤ۔ خصمانہ ۔ مالکانہ ۔مالکوں کا فرض ۔ عاقت ۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے خدا میں ہر وقت تیری اماد کی تاک میں دھیان لگاتا ہوں اے خدا مدد گار بن اے دوست ہاتھ پکڑ کر بچاؤ۔ رہاؤ ۔ اے خدا تیری کرم وعنایت بخشش و رحمت سے تمام بد روحیں جن اور دشمن دور ہو جاتے ہیں۔ یہ تمہارے ظاہر برکت و توفیق و وقار ہے جسے بھی تیرے خادم عاشق پیار کو کوئی ایذا رسانی کی تو نے مٹائیا (1) اے نانک۔ انسان زاد کا مالک خدا مالکانہ فرائض ادا کرتے ہوئے میری گذارش سنی خود۔ سکون حاصل ہوا دکھ درد عذاب مٹے الہٰی نام سچ حق اورحقیقت کی یادوریاض سے ۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
چتُر دِسا کیِنو بلُ اپنا سِر اوُپرِ کرُ دھارِئو ॥
ک٘رِپاکٹاکھ٘ز٘زاۄلوکنُکیِنوداسکادوُکھُبِدارِئو॥੧॥
ہرِ جن راکھے گُر گوۄِنّد॥
کنّٹھِ لاءِ اۄگُنھسبھِمیٹےدئِیالپُرکھبکھسنّد॥ رہاءُ ॥
جو ماگہِ ٹھاکُر اپُنے تے سوئیِ سوئیِ دیۄےَ॥
نانک داسُ مُکھ تے جو بولےَ ایِہا اوُہا سچُ ہوۄےَ॥੨॥੧੪॥੪੫॥
لفظی معنی:
چتروسا۔ چاروں طرف۔ ہرجا۔ بل۔ قوت۔ طاقت۔ کر ۔ ہاتھ ۔ دھاریؤ۔ رکھا۔ کٹاکھ ۔ نگاہ۔ نظر عنایت ۔ نگاہ شفقت۔ بداریوں۔ دور کیا۔ مٹائیا (1) ہر جن۔ خدمتگار خدا۔ ۔ راکھے ۔ حافظت کی ۔ گر گوبند ۔مالک ۔ زمین ۔ عالم ۔ گنٹھ ۔ گلے ۔ اوگن۔ بداوصاف ۔ برائیاں۔ دیال پرکھ ۔ رحمان الرحیم ۔ بخسند۔ بخشنے والا۔ رہاؤ۔ مانگیہہ۔ مانگتے ہیں ۔ انہان ۔ اوہاں۔ یہاں اور ہاں ۔ ہر دو اعالموں میں ۔دونوں جہانوں میں۔ داس۔ خادم۔ مکھ ۔ زبان۔ سچ ۔ صدیوی سچ۔
ترجمہ معہ تشریح:
خدا اپنے پریمیوں پیاروں و خدمتگارو کا محافظ ہے اپنے گلے لگاتا ہے برائیاں بداوصاف مٹاتاہے رحمان الرحیم ہے ۔ رہاؤ۔ چاروں طرف سارے عالم کو اپنے تابع توفیق وقوت رکھ کر اپنے ہاتھ میں رکھا ہوا ہے اور اپنے خدمتگاروں پر اپنی نظر عنیات و شفقت رکھتا ہے ار عذاب مصیبتوں سے بچاتا ہے ۔ (1) خادمان خدا خدا سے جو مانگتے ہیں۔ وہی انہیں دیتا ہے ۔ مہیا کرتا ہے ۔ اے نانک۔ خامان خدا زبان سے جوکلمہ نکلاتے ہیں بلوتے ہیں وہ ہر دو عالموںمیں سچ اور صدیوی ہوتا ہے ۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
ائُکھیِ گھڑیِ ن دیکھنھ دیئیِ اپنا بِردُ سمالے ॥
ہاتھ دےءِ راکھےَ اپنے کءُ ساسِ ساسِ پ٘رتِپالے॥੧॥
پ٘ربھسِءُلاگِرہِئومیراچیِتُ॥
آدِ انّتِ پ٘ربھُسداسہائیِدھنّنُہمارامیِتُ॥ رہاءُ ॥
منِ بِلاس بھۓساہِبکےاچرجدیکھِبڈائیِ॥
ہرِ سِمرِ سِمرِ آند کرِ نانک پ٘ربھِپوُرنپیَجرکھائیِ॥੨॥੧੫॥੪੬॥
لفظی معنی:
روکھی گھڑی ۔ مصیبت کاوقت۔ پردھ ۔ شروعاتی عادت۔ سماے ۔ یاد رکھتا ہے ۔ پرتپالے ۔ پرورش کرتا ہے (1) چیت۔ دل ۔ آد۔ آغاز۔ انت۔ آخر۔ سہائی ۔مددگار ۔ میت۔ دوست۔ رہاؤ۔ بلاس۔ خوشیاں۔ اچرج۔ چیران کن۔ وڈائی۔ بلند عظمت۔ پورن۔مکمل ۔ پیج ۔ عزت۔
ترجمہ معہ تشریح:
مجھے خدا سے محبت ہوگئی ہے ۔ جو آغازاول اور آخر میرا مددگار ہے ۔ ہمارا ایسا دوست قابل ستائش ہے ۔ رہاؤ ۔ خدا اپنا قدیمی سبھاؤ یا عادت ہمیشہ یاد رکھتا ہے اور اپنے خدمتگاروں کی اپنے ہاتھوں سے امداد حفاظت کرتا ہے اور ہر دم ہر سانس پرورش کرتا ہے (1) خدا میرا آقا کی حیران کن عظمت و بلندی دیکھ کر دل کھلتا ہے خوشی محسوس ہوتی ہے ۔ اے نانک یاد وریاض الہٰی سے سکون حاصل کر خدا مکمل محافظ ہے عزت کا۔
.
دھناسریِ مہلا ੫॥
جِس کءُ بِسرےَ پ٘رانپتِداتاسوئیِگنہُابھاگا॥
چرن کمل جا کا منُ راگِئو امِء سروۄرپاگا॥੧॥
تیرا جنُ رام نام رنّگِ جاگا ॥
آلسُ چھیِجِ گئِیا سبھُ تن تے پ٘ریِتمسِءُمنُلاگا॥ رہاءُ ॥
جہ جہ پیکھءُ تہ نارائِنھ سگل گھٹا مہِ تاگا ॥
نام اُدکُ پیِۄتجننانکتِیاگےسبھِ انُراگا ॥੨॥੧੬॥੪੭॥
لفظی معنی:
وسرے ۔ بھول جائے ۔ پران پت۔ زندگی کا مالک ۔ داتا۔ سخی ۔ دینے والا۔ سوئی۔ ویہ ۔ تنہو۔ سمجھو۔ ابھاگا۔ بد قسمت۔ چرن کمل۔ پائے پاک۔من راگیؤ۔ دلمیں محبت پریم پیار ہوگیا۔ امیو سرؤدر ۔ اب حیات کا تالات ۔ پاگا۔ پالیا (1) جن ۔ خدمتگار ۔ رنگ۔ پریم ۔ جاگا۔ بیدار۔ اس ۔ ستی۔ کاہل۔ چھج۔ گیا۔ ختم ہوئی ۔ پریتم۔ پیارے ۔ من لاگا۔ دلمیں لگاؤ۔ رشتہ بن گیا۔ رہاؤ۔ طیبہ پیکھؤ۔ جہاں جہاں دیکھتا ہوں۔ نظر دوڑاتا ہوں۔ سگل گھٹا۔سب دلوں میں۔ تاگا۔ لڑاگی کی مانند۔ نام ادک ۔۔سچ حق و حقیقت کا آب ۔ تیاگے ۔ چھوڑے ۔ سب الزاگا ۔ ساری محبت پیار۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے خدا تیرا خدمتگار تیری محبت پریم پیار سے پیدا ہوگیا ہے کامل سستی ختم ہوگئی ہے تن بدن سے اور پریتم پیارے سے رشتہ ناطہ بن گیا ہے ۔ رہاؤ۔ اسے بد قسمت سمجھو جس نے اپنی زندگی کے الک خدا بھلا دیا جو خدمت خڈا کا پیار اہوگیا اس نے روحانی واخلاقی زندگی بخشنے والے آبحیات کا چشمہ پالیا (1) جدھر جدھر جاتی ہے نظر ہر دلمیں بستا ہے خدا دیتا ہے دکھائی ۔ اے نانک۔ خادمان خدا الہٰی نام سچ حق وحقیقت کا آب حیات نوش کرتے ہی دوسرے محبت پیار ترک کردیتے ہیں۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
جن کے پوُرن ہوۓکام॥
کلیِ کال مہا بِکھِیا مہِ لجا راکھیِ رام ॥੧॥ رہاءُ ॥
سِمرِ سِمرِ سُیامیِ پ٘ربھُاپُنانِکٹِنآۄےَجام॥
مُکتِ بیَکُنّٹھ سادھ کیِ سنّگتِ جن پائِئو ہرِ کا دھام ॥੧॥
چرن کمل ہرِ جن کیِ تھاتیِ کوٹِ سوُکھ بِس٘رام॥
گوبِنّدُ دمودر سِمرءُ دِن ریَنِ نانک سد کُربان ॥੨॥੧੭॥੪੮॥
لفظی معنی:
کلی کال۔ کلجگ کے دور میں۔ مہاوکھیا۔ بھاری زہریلے ۔ لجا ۔ عزت۔ آبرو (1) نکت۔ نزدیک۔ جام۔ جم۔ فرشتہ موت۔ مکت۔ نجات۔ آزادی۔ بیکھنٹھ۔ جنت۔ بہشت۔ سورگ۔ سادھ کی سنگت۔ صحبت و قربت پاکدامناں ۔ جنہوں نے طرز زندگی کو درست بنا رکھا ہے الہٰی رسائی حاصل کر لی ہے ۔ وھام ۔ جائے رہائش ۔ ٹھکانہ (1) چرن کمل۔ پائے پاک۔ تھاتی ۔ اصرا ۔ کوٹ۔ کروڑوں ۔ بسرام۔ آرام۔ صدقربان ۔ سوبار قربان۔
ترجمہ معہ تشریح:
خادم خدا کے تمام کام کامیاب ہوتے ہیں اس تذبذب اور گمراہوں بھرے دور زماں میں دنیاوی زہریلی مادیات خدا ہی محافط عزت ہے ۔ رہاؤ۔ الہٰی یادوریاض سے فرشتہ موت نزدیک نہیں پھتکتا ۔ صحبت و قربت پاکدامن ہی نجات کا ذریعہ جنت و عیشت اور اسی سے الہٰی جائے رہائش و ٹھکانہ ہے (1) پائے الہٰی خادم خداکے لئے دولت کا تھیلا ہے ۔اسی سے کروڑوں آرام وآسائش کا احساس پاتاہے ۔ اے نانک۔ خدا کو روز و شب یا د کرؤ قربان ہوں اس پر ۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
ماںگءُ رام تے اِکُ دانُ ॥
سگل منورتھ پوُرن ہوۄہِ سِمرءُ تُمرا نامُ ॥੧॥ رہاءُ ॥
چرن تُم٘ہ٘ہارےہِردےَۄاسہِسنّتنکاسنّگُپاۄءُ॥
سوگ اگنِ مہِ منُ ن ۄِیاپےَ آٹھ پہر گُنھ گاۄءُ॥੧॥
س٘ۄستِبِۄستھاہرِکیِسیۄامدھ٘ز٘زنّتپ٘ربھجاپنھ॥
نانک رنّگُ لگا پرمیسر باہُڑِ جنم ن چھاپنھ ॥੨॥੧੮॥੪੯॥
لفظی معنی:
سگل منورتھ ۔ تمام مقصد ۔ خواہشات۔ مرادیں۔ سمرؤ۔ یاد کرنا۔ نام۔ سچ حق و حقیقت ۔ دان ۔ بھیک۔ رہاؤ۔ ہروے ۔ دلمیں ۔ سنتن کاسنگ۔ خدا رسیدہ پاکدامن ۔ روحانی واخلاقی رہنماؤں کی صحبت و قربت ۔ سوگ۔ افسوس۔ غمگینی ۔ دیاپے ۔ رہے ۔ بسے (1) سوست۔ پر سکون۔ پوستھا۔ حالت۔ مندھت۔ درمیانی عمر ۔ عمر اور بڑھاپا۔ رنگ ۔ پریم۔ پیار۔ بہوڑ۔ دوبار ۔ چھاپن۔ موت۔
ترجمہ معہ تشریح:
خدا سے ایک بھیک مانگتا ہوں خیران چاہتا ہوں تیرے نام سچ حق وحقیقت کو یاد کرتا رہوں جس کی برکت سے تمام مقصد حل ہوتے ہیں اور مرادیں پوری ہوتی ہیں۔ رہاؤ۔ تیری یاد میرے دل میں بستی رہے اور روز و شب تیری صفت صلاح اور حمدوثناہ کرتا رہون تاکہ غمگینی اور افسوس کی آگ دل میں نہ بسے (1) اے نانک۔ الہٰی خدمت اوردرمیانی عمر اور بڑھاپے می الہٰی حمدوچناہ سے زندگی پر سکون ہوجاتی ہے الہٰی محبت سے تناسخ میں نیہں پڑنا پڑتا ۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
ماںگءُ رام تے سبھِ تھوک ॥
مانُکھ کءُ جاچت س٘رمُپائیِئےَ پ٘ربھکےَسِمرنِموکھ॥੧॥ رہاءُ ॥
گھوکھے مُنِ جن سِنّم٘رِتِپُراناںبیدپُکارہِ گھوکھ ॥
ک٘رِپاسِنّدھُسیۄِسچُپائیِئےَدوۄےَسُہیلےلوک॥੧॥
آن اچار بِئُہار ہےَ جیتے بِنُ ہرِ سِمرن پھوک ॥
نانک جنم مرنھ بھےَ کاٹے مِلِ سادھوُ بِنسے سوک ॥੨॥੧੯॥੫੦॥
لفظی معنی:
تھوک۔ تمام اشیا ۔ حاجت۔ مانگے سے ۔ سرم۔ محبت ۔ مشقت۔ موکھ ۔ نجات۔ آزادی۔ رہاؤ۔ گھوکھے ۔ پڑتال۔ ملاحظہ ۔ پکارلہہ۔ پکارتے ہیں۔ گھوکھ ۔ غور وحوض اور ملاحظہ کرنے کے بعد۔ کرپا سندھ۔ رحمان الرحیم۔ مہربانیوں کا سمندر۔ سیو سچ پاییئے ۔ خدمت سے سچ حق وحقیقت واصلیت حاصل ہوتی ہے ۔ دویو سہیلے لوک ۔ ہر دو علاموں میں زندگی آسان ہوجاتی ہے (1) آن آچار ۔ بیوہار۔ اعمال اور کاروبار۔ پھوک۔ بیکار۔ سوک۔ غم۔
ترجمہ معہ تشریح:
خدا سے تمام نعمتیں مانگو انسان سے مانگنے پر صرف محنت و مشقت ہی حاصل ہوتی ہے مگر الہٰی حمدوثناہ سے ان دنیاوی دولت کی غلامیوں سے نجات حاصل ہوتی ہے (1) رہاؤ۔ رشیوں منیو کی تحریر کردہ سمرتیاں اورپران بغور ملاحطہ کرکے دیکھے ہی۔ اور ویدوں کا ملاحطہ کیا وہ بتاتے ہیں کہ رحمان الرحیم خداوند کریم کی خدمت حمدوثناہ سے ہی اسکا صدیوی نام سچ حق و حقیقت وآصلیت حاصل ہوتی ہے ۔ (1) الہٰی یادوریاض حمدوثناہ کے بگیر جتنے مذہبی اعمال رسم وراج سب بیفائہ اور فضول ہیں۔ اے نانک۔ پاکدامن خدا رسیدہ کے ملاپ سے موت کا خوف مٹ جاتا ہے اور ہر قسم کی غمگینی مٹ جاتی ہے

دھناسریِ مہلا ੫॥
ت٘رِسنابُجھےَہرِکےَنامِ॥
مہا سنّتوکھُ ہوۄےَگُربچنیِ پ٘ربھسِءُلاگےَپوُرندھِیانُ॥੧॥ رہاءُ ॥
مہا کلول بُجھہِ مائِیا کے کرِ کِرپا میرے دیِن دئِیال ॥
اپنھا نامُ دیہِ جپِ جیِۄاپوُرنہوءِداسکیِگھال॥੧॥
سرب منورتھ راج سوُکھ رس سد کھُسیِیا کیِرتنُ جپِ نام ॥
جِس کےَ کرمِ لِکھِیا دھُرِ کرتےَ نانک جن کے پوُرن کام ॥੨॥੨੦॥੫੧॥
لفظی معنی:
ترسنا۔ پیاس۔ ہر کے نام۔ سچ حق وحقیقت و اصلیت ۔ سمجھنے اور اس پر عمل کرنے سے ۔مہاسنتوکھ ۔ بھاری صبر ۔ گربجنی ۔کلام مرشدس ے ۔ پورن دھیان ۔ مکمل توجہی ۔ رہاؤ۔ کالول۔کھیل تماشے ۔ بجھیہ۔ ختم ہوں۔ گھال۔ محنت و مشقت (1) سرب منورتھ ۔ سارے مقصد ۔ مرعے ۔ کیرتن ۔ الہٰی حمدوثناہ صفت صلاح۔ کرم۔ قسمت۔ مقدر ۔ دھر کرتے ۔ الہٰی حجور کی طرف سے ۔
ترجمہ معہ تشریح:
الہٰی نام سچ حق حقیقت واصلیت سے خواہشات کی تکمیل کی پیاس ختم ہویت ہے ۔ انسا صابر ہوجاتا ہے اور خدا میں دھیان اور توجہ ہونے لگتی ہے ۔ رہاؤ۔ اے غریب نواز غریب پرور کرم وعنایت فرماتاکہ دنیاوی دولت کے رنگ کھیل تماشے خادم پر اچر انداز نہ ہوں۔ اپنا تاثر نہ ڈال سکیں اور اپنا نام سچ حق حقیقت واصلیت عنایت فرماتا کہ اسکی یادویراض سے اسکی محنت و مشقت براور اورپایہ تکمیل تک پہنچ سکے (1) الہٰی نام سچ حق وحقیقت کی یادوریاض سے سارے مدعے و مقصد حکمرای کے آرام و مزے اور بیشما رخوشیاں الہٰی حمدوثناہ سے حاصل ہو تی ہیں۔ اے نانک۔ جن کے مقدد رمیں خڈا نے خؤد تحریر کیا ہوتا ہے اسکے تمام کام خادم خدا کی پایہ تکمیل کو پہنتےہیں۔

دھناسریِ مਃ੫॥
جن کیِ کیِنیِ پارب٘رہمِسار॥
نِنّدک ٹِکنُ ن پاۄنِموُلےاوُڈِگۓبیکار॥੧॥ رہاءُ ॥
جہ جہ دیکھءُ تہ تہ سُیامیِ کوءِ ن پہُچنہار ॥
جو جو کرےَ اۄگِیاجنکیِہوءِگئِیاتتچھار॥੧॥
کرنہارُ رکھۄالاہویاجاکاانّتُنپاراۄار॥
نانک داس رکھے پ٘ربھِاپُنےَنِنّدککاڈھےمارِ॥੨॥੨੧॥੫੨॥
دھناسریِ مہلا ੫ گھرُ ੯ پڑتال
لفظی معنی:
سار۔ خیز گیری ۔ سنبھال۔ نندک۔ بدگوئی ۔ برائی کرنے والے ۔ ٹکن نہ پاون ۔ برابری نہ کر سکیں۔ سکون حاصل نہ کر سکیں۔ مولے ۔ بالکل۔ اوڈگئے بیکار نا قابل ۔ نکھے ۔ بیفائدہ ۔ سمجھے جا کر چلے گئے ۔ رہاو۔ جیہ جیہ ۔ جہاں جہاں۔ پہنچنہار۔ برابر ی کرنے والا۔ اوگیا۔ بے عزتی۔ چھار۔ راکھ ۔ تت۔ فورا۔ کرنہار۔ پیدا کرنے والا۔ رکھوالا ۔ محافظ ۔ پارادار۔ لامحدود۔ داس۔ غلام۔ خدمتگار۔
ترجمہ معہ تشریح:
کامیابیاں عنایت کرنے والا خدا اپنے خدمتگاروں کی خبر گیری کرتا ہے ۔ سبنبھال کرتا ہے ۔ بدگوئی کرنے والے کو سکنو پانے نہیں دیتا وہ بیکار بیفائدہ چلے جاتے ہیں۔ اس عالم سے ۔ رہاؤ۔ جہاں جہاں جدھ جدھر نظرجاتی ہے جس خدا تک کس کو رسائی حآصلنہیں ہر جگہ ہے موجو د خدا۔جو کوئی خادم خدا کی بے عزتی کرتا ہے مٹی میں ملجاتا ہے (1) کرنے والا کرتار محافظ ہو جس کا جس کے اول و آخرت کا نہیں کنار اکوئی ۔ اے نانک خدا خود محافظ ہے اسکا اور بدگوئی رنے والا روحانی اخلاقی موت مرجاتا ہے ۔

ستِگُر پ٘رسادِ॥
ہرِ چرن سرن گوبِنّد دُکھ بھنّجنا داس اپُنے کءُ نامُ دیۄہُ॥
د٘رِسٹِپ٘ربھدھارہُک٘رِپاکرِتارہُبھُجاگہِکوُپتےکاڈھِلیۄہُ॥ رہاءُ ॥
کام ک٘رودھکرِانّدھمائِیاکےبنّدھانِکدوکھاتنِچھادِپوُرے॥
پ٘ربھبِناآننراکھنہارانامُسِمراۄہُسرنِسوُرے॥੧॥
پتِت اُدھارنھا جیِء جنّت تارنھا بید اُچار نہیِ انّتُ پائِئو ॥
گُنھہ سُکھ ساگرا ب٘رہم رتناگرا بھگتِ ۄچھلُنانکگائِئو॥੨॥੧॥੫੩॥
لفظی معنی:
دکھ بھنجنا۔ عذاب مٹانے والا۔ درسٹ۔ نگاہ شفقت۔ دھارہو۔ کرو۔ تارہو۔ کامیاب ناو ۔ بھجا گیہہ۔ بازورپکڑ کر ۔ کوپ۔ کوآں۔ رہاؤکام۔ شہوت۔ کرودھ ۔ غسہ۔ اندھ مائیا کے بندھ۔ دولت کی بندشیں۔ غلامی۔ انک ۔ بیشمار۔ دوکھا ۔ عذآب ۔ دوش۔گناہ۔تن۔جسم۔ ۔ چھید۔ تاثر۔ یا آثر۔ ان۔ دیگر۔ رکھنہار۔ محافظ ۔ سرن سورے ۔ بہادر کی پناہ (1) پتت۔ بد اخلاق ۔ گناہگار ۔ ادھارنا۔ بچانا۔ جیئہ جنت۔ مخلوقات دید اچار۔ دید پڑھنے والے ۔ انت۔ اخر۔ انجام۔ گنیہہ سکھ ساگر۔ اوصاف و اڑام کے سمندر۔ رتنا گرا۔ قیمتی تنوں یا ہیروں کی کان ۔ بھگت وچھل۔ الہٰی پرمیوں کے پیارے ۔ گائیو ۔ صفت صلاح کرؤ۔
ترجمہ معہ تشریح:
اپنے زیر سایہ زیر پناہ رہنے والے کا عذآب مٹانے والے خدا اپنے کدمتگار خادم کو اپنا نام سچ حق وحقیقت عنایر کر ۔ اے خڈا نگاہ شفقت کیجیئے اور کرم و عنایت سے کامیابی بخشیئے اور ببازور پکڑ کر دنیاوی محبت کے کوئیں سے کاڈھ لیجیئے ۔ رہاؤ۔ اے شہوت اور غصہ میں نا سمجھ اندھے انسان دنیاوی دولت کی غلامی میں گرفتار انسان بیشمار گناہوں نے اس جسم پر اپنا تاثر قائم کر رکھا ہے مگر خدا کے بغیر کوئی محافظ نہیں الہٰی نام کی یادوریاض کراؤ اور بہادروں والی عزت پناہ میں آنے والے کی بچاؤ (1) اے بدکاروں بد اخلاقوں گناہگاروں کو بچانے والے اور سب مخلوقاقت کو کامیابی بخشنے والے ۔ وید پڑھنے والے بھی تیری اخرو انتہا کو سمجھ ہیں سکے اے نانک۔ اوصاف و آرام و آسائش کا سمندر اور قیمتی ہیروں کی کان اپنے پیاروں کے پیارے تیری صفت صلاح کیجیئے ۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
ہلتِ سُکھُ پلتِ سُکھُ نِت سُکھُ سِمرنو نامُ گوبِنّد کا سدا لیِجےَ ॥
مِٹہِ کمانھے پاپ چِرانھے سادھسنّگتِ مِلِ مُیا جیِجےَ ॥੧॥ رہاءُ ॥
راج جوبن بِسرنّت ہرِ مائِیا مہا دُکھُ ایہُ مہاںت کہےَ ॥
آس پِیاس رمنھ ہرِ کیِرتن ایہُ پدارتھُ بھاگۄنّتُلہےَ॥੧॥
سرنھِ سمرتھ اکتھ اگوچرا پتِت اُدھارنھ نامُ تیرا ॥
انّترجامیِ نانک کے سُیامیِ سربت پوُرن ٹھاکُرُ میرا ॥੨॥੨॥੫੪॥
دھناسریِ مہلا ੫ گھرُ ੧੨
لفظی معنی:
ہلت سکھ ۔ اس جہان میں۔ پلت سکھ ۔ دوران عاقبت۔ اگلی جہان میں۔ سمر نو۔ یاد خدا سے ۔ پاپ چرانے ۔ دیرنہ کئے بد اعمال ۔ سادھ سنگت۔ صحبت و قربت پاکدامناں ۔ نیک انسانوں۔ مواجیئجے ۔ روحانی واخلاقی طور پر فوت شدہ کو دوبارہ روحانی زندگی ملتی ہے (1) رہاؤ۔ راج ۔ حکومت۔ جوبن۔ جونای کی لہریں۔ وسرنت ہر ۔ خدا کو بھلا دیتے ہیں۔ مہانت۔ بلند عظمت۔ مہادکھ ۔ بھاری عذاب۔ آس۔ امید۔ پیاس رمن ۔ خواہشت میں محو ۔ ہر کیرتن ۔ الہٰی حمدوچناہ ۔ پدارتھ ۔ نمعت۔ بھاگونت ۔ خوش قیمت (1) سرن۔ پناہ۔ سمرتھ ۔ باتوفیق ۔ اکتھ ۔ جو بیان نہ ہو سکے ۔ اگوچہ ۔ اسانی تاثرات و احساسات سے بلند و بعید۔ پتت ادھارن ۔ گناہگاروں بدا خلقوں کو راہ راست پر لانے والا درست راستے پر لگانے والا۔ نام ۔ سچ ۔۔ حق حقیقت ۔ اصلیت ۔ انتر جامی ۔ پوشیدہ راز جاننے والا۔ سر بت پورن۔ ہر جگہ مکمل طور پر بسنے والا
ترجمہ معہ تشریح:
الہٰی نام سچ حق حقیقت و اصلیت کی یادوریاض سے ہر دو عالموں میں آرام و آساشئ نصیب ہوتا ہے ۔ اسے ہمیشہ یادرکھنا چاہیے ۔ اس سے دیرنہ کئے ہوئے گناہ بدکاریاں بد اعمال مٹ جاتے ہیں اور صحبت و قربت پاکدامن پارساؤں سے مٹی ختم ہوئی روحانی واخلاقی زندگی دوبارہ نصیب ہو جاتی ہے ۔ رہاؤ۔ حکمرانی اور جوانی کی لہریں خدا کو بھلا دیتی ہیں۔ بلند عظمت بزرگون کا کہنا ہے کہ دنیاوی دولت کی محبت بھاری عذاب کا سبب بنتی ہے ۔ الہٰی نام کی یادوریاض (سے) اور اسکی خواہشت اور محویت کی نعمت کسی خوش قیمت کو ہی نصیب ہوتی ہے (1) پناہ گیر کی امداد کی توفیق رکھنے والا جا ناقبل بیان ہے جو انسانی رسائی اور بیان کی توفیق سے باہر ہے ۔ گناہگاروں بداخلاقوں کی راہ راست پر لانے والا اے خڈا تیرا نام ہے ۔ اے اندرونی راز جانے والے نانک کے آقا ہر جگہ مکمل نور پر تو بستا ہے ۔

ستِگُر پ٘رسادِ
بنّدنا ہرِ بنّدنا گُنھ گاۄہُگوپالراءِ॥ رہاءُ ॥
ۄڈےَبھاگِبھیٹےگُردیۄا॥
کوٹِ پرادھ مِٹے ہرِ سیۄا॥੧॥
چرن کمل جا کا منُ راپےَ ॥
سوگ اگنِ تِسُ جن ن بِیاپےَ ॥੨॥
ساگرُ ترِیا سادھوُ سنّگے ॥
نِربھءُ نامُ جپہُ ہرِ رنّگے ॥੩॥
پر دھن دوکھ کِچھُ پاپ ن پھیڑے ॥
جم جنّدارُ ن آۄےَنیڑے॥੪॥
ت٘رِسنااگنِپ٘ربھِآپِبُجھائیِ॥
نانک اُدھرے پ٘ربھسرنھائیِ॥੫॥੧॥੫੫॥
لفظی معنی:
بندنا۔ سر جھکانا۔ سجدہ کرنا۔ غمسکار۔ ہر بندھنا۔ اے خدا۔ نمسکار۔ گوپال۔ پروردگار عالم۔ رہاؤ۔ وڈے بھاگ۔ بلند قسمت سے ۔ گرویوا ۔ فرشتہ مرشد۔ کوٹ پرادتھ ۔ کروڑوں گناہ ۔ ہر سیوا ۔ الہٰی خدامت سے (1) راتے ۔ پریمی ہوجاتا ہے ۔ سوگ اگن ۔ افسوس یا غمگینی کی آگ۔ دیاپے ۔ بستی ۔ اپناتا ثر پیدا نہیں کرتی (2) ساگر۔ دنیاوی زندگی ایک سمندر۔ سادہوسنگے ۔ نیک پارسا۔ خدا رسیدہ پادکدامن کی صحبت کی برکت سے ۔ نربھؤ۔ بیخوف۔ نام جپہو۔ الہٰی نام کی ریاض کرؤ۔ ہر رنگے ۔ الہٰی محبت سے (3) ترسنا اگن ۔ خواہشات کی آگ ۔ ادھرے ۔ بچے ۔ پردھن ۔ دوسروں کی دؤلت ۔ سرمایہ ۔ دوکھ ۔ عذآب ۔ عیب ۔ برائی ۔ پھیڑے ۔ برائیاں۔ جم جندار۔ جاہل کوتوال ۔
ترجمہ معہ تشریح:
سلام ہے نمسکار ہے سجدہ ہے خدا کے آگےس جدہ کرؤ حمدوثناہ خدا کی۔ رہاؤ۔ بلند قیمت سے مرشد سے ملاپ کا شرف حاصل ہوا۔ الہٰی خدمت کروڑوں گناہ عافو ہو جاتے ہیں ۔ جس کے دل کو محبت الہٰی تاثر کر گئی اپنا۔ غمگینی اور اداسی اسے ستاتی نہیں آتی نہیں (2) صحبت و ساتھ پاکدامن کا دنیاوی زندگی کے سمندر کو عبور کرا دیتا ہے ۔ زندگی کامیاب بنا دیتا ہے ۔ اس لئے بیخوف یاد خڈا میں الہٰی نام کی یادوریاض کرؤ (3) اسے دوسروں کے سرمایہ کے عیب برائی اور گناہ سر زد نہیں ہوتے اور خوفناک اخلاقی و روحانی موت نزدیک نہیں آتی ۔ اے نانک۔ سایہ خدا بچاتا ہے انسان آگ خؤاہشات بجھاتا ہے خود خدا ۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
ت٘رِپتِ بھئیِ سچُ بھوجنُ کھائِیا ॥
منِ تنِ رسنا نامُ دھِیائِیا ॥੧॥
جیِۄناہرِجیِۄنا॥
جیِۄنُہرِجپِسادھسنّگِ॥੧॥ رہاءُ ॥
انِک پ٘رکاریِبست٘راوڈھاۓ॥
اندِنُ کیِرتنُ ہرِ گُن گاۓ॥੨॥
ہستیِ رتھ اسُ اسۄاریِ॥
ہرِ کا مارگُ رِدےَ نِہاریِ ॥੩॥
من تن انّترِ چرن دھِیائِیا ॥
ہرِ سُکھ نِدھان نانک داسِ پائِیا ॥੪॥੨॥੫੬॥
لفظی معنی:
تیرپت۔ روحانی یا ذہنی خواہش باقی نہ رہنا۔ ہر طرح سے مکمل سیر ہونا۔ سچ ۔ صدیوی سچ حق وحقیقت ۔ بھوجن۔ روحانی ۔ ذہنی خوراک ۔ کھائیا۔ نوش کیا۔ رسنا۔ زبان۔ دھیائیا ۔ دھیان کیا ۔ توجہ دی (1) جیونا۔ زندگی۔ ہر جپ۔ الہٰی ریاض ۔ سادھ سنگ۔ پاکدامن کی صحبت و ساتھ۔ رہاؤ۔ انک ۔ بیشمار ۔ پرکار۔ طرح ۔ قسم۔ وستر۔ کپڑے ۔ اوڈھائے ۔ پہنائے ۔ اندن ۔ ہر روز۔ کیرتن۔ حمدوثناہ ۔ ہرگن گائے ۔ صفت ۔صلاح (2) ہستی ۔ ہاھی ۔ اس ۔ اسپ۔ گھوڑا۔ مارگ۔ راستہ ۔ ردے ۔ دلمیں۔ نہاری ۔ دیکھتا ہے (3) من تن ۔ دل وجان ۔ سکھ ندھان۔ آرام و آسائش کا خزانہ ۔
ترجمہ معہ تشریح:
پاکدامن پارساوں کی صحبت میں الہٰی یاد ہی حقیقی زندگی ہے ۔ رہاؤ۔ جس نے حق سچ و حقیقت و اصلیت کو بطور ذہنی و روحانی واخلاقی خوراک و کھانا بنا کر سمجھ کر ذہن میں بسا لیا اور دل وجان سے اور زبان سے الہٰی نام حق سچ حقیقت و اصلیت میں توجہ دی دھیان لگائیا اسکی خواہشات پایہ تکمیل کو پہنچ گئیں کوئی باقی نہیں رہی (1) کئی طرح کے کپڑے پہنے لئے جس نے ہر روز الہٰی حمدوثناہ کی (2) جس نے الہٰی راہ کو دل میں بسائیا سوچا سمجھا اور اختیار کیا گویا اسے ہاتھی ۔ رتھ ۔ گھوڑے کی سواری کر لی (3) جس نے پائے الہٰی میں دھیان لگائیا ۔ سمجھو اس نے آرام و آسائش کے خزانے خدا پالیا۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
گُر کے چرن جیِء کا نِستارا ॥
سمُنّدُ ساگرُ جِنِ کھِن مہِ تارا ॥੧॥ رہاءُ ॥
کوئیِ ہویا ک٘رمرتُکوئیِتیِرتھنائِیا॥
داسیِٹ਼ ہرِ کا نامُ دھِیائِیا ॥੧॥
بنّدھن کاٹنہارُ سُیامیِ ॥
جن نانکُ سِمرےَ انّترجامیِ ॥੨॥੩॥੫੭॥
لفظی معنی:
جیئہ ۔ روح۔ زندگی۔ نستار۔ کامیابی ۔ سمند ساگر۔ سمندر۔ کھن ۔ فورا ۔ تارا۔ کامیابی ۔ رہاؤ۔ کرم رت۔ اعمال میں محو ۔ مذہبی رسومات میں محو۔ تیرتھ ۔ زیارت میں ۔ داسا۔ خادمان خدا ۔ نام دھیائیا۔ الہٰی نام ۔ سچ حق حقیقت و اصلیت میں تجہ دی (1) بندھن کا سہنار سوآمی ۔ غلامی کو مٹانے والا آقا۔ انتر جامی ۔ اندرونی راز جاننے والا۔
ترجمہ معہ تشریح:
سایہ مرشد دنیاوی زندگی کامیابی کے لئے ایک وسیلہ ہے ۔ جو زندگی کے سمندر سے پل بھر میں کامیابی سے عبور کرا دیتا ہے ۔ کامیابی بخشتا ہے ۔ تہاؤ۔ کوئی بیرونی اعمال یا مذہبی رسم و رواج میں محو اور زیارت گاہوں کی زیارت میں مگر خادمان خدا الہٰی نام جو صدیوی سچ حق اور حقیقت و اصلیت ہے میں اپنی توجو اور دھیان لگاتے ہین (1) اے نانک۔ اس غلامی کی زنجریں کاٹنے والے اور اندرونی راز جاننے والے کو خادم خدا یاد کرتا ہے ۔

دھناسریِ مہلا ੫॥
کِتےَ پ٘رکارِنتوُٹءُپ٘ریِتِ॥
داس تیرے کیِ نِرمل ریِتِ ॥੧॥ رہاءُ ॥
جیِء پ٘رانمندھنتےپِیارا॥
ہئُمےَ بنّدھُ ہرِ دیۄنھہارا॥੧॥
چرن کمل سِءُ لاگءُ نیہُ ॥
نانک کیِ بیننّتیِ ایہ ॥੨॥੪॥੫੮॥
لفظی معنی:
کتے پرکار ۔ کسے بھی طریقے سے ۔ پریت ۔ محبت ۔ پیار ۔ نرمل۔ پاک ۔ ریت۔ رسم ۔ طرز زندگی ۔ رہاؤ۔ جیئہ ۔ روح۔ پران ۔ سانس۔ زندگی ۔ من ۔د ل ۔ دھن۔ سرمایہ۔ ہونمے بندھ۔ خودی پر پابندی ۔ نیہو۔ پیار ۔ عشق ۔بیننتی ایہو ۔ یہی عرض و گذارش ہے ۔
ترجمہ معہ تشریح:
کہیں ختم نہ ہوجائے محبت تیری خدمتگار رہتے ہیں ۔ پاک ہمیشہ اپنے رسم و رواجوں میں ۔ رہاؤ۔ خودی میں رکاوٹیں پانے والا خدا مجھے زندگی دل اور دولت اور جان سے پیارا ہے (1) نانک کی یہ گذارش ہے کہ اسکی خدا سے محبت ہی رہے ۔

ستِگُر پ٘رسادِ॥
دھناسریِ مہلا ੯॥
کاہے رے بن کھوجن جائیِ ॥
سرب نِۄاسیِسداالیپاتوہیِسنّگِسمائیِ॥੧॥ رہاءُ ॥
پُہپ مدھِ جِءُ باسُ بستُ ہےَ مُکر ماہِ جیَسے چھائیِ ॥
تیَسے ہیِ ہرِ بسے نِرنّترِ گھٹ ہیِ کھوجہُ بھائیِ ॥੧॥
باہرِ بھیِترِ ایکو جانہُ اِہُ گُر گِیانُ بتائیِ ॥
جن نانک بِنُ آپا چیِنےَ مِٹےَ ن بھ٘رمکیِکائیِ॥੨॥੧॥
لفظی معنی:
کاہے ۔ کیوں۔ بن ۔ جنگل۔ کھوجن۔ تالش۔ سرب نواسی ۔ تو ہی سنگ۔ تیرے ساتھ۔ سمائی ۔ بستا ہے ۔ رہاؤ۔ پہپ۔ پھول۔ باس۔ خوشبو۔ مکر۔ شیشہ ۔ چھائی۔ عکس ۔ نرنتر۔ لگاتار۔ گھٹ۔ دل ۔ کھوجو۔ تالاش ۔ ڈہونڈو۔ (1) باہر بھیتر۔ باہر اور اندر ۔ گر ۔ طرقیہ ۔گ یان۔ علم۔ جن نانک۔ خدمتگار نانک۔ آپا چینے ۔ اپنے آپ کا روحانی واخلاقی زندگی کی پڑتال۔ پرکھ ۔ بھرم کی کائی ۔ بھٹک ۔ وہم وگمان کا پردہ ۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے خدا کی تالش کے لئے کیوں جنگلوں میں جاتا ہے وہ سب میں بستا ہے بیلاگ بلا تاثر تیرے ساتھ بستا ہے ۔ رہاؤ۔ جیسے پھول کے اندر خوشبو ہے اور شیشے اندر عکس ہے ویسے ہی خدا لگاتار سب میں بستا ہے (1) مرشد نے یہ سبق طریقہ ار علم بتائیا ہے کہ اسے اندر اور اہر یکساں سمجھو۔ اے نانک۔ بغیر اپنے اعمال و کردار کی پڑتال اور پرکھ کئے بغیر وہم وگمان کا پردہ اور بھٹکن ختم نہیں ہوتی ۔

دھناسریِ مہلا ੯॥
سادھو اِہُ جگُ بھرم بھُلانا ॥
رام نام کا سِمرنُ چھوڈِیا مائِیا ہاتھِ بِکانا ॥੧॥ رہاءُ ॥
مات پِتا بھائیِ سُت بنِتا تا کےَ رسِ لپٹانا ॥
جوبنُ دھنُ پ٘ربھتاکےَمدمےَاہِنِسِرہےَدِۄانا॥੧॥
دیِن دئِیال سدا دُکھ بھنّجن تا سِءُ منُ ن لگانا ॥
جن نانک کوٹن مےَ کِنہوُ گُرمُکھِ ہوءِ پچھانا ॥੨॥੨॥
لفظی معنی:
سادہو۔ پاکدامنو۔ بھرم بھلانا۔ وہم وگمان میں بھولا ہوا۔ مائیا۔ دنیاوی دولت۔ بکانا۔ خریداگیا (1) ست ۔ بیٹا۔ بنتا۔ عورت۔ تاکے رس۔ انکے لطف ۔ لپٹانا۔ محو۔ جوبن ۔ جوانی ۔ دھن۔ سرمایہ۔پرتھا ۔ وقار۔ عظمت۔ مد۔ مستی ۔ محویوت۔ انس۔ روز و شب۔ دیوناہ ۔ پاگل۔ دین دیال ۔ غریب پرور۔ دکھ بھنجن۔ عذآب مٹانے والا۔ تاسیؤ ۔ اس سے ۔ من ۔ دل۔ کوٹن میہہ۔ کروڑوں میں۔ کنہو۔ کسی نے ۔ گورمکھ ۔ مرید مرشد۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے پداکدامن خدا کے متالشی رہبرو یہ دنیا بھول اور وہم و گمان میں بھٹکن رہی ہے خدا کی یادوچھو ڑ کر دنیاوی دؤلت کی غلام ہو رہی ہے ۔رہاؤ۔ ماں باپ ۔ بھائی بیٹے اور عورت کے لطف میں محو ہے جوانی ۔ سرامیہ وقار و عظمت کی مستی اور دھن میں پاگل ہو رہا ہے (1) دکھ درد مٹانے والے غریب پرور اس سے دلی پیار ہیں۔ اے کادم نانک۔ گرؤڑوں میں سے کوئی جس نے مرید مرشد ہوکرا لہٰی شراکت و پہچان حآصل کی ہو۔

دھناسریِ مہلا ੯॥
تِہ جوگیِ کءُ جُگتِ ن جانءُ ॥
لوبھ موہ مائِیا ممتا پھُنِ جِہ گھٹِ ماہِ پچھانءُ ॥੧॥ رہاءُ ॥
پر نِنّدا اُستتِ نہ جا کےَ کنّچن لوہ سمانو ॥
ہرکھ سوگ تے رہےَ اتیِتا جوگیِ تاہِ بکھانو ॥੧॥
چنّچل منُ دہ دِسِ کءُ دھاۄتاچلجاہِٹھہرانو॥
کہُ نانک اِہ بِدھِ کو جو نرُ مُکتِ تاہِ تُم مانو ॥੨॥੩॥
لفظی معنی:
تیہہ ۔ تو ۔ کؤ۔ کوئی ۔ جگت۔ طریقہ ۔ جانیؤ۔ نہیں ۔ سمجھیا۔ لوبھ ۔ لالچ۔ موہ۔ محبت۔ مائیا۔ دؤلت ۔ سرمایہ ۔ ممتا۔ میری ۔ ملکیت ۔ پھن۔ پھر ۔ گھٹ ۔د ل ۔ رہاؤ۔ نندد ۔ بدگوئی۔ استت۔ تعریف ۔ ستائش ۔ کنچن ۔ سونا۔ لوہ ۔ لوہا۔ سمانو۔ یکساں۔ برابر۔ ہر کھ ۔ خوشی ۔ سوگ۔ غمی ۔ اتیتا۔ بیلاگ۔ دنیار۔ وکھانو ۔ کہو۔ چنچل۔ بھٹکتا۔ دوڑ دہوپ میں۔ دہدس۔ دس اطراف۔ دھاوٹ۔ بھٹکتا ۔ دوڑ دہوپ کرتا۔ اچل۔ مستقل ۔ بدھ ۔ طریقہ۔ مکت۔ نجات یافتہ ۔ اذاد ۔
ترجمہ معہ تشریح:
اس جوگی نے طرز زندگی سلیقہ اور طریقہ نہیں جانتا جس کے دل میں لالچ صحبت دنیاوی دؤلت کی ملکیت کا جذبہ جس دل میں پہچان ہوتی ہے ۔ر ہاؤ۔ دوسروں کی بدگوئی اور خوشامدی تعریف ستائش نہیں کرتا اور سونا اور لوہے کی برابر سمجھتا ہے ۔ غمی اور خوشی سے بیلاگ غیر متاثر اسے جوگی کہو (1) اے نانک۔ بھٹکتا من ہر طرف دوڑ دہوپ کرتا ہے ۔ جس نے اسے مستقل مزاج بنا لیا ۔ اس طرح سے اس نے ذہنی نجات حاصل کر لی ۔

دھناسریِ مہلا ੯॥
اب مےَ کئُنُ اُپاءُ کرءُ ॥
جِہ بِدھِ من کو سنّسا چوُکےَ بھءُ نِدھِ پارِ پرءُ ॥੧॥ رہاءُ ॥
جنمُ پاءِ کچھُ بھلو ن کیِنو تا تے ادھِک ڈرءُ ॥
من بچ ک٘رمہرِگُننہیِگاۓزہجیِءسوچدھرءُ॥੧॥
گُرمتِ سُنِ کچھُ گِیانُ ن اُپجِئو پسُ جِءُ اُدرُ بھرءُ ॥
کہُ نانک پ٘ربھبِردُپچھانءُتبہءُپتِتترءُ॥੨॥੪॥੯॥੯॥੧੩॥੫੮॥੪॥੯੩॥
لفظی معنی:
اپاؤ۔ کوشش۔ جہد۔ بدھ ۔ طریقہ ۔ سنسا ۔ فکر ۔ تشویش۔ چوکے ۔ ختم ہوا۔ بھوندھ ۔ زندگی کے خوفناک سمندر۔ پار پرؤ۔ عبور کروں۔ مراد زندگی کامیابی سے گذرے ۔
ترجمہ معہ تشریح:
اب میں کونسی کوشش و جہد کروں جس سے میرے دل کی تشویش وفکر ختم ہو جائے اور زندگی کے اس خوفناک رحجان و سمندر کو کامیابی سے عبور رک سکوں پار ہو جاؤں مراد زندگی کامیابی سے گذر اوقات کر سکوں ۔ رہاؤ۔ جب سے جنم ہوا ہے کوئی نیک کام نہیں کیا نیکی نہیں کمائی ۔ اس لئے زہادہ خوف زدہ ہوں ۔ میرے دل میں یہ فکر یہ تشویش لا حق رہتی ہے ۔ کہ میںنے اپنے دل سے زبان کے ذریعے کلام اور بول کے ذریعے اعمال کے ذریعے اور نہ ہی الہٰی حمدوچناہ کی ہے ۔ یہ تشویش لا حق رہتی ہے (1) سبق مرشد پندو واعظ مرشد سنکر کچھ سمجھ اور علم پیدا نہیں ہوا مویشیو کی مانند پیٹ بھرتا رہا ۔ اے نانک۔ بتادے کہ اے خدا تو اپنا قدیمی عادت یاد رکھ پہچان کر تب ہی بدکار بداخلاق اس دنایوی زندگی کو جو سمندر کی مانند خوفناک ہے کامیابی سے عبور حاصل کر سکتے ہین۔ مراد زندگی کامیابی سے بستر کستے اور گذار سکتے ہیں۔

دھناسریِ مہلا ੧ گھرُ ੨ اسٹپدیِیا
ੴ ستِگُر پ٘رسادِ॥
گُرُ ساگرُ رتنیِ بھرپوُرے ॥
انّم٘رِتُسنّتچُگہِنہیِدوُرے॥
ہرِ رسُ چوگ چُگہِ پ٘ربھبھاۄےَ॥
سرۄرمہِہنّسُپ٘رانپتِپاۄےَ॥੧॥
کِیا بگُ بپُڑا چھپڑیِ ناءِ ॥
کیِچڑِ ڈوُبےَ میَلُ ن جاءِ ॥੧॥ رہاءُ ॥
رکھِ رکھِ چرن دھرے ۄیِچاریِ ॥
دُبِدھا چھوڈِ بھۓنِرنّکاریِ॥
مُکتِ پدارتھُ ہرِ رس چاکھے ॥
آۄنھجانھرہےگُرِراکھے॥੨॥
سرۄرہنّساچھوڈِنجاءِ॥
پ٘ریمبھگتِکرِسہجِسماءِ॥
سرۄرمہِہنّسُہنّسمہِساگرُ॥
اکتھ کتھا گُر بچنیِ آدرُ ॥੩॥
سُنّن منّڈل اِکُ جوگیِ بیَسے ॥
نارِ ن پُرکھُ کہہُ کوئوُ کیَسے ॥
ت٘رِبھۄنھجوتِرہےلِۄلائیِ॥
سُرِ نر ناتھ سچے سرنھائیِ ॥੪॥
آننّد موُلُ اناتھ ادھاریِ ॥
گُرمُکھِ بھگتِ سہجِ بیِچاریِ ॥
بھگتِ ۄچھلبھےَکاٹنھہارے॥
ہئُمےَ مارِ مِلے پگُ دھارے ॥੫॥
انِک جتن کرِ کالُ سنّتاۓ॥
مرنھُ لِکھاءِ منّڈل مہِ آۓ॥
جنمُ پدارتھُ دُبِدھا کھوۄےَ॥
آپُ ن چیِنسِ بھ٘رمِ بھ٘رمِروۄےَ॥੬॥
کہتءُ پڑتءُ سُنھتءُ ایک ॥
دھیِرج دھرمُ دھرنھیِدھر ٹیک ॥
جتُ ستُ سنّجمُ رِدےَ سماۓ॥
چئُتھے پد کءُ جے منُ پتیِیاۓ॥੭॥
ساچے نِرمل میَلُ ن لاگےَ ॥
گُر کےَ سبدِ بھرم بھءُ بھاگےَ ॥
سوُرتِ موُرتِ آدِ انوُپُ ॥
نانکُ جاچےَ ساچُ سروُپُ ॥੮॥੧॥
لفظی معنی:
گر۔ مرشد۔ ساگر۔ سمندر۔ رتی ۔ قیمتی ہیرے ۔ جواہرات ۔ لعل زمرود وغیرہ۔ بھر پورے ۔ مکمل طور پر۔ انمرت۔ اب حیات۔ سنت۔ خدا رسیدہ پاکدامن خوش اخلاق انسانیت پرست روحانی رہنما۔ چگیہہ ۔ چنتے ہیں۔ روحانی واخلاقی زندگی کا کھانا ۔ ہر رس۔ الہٰی لطف ۔ پربھ بھاوے ۔ خڈا کو پیار ۔ الہٰی رآض۔ پران پت۔ زندگی کا مالک ۔ خدا (1) بگ بپڑا۔ وچار بگلا۔ کیچڑ۔ دلدل۔ میل۔ غلاظت۔ رہاؤ۔ رکھ رکھ ۔ پھونک پھونک کر۔ سوچ سوچ ۔ سمجھ سمجھ ۔ وچاری ۔ سمجھکر ۔ دبدھا۔ دوچتی ۔ دورائے ۔ نرنکاری ۔ خدا پرست۔ مکت۔نجات۔ آزادی۔ پدارتھ ۔ نعمت۔ آون جان۔ تناسخ۔ گر راکھے ۔ ۔ مرشد محافظ (2) ۔ سرور ۔ تالاب۔ ندی ۔ ہنسا۔ پاکیزہ ۔ بھگت ۔ محبت ۔ پیار۔ سہج ۔ روحانی یا ذہنی سون۔ اکتھ گتھا۔ وہ کہانی جو بیان نہ وہسکے ۔ گربچنی اؤر۔ کلام رمشد سے عزت (3) سن منڈل۔ ایسی ذہنی حالت جس میں خیالات کی رو رک جاتی ہے ۔ روحانی وزہنی سکون ۔ جوگی ۔ خدا۔ رسیدہ انسان ۔ نارنہ پرکھ ۔نہ زن نہ مرو ۔ تربھون۔ تینوں عالموں ۔ جوت ۔ نور۔ روشنی ۔ سر۔ فرشتے ۔ نر۔ انسان۔ ناتھ ۔ جوگیوں کے سر کردہ جوگی ۔ سچے سرانئی ۔ اس سچے کی پناہ لیتے ہیں (4) آنند مول۔ سکون کی بنیاد۔ اناتھ ۔ ادھا ۔ بے مالکوں بے سہارا کا ساہرا۔ گورمکھ ۔ مرید مرشد۔ بھگت ۔ الہٰی عاشق۔ پریمی ۔ سہچ وچاری ۔ قدرتی روحانی علم ۔ بھگت وچھل۔پریمیوں کو پیار کرنے والا۔ بھے کاٹنہارا۔ خوف مٹانے والا۔ ہونمے ۔ خودی۔ پگ دھارے ۔ راستہ اختیار کرتا ہے (5) انک جتن۔ بیشمار کوشش۔ کال۔موت۔ سنتائے ۔ عذاب پہنچائے ۔ مرن۔ موت۔ منڈل۔ دنیا۔ علام۔ دبدھا۔ دوچتی دررائے ۔ آپ۔ خوئش۔ جنس۔ پڑتال۔ بھرم بھرم ۔ بھٹک بھٹک کر (6) کہتو۔ پڑتو۔ سنتو ۔ ایک ۔ وحدت ۔ کہتا ۔ سنتا اور پڑھتا ہے ۔ دھر نیدھر ۔ زمین کا سہارا۔ دھیرج ۔مستقل مزاجی ۔ دھرم انسانی یا مذہبی فرض ۔ جت ۔ اعضے علومی ۔ ست۔ سچ ۔ جت ۔ نفس پر ضبط۔ سنجم۔ ضبط۔ چوتھا پد۔ روحانی وہ حالت جہاں انسان دنیاوی تینوں اوصاف ۔ ترقی یا حکومت ست ۔ طاقت کا زرغم۔ لالچ سے بلند روحای واخلاقی زندگی بسر کرتا ہے ۔ پتیائے ۔ پسند کرتا ہے (7) نرمل۔ پاک ۔ میل۔ ناپاکیزگی ۔ گرکے سبد۔ کلام مرشد۔ بھرم۔ وہم وگمان۔ بھؤ۔ خوف۔ بھاگے ۔ مٹ جاتا ہے ۔ صورت۔ شکل ۔ مورت۔ تصویر۔ ہستی ۔ توصور و جود۔ انوپ۔ انوکھا ۔ جاپے ۔ مانگتا ہے ۔ ساچ سروپ ۔ شکل ۔ اد۔ اغآز ۔ اول۔
ترجمہ معہ تشریح:
بگلا چھوٹے جو ہڑ میں کو کسی لئے نہاتا ہے کیچڑ یا دلدل میں ڈوبتا ہے اور ناپاکیزگی دورنہیں ہوتی ۔ مراد انسان دیوی دیوتاؤں کی پناہ ڈہونڈتا ہے جو ایک کم گہرے چھوٹے سے جوہڑ کی مانند ہیں ۔ جہاں سے وہ زیادہ ناپاکیزگی کماتا اور پاتا ہے ر۔ رہاؤ۔ مرشد بہت سے قیمتی اوصاف سے پر بھرا ہوا سمندر کی مانند ہے ۔ مرید مرشد ان اوصاف کو روح کے لئے خوراک ہیں اپنے ذہن میں بساتا ہے ۔ ہنس موتی چنتا ہے ۔ اور سمند رکے نزدیک رہتے ہیں۔ اسی طور مریدان مرشد مرشد کے قریب رہتے ہیں اور پاکدامن خدا رسیدہ خوش اخلاق انسانیت پرست روحانی رہنما آبحیات جس سے زندگی روحانی اخلاقی صراط مستقیم پر گامزن ہوجاتی ہے اپنے ذہن نشین کرتے ہیں وہ الہٰی لطف لیتے ہیں الہٰی رضا و کرم وعنایت سے اور اسطرحسے ہنس کی مانند خڈا کو پا لیتے ہیں اس زندیگ کے مالک کو (1) مرید مرشد بڑی سوچ وچار سے زندگی کے راہ پر قدم رکھتا ہے ۔ خدا کے بغیر کسی دوسرے کا سہارا چھوڑ کر خدا کا ہی ہوجاتا ہے الہٰی لطف لیکع وہ نعمت حاصل کرتا ہے جو دنیاوی دولت کی محبت سے نجات دلاتی ہے ۔ جسکا محافظ مرشد ہوجائے ۔ اسکا تناسخ مٹ جاتا ہے (2) جس طرح سے ہنس مانسرو نہیں چھوڑتا ۔ اسی طرح مرید مرشد مرشد نہیں چھوڑتا۔ وہ الہٰی عشق و محبت کی برکت وعنایت سے روحانیسکون پاتا ہے اور مرید اور مرشد یکسو ہاجاتے ہیں مرید مرشد کے اوصاف اپنے ذہن میں بسا لیتا ہے یہ کہانی بیان سے باہر ہے صرف یہی کہا جا سکتا ہے کہ کلام مرشد پر عمل پیرا ہونے سے ہر دو عالموں میں عزت و قار حاصل ہوتا ہے (3 ) ایسی حالت میں جہاں انسان خڈا سے یکسو ہوجاتا ہے اسے بیرونی خواہشات اور ارادوں کا خیال نہیں رہتا اور اسکے خیالات کی رو میں مرد و زن کی تمیز ختم ہو جاتی ہے ۔ مراد شہوت اثر انداز نہیں کرتی ۔ کیونکہ وہ توخدا سے یکسو ہو اہواتا ہے جس کا نور تینوں عالموں میں بستا ہے ۔ جس کی فرشتے انسان اور سر کردہ جوگی جس کی پناہ میں رہتے ہیں (4) جس کی بنیاد ہی پر سکون ہے ۔ جو غریب پرور اور بے سہاروں کے لئے سہارا ہے جو نیاسروں کے لئے آسرا ہے جو مرشد کے وسیلے سے ریاض و عبادت خدا کرتا ہے اور جو اسکے پریم محبت اور عشق اور اسکے اوصاف کا خیال کرکے روحانی وذہین سکون پاتے ہیں وہ خاد اپنے پریمیوں ۔ عاشقوں کو پیار کرتا ہے جو انکے تمام خوف مٹانے کی توفیق رکھتا ہے ۔ خودی مٹآ کر اسکا پیروکار ہوجاتا ہے (5) خواہ انسان کتنی ہی کوشش موت لازم ہے اسکا عزآب آنا ہوتا ہی ہے ۔ انسان اس دنیا میں پیدا ہونے سے پہلے ہی اسکی موت تحریر ہوتی ہے ۔ انسان اپنےا عمال و کردار کی پہچان نہیں کرتا کہ وہ کیسا ہے اپنے نیک و بد ہونے کی پہچان نہیں کرتا اور دوغلے خیالات کی وجہ سے اپنی زندگی برباد کر لیتا ہے ۔ بھٹک بھٹک کر آہ وزاری کرتا ہے اپنے کئے ہوئے بد عملی کی وجہ سے (6) جو انسان واحد خدا کی صفت صلاح حمدوچناہ کرتا پڑھتا اور سنتا ہے یقین بھروسہ اعتماد خڈا میں جو علام کے لئے سہارا اور آسرا ہے کرتا ہے اسکے دلمیں نفس پر ضبط سچ کر دار پر ضبط دلمیں بس جاتا ہے اور دنیاوی تینوں اوصاف برتری سچ اور لالچ سے بلند روحانی واخلاقی زندگی نصیب ہوتی ہے اور دنایوی تینوں اوصاف اثر انداز نہیں ہوتے (7) جنہیں سچے پاک خدا نے پاکیزگی عنایت کی ہے وہ ناپاک نہیں ہوتے ۔ کلام مرشد سے وہم و گمان وشک و شبہات اور خوف مٹ جاتا ہے ۔نانک۔ اس صدیوی ہستی خدا مانگتا ہے ۔ نہیں جسکا ثانی جہان میں کوئی جس کی ہستی ہے روز اول سے وجود میں۔

. دھناسریِ مہلا ੧॥
سہجِ مِلےَ مِلِیا پرۄانھُ॥
نا تِسُ مرنھُ ن آۄنھُجانھُ॥
ٹھاکُر مہِ داسُ داس مہِ سوءِ ॥
جہ دیکھا تہ اۄرُنکوءِ॥੧॥
گُرمُکھِ بھگتِ سہج گھرُ پائیِئےَ ॥
بِنُ گُر بھیٹے مرِ آئیِئےَ جائیِئےَ ॥੧॥ رہاءُ ॥
سو گُرُ کرءُ جِ ساچُ د٘رِڑاۄےَ॥
اکتھُ کتھاۄےَسبدِمِلاۄےَ॥
ہرِ کے لوگ اۄرنہیِکارا॥
ساچءُ ٹھاکُرُ ساچُ پِیارا ॥੨॥
تن مہِ منوُیا من مہِ ساچا ॥
سو ساچا مِلِ ساچے راچا ॥
سیۄکُپ٘ربھکےَلاگےَپاءِ॥
ستِگُرُ پوُرا مِلےَ مِلاءِ ॥੩॥
آپِ دِکھاۄےَآپےدیکھےَ॥
ہٹھِ ن پتیِجےَ نا بہُ بھیکھےَ ॥
گھڑِ بھاڈے جِنِ انّم٘رِتُپائِیا॥
پ٘ریمبھگتِپ٘ربھِمنُپتیِیائِیا॥੪॥
پڑِ پڑِ بھوُلہِ چوٹا کھاہِ ॥
بہُتُ سِیانھپ آۄہِجاہِ॥
نامُ جپےَ بھءُ بھوجنُ کھاءِ ॥
گُرمُکھِ سیۄکرہےسماءِ॥੫॥
پوُجِ سِلا تیِرتھ بن ۄاسا॥
بھرمت ڈولت بھۓاُداسا॥
منِ میَلےَ سوُچا کِءُ ہوءِ ॥
ساچِ مِلےَ پاۄےَپتِسوءِ॥੬॥
آچارا ۄیِچارُسریِرِ॥
آدِ جُگادِ سہجِ منُ دھیِرِ ॥
پل پنّکج مہِ کوٹِ اُدھارے ॥
کرِ کِرپا گُرُ میلِ پِیارے ॥੭॥
کِسُ آگےَ پ٘ربھتُدھُسالاہیِ॥
تُدھُ بِنُ دوُجا مےَ کو ناہیِ ॥
جِءُ تُدھُ بھاۄےَتِءُراکھُرجاءِ॥
نانک سہجِ بھاءِ گُنھ گاءِ ॥੮॥੨॥
لفظی معنی:
سہج ۔ قدرتی طور پر پرُ سکون حآلت میں۔ روحانی طور پر۔ پروان ۔منظور۔ قبول۔ آون جان۔ تناسخ۔ ٹھاکر۔ آقا۔ مالک۔ خدا۔ داس۔ خدمتگار۔ خادم۔ سوئے ۔ وہی ۔ جیہہ دیکھا۔ جہاں دیکھتا ہوں۔ اور دوسرا ۔ دگر (1) گورمکھ ۔ مرشد کے وسیلے سے یا ذرعیے ۔ بھگت ۔ الہٰی عشق ۔ رپیم پیار۔ سہج ۔ ذہنی سکون۔ گھر ۔ دل ۔ گربھیٹے ۔ ملاپ مرشد (1) رہاؤ۔ ساچ۔ حق ۔ حقیقت ۔ اصلیت۔ درڑاوے ۔ دلمیں بالتین ۔ پختہ کرائے ۔ اکتھ ۔ ناقابلب یان ۔ کتھاوے ۔ کہائے ۔ سبد۔ کلام۔ سبق۔ کار۔ کام۔ ساچو۔ ٹھاکر۔ صدیوی ۔ سچا مالک۔ ساچ۔ سچ ۔ حق و حقیقت ۔ اصلیت۔ (22) تن ۔ جسم۔ ساچا۔ سچا خدا جو صدیوی سچا ہے ۔ راچا۔ محؤ ومجذوب۔ سیوک ۔ خدمتگار (3) ہٹھ۔ ضد۔ پتیجے ۔ خوش۔ بھیھے ۔ دھاوے ۔ گھڑ بھانڈے ۔ پیدا کرکے ۔ انمرت۔ آبحیات (4) بھؤ۔ الہٰی خوف۔ گورمکھ ۔ مرید مرشد (5) پوج سبلا۔ پتھر کی پرستش ۔ تیرتھ ۔ زیارت گاہ ۔ بن واسا۔ جنگل میں رہائش۔ پت۔ عزت۔ راکھ رضائے ۔ اپنی مرضی کے مطابق ۔ سہج بھائے ۔ قدرتی طور پر۔ بلا تردو وجہد۔
ترجمہ معہ تشریح:
مرشد کے ذریعے الہٰی عشق ومحبت سے دل وذہن کو سکون حآصل ہوتا ہے بغیر مرشد کے ملاپ انسان تناسخ میں پڑارہتا ہے پس و پیش میں رہتا ہے (1) رہاؤ۔ قدرتی طور پر ۔ ملاپ منظور اور قابل قبول ہوتا ہے اس کی روحانی واخلاقی موت واقع نہیں ہوتی ایسا خادم خدا خدا سے یکسو اور محو ومجذوب رہتا ہے ایسا خدائی خدمتگار الہٰی نور سے پر نور رہتا ہے ۔ اسے ہر شے ہر جگہ جدھر نظر جاتی ہے ۔ الہٰی نور اور جلوہ دکھائی دیتا ہے ۔ اسے مرشد بناؤ جو دلمیں الہٰی تصور اور صڈیوی خدا کو دل میں مستقل طور پر دلمیں بسا دے ۔ جو ناقبل بیان خدا کو بیان کرائے اور کلام سبق سے الہٰی وصل کرائے ۔ الہٰی خدمتگاروں کو اس کے بگیر کوئی دوسری کا ر سمجھ نہیں آتی اسے سچے مالک سچے خڈا اور سچ و حقیقت سے محبت ہوتی ہے (2) جس کے جسم میں دل اور دلمیں سچا خدا بستا ہے ۔ اس سچے کے ملاپ سے سچے سچ میں محوومجذوب رہتا ہے ۔ خادم خدا خدا کے زیر سایہ رہتا ہے اور سچا مرشد اسکا ملاپ کراتا ہے (3)خدا خود ہی جلوہ گر ہوتا ہے اور سب پر نظر کھتا ہے ولی ضد سے کئے ہوئے کام اور دکھاوے سے اسکی خوشنودی حاصل ہو سکتی ہے جس خدا نے انسان کو زندگی عنایت کی ہے اور اس میں الہٰی نام سچ حق و حقیقت اصلیت کا آبحیات عطا کیا ہے ۯ۔ ہو خدا پریم پیار محبت سے اپنا اشتراک ناطہ رشتہ بتائیا جا سکتا ہے (4) جس انسان کو اپنے علم و ہنر پر غرور ہو جاتا ہے وہ اس مغرروی میں روحانی موت کی زا پاتا ہے اور پس و بیش میںپڑا رہتا ہے جو الہٰی نام سچ حق حقیقت وآصلیت کو یاد کرتا ہے اورا لہٰی خوف و ادب کو بطور خوراک بناتا ہے وہ خادم مرشد کے وسیلے سے خدا کے پیار میں محو ومجذوب رہتا ہے (5) جو پتھروں کی پرستش کرتا زیارت گاہوں کی زیارت کرتا ہے طارق الدنیا ہوکر جنگلوں میں رہائش کرتا ہے مگر دلمیں ڈگمگاہٹ پس و بیش و بھٹکن ہے دل ناپاک ہے تو پاک و پائس کیسے ہوگا جس کے دامن میں سچ حق وحقیقت ہوگی اور الہٰی رسئای ہوگی اسی کو عزت نصیب ہوگی ۔ (6) اےخدا مجھے اپنی کرم و عنایت سے مرشد سے ملاپ کر جو پل بھر میں کروڑوں کو بدیوں اور برائیوں سے بچاتا ہے ۔ جو ہمیشہ مستقل مزاج پر سکون اور سنجیدہ رہتا ہے جو بلند اخلاق اور بلند روحانی وزہنی حالت میں بلند کرواسکا مالک ہے اور دانشمند (7) اےنانک۔ میں کس کے پاس لاہٰی صفت صلاح کوروں۔ مجھے تیرے بغیر تیرا ثانی دکھائی نہیں دیتا اے خدا جیسے تو چاہتا ہے اپنی رضا میں راضی رکھ تاکہ ذہنی و روحانی سکنو رہ کر تیری حمدوثناہ کرتا رہوں۔
SGGS p. 686

دھناسریِ مہل ੫ گھرُ ੬ اسٹپدیِ
ੴ ستِگُر پ٘رسادِ॥
جو جو جوُنیِ آئِئو تِہ تِہ اُرجھائِئو مانھس جنمُ سنّجوگِ پائِیا ॥
تاکیِ ہےَ اوٹ سادھ راکھہُ دے کرِ ہاتھ کرِ کِرپا میلہُ ہرِ رائِیا ॥੧॥
انِک جنم بھ٘رمِتھِتِنہیِپائیِ॥
کرءُ سیۄاگُرلاگءُچرنگوۄِنّدجیِکامارگُدیہُجیِبتائیِ॥੧॥ رہاءُ ॥
انِک اُپاۄکرءُمائِیاکءُبچِتِدھرءُمیریِمیریِکرتسدہیِۄِہاۄےَ॥
کوئیِ ایَسو رے بھیٹےَ سنّتُ میریِ لاہےَ سگل چِنّت ٹھاکُر سِءُ میرا رنّگُ لاۄےَ॥੨॥
پڑے رے سگل بید نہ چوُکے من بھید اِکُ کھِنُ ن دھیِرہِ میرے گھر کے پنّچا ॥
کوئیِ ایَسو رے بھگتُ جُ مائِیا تے رہتُ اِکُ انّم٘رِتنامُ میرےَ رِدےَ سِنّچا ॥੩॥
جیتے رے تیِرتھ ناۓاہنّبُدھِمیَلُلاۓگھرکوٹھاکُرُاِکُتِلُنمانےَ॥
کدِ پاۄءُ سادھسنّگُ ہرِ ہرِ سدا آننّدُ گِیان انّجنِ میرا منُ اِسنانےَ ॥੪॥
سگل اس٘رمکیِنےمنوُیانہپتیِنےبِبیکہیِندیہیِدھوۓ॥
کوئیِ پائیِئےَ رے پُرکھُ بِدھاتا پارب٘رہمکےَرنّگِراتامیرےمنکیِدُرمتِ ملُ کھوۓ॥੫॥
کرم دھرم جُگتا نِمکھ ن ہیتُ کرتا گربِ گربِ پڑےَ کہیِ ن لیکھےَ ॥
جِسُ بھیٹیِئےَ سپھل موُرتِ کرےَ سدا کیِرتِ گُر پرسادِ کوئوُ نیت٘رہُپیکھےَ॥੬॥
منہٹھِ جو کماۄےَتِلُنلیکھےَپاۄےَبگُلجِءُ دھِیانُ لاۄےَمائِیارےدھاریِ॥
کوئیِ ایَسو رے سُکھہ دائیِ پ٘ربھکیِکتھاسُنائیِتِسُبھیٹےگتِہوءِہماریِ॥੭॥
سُپ٘رسنّنگوپالراءِکاٹےَرےبنّدھنماءِگُرکےَسبدِمیرامنُراتا॥
سدا سدا آننّدُ بھیٹِئو نِربھےَ گوبِنّدُ سُکھ نانک لادھے ہرِ چرن پراتا ॥੮॥
سپھل سپھل بھئیِ سپھل جات٘را॥
آۄنھجانھرہےمِلےسادھا॥੧॥ رہاءُ دوُجا ॥੧॥੩॥
لفظی معنی :
جو جو جونی ۔ جو پیدا ہوا۔ ارچھا ئیو۔ الجھنو میں پھنسا ۔ مانس ۔ جن۔ انسنای زندگی۔ سنجوگی ۔ خوشقسمتی سے ۔ اوٹ۔ آسرا۔ سادھ ۔ ایسا انسان جس نے زندگی گذارنے کا صراط مسقیم حاصل کر لیا ۔ راکہو۔ حفاظت کیجیئے ۔ بچاییئے ۔ ہر رائیا۔ شہنشاہ خدا (1) انک جنم۔ بیشمار ۔ پیدئش ۔ بھرم۔ بھٹکن ۔ تھت ۔ ٹکاؤ۔ آرام۔ سیوا۔ خدمت۔ گوبند۔ خدا۔ مارگ ۔ راستہ ۔ رہاؤ۔ انک اپاو۔ کوشش۔ بچت۔ دلمیں۔ سد ہی ۔ ہمیشہ ۔ وہاوے ۔ گذرتی ہے ۔ بھیٹے ۔ ملے ۔ سنت۔ روحانی رہنما ۔ رہبر۔ لاہے ۔ مٹائے ۔ چنت ۔ فکر ۔ تشویش۔ رنگ۔ پریم (2) دھریہہ۔ دھیرج۔ روحانک سکون ۔ پنچا۔ پانچوں احساسات پدا۔ بھگت ۔ پریمی ۔ انمرت نام۔ آبحیات ۔ نام سچ حق و حقیقت واصلیت ۔ سنچا ۔ پراآب۔ آبپاشی (3) جیتے ۔ جتنے ۔ تیرھ نائے ۔ جتنی زیارت گاہوں کی زیارت کی ۔ اہندھ ۔ خودی ۔ تکبر۔ میل۔ ناپاکیزگی ۔ تل۔ ذرہ بھر۔ مانے ۔ منظور کرتا ہے ۔ سادھ سنگ۔ صحبت و قربت پاکدامن ۔ گیان انجن۔ علم و سمجھ کا سرمیہ۔ من اسنائے ۔ دل عصل کرتا ہے ۔ مراد دل پاک وروشن ہوتا ہے ۔ اسرم ۔ فرائض انسانی و مذہبی مطابق عمر۔ ہندو مذب کے مطابق انسانی زندگی کو چار حصوں میں تقسیم کیا ۔ برہم چریہ ، گرپست ۔ بان پرست۔ سنیاس۔ منوا نیہہ پتینے ۔ دل کی تسلی نہیں ہوتی ۔ بیک ہین ۔پاک خیالات کے بغیر ۔ دہی ۔ جسم۔ پرکھ بدھاتا۔ منصوبہ ساز۔ پار برہم ۔ کامیابی ۔ عنایت کرنے والا۔ رنگ راتا۔ پیار میں محو ومجذوب ۔ درمت۔ بے سمجھی ۔ بدعقلی ۔ مل۔ ناپاکیزگی ۔ کھوئے مٹائے (5) دھرم۔ اعمال و فراءج جگتا۔ مشغول ۔ نمکھ ۔ ذراسی دیر کے لئے ۔ ہیت۔ پیار ۔ پریم ۔ گربھ ۔ غرور ۔ تکبر ۔لیکھے ۔ حساب۔ بھیٹئے ۔ ملاپ ہو۔ سپھل۔ مورت ۔ برآور انسان مراد مرشد۔ کیرت۔ صفت صلاح۔ گر پرساد۔ رحمت مرشد سے ۔ نیترہو۔ آنکھوں سے ۔ پیکھے ۔ دیکھے ۔ نظر ڈالے (6) ہٹھ ۔ ضد۔ بگل۔ بگلے ۔ دھیان ۔ توجو۔ مائیا دھاری ۔ دولتمند۔ سرمایہ دار۔ سکھہ دائی ۔ سکھ دینے والا۔ گت بلند اخلاقی و روحانی حالت (7) سوپرسن گوپال۔ خوشنودی ۔ خدا۔ گر کے سبد۔ کلام مرشد ۔ من راتا۔ دل محو ہوا ۔ بھیٹیو نربھے گوبند۔ بیخوف الہٰی ملپا سے ۔ لادھے ۔ پائے ۔ چرن پراتا۔ پاؤں پڑا (8) سپھل۔ کامیاب ۔ بھئی ۔ ہوئی ۔ جاترا۔ زندگی کا سفر ۔ رہاؤ ۔ دوجا۔
ترجمہ:
بیشمار بار پیدا ہوا مگر ٹھکانہ نہیں ملا بھٹکتا رہا ۔ اے پاکدامن اب تیرا آسرا و پناہ لی ہے اب اپنے ہاتھ سے میری حفاظت کیجیئے میری تیری خدمت کرتا ہوں مرشد مجھے الہٰی راستہ بتادو (1) رہاؤ۔ جو اس جہان میں پیدا ہوا الجھنو کی گرفت میں آئیا ۔ یہ انسانی زندگی خوش قسمتی سے حاصل ہوئی ہے اے مرشد میں تیری پناہ اور آسرا لیا ہے ۔ مجھے اپنی امداد سے بچا کر اپنی کرم و عنایت سے خدا سے ملا (1) انسان دولت کے لئے بیشمار کوشش کرتا ہے اور خاص طور پر دل میں بسی رہتی ہے اور میری میری کرتے عمر گذر تی ہے ۔ کسی ایسے خدا رسیدہ پاکدامن روحانی رہبر سنت سے ملاپ ہوکر میرا فکر و تشویش ختم ہو جائے اور خدا سے پیار ہوجائے (2) سارے ودی پڑھلئے ان سے دل کے راز نہیں مٹے تھوری سی دیر کے لئے احساسات پانچوں بد سے دل کو سکون حاصل نہیں ہوا ا۔ کوئی ایسا الہٰی پریمی جو دنیاوی دولت سے طارق ہو جو میرے دل میں آبحیات نام الہٰی سچ حق وحقیقت واسلیت سے دل کو روشناش اور آبپاشی کرے روشنی دے (3) جتنی زیارت گاہیں ہیں۔ ان کی زیارت کرے تو اس سے انسان کو خودی کی ناپاکیزگی میں ملوچ ہوجاتا ہے اس ذرہ بھر الہٰی خوشنودی حآصل نہیں ہوتی ۔ کب صحبت و قربت پاکدامناں حاصل ہو تاکہ روحانی سکون حاصل ہو ارو ذہن علم و ہنر کی روشنی سے پاک ہو جائے () انسان کے عمر کے ہر دور کے فرائض کی انجام دہی سے دل کو تسکین حاصل نہیں ہوتی ۔ بے سمجھ انسان صرف جسمانی پاکیزگی ہی منزل و مقصد سمجھتا ہے ۔ الہٰی پریم پیار میں محو منصوبہ ساز انسان جو میرے دل کی برائی کی ناپاکیزگی دور کدے (5) خدا مذہبی فرائض کی انجام دہی ذرا بھر پسند نہیں کرتا اور خدا سے خفیف سے عرصے کے لئے بھی پیار نہیں بار بار غرور و تکبر میں پڑا رہتا ہے ۔ اسکا یہ کام بے نتیجہ بے انجام و بیحساب رہتا ہے ۔ جسے ایسا مرشد ملجاتا ہے جو تمام خواہشات پوریاں کر نے کی توفیق رکھتا ہے جس کی کرم و عنایت سے انسان الہٰی حمدوچناہ کرتا ہے ۔ اس کی کرم وعنایت سے الہٰی ددیار اپنی انکھوں سے پا لیتا ہے (6) جو انسان دلی ضد سے جہدوریاضت و عبادت کرتا ہے ذرا سی بھ خدا کو قبول ومنظور نہیں ہوتی وہ بگلے کی مانند سرمایہ کے لئے اپنا دھیان لگاتا ہے ۔ اگر کوئی ایسا روحانی سکون دینے والا الہٰی کہانی سنائے جس سے اسکے ملاپ سے ہمیں روحانی واخلاقی بلند حقیقت حاسل ہو جائے (7) جس انسان پر مہربان ہوتا ہے خدا اسکے دنیاوی دولت کی غلامی مٹا دیتا ہے ۔ اسکا دل کلام مرشد سبق مرشد میں محو ہوجاتا ہے ۔ اے نانک۔ بیخوف خدا کا ملاپ جسے ہو جائے حاصل اسکے دل کو روحانی سکون ہوجاتا ہے اور الہٰی گرویدہ ہوکر سکنو پاتا ہے (8) زندگی کا سفر پایہ تکمیل پہنچ جاتا ہے جسکا ملاپ پاکدامن سے ہوجاتا ہے تناسخ اسکا مٹ جاتا ہے ۔ رہاؤ ۔ دوجا ۔
SGGS p. 687

دھناسریِ مہلا ੧ چھنّت
ੴ ستِگُر پ٘رسادِ॥
تیِرتھِ ناۄنھجاءُتیِرتھُنامُہےَ॥
تیِرتھُ سبد بیِچارُ انّترِ گِیانُ ہےَ ॥
گُر گِیانُ ساچا تھانُ تیِرتھُ دس پُرب سدا دساہرا ॥
ہءُ نامُ ہرِ کا سدا جاچءُ دیہُ پ٘ربھدھرنھیِدھرا॥
سنّسارُ روگیِ نامُ داروُ میَلُ لاگےَ سچ بِنا ॥
گُر ۄاکُ نِرملُ سدا چاننھُ نِت ساچُ تیِرتھُ مجنا ॥੧॥
ساچِ ن لاگےَ میَلُ کِیا ملُ دھوئیِئےَ ॥
گُنھہِ ہارُ پروءِ کِس کءُ روئیِئےَ ॥
ۄیِچارِمارےَترےَتارےَاُلٹِجونِنآۄۓ॥
آپِ پارسُ پرم دھِیانیِ ساچُ ساچے بھاۄۓ॥
آننّدُ اندِنُ ہرکھُ ساچا دوُکھ کِلۄِکھپرہرے॥
سچُ نامُ پائِیا گُرِ دِکھائِیا میَلُ ناہیِ سچ منے ॥੨॥
سنّگتِ میِت مِلاپُ پوُرا ناۄنھو॥
گاۄےَگاۄنھہارُسبدِ سُہاۄنھو॥
سالاہِ ساچے منّنِ ستِگُرُ پُنّن دان دئِیا متے ॥
پِر سنّگِ بھاۄےَسہجِناۄےَبینھیِتسنّگمُستستے॥
آرادھِ ایکنّکارُ ساچا نِت دےءِ چڑےَ سۄائِیا॥
گتِ سنّگِ میِتا سنّتسنّگتِ کرِ ندرِ میلِ مِلائِیا ॥੩॥
کہنھُ کہےَ سبھُ کوءِ کیۄڈُآکھیِئےَ॥
ہءُ موُرکھُ نیِچُ اجانھُ سمجھا ساکھیِئےَ ॥
سچُ گُر کیِ ساکھیِ انّم٘رِتبھاکھیِتِتُمنُمانِیامیرا॥
کوُچُ کرہِ آۄہِبِکھُلادےسبدِسچےَگُرُمیرا॥
آکھنھِ توٹِ ن بھگتِ بھنّڈاریِ بھرِپُرِ رہِیا سوئیِ ॥
نانک ساچُ کہےَ بیننّتیِ منُ ماںجےَ سچُ سوئیِ ॥੪॥੧॥
لفظی معنی:
تیرتھ ۔ زیارت گاہ ۔ نام۔ سچ حق حقیقت اصلیت ۔ تیرتھ ۔ سبد وچار۔ کلام ۔ سمجھنا۔ انتر گیان ۔ دلمیں سمجھ ۔ گرگبان ۔ ساچا تھان۔ علم مرشد حقیقی ٹھکانہ ۔ وس پربھ ۔ دس متبر روز ہ دے ۔ و سیرا۔ وس گناہوں کو مٹانے والا دن ۔ جاچیؤ۔ مانگتا ہوں۔ دھرنیدھر۔ زمین کے سہارے ۔ روگی ۔ بیماری ۔ نام دارو۔ الہٰی نام۔ سچ حق حقیقت ایک دوائی ۔ گروواک ۔ سبق مرشد کالا مرشد۔ ۔ نرمل۔ پاک ۔ چانن۔ روشنی ۔ مجنا۔ اشنان ۔ غسل۔ (1) گنیہہ۔ اوصاف۔ ہار ۔ مالا۔ وچار مارے ۔ خیالات سے برائیاں ختم کرے ۔ نرے ۔ نارے ۔ کامیاب ہوتا ہے ۔الٹ ۔ دوبار ۔ جون ۔ پیدائش ۔ پارس۔ لوہے کو سونے مین بدل دینے والا پتھر۔ پرم دھیانی ۔ بھاری توجہ ۔ ساچ ساچے بھاوئے ۔ سچے کو سچا پیار لگتا ہے ۔ انند اندن ۔ ہر روز سچی خوشی سکون ۔ دوکھ کل وکھ پرر ہرے ۔ عذاب و گناہ مٹاتا ہے ۔ میل ناہی سچ منے ۔ سچا دل ناپاک نہیں ہوتا (2) صحبت و قربت اور دوست کامیاب مکمل زیارت اور اشنان ہے ۔ جو کلام مرشد اپنا کر قابل حمدوثناہ خدا کی حمدوثناہ کرتا ہے ۔ رماد پاکدامن کی صحبت و قربت میں خدا دوست کا ملاپ ہی مکمل زیارت ہے ۔ جو انسان قابل ی لائق صفت صلاح خدا کی صفت صلاح کرتا ہے ۔ اس کی زندگی معیاری بن جاتی ہے ۔ سچے مرشد کے سبق پر عمل کرنے سے اور الہٰی صفت صلاح سے انسنای عقل و ہوش دوسروں پر رحم کرنے والی اور خدمت کرنے والی ہوجاتی ہے ۔ الہٰی صحبت سے الہٰی محبت ہو جاتی ہے ۔ انسان خدا کو پیارا لگنے لگتا ہے جس سے روحانی سکون ملتا ہے ۔ یہی انسان کے لئے پاک سے پاک تربینی سنگم کی زیارت ہے ۔ واحد خدا کو یاد کر و جو ہر طرح کی نعمتیں عنایت کرتا ہے جو روز افزوں بڑھتی ہیں خدا مرشد کی صحبت سے انسان کی اخلاقی وروحانی زندگی بلند ہوتی ہے ۔ الہٰی نطر عنایت سے خڈا اپنی صحبت و قربت عنیات کرتا ہے (3) کہنے کو تو سب خدا کی عطمت بتاتے ہیں مگر کوی نہیں بتا سکتا کہ کتنا عطیم ہے میں اتنی عقل و ہوش نہیں رکھتا کہ سمجھا سکوں ۔ سچے مرشد کا سبق جو آبحیات اور روحانی زندگی بنانے وال اہے جسے میرا دل تسلیم کرتا ہے جو انسان دنیاوی دولت کی محبت میں زہر سے بھرے آتے ہیں زہر میں بھرے اس جہان سے چلے جاتے ہیں۔ مگر جو سبق و کلام مرشد پر عمل پیرا ہوتے ہیں مرشد انہیں بچالیتا ہے ۔ الہٰی عشق و محبت کے خزانے مکمل طور پر بھرے ہوئے ہیں کہنے سے کم ہوتے ہیں سب میں بستا ہے وہی نانک سچھی عرض گذارتا ہے کہ دل کی پاکیزگی میں ہی خدا مضمر ہے من کی پاکیزگی و صفائی ہی خدا ہے ۔
دھناسریِ مہلا ੧॥
جیِۄاتیرےَناءِمنِآننّدُہےَجیِءُ॥
ساچو ساچا ناءُ گُنھ گوۄِنّدُہےَجیِءُ॥
گُر گِیانُ اپارا سِرجنھہارا جِنِ سِرجیِ تِنِ گوئیِ ॥
پرۄانھاآئِیاہُکمِپٹھائِیاپھیرِنسکےَکوئیِ ॥
آپے کرِ ۄیکھےَسِرِسِرِلیکھےَآپےسُرتِبُجھائیِ॥
نانک ساہِبُ اگم اگوچرُ جیِۄاسچیِنائیِ॥੧॥
تُم سرِ اۄرُنکوءِآئِیاجائِسیِجیِءُ॥
ہُکمیِ ہوءِ نِبیڑُ بھرمُ چُکائِسیِ جیِءُ ॥
گُرُ بھرمُ چُکاۓاکتھُکہاۓسچمہِساچُسمانھا॥
آپِ اُپاۓآپِسماۓہُکمیِ ہُکمُ پچھانھا ॥
سچیِ ۄڈِیائیِگُرتےپائیِتوُمنِانّتِسکھائیِ॥
نانک ساہِبُ اۄرُندوُجانامِتیرےَۄڈِیائیِ॥੨॥
توُ سچا سِرجنھہارُ الکھ سِرنّدِیا جیِءُ ॥
ایکُ ساہِبُ دُءِ راہ ۄادۄدھنّدِیاجیِءُ॥
دُءِ راہ چلاۓہُکمِسباۓجنمِمُیاسنّسارا॥
نام بِنا ناہیِ کو بیلیِ بِکھُ لادیِ سِرِ بھارا ॥
ہُکمیِ آئِیا ہُکمُ ن بوُجھےَ ہُکمِ سۄارنھہارا॥
نانک ساہِبُ سبدِ سِجنْاپےَ ساچا سِرجنھہارا ॥੩॥
بھگت سوہہِ درۄارِسبدِسُہائِیاجیِءُ॥
بولہِ انّم٘رِت بانھِ رسن رسائِیا جیِءُ ॥
رسن رساۓنامِتِساۓگُرکےَسبدِۄِکانھے॥
پارسِ پرسِئےَ پارسُ ہوۓجاتیرےَمنِبھانھے॥
امرا پدُ پائِیا آپُ گۄائِیاۄِرلا گِیان ۄیِچاریِ॥
نانک بھگت سوہنِ درِ ساچےَ ساچے کے ۄاپاریِ॥੪॥
بھوُکھ پِیاسو آتھِ کِءُ درِ جائِسا جیِءُ ॥
ستِگُر پوُچھءُ جاءِ نامُ دھِیائِسا جیِءُ ॥
سچُ نامُ دھِیائیِ ساچُ چۄائیِگُرمُکھِساچُپچھانھا॥
دیِنا ناتھُ دئِیالُ نِرنّجنُ اندِنُ نامُ ۄکھانھا॥
کرنھیِ کار دھُرہُ پھُرمائیِ آپِ مُیا منُ ماریِ ॥
نانک نامُ مہا رسُ میِٹھا ت٘رِسنانامِنِۄاریِ॥੫॥੨॥
لفظی معنی :
جیوا۔ زندہ ہوں ۔ جیتا ہوں۔ نام ۔ سچ ۔ حق ۔ حقیقت و اصلیت ۔ آنند۔ روحانی یا ذہنی خوشی ۔ ساچو ساچا۔ صدیوی پاک ۔ سچا۔ گن ۔ وصف۔ گرگیان ۔ علم مرشد۔ اپار۔ لا محدود۔ سرجنہار۔ پیداکرنے والا۔ سا زندہ ۔ جن سرجی ۔ جس نے پیدا کی ۔ تن گوئی ۔ پروانہ ۔ تحریری فرمان۔ پٹھائیا۔ بھیجا ۔ پھر نہ سکے ۔ کوئی ۔ کوئی بدلنے کی توفیق نہیں رکھتا۔ آپے کر ویکھے ۔ خود ہی سازندہ خودہی نگراں۔ سر سر۔ ہر ایک ذمے ۔ لیکھے ۔ حساب ۔ سرت بجھائی ۔ ہوش و سمجھ ۔ اگم اگوچر ۔ انسانی عقل وہو ش سے بلند نا قابل بیان ۔ جیوا ساچی نائی ۔ زندگی سچے نام سچے ہے (1) تم سر ۔ تیرے برابر ۔ تیراثانی ۔ ائیا جا یسی ۔ نہ آئیا ہے نہ ہجائیگا۔ نیٹر۔ فیصلہ ۔ بھرم۔ شک و شبہات ۔ چکالئی ۔ مٹتا ہے ۔ اکتھ کہائے ۔ جو نا قابل بیان ہے بیان کراتا ہے ۔ سچ میہہ سا چ سمانا۔ پاکیزہ ۔ صدیوی میں ہی پاک جذب ہو سکتا ہے مل سکتا ہے ۔ اپائے ۔ پیدا کرکے ۔ آپ سمائے ۔ خود ہی مٹاتا ہے ۔ حکمی حکم پچھانا۔ حکم دینے والے کے حکم کی پہچان کی ۔ سچی وڈیائی ۔ سچی عطمت ۔ من انت سکھائی ۔ دل کا آخری ۔ ساتھی (2) الکھ ۔ سمجھ سے باہر۔ سرجنہار۔ سازندہ ۔ پیدا کرنے والا ۔ سندیا ۔ اے ساز گار۔ داد۔ جھگڑا۔ ردھندیا۔ بڑھتا ۔ سرندیا۔ اے ساز گار ۔ داد۔ جھگڑا۔ ددھندیا ۔ بڑھنا ہے ۔ دوئے راہ ۔ دو طرز زندگی ۔ ترک پرہیز گاری و دنیاداری ۔ حکم۔ فرمان۔ سبائے ۔ سب کے لئے ۔ جنم موآ۔ پیدائش و موت ۔ نام۔ سچ و حقیقت۔ بیلی ۔ دوست۔ یار۔ وکھ ۔ زہر۔ سربھار۔ ذمے گناہ ۔ سوارنہارا۔ درستی کی توفیق رکھنے والا۔ سبھائے ۔ پہچان (3) انمرت بان۔ آب حیات کی مانند گفتار ۔ رسن ۔ زبان۔ رسائے ۔ پر لطف۔ با مزہ ۔ مراد۔ میٹھی ۔ نام تسائے ۔ حقیقت کے طلبگار ۔ گر کے سبد وکانے ۔ کلام مرشد کے غلام ، خدمتگار ۔عمل پیرا۔ پارس۔ وہ بٹی چکے چھونے سے نکما لوہا سونا ہوجاتا ۔ لہذا مرشد ایک پارس ہے جس کی صحبت و قربت سے بد کرداری بھی نیک پارسا اورمرید مرشد ہوجاتا ہے ۔ بھانے ۔ چاہت۔ پیارا۔ امرابد۔ صدیوی زندگی کا درجہ ۔ آپ ۔ خوئشتا ۔ خودی ۔ورلا ۔ کوئی ہی ۔ شاذو نادر۔ گیان ۔ علم ۔ سمجھ ۔ واپاری ۔ سوداگر (4) بھوکہہ۔ پیاسے ۔ طلبگار ۔ آٹھ ۔ سرامیہ۔ کیؤ جائیسا۔ کیسے جاسکتا ہوں ۔ ساچ چوائی ۔ ھقیقیبیان ۔ گورمکھ ۔ مرشد کے وسیلے سے ۔ ساچ۔ حقیقت ۔ دبنا ناتھ ۔ غریب پرور ۔ دیال ۔ مہربان۔ نرنجن۔ بیداگ۔ پاک ۔ اندن۔ ہر روز۔ وکھانا۔ بیان کرتا ہے ۔ کرنی ۔ اعمال۔ دھرہو۔ الہٰی حجور سے ۔ آپ موآ۔ خودی مٹائی ۔ من ماری ۔ اپنے دل کو زہر یا تابع کیا۔ پرہیز گار بنائیا ۔ مہارس۔ بھاری پر لطف ۔ ترشنا ۔ خواہشات کی بھوک پیاس ۔ نواری ۔ مٹائی ۔
ترجمہ:
اےخدا تیرا نام سچ وحقیقت اپنانے انسان کے دل میں روحانیت اور اخلاق پیدا ہوتا ہے ۔ اور دل کو سردر حاصل ہوتا ہے الہٰی نام سچ حق حقیقت واصلیت صڈیوی رہنے والی ہے ۔خدا اوصاف کا خزانہ ہے اور سب کے دلی راز جاننے والا ہے ۔ علم مرشد سے پتہ چلتا ہے کہ سازندہ خدا بے پناہ قوتوں کا مالک ہے جس نے یہ عالم پیدا کیا ہے جس نے یہ عالم پیدا کیا ہے مٹاتا بھی وہی ہے ۔ اس کے فرمان کو کوئی روک یا منسوخ نہیں کراسکتا ہے ۔ خدا خؤد ہی پیدا کرکے خود ہی نگرانی اور سنبھال کرتا ہے ۔ خود ہی انسان کردار و اعمال کے مطابق اسکا حساب تحریر کرتا ہے ۔ خود ہی انسان کو طرز زندگی اپنانے کاشعور اور سلیقہ سمجھاتا ہے اے نانک۔ خدا انسان کی رسائی اور توفیق سے بلند ترین ہستی ہے اور اسکی طاقت انسانی توفیق بیان سے بلند ترین ہے ۔ سچے نام و حقیقت سے زندگی بنتی و حاصل ہوتی ہے (1) اے خدا نہیں ثانی تیرا اس عالم میں جو بھی پیدا ہوتا ہ آخر مٹ جاتا ہے تیرے ہی فرمان سے تنازعے مٹتے ہیں وہم و گمان ختم ہوتا ہے ۔مرشد وہم گمان و بھٹکن یا گمراہی مٹا تا ہے ۔ نا قابل بیان کو بینا کراتا ہے مراد اس کی حمدوچناہ کراتا ہے ۔ وہ اس صدیوی سچے خدا کی یاد میں محو ومجذوب ہوجاتا ہے خدا خو ہ پیدا کرتا ہے اور خود ہی اپنے اند رجذب کر لیتا ہے ۔ اس کے فرمان سے ہی اسکی رضا کی سمجھ آتی ہے ۔ سچی عظمت مرشد سے ملتی ہے تو خدا دلمیں بستا ہے ۔ اور بوقت آخرت مددگار بنتا ہے ۔ اے نانک۔ خدا جیسی نہیں کوئی دیگر ہستی اسکے انم سچ حق وحقیقت میں ہی عظمت و حشمت مضمر ہے (2) اے خدا تو صدیوی پاک ساز گار ہے اورتحریر سے بعید ساز گار ہے ۔خدا واحد ہے اس نے عالم کے لئے دو راہیں بنائی نہیں جس سے تنازعے بڑھتے ہیں اسکی رضا و فرمان سے عالم پیدا ہوتاہے اور ختم ہوجاتا ہے ۔ دنیای میں الہٰی نام سچ و حقیقت کے بغیر کوئی دوست نہیں سارا عالم زیر آلود ہے اور انسان گناہوں سے بھر اہوا ہے ۔ انسان الہٰی فررمان سے پیدا ہوتا ہے ۔مگر وہ اس فرمان کو نہیں سمجھتا اور اپنے ہی حکم سے اسے صراط مستقیم پر گامزن کرنے کی توفیق رکھتا ہے ۔ اے نانک۔ کلام و سبق سے ہی اسکی سمجھ و پہچان ہوتی ہے کہ خدا ہی ساراے عالم کا پیدا کرنے والا ہے (3) الہٰی عاشق رب کے پیارے پریمی خدا کے حضور ہیں۔ شہرت پاتے ہیں۔ کیونکہ سبق کلام مرشد پر عمل پیرا ہوکر اپنی طرز زندگی پاک اور نیک بنا لیتے ہیں وہ آبحیات کلام اپنی زبان سے بیان کرتے ہیں اور اسکا لطف لیتے ہیں حتی کہ وہ الہٰی نام کی پیاس محسوس کرنے لگتے ہیں۔ اور کلام مرشد کے غلام اور قائل ہو جاتے ہیں۔ اے خدا جب پریمی تیرے دل کے محبوب ہوجاتے ہیں ۔ تب وہ مرشد کی صحبت و قربت سے پاک بنا لیتے ہیں ۔ جیسے پارس کو چھونے سے دوسری اشیا پارس ہوجاتی ہیں۔ جو خودی خود کی مٹالتیے ہیں۔ وہ روحانی واخلاقی زندگی بنا لیتے ہیں۔ مگر ایسے انسان بہت کم ہوتے ہیں۔ جو سبق وواعظ مرشد کو سمجھتے ہیں۔ اے نانک۔ الہٰی درویش و بھگت خدا کے در پر س چ وحقیقت کی سوداگری کرتے ہیں (4) جبتک انسان کو دنیاوی دولت کی بھوک اور پیاس ہے اس وقت تک الہٰی رسائی حاصل نہیں کر سکتا۔ جب مرشد سے سبق لیتا ہے تب الہٰی نام سچ وحقیقت یاد کرتا ہے ۔ سچے نام کو یاد کر سچ بول اور مرشد کے وسیلے سے حقیقت کی پہچان کی اور پہچان کر اشتراکیت پیدا ہوجاتی ہے ۔ اس سے ہر روز زبان سے خدا کا نام لیتا ہے ۔ اس خدا کا جو غریب پرور مہربان بیداغ پاک خدا کا ہر روز نام لیتا ہے ۔ جس نے خدا اپنے حضور سے سچ و حقیقت نام الہٰی کا فرمان کرتا ہے و دنیاوی دولت کی بھوک پیاس مٹا لیتا ہے ۔ اور اسکے اثرات سے محفوظ ہوجات اہے ۔ اے نانک۔ اسے الہٰی نام سچ وحقیقت سے محبت ہوجاتی ہے ۔ الہٰی نام سے خواہشات کی پیاس مٹا لیتا ہے ۔

دھناسریِ چھنّت مہلا ੧॥
پِر سنّگِ موُٹھڑیِۓکھبرِنپائیِیاجیِءُ॥
مستکِ لِکھِئڑا لیکھُ پُربِ کمائِیا جیِءُ ॥
لیکھُ ن مِٹئیِ پُربِ کمائِیا کِیا جانھا کِیا ہوسیِ ॥
گُنھیِ اچارِ نہیِ رنّگِ راتیِ اۄگُنھبہِبہِروسیِ॥
دھنُ جوبنُ آک کیِ چھائِیا بِردھِ بھۓدِنپُنّنِیا॥
نانک نام بِنا دوہاگنھِ چھوُٹیِ جھوُٹھِ ۄِچھُنّنِیا॥੧॥
بوُڈیِ گھرُ گھالِئو گُر کےَ بھاءِ چلو ॥
ساچا نامُ دھِیاءِ پاۄہِسُکھِمہلو॥
ہرِ نامُ دھِیاۓ تا سُکھُ پاۓپیئیِئڑےَدِنچارے॥
نِج گھرِ جاءِ بہےَ سچُ پاۓاندِنُنالِپِیارے॥
ۄِنھُبھگتیِگھرِۄاسُنہوۄیِسُنھِئہُلوکسباۓ॥
نانک سرسیِ تا پِرُ پاۓراتیِساچےَناۓ॥੨॥
پِرُ دھن بھاۄےَتا پِر بھاۄےَناریِجیِءُ॥
رنّگِ پ٘ریِتمراتیِگُرکےَسبدِۄیِچاریِجیِءُ॥
گُر سبدِ ۄیِچاریِناہپِیاریِنِۄِنِۄِبھگتِکریئیِ॥
مائِیا موہُ جلاۓپ٘ریِتمُرسمہِرنّگُکریئیِ॥
پ٘ربھساچےسیتیِرنّگِ رنّگیتیِ لال بھئیِ منُ ماریِ ॥
نانک ساچِ ۄسیِسوہاگنھِپِرسِءُپ٘ریِتِپِیاریِ॥੩॥
پِر گھرِ سوہےَ نارِ جے پِر بھاۄۓجیِءُ॥
جھوُٹھے ۄیَنھچۄےکامِنآۄۓجیِءُ॥
جھوُٹھُ الاۄےَکامِنآۄےَناپِرُ دیکھےَ نیَنھیِ ॥
اۄگُنھِیاریِکنّتِۄِساریِچھوُٹیِۄِدھنھریَنھیِ॥
گُر سبدُ ن مانےَ پھاہیِ پھاتھیِ سا دھن مہلُ ن پاۓ॥
نانک آپے آپُ پچھانھےَ گُرمُکھِ سہجِ سماۓ॥੪॥
دھن سوہاگنھِ نارِ جِنِ پِرُ جانھِیا جیِءُ ॥
نام بِنا کوُڑِیارِ کوُڑُ کمانھِیا جیِءُ ॥
ہرِ بھگتِ سُہاۄیِساچےبھاۄیِبھاءِبھگتِپ٘ربھراتیِ॥
پِرُ رلیِیالا جوبنِ بالا تِسُ راۄےرنّگِراتیِ॥
گُر سبدِ ۄِگاسیِسہُراۄاسیِپھلُپائِیاگُنھکاریِ ॥
نانک ساچُ مِلےَ ۄڈِیائیِپِرگھرِسوہےَناریِ॥੫॥੩॥
لفظی معنی:
پرسنگ۔ خدا ساتھ ۔ موٹھڑیے ۔ گمراہ ہوئے انسان ۔ خبر۔ بیدار۔ مستک ۔ پیشانی ۔ لکھیڑا۔ تحریر ۔ لیکھ ۔ مضمون۔ پرب۔ پہلے کمائیا ۔ اعمال۔ کیا جانا ۔ کیا سمجھوں۔ ہوسی ۔ ہوگا۔ گنی ۔ اوصاف۔ آچار۔ چال چلن ۔ اخلاق۔ رنگ راتی ۔ پریم میں محو۔ اوگن ۔ بداوصاف۔ دھن جو بن۔ دولت اور جوانی ۔ آک کی چھائیا ۔ زیر آلودہ سایہ ۔ بیکار سہارا ۔ ہر ودھ ۔ بڑھاپا۔ دن پنیا ۔ عمر ختم ہو جاتی ہے ۔نام بنا سچ ۔ حق و حقیقت کے بغیر۔ دوہاگن۔ چھٹڑ۔ طلاقی ۔ رنڈی ۔ وچھنیا۔ جدائی پائی (1) بوڈی ۔ ڈوبی ۔ گھر گھالیؤ ۔ گھر برباد کیا ۔ بائے ۔ پریم ۔ ساچا نام دھیائے ۔ حقیقت پر ستی پاوہو سکھ محلو۔ آرام و آسائش اور ٹھکانہ حاصل ہوگا۔ پیڑے ۔ اس دنیا میں نج گھر ۔ خوئش ذہن۔ سچ پائے ۔ حقیقت معلوم ہو۔ اندن۔ ہر روز۔ بن بھگتی ۔ بغیر پیار پریم۔ لوک سبائے ۔سارے لوک۔ رشی ۔ پر لطف۔ پر سکون ۔ راتی ساچے نائے ۔ سچے نام۔ سچ حق وحقیقت میں محو ومجذوب ہونے سے (2) پر دھن بھاوے ۔ اگر انسان کو خدا سے محبت ہو ۔ پر بھاوے ۔ ناری جیؤ۔ تبھی خدا کو اپنے پیار کرنے والے سے پیار ہوگا۔ رنگ پریتم رائی ۔ الہٰی پیار میں محو۔ گر کے سبد۔ کلام مرشد وچاری۔ سمجھ کر۔ نو نو۔ جھک جھک ۔ مائیا موہ جالائے ۔ دنیاوی دولت کی محبت ختم کرے ۔ پریتم رس۔ پیارے کا لطف۔ رنگ ۔ پریم۔ سیتی ۔ سے ۔ رنگ ۔ رنگینی ۔ پریم پیار میں مجذوب۔ لال۔ سرخرو۔ ساچ وہی ۔ حقیقت پرستی ۔ سوہاگن۔ خوشباش ۔ پر سیؤ پریت پیاری ۔ الہٰی محبوبہ (3) پرگھر ۔ خاوند کے گھر ۔ سوہے ۔ اچھی لگتی ہے ۔ پر بھاوئے ۔ اگر خاوند سے محبتہے ۔ رین ۔ بول۔ چوے ۔ بولے ۔کام نہ آوئے ۔ بیکار نہیں۔ نینی ۔ آنکھوں سے ۔ اوگنیاری ۔ بداوصاف ۔ کنت وساری ۔ خاوند کی بھلائی ۔ بدھن رینی ۔ بلا خاوند رات ۔ پھاہی پھاتھی ۔ غلامی میں جکڑی ۔ سادھن۔ ایسی عورت۔ محل۔ ٹھکانہ ۔ آپے آپ پچھانے ۔ اپنی اصلیت و حقیقت کو سمجھے ۔ گورمکھ ۔مرشد کے وسیلے سے ۔ سہج ۔ روحانی ۔ ذہنی سکون (4) دھن۔ شاباش۔ مبارک ۔ سہاگن ۔ خاوند پرست۔ پر جانیا ۔ جس نے خاوند مراد خدا کو پہچانا ۔ نام بنا۔ سچ وحقیقت کے بگیر ۔ کوڑیار۔ جھوتی ۔ کوڑ کمانیا جیؤ۔ جھوٹے اعمال کرتا ہے ۔ ہر بھگت ۔ الہٰی پریم ۔ سہاوی ۔ سہاونا۔ ساچے بھاری ۔ سچے کی پیاری ۔ بھائے بھگت۔ پریم کے پیار سے ۔ پرھ ۔ راتی ۔ خدا میں محو ومجذوب ۔ پر رلیا لہ ۔ پر جوش خاوند ۔ جو ب بالا۔ بھر جوان ۔ تس راوے رنگ۔ راتی ۔ اسے پریم پیار سے اسکا لطف اٹھاتی ہے ۔ گر شبد۔ کلام مرشد۔ وگاسی ۔ خوشی محسو کرتی ہے ۔ گنکاری ۔ بااوصاف ۔ ساچ۔ سچ وحقیقت سے ۔ وڈیائی ۔ عظمت ۔ سہہ۔ خاوند ۔ راداسی ۔ محو ومجذوب ۔
ترجمہ:
اے گمراہ انسان خدا تمہارے ساتھ ہے مگر تجھے خبرنہیں جو تو نے اعمال کئے ہیں پہلے تحریر ہیں تیری پیشانی پر ۔ پہلے کئے اعمالوں کا حساب ختم ہوتا نہیں مٹ سکتا نیہں سمجھ نہیں آتی کہ عاقبت میں حال ہمارا کیا ہوگا۔ اوصاف واخلاق نہیں جس دامن بداوصافکی وجہ سے بیٹھا روئے گا ۔ اوصاف واخلاق نہیں جس دامن بداوصافکی وجہ سے بیٹھا روئے گا پچھتا ئیگا۔ سرمایہ اور جوانی مانند آک کے سایہ ہے بڑھا پا آمانے پر آخر عمر ختم ہوجاتی ہے ۔ اے نانک الہٰی نام سچ حق و حقیقت کے بغیر بد قسمت انسان دنیاوی دؤلت کی گرفتمیں جھوتی محبت کیوجہ سے خدا سے جدائی مل جاتی ہے (1) جو غرقاب محبتمیں دنیاوی دولت کے ہو جاتے ہیں۔ مرشد کی محبت میں رہ کر صدیوی نام خدا کی یاد سے در وراہ الہٰی پا لیتے ہیں۔ سچے نام کی یادوریاض سے آرام پائیا جات اہے اس عالم میں زندگی چند روزہ ہے ۔ حقیقت پرستی اور سمجھ کر ہی سکون ملتا ہے اورملاپ الہٰی ہوتا ہے اور ہر روز وصل حاصل ہوتا ہے ۔ اسے ۔ اے سارے لوگوں سنو بغیر پیارم پیار کے بغیر روحانی و ذہنی سکون حاصل نہیں ہو سکتا ۔ اے نانک ۔ جب انسان خدا کی محبت میں محو ومجذوب ہوجاتا ہے ۔ سچ حق وحقیقت پرست ہوجاتا ہے تو سکون روحانی پاتا ہے اور وصل الہٰی مل پاتاہے (2) اگر انسان کی محبت ہوگی خدا سے تبھی خدا کی محبت ہوگی انسان سے پیارے خدامین محو ومجذوب اور کلام مرشد پر عمل پیراہوکر پارسا دانا ہوجاتا ہے انسان کلام مرشد کو سمجھنے والا انسان محبوب خدا ہوجاتا ہے اور یقین واثق و عاجزی انکساری سے پیار خدا سے کرتا ہے ۔ پیارا خدااسکے دل سے دنیاوی دولت کی محبتمٹادیتا ہے ۔ تو پر لطف محبت کرتا ہے ۔ سچے خدا کی صحبت سے سرخرو ہوجات اہے انسان اپنے دل پر قابو پا لیتا ہے زندگی خوشحال و خوش اخالق ہو جاتی ہے ۔ اے نانک۔ سچ حق حقیقت جب دل من انسان کی بس جائے تو محبوب الہٰی ہوجات اہے (3) بارگا ہے خدا میں تبھی انسان عظمت وحشمت پاتا ہے جب محبوب خدا کاہوتا ہے جھوٹ او ر کفر سے کیا کلام کرتا ہے ۔ بذھن خدا جو جھوٹ بولتا ہے ۔ خدا سکی طرف دیکھتا نہیں۔ بداوصاف کو خدا بھلا دیتا ہے اور زندگی عذابون میں گذرتی ہے منکر ہے جو کلام مرشد سے دنیاوی دولت کی غلامی میں گرفتار وہ رہتا ہے ۔ ٹھکانہ نہیں ملتا۔ اسے خانہ خدامیں اے نانک۔ جو پہچان خوئش کی کرتا ہے وساطت مرشد سکون روحانی پاتا ہے (4) خوش قسمت ہے انسان جس نے حاصل پہچان خدا کی کرلی ۔ الہٰی نام سچ وحقیقت کے بغیر کافر اور جھوٹا ہے انسان کردار بھ اسکا جھوٹا ہے جو انسان پریم پیار سے پسندیدہ خدا ہوجاتا ہے محوومجذوب پیار خدا ہوجاتا ہے ۔ روحانی سکون کا سرچشمہ صدیوی جوان کو وصل الہٰی اسکے محبت پیار میں محویت و مجذوبیت حاصل ہوجاتی ہے کلام مرشد سے خوشباش انسان الہٰی وصل کا مزہ لیتاہے اسکی ضمیر روحانی اوصاف والی ہوجاتی ہے ۔اے نانک ۔ صدیوی سچ و حقیقت سے انسان کو عظمت ملتی ہے اور بارگاہ الہٰی عزت و حشمت حاصل ہوتی ہے ۔

دھناسریِ چھنّت مہلا ੪ گھرُ ੧
ੴ ستِگُر پ٘رسادِ॥
ہرِ جیِءُ ک٘رِپاکرےتانامُدھِیائیِئےَجیِءُ॥
ستِگُرُ مِلےَ سُبھاءِ سہجِ گُنھ گائیِئےَ جیِءُ ॥
گُنھ گاءِ ۄِگسےَسدااندِنُجاآپِساچےبھاۄۓ॥
اہنّکارُ ہئُمےَ تجےَ مائِیا سہجِ نامِ سماۄۓ॥
آپِ کرتا کرے سوئیِ آپِ دےءِ ت پائیِئےَ ॥
ہرِ جیِءُ ک٘رِپاکرےتا نامُ دھِیائیِئےَ جیِءُ ॥੧॥
انّدرِ ساچا نیہُ پوُرے ستِگُرےَ جیِءُ ॥
ہءُ تِسُ سیۄیِدِنُراتِمےَکدےنۄیِسرےَجیِءُ॥
کدے ن ۄِساریِ اندِنُ سم٘ہ٘ہاریِجانامُلئیِتاجیِۄا॥
س٘رۄنھیِسُنھیِتاِہُمنُ ت٘رِپتےَگُرمُکھِانّم٘رِتُپیِۄا॥
ندرِ کرے تا ستِگُرُ میلے اندِنُ بِبیک بُدھِ بِچرےَ ॥
انّدرِ ساچا نیہُ پوُرے ستِگُرےَ ॥੨॥
ستسنّگتِ مِلےَ ۄڈبھاگِتاہرِرسُآۄۓجیِءُ॥
اندِنُ رہےَ لِۄلاءِتسہجِ سماۄۓجیِءُ॥
سہجِ سماۄےَتاہرِمنِبھاۄےَسدااتیِتُبیَراگیِ॥
ہلتِ پلتِ سوبھا جگ انّترِ رام نامِ لِۄلاگیِ॥
ہرکھ سوگ دُہا تے مُکتا جو پ٘ربھُکرےسُبھاۄۓ॥
ستسنّگتِ مِلےَ ۄڈبھاگِتاہرِرسُ آۄۓجیِءُ॥੩॥
دوُجےَ بھاءِ دُکھُ ہوءِ منمُکھ جمِ جوہِیا جیِءُ ॥
ہاءِ ہاءِ کرے دِنُ راتِ مائِیا دُکھِ موہِیا جیِءُ ॥
مائِیا دُکھِ موہِیا ہئُمےَ روہِیا میریِ میریِ کرت ۄِہاۄۓ॥
جو پ٘ربھُدےءِتِسُچیتےَ ناہیِ انّتِ گئِیا پچھُتاۄۓ॥
بِنُ ناۄےَکوساتھِنچالےَپُت٘رکلت٘رمائِیادھوہِیا॥
دوُجےَ بھاءِ دُکھُ ہوءِ منمُکھِ جمِ جوہِیا جیِءُ ॥੪॥
کرِ کِرپا لیہُ مِلاءِ مہلُ ہرِ پائِیا جیِءُ ॥
سدا رہےَ کر جوڑِ پ٘ربھُمنِبھائِیاجیِءُ॥
پ٘ربھُمنِبھاۄےَتاہُکمِسماۄےَہُکمُمنّنِسُکھُپائِیا॥
اندِنُ جپت رہےَ دِنُ راتیِ سہجے نامُ دھِیائِیا ॥
نامو نامُ مِلیِ ۄڈِیائیِنانکنامُمنِبھاۄۓ॥
کرِ کِرپا لیہُ مِلاءِ مہلُ ہرِ پاۄۓجیِءُ॥੫॥੧॥
لفظی معنی:
دھیایئے ۔ دھیان دینا۔ توجو کرنا۔ سہج ۔ سکنو سے ۔ سبھائے ۔ پریم سے ۔ گن گاییئے ۔ صفت صلاح۔ وگسے ۔ خوشی محسوس ہو۔ بھاوئے ۔ چاہے ۔اہنکا۔ غرور۔ تکبر ۔ ہونمے ۔ خودی (1) نیہو ۔ پیار۔ ستگرے ۔سچے مرشد۔ سیوی ۔ خدمت۔ وساری ۔بھلانا۔ سماری ۔ سنبھال ۔سروی ۔ کانوں ۔ ترپنے ۔ تسلی ۔ گورمکھ ۔ مرید مرشد ۔ انمرت ۔ آب حیات ۔ ندر ۔نگاہ۔ شفقت۔ مہربانی۔ ببیک بدھ۔ نتیجہ خیز عقل ۔ نیک و بد کی تمیز کرنے والی سمجھ ۔ بچرے ۔ کام آتی ہے (2) ست سنگت۔ راست پرست۔ اجتماع ۔ صحبت وقربت پاکدامناں۔ وڈبھاگ۔ بلند قسمت۔ ہر رس۔ الہٰی لطف ۔لو۔ محبت۔ سہج سماوئے ۔ ذہنی سکون۔ ملے ۔ تیت ۔ طارق۔ بیراگی ۔ طارق۔ ہلت پلت۔ ہر دو عالموں میں۔ سوبھا۔ نیک شہرت۔ رام نام لو ۔ الہٰی نام سچے محبت ۔ہرکھ سوگ۔ غمی ۔ خوشی۔کتا ۔ ازاد۔ نجات یافتہ ۔ بھاوئے ۔ راضی چاہے (3) دوجے بھائے ۔ دوسروں سے محبت۔ منمکہہ۔ مرید من۔ حم ۔ موت کا فرشتہ ۔ جوہیا۔ تاک۔ زہر نظر۔ موہیا ۔محبت میں۔ ہونمے روہیا۔ خودی کے جوش میں۔ رہاؤ۔ گنزرے ۔ تیس ۔ اسے ۔ چیتے ۔ یاد نہیں۔ غور نہیں۔ انت۔ آکر۔ بن ناوے ۔ خداکے نام۔ سچ حق وحقیقت کے بغیر ۔ کلتر ۔ بیوی ۔ زوجہ ۔ مائیا دہوئیا ۔ دنیاوی دولت کے دہوکے فریب کی وجہسے ۔ محل ۔ ٹھکانہ ۔ کر۔ ہاتھ ۔حکم سماوے ۔ فرمانبردار ۔ راضی و رضا ۔ اندن۔ ہر روز۔ سہجے ۔ پر سکون ۔ نامو نام۔ صرف۔ الہٰی نام ۔ سچ حق وحقیقت سے ۔ وڈیائی ۔عظمت۔ بزرگی ۔ من بھاوے ۔دل چاہتا ہے ۔
ترجمہ:
اگرخدا رحمت کرے تو الہٰی نام سچ حق وحقیقت میں توجہ کریں۔ سچا مرشد پیار و پریم سےملے تو پر سکون حمدوثناہ کریں۔ حمدوثناہ سے خوشی حاصل ہوتی ہے ۔ ہمیشہ اگر ہو رضائے خدا ۔ غرور تکبر خودی اور دنیاوی دولت کی محبت ترک کرکے روحانی وزہنی سکون حاصل ہوتا ہے ۔ اور سچ حق حقیقت میں محوئیت و مجذوبیت ہوجاتی ہے ۔ خدا خود کرتا ہے ۔ جو دیا ہے وہی ملتا ہے الہٰی رحمت سے ہی الہٰی نام میں توجہ اور دھیان لگائیا جا سکتا ہے (1) اے سچے مرشد دل میں سچا پیار سچی محبت ہوگئی ہے۔ میں روز و شب خدمت کرتا ہوں ۔ مجھے وہ کبھی نہیں بوھلتا۔ میں کبھی بھلاتا نہیں اور اسکے نام سے روحانی زندگی میسر ہوتی ہے ۔ کانوں سے سنتا ہوں تو دل کو تسکین حاصل ہوتی ہے ۔ مرشد کی وساطت سے آبحیات جس سے روحانی واخالقی زندگی بنتی اور متی ہے نوش کرتاہوں ۔ اگر الہٰی نظع انیت و شفقت حاصل ہو تو ملاپ مرشد سے نتیجہ خیز نیک و بد میں اچھا ئی برائی مین تمیز کرنے والا سوچ سمجھ و عقل کام کرتی ہے ۔ کاملمرشد کی رحمت سے خدا سے صدیوی عشق و صحبت ہوگئی ہے (2)بلند قسمت سے صحبت و قربت (سے) راست بازوں و پاکدامنوں کی نصبی ہو جائے تو الہٰی لطف نصیب ہوتاہے ۔ ہر وز محبت بنی رہتی ہے ۔ اور روحانی وزہنی سکون رہتا ہے روحانی سکون سے انسان کو الہٰیمحبت ملتی ہے انسان خدا کا دلی پیارا ہو جاتا ہے ۔ اس سے انسان تارک اور تیاگی ہوجاتا ہے ۔ جس سے ہر دو عالموں میں عزت و حشمت حاصل ہوتی ہے ۔ پر ماتما کے نام حق سچ وحقیقت سے اشتیاق پیدا ہو جاتا ہے ۔ اور خوشی وغمی سے آزاد ہوجاتا ہے تعلق رشتہ منقطع ہوجاتا ہے ۔انسان الہٰی رضا میں راضی رہتا ہے ۔ اگر بلند قسم سے پاکدامنوں راست بازاروں کی صحبت و قربت حاصل ہو جائے تب الہٰی نام سچ حق وحقیقت کا لطف آنے لگتا ہے (3) خدا کے علاوہ دوسری محبت خودی پسند مرید من روحانی وذہنی موت ہمیشہ اسکی تاک میں رہتی ہے ۔ وہ دنیاوی دولت کی محبت کے عذاب اور خودی میں گرفتار و مجذوب میری میری کرتے عمر گذر جاتی ہے ۔ خڈا جو نعتمیں بخشتا ہے یاد نہیں آخر پچھتاتا ہوا کوچ کر جاتا ہے ۔ بغیر الہٰی نام سچ حق و حقیقتکی کوئی ساتھی نہیں نہ ساتھی دیتا ہ ۔ بیٹا ۔ بیوی ۔ دولت ۔ سرمایہ سراسر دہوکا ہے فریب ہے ۔ خودی پسند مرید من کی روحانی دولت سے محبت کی وجہ سے ہمیشہ عذاب پاتا ہے (4) اے خدا کرم وعنایت سے ملاپ بخشش تاکہ تیرا در تیرا ٹھکانہ نصیب ہو۔ جو ہمیشہ ہاتھ باندھتا ہے عاجزی و انکساری ۔ حلیمی اکتیار کرتا ہے خدا کے دل کا پیارا ہوجاتا ہے ۔ جب خدا کا پیارا ہوجاتا ہے تو فرمانبرداری اور الہٰی رضا میں راضی رہتا ہے ۔ فرمانبرداری اور رضا سے سکھ آرام و آسائ ش حاصل ہوتی ہے وہ ہر وقت الہٰی یادوریاض میں مشغول رہتا ہے اور پر سکون نام میں توجہ دیتے اور دھیان لگاتے ہیں۔ اے نانک الہٰی نام سے ناموس اور عظمت حاصل ہوتی ہے نام دل کوپیار لگتا ہے ۔ اے خدا اپنی کرم و عنایت سے اپنے ساتھ ملاے تاکہ تیرا در تیری حضور حاصل ہوجائے ۔

دھناسریِ مہلا ੫ چھنّت
ੴ ستِگُر پ٘رسادِ॥
ستِگُر دیِن دئِیال جِسُ سنّگِ ہرِ گاۄیِئےَجیِءُ॥
انّم٘رِتُہرِکانامُسادھسنّگِراۄیِئےَجیِءُ ॥
بھجُ سنّگِ سادھوُ اِکُ ارادھوُ جنم مرن دُکھ ناسۓ॥
دھُرِ کرمُ لِکھِیا ساچُ سِکھِیا کٹیِ جم کیِ پھاسۓ॥
بھےَ بھرم ناٹھے چھُٹیِ گاٹھے جم پنّتھِ موُلِ ن آۄیِئےَ॥
بِنۄنّتِنانکدھارِکِرپاسداہرِ گُنھ گاۄیِئےَ॥੧॥
نِدھرِیا دھر ایکُ نامُ نِرنّجنو جیِءُ ॥
توُ داتا داتارُ سرب دُکھ بھنّجنو جیِءُ ॥
دُکھ ہرت کرتا سُکھہ سُیامیِ سرنھِ سادھوُ آئِیا ॥
سنّسارُ ساگرُ مہا بِکھڑا پل ایک ماہِ ترائِیا ॥
پوُرِ رہِیا سرب تھائیِ گُر گِیانُ نیت٘ریِانّجنو॥
بِنۄنّتِنانکسداسِمریِسربدُکھبھےَبھنّجنو॥੨॥
آپِ لیِۓلڑِلاءِکِرپادھاریِیاجیِءُ॥
موہِ نِرگُنھُ نیِچُ اناتھُ پ٘ربھاگماپاریِیاجیِءُ॥
دئِیال سدا ک٘رِپالسُیامیِنیِچتھاپنھہارِیا॥
جیِء جنّت سبھِ ۄسِتیرےَسگلتیریِسارِیا॥
آپِ کرتا آپِ بھُگتا آپِ سگل بیِچاریِیا ॥
بِنۄنّتنانکگُنھگاءِجیِۄاہرِجپُجپءُبنۄاریِیا॥੩॥
تیرا درسُ اپارُ نامُ امولئیِ جیِءُ ॥
نِتِ جپہِ تیرے داس پُرکھ اتولئیِ جیِءُ ॥
سنّت رسن ۄوُٹھاآپِتوُٹھاہرِرسہِسیئیِماتِیا॥
گُر چرن لاگے مہا بھاگے سدا اندِنُ جاگِیا ॥
سد سدا سِنّم٘رتب٘ز٘زسُیامیِساسِساسِگُنھ بولئیِ ॥
بِنۄنّتِنانکدھوُرِسادھوُنامُپ٘ربھوُامولئیِ॥੪॥੧॥
لفظی معنی:
ستگر۔ سچا مرشد۔ دین دیال۔ غریب پرور۔ انمرت۔ آبحیات۔ روحانی زندگی بنانے والا پانی ۔ ہر کانام۔ الہٰی نام ۔ سچ ۔ حق ۔ حقیقت ۔ سادھ ۔ پاکدامن ۔ جس نے طرز زندگی پاک بنالی۔ سنگ۔ ساتھ ۔ صحبت۔ قربت۔ راوئے ۔ حمدوثناہ کیجئے ۔ یادوریاض کرنا۔ بھج۔ یا زکر سنگ سادہو ۔ پاکدامن ۔ پارسا کی صحبت میں ۔ ایک ۔ واحد۔ ارادہو۔ یاد کر۔ نا سیئے ۔ ختم ہو۔ دھر کرم۔ آغاز سے بخشش ۔ ساچ سکھیا۔ سچی نصٰحت۔ سچا سبق۔ پھاسیئے ۔ پھندہ۔ بھے ۔خوف۔ بھرم۔ وہم وگمان۔ ناتھے ۔ ختم ہوتا ہے ۔ گاٹھے ۔ الجھن ۔ تنازعہ ۔ جم پنتھ۔ روحانی موت کیراہیں۔ مول۔ بالکل۔ بنونت۔ عرض گذارتا ہے ۔ دھار کرپا۔ کرم وعنیات فرمایئے ۔ سدا۔ ہمیشہ ۔ ہرگن۔ الہٰی حمدوثناہ۔
ترجمہ معہ تشریح:
سچا مرشد غریب پرور ہے جس کی صحبت میں الہٰی حمدوثناہ کریں۔ آبحیات الہٰی نام صحبت و قربت پاکدامن میں یادوریاض کرں۔ سادہو کی صحبت اختیار کر واحد خدا میں دھیان لگا تاکہ تیرا تناسخ ختم ہو جائے ۔ جس کی قیمت میں بارگاہ خدا سے بخشش تحریر ہوتی ہے ۔ وہ ہمیشہ الہٰینام سچ حق وحقیقت کا سبق دل میں بساتا ہے اسکا روحانی موت کا پھندہ کٹ جاتاہے ۔ اس کے خوف وہم وگمان الجھنیں مخمسے ختم ہوجاتے ہیں۔ وہ روحانیموت کا راستہ اختیارنہیں کرتا ۔ نانک عرض گذارتا ہے اے خدا کرم و عنایت فرما کہ ہمیشہ الہٰی حمدوثناہ کرتے ہیں۔
لفظی معنی:
ندھریا۔ بے سہارا۔ دھر۔ سہارا۔ ایک نام نرنجنو۔ واحد پاک نام سچ وحقیقت۔ داتا۔ نعمیتں عطا کرنے والا ۔ سخی ۔ سرب دکھ بھنجو۔ سارے عذاب مٹانے والا۔ دکھ ہرتا۔ عذآب دور کرنے والا۔ سکھیہہ سوامی ۔ آرام و آسائش کا مالک ۔ سرن سادہو ۔ پاکدامن کے زیر سایہ۔ پناہ۔ سنساار ۔ ساگر۔ دنیاوی سمندر۔ وکھڑا۔ دشوار گذار ۔ ترائیا۔ پار کرائیا۔ کامیاب بنائیا۔ پور رہیا۔ بستا ہے ۔ سرب تھائی۔ سب جگہ ۔ گرگیان ۔ علم مرشد ۔ نیری ۔ آنکھوں۔ انمو ۔ سرمہ۔ سرب دکھ بھنجو۔ سارے عذاب مٹانے والا۔
ترجمہ:
بے سہاروں کے لئے الہٰینام ہی ایک سہارا ہے جو بیداغ اور پاک ہے اے خدا تو سب کو نعمتیں عنایت کرنے والا سختی ہے اور سب کے دکھ درد مٹانے والا ہے ۔ آرام و آسائش کا مالک اور عذآب دور کرنے والا ہے ۔ جو خدا رسیدہ پاکدامن کی صحبت اختیار کرتا ہے ۔ یہ دنیاوی سمندر بھاری دشوار ہے وہ پل بھر مں اس سے پار لگاتا ہے مراد زندگی کامیاب بناتا ہے ۔ خدا ہر جگہ بستا ہے علم و سبق کا سرمیہ مرشد جس کی آنکھوں میں پڑجااتا ہے ۔ دکھائی دیتا ہے ۔ نانک عرض گذارتا ہ کسارے عذاب متانے والے خدا کو یاد کرؤ۔
لفظی معنی:
لڑپلے ۔ دامن۔ نرگن۔ بے اوصاف ۔ نیچ ۔کمینہ ۔ اناتھ۔ بے مالک۔ اگم۔ جس تک انسانی عقل و ہوش کی رسائی نہ ہو سکے ۔ اپاریا۔ لا محدود۔ دیال۔ مہربان۔ سوامی مالک۔ تھا پنہاریا ۔ ٹھکانے بنانے والے ۔ ساریا۔ سنبھال۔ کرتا۔ کرتار۔ بھگتا۔ صرف کرنے والا۔ یچاریا۔ ہر طرح کے خیالات اور سوچ سمجھ رکھنے والا۔ گن گائے ۔ حمدوثناہ ۔ ہر جپ ۔ الہٰی حمد۔ بنواریا۔ جنگلوں کے مالک ۔ خدا۔
ترجمہ:
جسے خدا اپنی کرم وعنایت اپنا دامن پکڑ لیتا ہے میں میں کمزے اوصاف بے مالک خدا انسانی عقل و ہوش اور رسائی سے بلند ترینہے لا محدود ہے رحمان الرحیم مالک ناتوانوں کمینوں کو بلند یوں پر پہنچانے والے ساری مخلوقات تیری زیر سایہ ہیں اور تو سب کی سنبھال کرا ہے تو زندہ ہے اور خود ہی زیر تصرف لانے والا بھی ہے اور خود ہی سب کا خیال کرنے والا ہے ۔ نانک عرض گذارتا ہے ۔ اے خدا کرم وعنیات فرما ک ہ تیری حمدوثناہ کرکے روحانی واخلاقی زندگی پاتا رہوں اور تیری یادوریاض کرتارہوں۔
لفظی معنی:
درس۔ دیدار۔ اپار۔ بیشمار۔ نام امولئی ۔ نام بیش قیمت۔ داس۔ غلام۔ خدمتگار۔ انولئی ۔ جس کا وزن نہ ہو سکے ۔ رسن۔ زبان ۔ سنت۔ خدا رسیدہ پاکدامن روحانی واخلاقی ومذہبی رہنما رہبر۔ دوٹھا ۔ بسا۔ توٹھا۔ مہربان ہوا۔ رسیہہ۔ پر ۔ لطف۔ مائیا۔ مست۔ محو۔ سیئی ۔ وہی ۔ گرچن۔ پائے مرشد۔ مہابھاگے ۔بھاری قیمت والے ۔ سدا۔ ہمیشہ اندن۔ ہر روز۔ جاگیا۔ بیدار ہوا۔ سمر تیہہ۔ یادوریاض ۔ سوآمی ۔ مالک ۔ ساس ساس ۔ ہر سانس مراد ہر وقت ۔گن بولئی ۔ اوصاف کہو۔ دہور۔ سادہو ۔ خاک پائے پاکدامن ۔ نام پربھؤ۔ الہٰی نام۔ سچ حق وحقیقت ۔ امولئی ۔ جس کی قیمت کا تعین و اندازہ ہ ہو سکے ۔
ترجمہ:
اے خدا تیرا دیدار لا محدود ہے اور تیرے نام سچ حق و حقیقت کی قیمت کا تعین اور اندازہ نہیں ہو سکتا۔ اے لا تعین وزن خدا تیرے خدمتگار ہر روز تجھے تیری یادریاض کرتے ہیں اے خدا تو اپنے سنتؤن پاکدامن خدا رسیدہ رہبروں پر مرہبان ہوتا ہے ان کی زبان پر بستا ہے یعنی وہ ہر وقت تیری یاد میں ہیں جو انسان پائے مرشد لگتے ہیں وہ بھاری بلند قیمت ہیں اور ہوجاتے ہیں اور بیدار مقنر ہو جائے ہیں۔ نانک عرض گذارتا ہے کہ خاک پائے پاکدامن اور نام الہٰی کی قیمت کا اندازہ اور تعین ہو سکتا ۔

راگُ دھناسریِ بانھیِ بھگت کبیِر جیِ کیِ
ੴ ستِگُر پ٘رسادِ॥
سنک سننّد مہیس سماناں ॥
سیکھناگِ تیرو مرمُ ن جاناں ॥੧॥
سنّتسنّگتِ رامُ رِدےَ بسائیِ ॥੧॥ رہاءُ ॥
ہنوُمان سرِ گرُڑ سماناں ॥
سُرپتِ نرپتِ نہیِ گُن جاناں ॥੨॥
چارِ بید ارُ سِنّم٘رِتِپُراناں॥
کملاپتِ کۄلانہیِجاناں॥੩॥
کہِ کبیِر سو بھرمےَ ناہیِ ॥
پگ لگِ رام رہےَ سرناںہیِ ॥੪॥੧॥
لفظی معنی:
سنگ۔ سند۔ سناتن۔ سنت کمار۔ برہما جی کے چار لڑکے تھے ۔ مہیش ۔ شوجی ۔ سمانا۔ جیسے ۔ سیکھ ناگ۔ سانپو کا راجہ ۔مرم۔ بھید۔ راز (1) ہنومان۔ رام چند کا فرمانبردار بھگت ۔ گڑ ۔ فرشتہ کے باشاہ ۔ سر جیے ۔ سر پٹ۔ فرشتوں کے راجے ۔ نرپت۔ انسانوں کے حکمران ۔ گن ۔ وصف۔ جاناں۔ سمجھے (2) چار وید۔ کملا پت۔ وشنو۔ گولا ۔ لچھی دنیاوی دولت (3) بھرمے ۔ بھٹکن ۔ گمراہ ۔ پگ ۔پاؤں ۔ رام رہے سرناہی۔ جو خدا کی پنا ہ لیگا۔
ترجمہ معہ تشریح:
روحانی رہبروں کی صحبت و قربت میں خدا دل میں بساتا ہوں۔ رہاؤ۔ اے خڈا۔ سنک سند اور شوجی جیسے تیرا راز نہیں سمجھ سکے سیکھ ناگ تیرا بھید نہیں پاسکا (1) نیو مان اور پرندوں کے راجہ گڑ فرشتوں کے راجے اور انسانوں کے باشاہ بھی تیرے اوصاف ہیں سمجھ سکے (2) وید ۔ سمرتیاں اور پران و لچھی کا خاوند و شنو بھی نہ سمجھ سکا (3) اے کبیر بتادے ۔ وہ گمراہ اور بھٹکن میں نہیں پرتا جو خدا کے پاؤں پڑا سکی پناہ لیتا ہے ۔

دِن تے پہر پہر تے گھریِیا آۄگھٹےَتنُچھیِجےَ॥
کالُ اہیریِ پھِرےَ بدھِک جِءُ کہہُ کۄنبِدھِکیِجےَ॥੧॥
سو دِنُ آۄنلاگا॥
مات پِتا بھائیِ سُت بنِتا کہہُ کوئوُ ہےَ کا کا ॥੧॥ رہاءُ ॥
جب لگُ جوتِ کائِیا مہِ برتےَ آپا پسوُ ن بوُجھےَ ॥
لالچ کرےَ جیِۄنپدکارنلوچنکچھوُنسوُجھےَ॥੨॥
کہت کبیِر سُنہُ رے پ٘رانیِچھوڈہُمنکےبھرما॥
کیۄلنامُجپہُرےپ٘رانیِپرہُایککیِسرناں॥੩॥੨॥
لفظی معنی:
دن۔ ہر روز ۔ پہر ۔ ہر وقت۔ گھر یاں۔ ہر گھڑی ۔ آد۔ عمر۔ تن چھیجے ۔ کمزور۔ دبلا۔ کال۔ موت۔ اہیری ۔ شکاری ۔ بدھک ۔ شکاری ۔ جیؤ۔ جیسے ۔ مانند۔ بدھ ۔ طریقہ (1) سودن ۔ وہ دن۔ ست۔ بیٹا۔ بنتا۔ بیوی ۔کود۔ کون ۔ کاکا ۔کس کا (1) رہاؤ۔ جب لگ ۔ جس وقت تک ۔ جوت ۔ نور ۔ روح ۔ ۔ کائیا ۔ جسم۔ درتے ۔ موجود ہے ۔ آپا۔ خوئشتا ۔ اپنا آپ ۔ پسو۔ حیوان۔ سوبجھے ۔ سجھتا نہیں۔ جیون پدکارن زندہ رہنے کے لئے ۔لوچن۔ آنکھوں ۔ کچھو نہ شوجھے ۔ دکھائی نہیں۔ دیتا (2) بھرما ۔ گمراہی ۔ بھٹکن نام جپو۔ ۔ خڈا کو یاد کرؤ۔ کیول ۔صرف۔
ترجمہ معہ تشریح:

جو جنُ بھاءُ بھگتِ کچھُ جانےَ تا کءُ اچرجُ کاہو ॥
جِءُ جلُ جل مہِ پیَسِ ن نِکسےَ تِءُ ڈھُرِ مِلِئو جُلاہو ॥੧॥
ہرِ کے لوگا مےَ تءُ متِ کا بھورا ॥
جءُ تنُ کاسیِ تجہِ کبیِرا رمئیِئےَ کہا نِہورا ॥੧॥ رہاءُ ॥
کہتُ کبیِرُ سُنہُ رے لوئیِ بھرمِ ن بھوُلہُ کوئیِ ॥
کِیا کاسیِ کِیا اوُکھرُ مگہرُ رامُ رِدےَ جءُ ہوئیِ ॥੨॥੩॥
لفظی معنی:
جو جن۔ جو انسان۔ بھاؤ بھگت ۔ محبت پیار ۔ ۔ جانے سمجھتا ہے ۔ اچرن کا ہو۔ حیران گیسی ۔ ڈھر ۔ پگل کر (1) مت کا بھؤر ۔ بھولا۔ تن ۔ جسم۔ تجیہہ ۔ چھوڑے ۔ رمیئے ۔ خدا کو ۔ نہورا۔ احسان (1) رہاؤ۔ لوئی ۔ لوگو۔ بھرم۔ شک شیبہ ۔ اوکھر ۔ کلر اٹھی ۔ رام روے ۔ دلمیں ہو خدا
ترجمہ معہ تشریح:
جسے عشق اور محبت کی سمھ ہے اسےلفظی معنی:
ونسی حیرانی کی بات ہے جیسے پانی میں پانی ڈال دیں تو اسے علیحدہ نہیں کیا جا سکتا ہے ۔ ہی ڈھل کر پا بگل کر جلاہا مل گیا ہے (1) اے خڈائی بندو میں تو عقل ہوش سے ناندان ہوں اے کبیر اگر تو کاسی میں اپنا جسم چھوڑتا تو اس میں خدا کا اس میں کونسا احسان ہوگا۔ رہاؤ۔ اے خڈائی انسانوں اس وہم وگمان اور بھولمیں نہ رہو ۔ جب دل میں ہو یاد خدا تو کانسی اور مگہیر میں کیا فرق ہے ۔
مدعا و مقصد:
الہٰی ملاپ کا واحد وسیلہ ہے یاد خڈا اسکا کسی خاص مقام یا زیارت گاہ سے کوئی رشتہ یا سمبندھ نہیں۔

اِنّد٘رلوکسِۄلوکہِجیَبو॥
اوچھے تپ کرِ باہُرِ ایَبو ॥੧॥
کِیا ماںگءُ کِچھُ تھِرُ ناہیِ ॥
رام نام رکھُ من ماہیِ ॥੧॥ رہاءُ ॥
سوبھا راج بِبھےَ بڈِیائیِ ॥
انّتِ ن کاہوُ سنّگ سہائیِ ॥੨॥
پُت٘رکلت٘رلچھمیِمائِیا॥
اِن تے کہُ کۄنےَسُکھُپائِیا॥੩॥
کہت کبیِر اۄرنہیِکاما॥
ہمرے من دھن رام کو ناما ॥੪॥੪॥
لفظی معنی:
اندر لو ک ۔ بہشت ۔ جنت۔ شو لوکہہ۔ شوجی کے ملک ۔ جیو ۔ اگر۔ وچھے تپ ۔ اوچھے ۔ فضول۔ ناجائز۔ تپ ۔ محنت و محشقت سے ۔ باہر۔ دوبارہ ۔ عیو ۔ آئیگا (1) تھر ۔ صدیوی ۔ مستقل ۔ (1) رہاؤ۔ سوھا۔ شہرت۔ راج ۔ حکومت۔ بوئے ۔ دولت ۔ سرمایہ ۔ وڈیائی ۔ عظمت۔ انت۔ بوقت اخرت۔ کا ہو ۔ کسے سنگ۔ ساتھ۔۔ سہائی مددگار (2) کلتر۔ عورت۔ ان نے ۔ اس سے ۔ گونے ۔ کس نے ۔ اور۔ اور ۔ کاما ۔ مطلب ۔
ترجمہ معہ تشریح:
کیا مانگو کچھ بھی مستقل پائیدار اور صدیوی نہیں الہٰی نام دل میں بسا (1) رہاؤ۔ اگر انسان تب و ریاضٹ سے بہشت و جنت پائیگا تو بھی وہاں سے واپس آنا پڑیگا (1) شہرت حکومت سامان عشق و عشرت یا عیاشی و عظمت بوقت آخرت کو ساتھی و مدد گار نہ ہوگا (2) بیٹا ، بیوی ، سرمایہ بتاؤ اس سے کس کو آڑام نصیب ہوا ہے (3) اے کبیر بتادے دوسرا کوئی بھی کام فضول ہے ۔ میرے دل کو تو الہٰی نام ہی سرمایہ معلوم ہوتا ہے ۔
مدعائے کا کالم :
الہٰی نام سچ حق وحقیت ہی ایک سرامیہ ہے جو ہمیشہ ساتھ دیتا ہے ۔ جنت ،حکومت ، عظمت و سامان عیاشی و عیش عشرت کوئی صدیوی ساتھی و مددگار نہیں۔

رام سِمرِ رام سِمرِ رام سِمرِ بھائیِ ॥
رام نام سِمرن بِنُ بوُڈتے ادھِکائیِ ॥੧॥ رہاءُ ॥
بنِتا سُت دیہ گ٘ریہ سنّپتِ سُکھدائیِ ॥
اِن٘ہ٘ہمےَکچھُناہِتیروکالاۄدھآئیِ॥੧॥
اجامل گج گنِکا پتِت کرم کیِنے ॥
تیئوُ اُترِ پارِ پرے رام نام لیِنے ॥੨॥
سوُکر کوُکر جونِ بھ٘رمےتئوُلاجنآئیِ॥
رام نام چھاڈِ انّم٘رِت کاہے بِکھُ کھائیِ ॥੩॥
تجِ بھرم کرم بِدھِ نِکھیدھ رام نامُ لیہیِ ॥
گُر پ٘رسادِجنکبیِررامُکرِسنیہیِ॥੪॥੫॥
لفظی معنی:
رام سمر۔ خڈا یا کر ۔ سمرن بن ۔ یاد وریاض کے بغیر ۔ بوڈتے ۔ ڈوبتے ۔ ادھکائی ۔ بہشت سے (1) رہاؤ۔ بنتا۔ بیوی۔ ست۔ بیٹا۔ دیہہ۔ جسم۔ گریہہ۔ گھر۔ سنپت۔ جاپداد۔ سکھدائی ۔ سکھ دینے والی ۔ کال۔ موت۔ اودھ۔ عمر۔ اجامل۔ بد کار برہمن جو بعد میں نیک اور پارسا بنا ۔ گج ۔ ہاتھی۔ گنگکا۔ گنکا۔ ایک پیشہ ور عورت۔ پتیت ۔ برے ۔ ناپاک۔ کرم۔ اعمال۔ تیو۔ اسے ۔ پار پرے ۔ زندگی کامیاب ہوئی ۔ رام نام لینے الہٰی عبادت یاد و ریاض سے (2) موکر۔ سور۔ کوکر۔ کتے ۔ جون بھرمے ۔ کی زندگی میں بھٹکتے رہے ۔ لاج ۔ حیا ۔ شرم ۔ چھاڈ۔ ترک کرکے ۔ وکھ ۔ زہر (3) تج۔ چھوڈ۔ کاہے ۔ کیوں۔ نکھید۔ برے ۔ بدھ کرم ۔ جائز۔ نیک۔ اعمال۔ سنہی ۔ ساتھی ۔ رشتہ دار ۔ پیارا۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے بھائی اے انسان یاد کر خڈا خدا کی یاد کے بغیر بہت سے زندگی میں نا کامیاب ہوئے ہیں (1) رہاؤ۔ بیوی ۔ بیٹا ۔ چم گھر ۔ جائیداد اور عیاشی و عیش و عشرت کا سامان ان میں بوقت آخرت کچھ بھی تیرا نہ ہوگا جب تیری موت ہوگی (1) اجامل ۔ گج ۔ گنکا بداعمالیاں کرتے رہے ۔ مگر ج خدا کی یادوریاض کی انہیں زندگی میں کامیابی حاصل ہوئی (2) سورکتے کی طرفح بھٹکتا رہا ان کی سی زندگی بتائی تب بھی شرم و حیات نہ کی الہٰی نام کا آب حیات ترک رککے برائیوں اور بد کاریوں میں مشغول رہا (3) وہم وگمان شک و شہبات چھوڑ کر نیک و بد اعمال کا خیال چھوڑ کر خدا کو یاد کرر اے خادم کبیر تو اپنے مرشد کی رحمت سے خڈا کو اپنا پیار بنا ے ۔

دھناسریِ بانھیِ بھگت نامدیۄجیِکیِ
ੴ ستِگُر پ٘رسادِ॥
گہریِ کرِ کےَ نیِۄکھُدائیِاوُپرِمنّڈپچھاۓ॥
مارکنّڈے تے کو ادھِکائیِ جِنِ ت٘رِنھدھرِموُنّڈبلاۓ॥੧॥
ہمرو کرتا رامُ سنیہیِ ॥
کاہے رے نر گربُ کرت ہہُ بِنسِ جاءِ جھوُٹھیِ دیہیِ ॥੧॥ رہاءُ ॥
میریِ میریِ کیَرءُ کرتے دُرجودھن سے بھائیِ ॥
بارہ جوجن چھت٘رُچلےَتھادیہیِگِرجھنکھائیِ॥੨॥
سرب سد਼ئِن کیِ لنّکا ہوتیِ راۄنسےادھِکائیِ॥
کہا بھئِئو درِ باںدھے ہاتھیِ کھِن مہِ بھئیِ پرائیِ ॥੩॥
دُرباسا سِءُ کرت ٹھگئُریِ جادۄاےپھلپاۓ॥
ک٘رِپاکریِجناپُنےاوُپرنامدیءُہرِگُنگاۓ॥੪॥੧॥
لفظی معنی:
نیو۔ بنیاد۔ منڈپ۔ شامیانے ۔ محلات۔ ادھکارئی ۔ بلند عظمت۔ ترن ۔ تنکے ۔ مونڈ۔ سیر ۔ بلائے ۔ عمر گذاری (1) کرتا ۔کرتار۔ کرنے والا۔ سنہی ۔ رشتے دوار۔ گربھ۔ غرور۔ تکبر ۔ گھمنڈ۔ ونس۔ مٹ ۔ دیہی ۔ جسم (1) رہاؤ۔ کیرؤ۔ حکمران۔ جوجن۔ چار کوس۔ دریودھن سے بھائی جسکا در یودھن بھائی تھا (2) سربس وئن۔ ساری سونے کی تھی ۔ ادھکائی ۔ بند عظمت ۔ کہابھیؤ۔ کیا ہوا۔ دردازے ۔ کھن میہہ۔ تھوڑے سے وقفے میں۔پرائی ۔ بیگانے ۔ درباسا۔ ایک رشی ۔ ولی اللہ ۔ ٹھ گوری ۔ مخلول۔ پھل۔ نتیجہ ۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے انسانوں اس جسم کا کیوں غرور کرتے ہوآخر اس نے ختم ہوجانا ہے ۔ ہمارا کارساز کرتار پیدا کرنے والا ہی ہمارا ساتھی سمبندھی ہوگا۔ رہاؤ۔ جنہوں نے گہری بنیادیں کھدوا کر اوپر محلات تعمیر کرائے شامیانے لگوائے ختم ہوگئے ۔ مارکنڈے رشی سے بلند عظمت کون تھا جس نے گھاس کی جھونپڑی میں عمر گذاری (1) کیروں میری میری کرتی اس دنیا سے چلے گئے جنکا در یودھن بھائی تھا جن کا لشکر اور فوجیں اڑتالیس کوسوں میں تھیں۔ آخر اسکا حشر یہ ہوا کہ انکے جسم گرجیو نے نوچ نوچ کر کھائے (2) روان سے بلند عظمت حکمران جنکا سارا علاقہ لنکا سونے کا تھا اور دروازے پر ہاتھی بندھے ہوئے تھے ۔ آخر پہل میں سب پر دوسروں کی حکمرانی ہوگئی (3) یادوں نے دربا سارشی سے مخلول کیا جس کا نتیجہ یہ ہوا کہ سارا خادنان آپس میں لڑ کر ختم ہوگیا خدا نے اپنے خدمتگار نامدیو پر کرم فرمائی کی کہ وہ الہٰی حمدوچناہ کرتا ہے ۔

دس بیَراگنِ موہِ بسِ کیِن٘ہ٘ہیِپنّچہُکامِٹناۄءُ॥
سترِ دوءِ بھرے انّم٘رِتسرِبِکھُکءُمارِکڈھاۄءُ॥੧॥
پاچھےَ بہُرِ ن آۄنُپاۄءُ॥
انّم٘رِت بانھیِ گھٹ تے اُچرءُ آتم کءُ سمجھاۄءُ॥੧॥ رہاءُ ॥
بجر کُٹھارُ موہِ ہےَ چھیِناں کرِ مِنّنتِ لگِ پاۄءُ॥
سنّتن کے ہم اُلٹے سیۄکبھگتنتےڈرپاۄءُ॥੨॥
اِہ سنّسار تے تب ہیِ چھوُٹءُ جءُ مائِیا نہ لپٹاۄءُ॥
مائِیا نامُ گربھ جونِ کا تِہ تجِ درسنُ پاۄءُ॥੩॥
اِتُ کرِ بھگتِ کرہِ جو جن تِن بھءُ سگل چُکائیِئےَ ॥
کہت نامدیءُ باہرِ کِیا بھرمہُ اِہ سنّجم ہرِ پائیِئےَ ॥੪॥੨॥
لفظی معنی:
دس بیراگن۔ دس اعضائے جسمانی ۔ پنچؤ۔ پانچ احساسات بد۔ کا شہوت۔ غصہ ۔ لالچ ۔ صحبت۔ غرور۔ ستر دوئے ۔ ببہتر ہزار بڑھی شرایانیں۔ انمرت۔ آب حیات۔ وہ پانی جس سے صدیوی روحانی واخلاقی زندگی ملتی ہے ۔ وکھ ۔ بدکاریوں کی زہر (1) پاچھے ۔ بعد۔ انمرت بانی ۔آبحیات کلام۔ وہ لطٖ جس سے زندگی پر اخلاق اور روحانی ہو جاتی ہے ۔ گھٹ۔ دل ۔ اُچرؤ۔ کہو۔ بولو۔ آتم ۔ اپنے دل ۔ (1) رہاؤ۔ بجر۔ پتھر کی مانند سخت۔ کوٹھار۔ کلہاڑا۔ چھینا ۔ چھین لیا۔ سنتن۔ خدا رسیدہ ۔ روحانی رہبر۔ سیوک ۔ خدمتگار ۔ بھکتن ۔ الہٰی عاشق۔ خدا کے پیارے پریمی (2) چھوٹو۔ نجات ملے ۔ آزاد ہو ۔ پٹاوؤ۔ لالچ نہ کرؤ۔ گرچھ جون۔ تناسک۔ تیہہ تج ۔ اسے چھوڑ کر (3) ات کر۔ اس طرح سے ۔ بھؤ۔ خوف۔ چکاییئے ۔ مٹتا ہے ۔ بھرمیہو۔ بھٹکتے ہو ۔ سنجم۔ ضبط۔
ترجمہ معہ تشریح:
میں اپنے دس اعضائے جسمانی الہٰی پریمی ہوکر ان پر ضبط حاصل کر لیا ہے پانچوں برے احساس ، شہوت ، غصہ ، لالچ ، محبت اور غرور کا نام تک مٹا دیا ۔ بہتر ہزار ناڑیوں مراد ہر اعضا الہٰی نام سچ حق و حقیقت کے آبحیات سے پر کرلی ہیں۔ برائیوں اور بدکاریوں کی زہر کا مکمل طور پر خاتمہ کر دیا ہے (1) اب دوبارہ تناسخ میں آنا پڑیگا ۔ کیونکہ اب الہٰی آبحیات کلام بولتا ہوں اور اپنی ضمیر کو سمجھاتا ہوں ۔ (1) رہاؤ۔ اب میں نے وہ سخت کلہاڑ اچھین لیا ہے منت سماجت اور پاؤں پڑ کر ۔ دنیا سے الٹ ہوکر خدا رسیدہ پاکدامن روہانی رہنما (کے ) کا خدمتگار ہوگیا ہوں اور ولی اللہ الہٰی سے خوف زدہ ہوں (2) اس دنیا دولت سے تبھی نجات حاصل ہوتی ہے ۔ اگر اسکی محبت میں گرفتار ہونے سے بچو گے ۔ یہ دنیاوی دؤلت ہی تناسخ یا آواگون کی بنیاد ہے ۔ اسے چھوڑ کر ہی الہٰی دیدار ہو سکتا ہے (3) اس طریقے سے جو شخص خڈا کی عبادت و ریاضت اور خدا سے پیار کرتے ہیں ان کے تمام خوف مٹ جاتے ہیں۔ اے نامدیو بتادے کہ باہر کیوں بھٹکتے ہو۔ ان ضبط اور طرز عمل سے الہٰیملاپ حاصل ہو سکتا ہے ۔

مارۄاڑِجیَسےنیِرُبالہابیلِبالہاکرہلا॥
جِءُ کُرنّک نِسِ نادُ بالہا تِءُ میرےَ منِ رامئیِیا ॥੧॥
تیرا نامُ روُڑو روُپُ روُڑو اتِ رنّگ روُڑو میرو رامئیِیا ॥੧॥ رہاءُ ॥
جِءُ دھرنھیِ کءُ اِنّد٘رُبالہاکُسم باسُ جیَسے بھۄرلا॥
جِءُ کوکِل کءُ انّبُ بالہا تِءُ میرےَ منِ رامئیِیا ॥੨॥
چکۄیِکءُجیَسےسوُرُبالہامانسروۄرہنّسُلا॥
جِءُ ترُنھیِ کءُ کنّتُ بالہا تِءُ میرےَ منِ رامئیِیا ॥੩॥
بارِک کءُ جیَسے کھیِرُ بالہا چات٘رِکمُکھجیَسےجلدھرا॥
مچھُلیِ کءُ جیَسے نیِرُ بالہا تِءُ میرےَ منِ رامئیِیا ॥੪॥
سادھِک سِدھ سگل مُنِ چاہہِ بِرلے کاہوُ ڈیِٹھُلا ॥
سگل بھۄنھتیرونامُبالہاتِءُنامےمنِبیِٹھُلا॥੫॥੩॥
لفظی معنی:
مار داڑ۔ صحرا۔ نیر ۔ پانی ۔ بالہا۔ عزیر ۔ پیار۔ بیل۔ ہریالی ۔ کر ہلا۔ اونٹ۔ کرنک ہرن ۔ تس۔ رات۔ ناد۔ گھنٹے کی آواز۔ میرے من ۔ میرے دل کو ۔ رامیا ۔ خدا (1) روڑو۔ سندر۔ روپ ۔ شکل۔ رنگ۔ پریم۔ (1) رہاؤ۔ دھرنی ۔ زمین۔ اندر۔ بارش۔ کسم باس۔ پھوں کی خوشبو ۔ بھورلا۔ بھورے (2) سور۔ سورج ۔ مانسرؤ ور ہنسلا۔ ہنس کو جھیل مانسرؤدر۔ ترنی ۔ دوشیزہ ۔ جوان عورت ۔ کنت ۔ خاوند (3) بارک ۔ بچے ۔ کھیر۔ دودھ ۔ چاترک۔ پپیہا۔ سارنگ ۔ جلد ھر۔ بادل۔ نیر۔ پانی (4) سادھک۔ سدھی ۔ کے لئے کوشاں۔ صراط مستقیم کے راہگیر ۔دھ جنہوں نے صراط مستقیم طے کر لیا ہے اور منزل پالی ہے ۔ سگل ۔ سارے من۔ ولی اللہ ۔ چاہے ۔ چاہتے ہیں۔ برے ۔ کسی نے ہی ۔ شاذ و نادر۔ ڈیٹھلا۔ دیدار کیا ہے ۔ سگل بھون۔ سارے عالم ۔ کل دنیا۔ سارے سنسار۔ بیٹھال۔ خدا۔
ترجمہ معہ تشریح:
جیسے صحرا میں ہے پانی پیار اونٹ کو بیل پیارے ہے جیسے رات کو ہرن کو گھنٹے کی آواز پیارے ہے ۔ ایسے میرے دل کو پیار خدا پیارا ہے (1) اے میرے خوبرو خدا تیرا نام (سچ ۔ حق ۔ حقیقت) بھی خوبصورت اور رنگ بھی خوبصورت 1( رہاؤ۔ جیسے زمین کو بارش پیاری ہے ۔ جیسے بھورے پھولوں کی خوشبو سے پیار ہے ۔ کوئ ل کو آم سے محبت ہے ویسے ہی میری محبت میرے پیارے خدا سے ہے (2) جیسے چکوی کو سورج سے محبت ہے ہنس کو مانسرؤ ور سے جیسے نوجوان دوشیزہ کو اپنے خاوند سے پیارے ہے ایسے ہی مجھے میرے پیار خدا سے صحت ہے (3جیسے بچہ دودھ کو پیار رکتا ہے ۔ پیہے کی بادی سے محبت مچھلی کو پانی پیار ا لگتا ہے ۔ ایسے ہی میرا خداوند کریم سے پیار ہے (4)
خدا رسیدہ سدھ اور خدا سے رسائی حآصل کرنے کے رہاگیر ولی اللہ سارے ویدار خڈا چاہتے ہیں مگر ہوتا ہے کسی کو ہی نصیب ۔ اے خدا سارے عالم کو تیرا نام پیارا ہے ۔ ایسے نامدیوں کو خدا پیار اہے ۔

پہِل پُریِۓپُنّڈرکۄنا॥
تا چے ہنّسا سگلے جناں ॥
ک٘رِس٘ناتےجانئوُہرِہرِناچنّتیِناچنا॥੧॥
پہِل پُرسابِرا ॥
اتھون پُرسادمرا ॥
اسگا اس اُسگا ॥
ہرِ کا باگرا ناچےَ پِنّدھیِ مہِ ساگرا ॥੧॥ رہاءُ ॥
ناچنّتیِ گوپیِ جنّنا ॥
نئیِیا تے بیَرے کنّنا ॥
ترکُ ن چا ॥
بھ٘رمیِیاچا॥
کیسۄابچئُنیِائیِۓمئیِۓایکآنجیِءُ॥੨॥
پِنّدھیِ اُبھکلے سنّسارا ॥
بھ٘رمِبھ٘رمِآۓتُمچےدُیارا ॥
توُ کُنُ رے ॥
مےَ جیِ ॥
ناما ॥
ہو جیِ ॥
آلا تے نِۄارنھاجمکارنھا॥੩॥੪॥
لفظی معنی:
پہل پرئے ۔ سب سے پہلے ۔ بنڈرک ونا۔ کنول کے پھولوں کا جنگل۔ تاچہ ۔ اس میں ۔ سگلے جنا۔ سارے جاندار ۔ ہنس ہوئے ۔ ہو کر سنا ۔ خدا کی دنیاوی دولت ۔ جانو۔ سمجھو۔ ہر نا چنتی ۔ الہٰی ناچ ۔ کرنے والی ۔ ناچنا۔ ناچ رہی ہے (1) پہل پرساہرر۔ پہلے خدا ظہور پذری ہوا۔ اتھون پر سادمر۔ اسکے بعد انسان اور مائیا یعنی قدرت قائنات ۔ اس گا۔ اس کا ۔ اس گا ۔ اس کا ۔ باگرا۔ باغ۔ بندی ۔ ٹنڈاں۔ ساگر۔ سمندر۔ مراد پانی (1) رہاؤ۔ ناچنتی گوپی جنا۔ مردود زن ۔ ناچتے ہیں۔ تیسیا۔ نائک ۔ خدا۔ ہیرے ۔ علیحدہ ۔ گنا۔ کوئی نہیں۔ ترک نہ چا۔ نکتہ چینی نہ کر ۔ بھرمیا چا۔ یہ گمراہ کن ہے ۔ غلط راستے ڈالنے والی ہے ۔ کیسو بچؤنی ۔ الہٰی کلام۔ اییئے ۔ مییئے ۔ مردود زن ۔ ایک آن جیؤ۔ لگاتار ہو رہے ہیں (2) ابھکلے ڈبکیاں۔ سنسار۔ دنیا۔ بھرم بھرم۔ بھٹک بھٹک ۔ تم جے ۔تیرے ۔ دارا۔ ذریعے ۔ راہیں۔ کن۔ کون۔ ہوجی ۔ اے خدا۔ ۔ آلا۔ گھر ۔ گرہست۔ گھریلو۔ نوارنا۔ بچالے ۔ جم کارنا۔ موت کے خوف سے ۔
ترجمہ معہ تشریح:
سب سے اول خدا نے اپنے آپ کو ظہور پذیر کیا اور خدا سے مائیا مراد قائنات قدرت ظہور میں آئی ۔ قائنات قدرت اور خدا کا آپس میں ملاپ ہوا۔ اس طرح سے یہ عال وجود میں آئیا جو رہٹ کی ٹنڈوں کی مانند آمد و رفت میں ناچ رہا ہے ۔ مراد دنیاوی جاندار دنیاوی دولت کی محبت میں اپنیتگ و دو میں مصروف ہیں (1) رہاؤ۔ سب سے پہلے کنول کے پھولوں کا باغ یا کھیت وجود میں آئیا مراد دنیا و جود میں ائی ۔ اور سارے جادنار اس میں ہنسوں جیسے ہیں۔ خدا کی یہ رچنا دوڑ دہوپ کر رہی ہے ۔ اسےد نایوی دولت کا ایک کھیل سمجھو (1) سارے مرد زن دوڑ دہوب میں مسروف ہیں۔ یہ خدا کے علاوہ کچھ بھینہیں اس پر شک و شبہ نہ کرؤ وہم وگمان دور کردو۔ ہر مرد و زن میں الہٰیکلام ہی لگاتار ہو رہا ہے ۔ مراد خدا کی ہی دھن کام کر رہی ہے (2) جاندار ہی اس عام میںرہٹ کی ٹنڈوں کی مانند آمدورفت میں ہیں۔اب بھٹک بھٹک تیرے در پر تیری بناہ آئیا ہوں اگر تو مجھ سے دریافت کرے کہ تو کون ہے تو اے جی میں ناما ہوں۔ مجھے دنیا کے اس الجھنوں (جنجال) موت کے خوف کا سبب ہے اے خدا بچالو۔

پتِت پاۄنمادھءُبِردُتیرا॥
دھنّنِ تے ۄےَمُنِجنجِندھِیائِئوہرِپ٘ربھُمیرا॥੧॥
میرےَ ماتھےَ لاگیِ لے دھوُرِ گوبِنّد چرنن کیِ ॥
سُرِ نر مُنِ جن تِنہوُ تے دوُرِ ॥੧॥ رہاءُ ॥
دیِن کا دئِیالُ مادھوَ گرب پرہاریِ ॥
چرن سرن ناما بلِ تِہاریِ ॥੨॥੫॥
لفظی معنی:
پتت۔ بد اخلاق۔ چال چلن سے گرے ہوئے ۔ پاون۔ پاک بنانے والا۔ مادہو ۔ خدا۔ بردھ ۔ عادت۔ سبھاؤ۔ خاصہ ۔ خاصیت ۔ وے وہ ۔ من جن۔ خدا پرست۔ ولی اللہ ۔ دھیایؤ۔ ریاضت کی دھیان لگائیا ۔ (1) ماتھے ۔ پیشانی ۔دہور ۔ خاک پا۔ گوبند چرنن کی ۔ پائے الہٰی ۔ سر۔ فرشتے ۔ من ۔ خادم خدا۔ تن ہوتے دور۔ جو انہیں بھی نصیب نہیں (1) رہاؤ۔ دین کا دیال۔ غریب پرور۔ غریبوں پر مہربان ۔ گربھ پر ہاری ۔ غرور دور کرنے والا۔ بل تہاری ۔ تیرے صدقے ۔ تجھ پر قربان ہوں۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے خدا ناپاک بداخلاق بد چلن کو پاک خوش اخلاق نیک چلن بنانے والی تیری قدیمی عادت اور سبھاؤ ہے ۔ وہ خدا پرست خادمان خدا قابل ستائش و شاباش و خوش قسمت ہیں جنہون نے میرے پیارے خدا کی عبادت وریاضت کی اور دھیان لگائیا (1) مجھے خداوند کریم کے خا ک پا اپنی پیشانی پر لگانا نصیب ہوا ہے ۔ جس سے فرشتے انسان اور خدا پرست ولی اللہ خادمان خدا کو بھی نصیب نہیں ہوئے دور رہے (1) رہاؤ۔ غریب پرور غریبوں پر مہربان غرور اور تکبر دور کرنے والا ناما ( نامدیو) اسکے پاؤں کی پناہ میں آئیا ہے اور تجھ پر قربان و صدقے ہے ۔

دھناسریِ بھگت رۄِداسجیِکیِ
ੴ ستِگُر پ٘رسادِ॥
ہم سرِ دیِنُ دئِیالُ ن تُم سرِ اب پتیِیارُ کِیا کیِجےَ ॥
بچنیِ تور مور منُ مانےَ جن کءُ پوُرنُ دیِجےَ ॥੧॥
ہءُ بلِ بلِ جاءُ رمئیِیا کارنے ॥
کارن کۄنابول॥ رہاءُ ॥
بہُت جنم بِچھُرے تھے مادھءُ اِہُ جنمُ تُم٘ہ٘ہارےلیکھے॥
کہِ رۄِداسآسلگِجیِۄءُچِربھئِئودرسنُدیکھے॥੨॥੧॥
لفظی معنی:
ہم سر دین ۔ ہمارے برابر کمینہ بے غیرت۔ دیال نہ تم سر ۔ تیرے برابر مہربان نہیں۔ پتیار۔ آزمائش ( امتہاں ) امتحآن ۔ کیجے ۔ کرؤ گے ۔ بچنی تور۔ تیرے کلام۔ مور من مانے ۔ میرےد ل کو یقین ہو جاتا ہے ۔ دل پسند کرتا ہے جن۔ خادم۔ پورن ۔ مکمل (1) بل بل ۔ قربان ۔ صدقے ۔ رمیئیا۔ رام ۔ خدا۔ کارنے ۔ پر۔ کارن ۔ سبب۔ کون ۔ کونسا۔ ابول۔ نہیں بوکتا (1) رہاؤ۔ بچھرے ۔ جدا ہوئے ۔ ایہہ جنم۔ یہ زندگی ۔ تمہارے لیکھے ۔ تیرے لئے ۔ کہہ رویداس۔ اے رویداس بتادے ۔ آس لگ ۔ امید میں۔ جیوؤ۔ زندہ ہوں۔ چر ۔ دیر۔ بھیؤ ۔ ہوگئی ۔ درشن دیکھے ۔ دیدار کئے ۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے خدا:- میرے جیسا کمینہ ۔ غیرب ناتواں نہین کوئی ۔ تمہارے جیسا رحمان الرحیم نہیں کوئی اب مزید امتحان آزمائش کیا لوگے ۔ تیرا کلام میرا دل سپند ہے ۔ اسمیں محو ومجذوب رہوں مجھ خدمتگار کو یہصدق عنایت فرما (1) اے خدا:- کیا وجہ ہے کس وجہ سے میرے ساتھ نہیں بولتا میں تجھ پر قربان ہوں صدقے ہوں (1) رہاؤ۔ اے خدا:- بہت سے زندگیاں تیری جدائی میں گذر دی ۔ جدا رہے ۔ اب یہ زندگی تیرے لئے تیری خاطر ہے ۔ اے رویداس بتادے کہ اس امید میں زندہ ہوں۔ کہ تیرے دیدار کو بہت دیر ہوگئی ۔

چِت سِمرن کرءُ نیَن اۄِلوکنوس٘رۄنبانیِسُجسُپوُرِراکھءُ॥
منُ سُ مدھُکرُ کرءُ چرن ہِردے دھرءُ رسن انّم٘رِترامنامبھاکھءُ॥੧॥
میریِ پ٘ریِتِگوبِنّدسِءُجِنِگھٹےَ॥
مےَ تءُ مولِ مہگیِ لئیِ جیِء سٹےَ ॥੧॥ رہاءُ ॥
سادھسنّگتِ بِنا بھاءُ نہیِ اوُپجےَ بھاۄبِنُبھگتِنہیِہوءِتیریِ॥
کہےَ رۄِداسُ اِک بینتیِ ہرِ سِءُ پیَج راکھہُ راجا رام میریِ ॥੨॥੨॥
لفظی معنی:
دل و ذہن تیری یادوریاض کے لئے ۔ چت سمرن سیؤ۔ نین اولوکنو۔ آنکھیں۔ دیدار کے لئے ۔ سرون ۔ کان۔ بانی سجس ۔ کلام سننے کے لئے ۔ پور راکھیؤ۔ بھر رکھوں۔ مدتھکر ۔ بھور۔ چرن۔ پاؤں۔ پروے ودھرو۔ دل میں بساؤں۔ رسن۔ زبان۔ انمرت رام نام ۔ الہٰی نام جو ابحیات ۔ روحای واخلاقی زندگی عنایت کرنے والا۔ بھا کھیؤ۔کہوں (1) پریت ۔ پریم ۔ پیار۔ گوبند سیؤ۔ ۔ خدا سے ۔ جن گھٹے ۔ کبھی نہ کم ہو۔ مول ۔ قیمتاً ۔ قیمت سے ۔ جیئہ سٹے ۔ زندگی کے عوض ۔ (1) رہاؤ۔ سادھ سنگت۔ صحبت و قربت خدا رسیدہ پاکدماناں ۔ بنا ۔ بغیر۔ بھاؤ۔ پریم پیار۔ اپجے ۔ پیدا۔ بھاوبن ۔ پریم بغیر۔ بھگت۔ الہٰی محبت ۔ عبادت وریاضت ۔ بینتی ۔ گزارش ۔ عرض۔ ہر سیؤ۔ خدا سے ۔ پیج ۔ عزت۔ راکھہو۔ بچاؤ۔ راجا رام ۔ خدا۔
ترجمہ معہ تشریح:
کہیں میرا پیار میری محبت کم نہ ہوجائے میں نے یہ بھاری قیمت ادا کرکے حآصل کی ہے اپنی زندگی کے عورض (1) رہاو۔ دل میں یادوریاض ہے ۔ آنکھوں سے دیدار کرتا رہوں کانوں سے کلام الہٰی سنتا رہوں اور بھرا رہے ۔ دل بھنور رہے پاؤں دل میں بسیں زبان ( پر ) سے الہٰی نام کہوں جس سے ملتی ہے روحانی واخلاقی زندگی ایک انمرت با آب حیات (1) صحبت و قربت پاکدامن خدا رسیدگان الہٰی محبت پیدا نہیں ہوتی اور پریم کے بغیر الہٰی عبادت وریاضت یاد خڈا نہیں ہو سکتی ۔ اے خدا تیری رویداس خدا سے گذارتا ہے ۔ عرض ایک اے خدا میری عزت بچا۔ لاچ رکھ ۔

نامُ تیرو آرتیِ مجنُ مُرارے ॥
ہرِ کے نام بِنُ جھوُٹھے سگل پاسارے ॥੧॥ رہاءُ ॥
نامُ تیرو آسنو نامُ تیرو اُرسا نامُ تیرا کیسرو لے چھِٹکارے ॥
نامُ تیرا انّبھُلا نامُ تیرو چنّدنو گھسِ جپے نامُ لے تُجھہِ کءُ چارے ॥੧॥
نامُ تیرا دیِۄانامُتیروباتیِنامُتیروتیلُلےماہِ پسارے ॥
نام تیرے کیِ جوتِ لگائیِ بھئِئو اُجِیارو بھۄنسگلارے॥੨॥
نامُ تیرو تاگا نامُ پھوُل مالا بھار اٹھارہ سگل جوُٹھارے ॥
تیرو کیِیا تُجھہِ کِیا ارپءُ نامُ تیرا تُہیِ چۄرڈھولارے॥੩॥
دس اٹھا اٹھسٹھے چارے کھانھیِ اِہےَ ۄرتنھِہےَسگلسنّسارے॥
کہےَ رۄِداسُنامُتیروآرتیِستِنامُ ہےَ ہرِ بھوگ تُہارے ॥੪॥੩॥
لفظی معنی:
آرتی ۔ پرستش کا ایک خاص طریقہ جس میں ایک تھال میں پھول اور چراغ جلا کر اور چندن وغیرہ کی خوشبوئیں رکھ اسکو مورتی کے آگرے لہرانا اور اسکی تعریف میں گانے گا نا آرتی کہلاتا ہے ۔ نام تیرو۔ اے خدا تیرا نام ۔ سچ حق و حقیقت ہی آرتی ہے ۔ سگل پسارے ۔ سار ے پھیلاؤ (1) رہاؤ۔ آستو۔ پرستش کی جگہ ۔ ارسا۔ کیسر گرنے والا پتھر ۔ انبھلا۔ پانی ۔ چند نو ۔ چندن۔ چھٹکارے ۔ چھڑکنا ۔ گھس ۔ جچے ۔ چندن گھسانا۔ چارے ۔ چاڑھے (1) دیوا۔ چراغ۔ باقی ۔ چراغ میں بنتی ۔ تیل ئے ماہے پسارے ۔ اس چراغ میں ڈالا ہوا تیل۔ جوت۔ روشنی ۔ بھیؤ احیارو۔ روشنی ہوئی ۔ بھون سگلارے ۔ سارےعالم میں (2) تاگا۔ دھاگا۔ پھول مالا۔ پھولوں کا ہار۔ بھار اھارہ ۔ ٹھاراں لدھے ۔ جبکہ 5 من کچے کا ایک لدھا اور کچامن 17 سیر کا ہوتا ہے ۔ سگل جو ٹھارے ۔ ساری بناسپتی یا سبزہ زار جھوٹھا ہے ۔ ارپؤ۔ بھینٹ ۔ تو ہی ۔ تیرے اوپر ۔ چور ڈہولارے۔ چور کرتا ہوں (3) دس اٹھا۔ اٹھاراں ۔ پران۔ اٹھ سٹھے ۔ اڑسٹھ (68) زیارت گاہیں۔ چارے کھانی ۔ چاروں کانیں۔ درتن۔ روزہ مرہ کا کام۔ سگل سنارے ۔ سارےع ال میں۔ نام تیرو آرتی ۔ اے خدا تیرا نام ہی آرتی ہے ۔ ست نام۔ سچ ۔ صدیوی ۔ حق حقیقت ہے ۔ ہر بھوگ تہارے ۔ تیرا کھانا ہے
ترجمہ معہ تشریح:
اے خدا تیرا نام ہی آرتی یا تیری دعا و حمد ہے اور زیارت ہے ۔ الہٰی نام کے بغیر سارا دنیاوی پھیلاؤ دکھاوا جھوٹا اور مٹنے والا ہے (1) رہاؤ۔ تیرا نام ہی پرستش کرنے والی جگہ ہے ۔ تیرا نام ہی ارسا مراد چندن ۔ گھسانے والا پتھر ہے ۔ تیرا نام ہی کیسر چھڑکتا ہے ۔ اور میرے لئے کیسر ہے ۔ تیرا نام ہی پانی ہے ۔ نام ہی چندن ہے ۔ جو گھسا کر بھینٹ کیا جاتا ہے (1) تیرا نام ہی چراغ اور نام ہی چراغ میں ڈالنے والی بنتی نام ہی تیل ہے جو وئے میںڈالا ہے ۔ تیرے نام کی جوت یا روشنی سے ہی سارا عال روشن ہے (2) تیرا نام ہی ایک دھاگا ۔ اور تیرا نام ہی پھولوں کی مالا ہے ۔ سار سبزہ زار اور بناسپتی جھوٹھی ہے ۔ یہ سب قائنات تیری پیدا کی ہوئی ہ تیرا کیا ہوا تجھے کیا میں بھینٹ کرؤں۔ تیری پیدا کی ہوئی ہے تیرا کیا ہوا تجھے کیا میں بھینٹ کرؤں۔ تیرے نام کا ہی تجھ پر چور پھیرتا ہوں (3) سارےع الم کا روز مرہ کا کام یہ ہے کہ اٹھاراں پرانوں کی کہانیاں پڑھنے سننے میں محو ہیں۔ اڑسٹھ تیرتھوں کی زیارت ثواب سمجھتے ہیں اس طرح چاروں کانوں کی زندگی میں بھٹک رہے ہیں ۔ رویداس کہتا ہے ۔ کہ خدا تیرا نام ہی تیری آرتی یا حمدوثناہ ہے تیرا سچا صدیوی نام (سچ حق و حقیقت ہی تیرا کھانا اور پرشاد ہے ۔

دھناسریِ بانھیِ بھگتاں کیِ ت٘رِلوچن
ੴ ستِگُر پ٘رسادِ॥
نارائِنھ نِنّدسِ کاءِ بھوُلیِ گۄاریِ॥
دُک٘رِتُسُک٘رِتُتھاروکرمُریِ॥੧॥ رہاءُ ॥
سنّکرا مستکِ بستا سُرسریِ اِسنان رے ॥
کُل جن مدھے مِپ਼ل٘ز٘زوسارگپانرے॥
کرم کرِ کلنّکُ مپھیِٹسِ ریِ ॥੧॥
بِس٘ۄکادیِپکُس٘ۄامیِتاچےرےسُیارتھیِپنّکھیِراءِگرُڑتاچےبادھۄا॥
کرم کرِ ارُنھ پِنّگُلا ریِ ॥੨॥
انِک پاتِک ہرتا ت٘رِبھۄنھناتھُریِتیِرتھِتیِرتھِبھ٘رمتالہےَنپارُریِ॥
کرم کرِ کپالُ مپھیِٹسِ ریِ ॥੩॥
انّم٘رِتسسیِءدھینلچھِمیِکلپترسِکھرِسُناگرندیِچےناتھنّ॥
کرم کرِ کھارُ مپھیِٹسِ ریِ ॥੪॥
دادھیِلے لنّکا گڑُ اُپاڑیِلے راۄنھبنھُسلِبِسلِآنھِتوکھیِلےہریِ॥
کرم کرِ کچھئُٹیِ مپھیِٹسِ ریِ ॥੫॥
پوُربلو ک٘رِتکرمُنمِٹےَریِگھرگیہنھِتاچےموہِجاپیِئلےرامچےنامنّ॥
بدتِ ت٘رِلوچنرام جیِ ॥੬॥੧॥
لفظی معنی:
نارائن۔ خدا۔ نندس۔ بدگوئی ۔کائے ۔ کیوں۔ بھولی گواری ۔ گمراہ جاہل۔ دکرت۔ برے کام۔ سکرت۔ نیکیاں ۔ تھارے ۔ تیرے ۔ کرم ری ۔ تیرے کئے اعمال ہیں (1) رہاؤ۔ سنکر۔ شوجی ۔ مستک پیشانی ۔ سر سری ۔ گنگا دریا ۔ رے ۔ اے انسان۔ سارنگ پان۔ وشنو۔ جس کے ہاتھ میں دھنش ہے ۔ کل۔ خاندان۔ مدھے میں۔ کرم کر۔ اعمال کی وجہ سے ۔ کلنک ۔ دھبہ ۔داغ۔ مفیٹس۔ نہیں مٹا (1) وسو ۔ عالم ۔ دنیا۔ جہان ۔ دیپک ۔ چراغ ۔ روشنی دینے والا۔ سوآمی ۔ مالک ۔ سوارتھی ۔ سارتھی ۔ اتھوان رتھ چلانے والا۔ پنکھی رائے ۔ پروندوں کا بادشاہ گرڑ۔ تاپے ۔کے بادھو ۔ رشتہ دار۔ ارن ۔ علے الصبح کی سرخی۔ پرانوں کی کہانی کے مطابق گرڑ بڑا بھائی تھا اور سورج کا رتھو اہی مانا جاتا تھا ۔ جو پیدائشی طور پر پنگلا تھا (2) انک ۔ بیشمار۔ پاتک۔ گناہ۔ دوش۔ پاپ۔ ہرتا۔ مٹانے والا۔ تربھون ناتھ ۔ تینوں عالموں کا مالک ۔ تیرتھ تیرتھ بھرمتا۔ ہر ایک تیرتھ پر جاتا ۔ لہے نہ پارری ۔ کامیابی نہیں پاتا۔ کپال۔کھوپری ۔ پرانوں میں ایک کہانی ہے کہ برہما اپنی لڑکی سر ستی پر عاشق ہوگیا شوجی نے اسکا پانچوں سرکاٹ دیا ۔ جس سے شوجی سے برہم قتل کا گناہ ہوگای شوجی اس کے سچاتاپ و کفارے کے لئے تیرتھوں پر گیا کیونکہ برہما جی کی کھوپری اسکے ہاتھ پر چمٹ گئی اور اخر کپال موچن پرجا کر لی (3) سسی۔ چاند۔ دھن۔ گائے ۔ کلپتر۔ بہشت کا درخت۔ جو مرادیں پوری کرتا ہے ۔ سکھر ۔ گھوڑا۔ سناگر۔ دھنتر وید۔ ندی چہ ناتھ ۔ ندیوں کے مالک۔ کھار مفیٹس۔ کھار نہ دور کر سکے ۔ وادھیلے ۔ ساڑ دی ۔ جلا دی ۔ اپاڑیلے ۔ اکھاڑویا ۔ بن ۔ باغ۔ سل۔ درد۔ بسل۔ درد دور کرنے والی ۔ توکھیلے ۔ خوش کیا۔۔ کرم کیا۔ کرم کر۔ اعمال کی وجہ سے ۔ چھوٹی ۔ لنگوٹی (5) پوربلے کرت کرم۔ پہلے کئے ہوئے اعمال۔ گھر گیہن ۔ گھر کی مالک ۔ تاپے موہ۔ تب میری جان ۔ جابیپے رام۔ خدا کی عبادت کر ۔ بد ت ترلوچن۔ ترلوچن کہتا ہے ۔ رام جی ۔ اے خدا۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے نادانگمراہ زندگی خدا پر کیوں الزام لگاتی ہے یہ عزآب و اسائش تیرے اپنے کئے ہوئے نیک و بد اعمال کی وجہ سے ہے (1) رہاؤ۔
اپنے کئے اعمال کی وجہ سے چاند پر لگا ہوا دھبہ نہیں مٹ سکا خواہ و شوجی کے ماتھے پر بستا ہے اور ہر روز گنگا میں اشنان کرتا ہےاور اسکے خاندان میں وشنو پیدا ہوا ہے (1) اپنے اعمال کی وجہ سے ارن پنگلا ہی رہا حالانکہ سارے عالم کو روشن کرنے والا سورج اسکا مالک تھا اور سورج کا رتھو اہی تھا اور پرندوں کے بادشاہ گرڑ کا رشتے دار تھا (2) کئے ہوئے اعمال کی وجہ سے شو جی کی برہم ہتیا کی وجہ سے برہما کے ہاتھ سے کھوپڑی نہ لیہہ سکی خواہ شوجی کو سارےع الم کامالک سمجھا جاتا ہے اور بیشامر گناہوں کو مٹانے والا کہا جاتا ہے ۔ بیشمار تیرتھوں کی زیارت کرتا رہتا تاہم بھی کھوپری سے نجات نہ پا سکا (3) پرانوں میں ذکر ہے کہ ایک دفعہ سمندر ٹٹہری کے بچوں کو روڑ کر لیگیا اسی گناہ میں سمندر آج تک کھارا چلا آتا ہے ۔ ساتھ ہی یہ بھی بتائیا گیا ہے کہ سمندر سے چودہ رتبن پیدا ہوئے ہیں ۔ جن میں کام دھین گائے اور کلتر شجر جو تمام مرادیں پوری کرنے والے تھے اور وشنو کا ٹھکانہ بھی سمندر میں بتاتے ہیں۔ اگر کام دھین گائے کلتر درخت اور وشنو سمندر کا گناہ دور نہیں کر سکے ۔ تو وشنو کی پرستش سے کس فائدے کی اُمید رکھتے ہو اور کام دھین گائے ارو کلپتر درخت سے مرادیں حاصل کر سکو گے (3)
رام چندر کی مورتی کی پر ستش کی جاتی ہے اور ہنو مان کو بھاری خدمتگار مانا جاتا ہے ۔ مگر اسکے عوض صرف لنگوٹی یا کچھ ملی کیا ہنو مان سے زیادہ خوش کر سکو گے (4) شو جی کو بھاری طاقت والا دیوتا سمجھ اکر مندروں میں ٹکاتے ہو اور پرستش کرتے ہو جب برہما اپنی ہی پڑکی پر عاشق ہو گیا تو شوجی نے اسکا ایک سر کاٹ دیا جو و جی کے ہاتھ سے جڑ گیا بہت سے تیرتھوں پر گیا مگر سر ہاتھ سے جدا نہ ہوا اور بھاری عذاب پائیا پریشان ہوا نہیں کیا فائدہ پہنچائے گا ؟اخر اپنی روح کو ضمیر کو سمجھاتے ہیں کہ الہٰی عبادت وریاضت ہی پہلے کئے اعمال مٹانے کے لائق ہے ۔
آخ حقیقت پر پرانوں میں حقیقت کے خلاف کہانیاں جو پرانوں میں درج ہیں چونکہ خود تر لوچن جی پندٹ تھے پنڈت ہو نے کی وجہ سے پرانوں کی کہانیوں سے بھی واقف تھے ۔ اسلئے انہوںان کہانیوں کا حوالہ دیکر بت پرستی سے پرہیز کرنے کی اور سچ۔ حق۔ حقیقت پر اعتماد لانے کی تلقین کی ہے ۔ اوراپنے اعمال نیک بنانا بتائیا ہے ۔

س٘ریِسیَنھُ॥
دھوُپ دیِپ گھ٘رِتساجِآرتیِ॥
ۄارنےجاءُکملاپتیِ॥੧॥
منّگلا ہرِ منّگلا ॥
نِت منّگلُ راجا رام راءِ کو ॥੧॥ رہاءُ ॥
اوُتمُ دیِئرا نِرمل باتیِ ॥
تُہیِ نِرنّجنُ کملا پاتیِ ॥੨॥
راما بھگتِ راماننّدُ جانےَ ॥
پوُرن پرماننّدُ بکھانےَ ॥੩॥
مدن موُرتِ بھےَ تارِ گوبِنّدے ॥
سیَنُ بھنھےَ بھجُ پرماننّدے ॥੪॥੨॥
لفظی معنی:
گھرت ۔ گھی ۔ ساج۔ بنا کے ۔ وارنے ۔ قربان۔ کملا۔ لچھی ۔ پتی ۔ خاوند۔ کملا پتی ۔ خدا۔ قادر قائنات قدرت۔ لچھی ۔ قائنات قدرت (!) منگلا ۔ خوشیاں۔ سکون ۔ راجہ ۔ مالک (1) رہاؤ۔ اتم وسیرا ۔ اچھا چراغ ۔ نرمل ۔ پاک۔ نرنجن۔ بیداغ (2) راما بھگت ۔ الہٰی عشق ۔ الہٰیپیار۔ رامانند۔ خدا کا سکون ۔ پورن ۔ مکمل ۔ وکھانے ۔ بیان کرتا ہے (3) مدن مورت۔ دلکش شکل وصورت ۔ بھے تارگر بندے ۔ خود دور کرنے والا خدا۔ بھنے ۔کہتا ہے ۔ بھج۔ یاد کر۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے قادر قائنات قدرت قربان ہوں تجھ پر ۔ دہوپ ۔ چراغ۔ گھی ۔ پیدا کرکے تیری آرتی یا پر ستش کرتی ہے (1) خوشیاں اے خڈا خوشیاں ۔ تیری کرم وعنایت سے ہر روز خوشیاں۔ اے خدا (1) اے بیداغ پاک قادر قائنات قدرت تو ہی بڑھیا چراگ اور پاک بتی ہے (2) جو انسان الہٰی حمدوثناہ کرتا ہے وہی الہٰی پریم کی وجہ سے ملاپ کا سکون پاتا ہے (3) سین کہتا ہے کہ اے انسان اس دلکش قادر قائنت قدرت جو مکمل طور پر کامیابیاں عنایت کرنے والا پر سوکن ہستی ہے یاد کر۔

پیِپا ॥
کازءُ دیۄاکائِئءُدیۄلکائِئءُجنّگمجاتیِ॥
کائِئءُ دھوُپ دیِپ نئیِبیدا کائِئءُ پوُجءُ پاتیِ ॥੧॥
کائِیا بہُ کھنّڈ کھوجتے نۄنِدھِپائیِ॥
نا کچھُ آئِبو نا کچھُ جائِبو رام کیِ دُہائیِ ॥੧॥ رہاءُ ॥
جو ب٘رہمنّڈےسوئیِپِنّڈےجوکھوجےَسوپاۄےَ॥
پیِپا پ٘رنھۄےَپرمتتُہےَستِگُرُہوءِلکھاۄےَ॥੨॥੩॥
لفظی معنی:
کایؤ۔ جسم۔ دیوا۔ دیوتا۔ فرشتہ۔ دیول۔ مندر۔ پرستش کرنے کی جگہ ۔ جنگم۔ شوجی کا پجاری ۔ جاتی ۔یاترا۔ زیارت۔ دہوپ۔ خوشوبو۔ دیپ۔ راغ۔ نیئہ۔ دودھ کی کھیر ۔ پاتی ۔ ۔ پیتے (1) بہوکھنڈ۔ زمین کے بہت سے حصے ۔ کائیا ۔ نوندھ پائی۔ جسم میں ہی نواخزانے پائے ۔ آئیو ۔ آتا ہے ۔ جائیو ۔ جاتا ہے ۔ دہائی ۔ طاقت و قبوت (1) رہاؤ۔ برہمنڈے ۔ عالم ۔ دنیا۔ جہان ۔ سوئی پنڈے ۔ دہی ہے (1) جسم میں۔ جو کھوجے ۔ جو تلاش کرتا ہے ڈھونڈتا ہے ۔ سو پاوے ۔ پاتا ہے حآصل کرتا ہے ۔ پیپا ر نوے ۔ پیپا عرض گذارتا ہے ۔ پرم تت ۔ بھاری حقیقت۔ اصلیت۔ سچ۔ ستگر۔سچا مرشد۔ لکھاوے ۔ سمجھاتا ہے ۔
ترجمہ معہ تشریح:
دیش بدیش کرتا رہا تالش مگر اخر اس جسم میں ہی نو خزانے ملے ۔ یہ سارے قیمت الہٰی ہی نہ کچھ آتا ہے نہ جاتاہے ۔ر ہاؤ۔ یہ جسم ہی دیوتا ہے اور یہ جسم ہی مندر ہے ۔ یہ جسم ہی جنگم یا جوگی ہے ۔ جسم ہی زیارت کرنے والا ہے ۔ جسم ہی دہوپ ۔ خوشبوں ۔ چراغ اور دودھ کی کھیر ہے اس جسم کی تلاش ہی میں سمجھو پتے بھینٹ رکھ کر پرسش کر رہا ہوں (1) پیپا عرض گذارتا ہے کہ سازندہ عالم خدا سارےع الم میں بستا ہے وہی اس جسم میں بستا ہے جو اسکی تلاش کرتا ہے پالیتا ہے ۔ اگر سچے مرشد سے ملاپ ہو جائے تو دیدار کرادیتا ہے ۔

دھنّنا ॥
گوپال تیرا آرتا ॥
جو جن تُمریِ بھگتِ کرنّتے تِن کے کاج سۄارتا॥੧॥ رہاءُ ॥
دالِ سیِدھا ماگءُ گھیِءُ ॥
ہمرا کھُسیِ کرےَ نِت جیِءُ ॥
پن٘ہ٘ہیِیاچھادنُنیِکا॥
اناجُ مگءُ ست سیِ کا ॥੧॥
گئوُ بھیَس مگءُ لاۄیریِ॥
اِک تاجنِ تُریِ چنّگیریِ ॥
گھر کیِ گیِہنِ چنّگیِ ॥
جنُ دھنّنا لیۄےَمنّگیِ॥੨॥੪॥
لفظی معنی:
گوپال۔ مالک عالم۔ آرتا۔ پرستش۔ جوجن۔ جو شحص۔ کرنتے ۔ کرتے ہیں۔ تن کے ۔ ان کے ۔ کاج ۔ کام (1) رہاؤ۔ سیدھا ۔ سامان باورچی ۔ پنیا۔ جوتی ۔ چھادن۔ کپڑے ۔ نیکا ۔ بڑھیا۔ ست سی کا۔ سات دفعہ جوتی زمین کا (1 ) لوپری ۔ دودھ دینے والی ۔ تاجن شری چنگیری ۔ ایک بڑھیا گوڑی ۔ گیہن ۔ بیوی ۔ گھر والی ۔ جن دھنا۔ خدمتگار
ترجمہ معہ تشریح:
اے پروردگار دو عالم مالک عالم میں تیری پرستش کرتا ہوں۔ جو بھی تیری عبادت وریاضت کرتے ہیں تو انکے کام پورے کرتا ہے (1) رہاؤ۔ میں تجھ سےدالا ور سامان رسوئی اور گھی مانگتا ہوں جس سے مجھے خوشی حاصل ہو ۔ جوتا اور بڑھیا کپڑے اور سات دار زمین جوتی ہوئی کا انجاج (1) گائے اور بھینس دودھ دیتی اور عربی بڑھیا گھوڑی اور در یک سیرت بیوی تیرا پریمی پیار دھنا تجھ سے لینے کی دعا کرتا ہے ۔

جیَتسریِ مہلا ੪ گھرُ ੧ چئُپدے
ੴ ستِگُر پ٘رسادِ॥
میرےَ ہیِئرےَ رتنُ نامُ ہرِ بسِیا گُرِ ہاتھُ دھرِئو میرےَ ماتھا ॥
جنم جنم کے کِلبِکھ دُکھ اُترے گُرِ نامُ دیِئو رِنُ لاتھا ॥੧॥
میرے من بھجُ رام نامُ سبھِ ارتھا ॥
گُرِ پوُرےَ ہرِ نامُ د٘رِڑائِیابِنُ ناۄےَجیِۄنُبِرتھا॥ رہاءُ ॥
بِنُ گُر موُڑ بھۓہےَمنمُکھتےموہمائِیانِتپھاتھا॥
تِن سادھوُ چرنھ ن سیۄےکبہوُتِنسبھُجنمُاکاتھا॥੨॥
جِن سادھوُ چرنھ سادھ پگ سیۄےتِنسپھلِئوجنمُسناتھا॥
مو کءُ کیِجےَ داسُ داس داسن کو ہرِ دئِیا دھارِ جگنّناتھا ॥੩॥
ہم انّدھُلے گِیانہیِن اگِیانیِ کِءُ چالہ مارگِ پنّتھا ॥
ہم انّدھُلے کءُ گُر انّچلُ دیِجےَ جن نانک چلہ مِلنّتھا ॥੪॥੧॥
لفظی معنی:
ہیرے ۔ ذہن میں دل میں۔ رتن نام۔ قیمتی الہٰی نام سچ ۔ جو صدیوی ہے ۔ بطور حفاظت اور امداد کی ۔ کلل وکھ ۔ گناہ۔ دوش۔ رن۔ قرضہ (1) بھج۔ یاد کر ۔ رام نام۔ الہٰی نام سچ۔ سبھ ارتھا۔ جو ہر قسم کا سرمایہ اور دولت ہے ۔ درڑائیا۔ مکمل طور پر دل میں بسا دیا۔ برتھا۔ بیکار۔ بیفائدہ ۔ رہاؤ۔ موڑ۔ بیوقوف ۔ منمکھ ۔ مرید من۔ پھاتھا ۔ گرفتار ۔ پھنسا ہوا۔ اکاتھا۔ بیکار۔ بیفائدہ (2) سادھ پگ ۔ پائے پاکدامن۔ سھپلیؤ۔کامیاب۔ سناتھا۔ باملک ۔ جگنا تھا۔ مالک عالم (3) اندھلے ۔ا ندھے ۔ گیان ہین ۔ بے علم ۔ پنتھا۔ راہ راست۔ انچل۔ گود۔ پلہ۔ ملنتھا۔ مل کر۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے دل الہٰی نام یاد کر ہر طرح کی دؤلت و سرامیہ اور نعمتیں عنایت کرنے والا ہے ۔کامل مرشد نے الہٰی نام مکمل طور پر ذہن نشین کرادیا بغیر نام یہ زندگی بیکار اور بیفائدہ ہے (1) رہاؤ۔ میرے دل وذہن میں قیمتی نام بس گیا اور مرشد نے حفاظتی اور امدادی ہاتھ میری پیشانی پر رکھا میرے دیرینہ جنم جنم کے گناہ عافو ہوگئے اور قرض اتر گیا (1) بغیر مرشد مرید من بیوقوف ہوگیا ہے ہر روز سرامیہ کی محبت میں گرفتار رہتا ہے ۔ وہ کبھی خدا رسیدہ پاکدامن سادہو کا آسرا سہارا نہیں بستا جس کی دوسے تمام زندگی بیکار چلتی جاتی ہے (2) جو پائے پاکدامن خد رسیدہ جس نے راہ راست اپنائیا ہوا ہے کی خدمت کرتا ہے ۔ خدا اسکا مالک ہو جاتا ہے اور زندگی کا میاب بنا لیتا ہے ۔ اے خدا اپنے خادموں کے خادموں کا خدمتگار بناؤ۔ اے مالک۔ عالم مہربانی کیجیئے (3) ہم بے علم جاہل اور نادان ہیں ۔ کیسے راہ راست اپنا سکتے ہیں۔ اے نانک۔ کہہ کہ ہم علم سے بے پہرہ اور نابینا ہیں۔ ہمیں اپنا دامن و گود لیجیئے مرشد تاکہ بتائے ہوئے راہ راست پر چل سکیں۔

جیَتسریِ مہلا ੪॥
ہیِرا لالُ امولکُ ہےَ بھاریِ بِنُ گاہک میِکا کاکھا ॥
رتن گاہکُ گُرُ سادھوُ دیکھِئو تب رتنُ بِکانو لاکھا ॥੧॥
میرےَ منِ گُپت ہیِرُ ہرِ راکھا ॥
دیِن دئِیالِ مِلائِئو گُرُ سادھوُ گُرِ مِلِئےَ ہیِرُ پراکھا ॥ رہاءُ ॥
منمُکھ کوٹھیِ اگِیانُ انّدھیرا تِن گھرِ رتنُ ن لاکھا ॥
تے اوُجھڑِ بھرمِ مُۓگاۄاریِ مائِیا بھُئنّگ بِکھُ چاکھا ॥੨॥
ہرِ ہرِ سادھ میلہُ جن نیِکے ہرِ سادھوُ سرنھِ ہم راکھا ॥
ہرِ انّگیِکارُ کرہُ پ٘ربھسُیامیِہمپرےبھاگِتُمپاکھا॥੩॥
جِہۄاکِیاگُنھآکھِۄکھانھہ تُم ۄڈاگمۄڈپُرکھا॥
جن نانک ہرِ کِرپا دھاریِ پاکھانھُ ڈُبت ہرِ راکھا ॥੪॥੨॥
لفظی معنی:
امولک۔ اتنا قیمتی کہ اس کی قیمت تائی یا تعین نہ ہو سکے ۔ گاہک ۔ بغیر چاہنےو الے ۔ خریدار ۔ میکا کا کھا۔ تنکے کے برابر۔ رتبن گاہک ۔ ہیروں کا خریدار۔ گر سادہو۔ خڈا رسیدہ مرشد۔ رتن بکلا نو لاکھا۔ تو وہی ہیرا لاکھوں میں خرید اگیا۔ گپت ۔ پوشیدہ ۔ ہر راکھا۔ خدا نے رکھا ہے ۔ دین دیال ۔ غریب پرور ۔ غریبوں پر محبوبان۔ ہیر پراکھا۔ ہیروں کا قدردان ۔ پارکھو ۔ رہاؤ۔ منمکھ ۔ مرید من۔ خودی۔ پسند۔ کوٹھی گھر۔ اگیان ۔ لاعلمی ۔ جہالت۔ اندھیرا۔ نا اندیشی ۔ اوجھڑ۔ گمرہا۔ گاواری ۔ جاہل ۔ بھرم۔ بھٹکن۔ گمراہی ۔ بھونگ۔ ناگنی ۔ سناپ ۔ وکھ ۔ زہر۔ چاکھا۔ مزہ لیتا ہے ۔ چکھتا ہے (2) نیکے ۔ اچھے ۔ سادہو ۔ جنہوں نے زندگی کا راہ راست پالیا ہے ۔سرن ۔ پناہ گیری ۔ انگیکار ۔ ساتھی امدادی ۔ پاکھا۔ امدادی (3) وکھانیہہ۔ بیان کریں وڈاگم۔ بڑے انسانی عقل و ہوش اور رسائی سے بعید ۔ پاکھان ڈبت۔ ڈوبتے پتھر۔
ترجمہ معہ تشریح:
میرے دل میں ایک ہیرا خدا نے پوشیدہ رکھا ہوا ہے ۔ غریب پرور مہربان ایک پاکدامن مرشد سے ملائیا (الہٰی) مرشد کے ملاپ سے ہیرے کی پہچان ہوئی ۔ رہاؤ۔ اس ہیرے لعل نایاب اور نہایت بیش قیمت ہے مگر خریدار کے بغیر ایک تنکا بھی قیمت نہیں جب اس رتن کا خریدار مرشد مل گیا تو لاکھوں میں بکنے لگا (1) مرید من خودی پسند جو لا علمی کے اندھیرے کا مکان ہے ۔ اس نے اپنے دل میں اس قیمتی ہیرے کو کبھی نہیں ویکھا وہ گمراہی میں جاہل روحانی موت مرتے ہیں دنیاوی دولت جو ایک ناگنی ہے ۔ اسکا زہر کا مزہ چکھتے ہیں (2) اے خڈا مجھے پاکدامن خدا رسیدگان سے ملا اور انکے زیر سایہ رکھیئے اے خدا مریی مدد کر میں سب کو چھوڑ کر تیرے زیر سایہ رہوں (3) اے خدا تو جلیل القدر بلند عظمت انسانی عقل و ہوش اور رسائی سے بلندتریین ہے ۔ اے خدمتگار نانک۔ اے خدا کرم و عنایت فرمائی دؤبتے ہوئے پتھر کو بچائیا ہے ۔

جیَتسریِ مਃ੪॥
ہم بارِک کچھوُء ن جانہ گتِ مِتِ تیرے موُرکھ مُگدھ اِیانا ॥
ہرِ کِرپا دھارِ دیِجےَ متِ اوُتم کرِ لیِجےَ مُگدھُ سِیانا ॥੧॥
میرا منُ آلسیِیا اُگھلانا ॥
ہرِ ہرِ آنِ مِلائِئو گُرُ سادھوُ مِلِ سادھوُ کپٹ کھُلانا ॥ رہاءُ ॥
گُر کھِنُ کھِنُ پ٘ریِتِلگاۄہُمیرےَہیِئرےَمیرےپ٘ریِتمنامُ پرانا ॥
بِنُ ناۄےَمرِجائیِئےَمیرےٹھاکُرجِءُاملیِاملِلُبھانا॥੨॥
جِن منِ پ٘ریِتِلگیِہرِکیریِتِندھُرِبھاگپُرانا॥
تِن ہم چرنھ سریۄہکھِنُکھِنُجِنہرِمیِٹھلگانا॥੩॥
ہرِ ہرِ ک٘رِپادھاریِ میرےَ ٹھاکُرِ جنُ بِچھُرِیا چِریِ مِلانا ॥
دھنُ دھنُ ستِگُرُ جِنِ نامُ د٘رِڑائِیاجنُنانکُتِسُکُربانا॥੪॥੩॥
لفظی معنی:
بارک ۔ بچے ۔ گت میت۔ حالت اورعظمت کا اندازہ ۔ مورکھ مگدھ ۔ ایانا۔ بیوقو ف۔ جاہل ۔ انجان بچے ۔ مت اتم ۔ اونچی ۔ عقل ۔ مگدھ سیانا۔ بیوقوف کو علقمند (1) لسیا ۔ سست۔ کاہل۔ اگھلانا۔ غافل ۔کپٹ۔کواڑ ۔ دروازے کھلانا۔ رہاؤ۔ ۔ کھ کھن ۔ ہر وقت۔ ہیڑے ۔ ذہن۔ دلمیں۔ پریتم نام ۔ پیارے نام۔ سچ وحقیقت۔ پرانا۔ زندگی۔ عملی ۔نشئی ۔ نشیڑی ۔ عمل۔ نشہ ۔ لبھانا۔ لالچ کرنا (2) من پریت ۔د لی محبت۔ تن وھر بھاگ پرانا۔ انکی تقدیر بارگاہ الہٰی تحریر کردہ پوری ہوئی ۔ چرن سریو ہو ۔ خدمت پاؤں ۔کھن کھن ۔ ہروقت۔ جن ہر میٹھ لگانا۔ جس سے خدا سے محبت بڑھتی ہے (3) جن وچھریا۔ دیرینہ جدا ہوئے خادم کو بلائیا۔
ترجمہ معہ تشریح:
میرے غفلت کی نیند میں سوئے ذہن دل و دماغ کو خدا نے پاکدامن مرشد سے ملاپ کرائیا جس سے میرے ذہن اور دل و دماغ بیدار ہوا عقل و ہوش کے بند روازے کھلے ۔ رہاؤ۔ اے کدا ہم نا اہل نادان بے سمجھ بچے ہیں انجان ہیں تیرے حالات سے ناواقف ہیں کہ تو کتنا بلند عظمت ہے ۔ اے خدا کرم وعنایت فرما مجھ کم عقل نادان کو عاقفل و دانشمند بنا دے (1) اے مرشد میرے دل میں ہر وقت الہٰی پیار کا جذبہ پیدا کر دے یرے پیارےپر ماتما کا نام سچ وحقیقت میری زندگی ہوجائے ۔ جس طرحس ے نشئی نشے کالالچ کرتا ہے میرے آقا اس طرح تیرے نام کے بغیر میری روحانی موت ہوجاتی ہے (3) خدا نے جس پر کرم وع نایت کی اسے جدا ہوئے ہوئے کومائیا ۔ شاباش ہے اس مرشد کو جس نے ذہن دل و دماغ میں مستقل طور پر الہٰی نام بسا دیا خادم نانک اس پر قربان ہے ۔

جیَتسریِ مہلا ੪॥
ستِگُرُ ساجنُ پُرکھُ ۄڈپائِیاہرِرسکِرسکِ پھل لاگِبا ॥
مائِیا بھُئِئنّگ گ٘رسِئوہےَپ٘رانھیِگُربچنیِبِسُہرِکاڈھِبا ॥੧॥
میرا منُ رام نام رسِ لاگِبا ॥
ہرِ کیِۓپتِتپۄِت٘رمِلِسادھگُرہرِنامےَہرِرسُچاکھِبا॥ رہاءُ ॥
دھنُ دھنُ ۄڈبھاگ مِلِئو گُرُ سادھوُ مِلِ سادھوُ لِۄاُنمنِلاگِبا॥
ت٘رِسنااگنِبُجھیِساںتِپائیِہرِنِرملنِرملگُنگائِبا॥੨॥
تِن کے بھاگ کھیِن دھُرِ پاۓجِنستِگُردرسُنپائِبا॥
تے دوُجےَ بھاءِ پۄہِگ٘ربھجونیِ سبھُ بِرتھا جنمُ تِن جائِبا ॥੩॥
ہرِ دیہُ بِمل متِ گُر سادھ پگ سیۄہہمہرِمیِٹھلگائِبا॥
جنُ نانکُ رینھ سادھ پگ ماگےَ ہرِ ہوءِ دئِیالُ دِۄائِبا॥੪॥੪॥
لفظی معنی:
ساجن۔ دوست۔ وڈپرکھ ۔ بلند عظمت۔ ہر رسک رسک ۔ الہٰی لطف بامزہ ۔ پھل لاگیا۔ پھل لگا۔ بھؤئنگ۔ ناگنی ۔ سانپ ۔ گر سیوہے پرانی۔ انسان کو پکڑ رکھا ہے اپنی گرفت میںلے رکھا ہے ۔ گرچتی ۔ کلام مرشد سے ۔ وس۔ زہر کا۔ کا ڈھبا۔ نکلتی ہے (1) رس لاگیا۔ لطف میں لگا ہو اہے ۔ پتت۔ بد اخلاق اخلاق سے گرےہوئے ۔ بدچلن ۔ پوتر۔ پاک ۔ نیک چلن ۔ خوش اخلاق۔ چاکھیا۔ چکھا۔ رہاؤ۔ وڈباگ ۔ بلند قسمت۔ لو۔ لگن۔ محبت لگاتار ۔ اتمن۔ روحانیت کی وہ بلندی جس میں انسان کے ذہن میں برائیوں کے خیالات پیدا ہی نہیں ہوتے ۔ ترشنا اگن ۔ خواہشات کی آگ ۔ سانت۔ سکون ۔ نرمل۔ پاک۔ گن ۔ اوصاف۔ کھین ۔ بے ۔ درس۔ دیدار۔ دوجے بھائے ۔ دنیاوی دولت کی محبت میں۔ گربھ جونی ۔ غلیظ زندگی ۔ برتھا ۔ بیفائدہ (3) بمل مت۔ پاک سمجھ ۔ گر سادھ پگ سیویہہ۔ پاکدامن مرشد کے پاؤں پوچھیں۔ میٹھ ۔ میٹھے ۔ دوائیسیا۔ دواتا ہے ۔
ترجمہ معہ تشریح:
میرا دل الہٰی نام لطف اور مزہ چھکھنے لگا ہے خدا بداخلاق ناپاک بدچلن کو نیک چلن خوش اخلاق اور پاک بنا دیتا ہے پاکدامن مرشد کے ملاپ سے الہٰی لطف ملتا ہے ۔ر ہاؤ۔ مرشد بلند عطمت دوست ہے جسکا ملاپ مرشد سے ہوجاتا ہے وہ بھاری لطف و مزے سے الہٰی حمدوثناہ کا پھل پر لطف ہوکر لیتا ہے ۔ دنیاوی دولت ایک ناگنی کی مانند ہے جس نے انسان کو اپنی گرفت میں جکڑ رکھا ہے ۔ کلام مرشد سےا سکی زہر اتر جاتی ہے (1) بلند قیمت کو ہی پاکدامن مرشد ملتا ہے ۔ اس پاکدامن کے ملاپ سے اس بلند روحانیس کون پانے لگتا ہے ۔ اسکی خواہشات کی آگ بجھ جاتی ہے اور وہ پاک خدا کی پاک حمدوثناہ کرنے لگتا ہے (2) وہ پہلے ہی سے بد قسمت ہیں انکی حشمت ہار گئی جنہوں نے دیدار مرشد نہیں کای دنیاوی دولت کی محبت میں انسان پوس و پیش میں پڑا رہتا ہے اور زندگی بیکار گذر جاتی ہے (3) اے خدا اونچی عقل و ہوش عنایت فرماتا کہ میں پداکمن مرشد کے پاؤں پڑآرہوں ۔ اور خدا سے پیار بنا رہے ۔ خدمتگار خدا نانک۔ پکدامن کے پاؤں کی دہول مانگتا ہے ۔جس پر مہربان ہوتا ہے خدا اسے اسے دلاتا ہے ۔

جیَتسریِ مہلا ੪॥
جِن ہرِ ہِردےَ نامُ ن بسِئو تِن مات کیِجےَ ہرِ باںجھا ॥
تِن سُنّجنْیِ دیہ پھِرہِ بِنُ ناۄےَاوءِکھپِکھپِمُۓکراںجھا॥੧॥
میرے من جپِ رام نامُ ہرِ ماجھا ॥
ہرِ ہرِ ک٘رِپالِک٘رِپاپ٘ربھِدھاریِگُرِگِیانُ دیِئو منُ سمجھا ॥ رہاءُ ॥
ہرِ کیِرتِ کلجُگِ پدُ اوُتمُ ہرِ پائیِئےَ ستِگُر ماجھا ॥
ہءُ بلِہاریِ ستِگُر اپُنے جِنِ گُپتُ نامُ پرگاجھا ॥੨॥
درسنُ سادھ مِلِئو ۄڈبھاگیِسبھِکِلبِکھگۓگۄاجھا॥
ستِگُرُ ساہُ پائِیا ۄڈدانھاہرِکیِۓبہُگُنھساجھا॥੩॥
جِن کءُ ک٘رِپاکریِجگجیِۄنِہرِاُرِدھارِئومنماجھا॥
دھرم راءِ درِ کاگد پھارے جن نانک لیکھا سمجھا ॥੪॥੫॥
لفظی معنی:
ہروے ۔ دل ۔ ذہن۔ نام ۔ سچ ۔ حق ۔ حقیقت۔ اصلیت ۔ تن ۔ انکی ۔ مات ۔ ماتا۔ بانجھا۔ جو بچہ پیدا نہ کر سکے ۔ سنبھی ۔ ادارہ سنسان۔ کھپ کھپت ۔ ذلیل و خوار۔ کرانجھا ۔ پس و پیش میں (1) ماجھا ۔ اندر۔ رہاؤ۔ ہر کیرت۔ الہٰی صفت صلاح۔ پداتم ۔ بلند رتبہ ۔ گپت ۔ پوشیدہ ۔ پرگاجھا۔ ظہور پذیر کیا (2) درسن ساد ۔ دیدار پاکدامن ۔ کل وکھ ۔ گناہ۔ گواجھا۔ دور ہوگئے ۔ ستگر ۔ سچا مرشد۔ ساہو ۔ شاہوکار۔ وڈدانا بھاری دانشمند ۔ بہوگن ساجھا۔ بہت سے اوصاف میں اشراکیت پیدا ہوئی (3) جگجیون ۔ زندگئے عالم۔ ار۔ دل میں۔ دھاریؤ۔ بسائیا۔ من ماجھا۔ دل وذہن پاکب نائیا۔ کاگد پھارے ۔ حساب اعمال ختم کیا۔ کوئی طاقی نہ رہی ۔ لیکھ۔ا حساب۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے دل خدا کو یاد کر جو تیرے اندر بس رہا ہے ۔ خدا نے کرم و عنایت فرمائی مرشد نے من کو علم سے سمجھائیا ۔ رہاؤ۔ جن کے دلمیں الہٰی نامس چ وحقیقت نہیں بستی ان کی ماں کو اے خدا بانجھ بنادے ۔ تاکہ ایسا اور پیدا نہ ہو نام کے بغیر یہ جسم سنسان ہے اور بھٹکتی پھرتی ہے اور انسان ذلیل وخوار ہوکر روحانی موت مرتا ہے (1) الہٰی صفت صلاح ہی اس زمانے میں بلند درجہ رکھتی ہے ۔ الہٰی ملاپ مرشد کےو سیلےسے ہوتا ہے ۔ قربان ہوں اس مرشد پر جس نے پوشیدہ الہٰی نام مجھ پر افشاں کر دیا (2) بلند قسمت سے دیدار مرشد ہوتا ہے جس سے سارے گناہ عافو ہو جاتے ہیں ۔ بھاری دانشمند سچا مرشد ملا جس نے مریی شراکت بہت سے اوصاف سے کرادی (3) جن پر عالم نے کرم وعنایت فرمائی خدا پنے دل میں بسائیا۔ اے نانک۔ الہٰی منصف کی عدالت میں انکے کئے ہوئے اعمال اور اعمالنامے کا حساب کے کاغذات پھاڑ دیئے جاتے ہیں۔ اور حسب ختم ہوجاتا ہے ۔

جیَتسریِ مہلا ੪॥
ستسنّگتِ سادھ پائیِ ۄڈبھاگیِمنُچلتوَبھئِئواروُڑا॥
انہت دھُنِ ۄاجہِنِتۄاجےہرِانّم٘رِتدھاررسِلیِڑا॥੧॥
میرے من جپِ رام نامُ ہرِ روُڑا ॥
میرےَ منِ تنِ پ٘ریِتِلگائیِستِگُرِہرِمِلِئولاءِجھپیِڑا ॥ رہاءُ ॥
ساکت بنّدھ بھۓہےَمائِیابِکھُسنّچہِ لاءِ جکیِڑا ॥
ہرِ کےَ ارتھِ کھرچِ نہ ساکہِ جمکالُ سہہِ سِرِ پیِڑا ॥੨॥
جِن ہرِ ارتھِ سریِرُ لگائِیا گُر سادھوُ بہُ سردھا لاءِ مُکھِ دھوُڑا ॥
ہلتِ پلتِ ہرِ سوبھا پاۄہِہرِرنّگُلگامنِگوُڑا॥੩॥
ہرِ ہرِ میلِ میلِ جن سادھوُ ہم سادھ جنا کا کیِڑا ॥
جن نانک پ٘ریِتِلگیِپگسادھگُرمِلِسادھوُپاکھانھُہرِئومنُموُڑا॥੪॥੬॥
لفظی معنی:
چلتو ۔ بھٹکتا ۔ اروڑ۔ مستقل مزاج۔ انحت۔ لگا تار۔ دھن۔ رؤ۔ انمرت دھایر ۔ ابحیات میں سے زندگی روحانی وخوش اخلاق ہوجاتی ہے ۔ رس۔لطف۔ لیڑا۔ سیر ہوا (1) روڑا ۔ سوہنا۔ چھیڑا ۔ بغل گیر۔ رہاؤ۔ ساکت۔ مادہ پرست۔ منکر۔ وکھ ۔ سنچیہہ۔ زہر اکھٹی کرتا ہے ۔ جکیڑا۔ جکڑ سے ۔ بزور ۔ارتھ ۔ خاطر۔ جمکال۔ فرشتہ موت۔ بیڑا۔ درد۔ عذاب (2) ہرارتھ ۔ خدا کے لئے ۔ سروھا۔ وشواش ۔ یقین ۔ دہوڑ۔ دہول۔ خاک۔ ہلت پلت۔ ہر دو عالموں میں۔ سوبھا۔ شہرت۔ ہر رنگ ۔ الہٰی پریم۔ من گوڑھیا دل میں زبر دست (3) کیڑا۔ ناچیز ۔ یگ سادھ۔ پائے پاکدامن۔ پاکھان۔ پتھر۔ من موڑھا۔ بیوقوف۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے دل پیارے الہٰی نام کو یاد کر جو دل کش ہے ۔ میرے دل میں سچے گیر ہوگیا ہے ۔ رہاؤ۔ خوش قسمتی سے اور بلند تقدیر سے پاکدامن پاکدامنوں کی صحبت و قربت حاصل ہوگئی اور اب بھٹکتا من مستقل مزاج ہوگیا ہے اب لگا تار دل میں روحانی سنگیت اور آبحیات جس سے زندگی بنتی کی رو اور دھارایہہ رہی ہے جس سے دل سیر ہوگیا ہے (1) مادہ پرست خدا سے منکر دنیاوی دولت کا غلام اس سرمایہ کی محبت میں گرفتار سرمایہ اکھتآ کر نے میں مصروف رہتے ہیں خدا اور نیکی رراہ میں خرچ نہیں سکتے اس لئے روحانی موت کا عذاب اپنے ذمے لیتے اور برداشت کرتے ہیں (2) جنہوں نے خدا کی راہ پر اپنے آپ کو وقف کر دیا اور پاکدامن مرشد پر یقین اور ایمان لائیا اور گرویدہ ہوئے ہر دو عاموں میں شہرت پائی اور خدا سے گہری محبت ہوئی (3) اے خدا پاکدامن خادم خدا سے ملا میں ان کا بے قار خادم ہوں۔ خادم نانک کا پاکدامن کے پاؤں کا گرویدہ ہوگیا ہے اور پیار ہوگیا ہے اور مرشد کے ملاپ سے پتھر دل بھی مائل ہوجاتا ہے ۔

جیَتسریِ مہلا ੪ گھرُ ੨
ੴ ستِگُر پ٘رسادِ॥
ہرِ ہرِ سِمرہُ اگم اپارا ॥
جِسُ سِمرت دُکھُ مِٹےَ ہمارا ॥
ہرِ ہرِ ستِگُرُ پُرکھُ مِلاۄہُگُرِمِلِئےَسُکھُہوئیِرام॥੧॥
ہرِ گُنھ گاۄہُمیِتہمارے॥
ہرِ ہرِ نامُ رکھہُ اُر دھارے ॥
ہرِ ہرِ انّم٘رِتبچنسُنھاۄہُگُرمِلِئےَپرگٹُہوئیِرام॥੨॥
مدھُسوُدن ہرِ مادھو پ٘رانا॥
میرےَ منِ تنِ انّم٘رِتمیِٹھلگانا॥
ہرِ ہرِ دئِیا کرہُ گُرُ میلہُ پُرکھُ نِرنّجنُ سوئیِ رام ॥੩॥
ہرِ ہرِ نامُ سدا سُکھداتا ॥
ہرِ کےَ رنّگِ میرا منُ راتا ॥
ہرِ ہرِ مہا پُرکھُ گُرُ میلہُ گُر نانک نامِ سُکھُ سوئیِ رام ॥੪॥੧॥੭॥
لفظی معنی:
اگم اپار۔ اسنانی عقل و ہوش و سمجھ سے بعید او ر اتنا وسیع جسکا کوئی کنارہ نہیں (1) اردھارے ۔ دل میں بسا کر ۔ پرگٹ ۔ظاہر (2) مدھسنودن۔ خدا۔ مادہو ۔ خدا (3) راتا۔ محو۔ نام۔ سچ ۔ حق ۔حقیقت وآصلیت
ترجمہ معہ تشریح:
اے انسانوں اس انسانی عقل و ہوش و سمجھ سے بعید اور اتنے وسیع خدا کو یاد کرؤ جس کا کوئی کنار تک نہیں۔ اے خدا سچے مرشد کو ملاؤ اے خدا مرشد کے ملاپ سے سکھ حاصل ہوتا ہے (1) اے دوست خدا کی صفت صلاح کرؤ اور الہٰی نام سچ حق وحقیقت و اسلیت دل میں بساؤ اور الہٰی آبحیات کلام ج سے زندگی روحانی واخلاقی بنتی ہے (2) خدا ہی زندگی ہے میرے دل وجان کو آبحیات کی مانند پیارا ہے اے خدا رحمت فرمایئے جو دنیاوی دولت کے تاثرات سے بیباق پاکاور بیداغ ہے مرشد ملا (3) الہٰی نام صدیوی سکھ دینے والا ہے ۔ میرا دل الہٰی محبت پیار میں ہمیشہ محؤ ومجذوب رہتا ہے ۔ اے خدا سی عظیم ہستی مرشد ملاؤ۔ اے نانک۔ مرشد کے عنایت کردہ الہٰی نام سچ حق وحقیقت سے اور اسے اپنانے سے روحانی واخلاقی سکون حاصل ہوتا ہے ۔

جیَتسریِ مਃ੪॥
ہرِ ہرِ ہرِ ہرِ نامُ جپاہا ॥
گُرمُکھِ نامُ سدا لےَ لاہا ॥
ہرِ ہرِ ہرِ ہرِ بھگتِ د٘رِڑاۄہُہرِہرِنامُاوُُماہارام॥੧॥
ہرِ ہرِ نامُ دئِیالُ دھِیاہا ॥
ہرِ کےَ رنّگِ سدا گُنھ گاہا ॥
ہرِ ہرِ ہرِ جسُ گھوُمرِ پاۄہُمِلِستسنّگِاوُُماہارام॥੨॥
آءُ سکھیِ ہرِ میلِ مِلاہا ॥
سُنھِ ہرِ کتھا نامُ لےَ لاہا ॥
ہرِ ہرِ ک٘رِپادھارِگُرمیلہُگُرِمِلِئےَہرِاوُماہارام॥੩॥
کرِ کیِرتِ جسُ اگم اتھاہا ॥
کھِنُ کھِنُ رام نامُ گاۄاہا॥
مو کءُ دھارِ ک٘رِپامِلیِئےَگُرداتےہرِنانکبھگتِاوُمماہارام॥੪॥੨॥੮॥
لفظی معنی:
جپاہا۔ جپو۔ ریاض کرؤ۔ گورمکھ ۔ مرشد کے وسیلے سے ۔ لاہا۔ منافع۔ وررادہو۔ دل میں مستقل طور پر بساؤ۔ اوماہا۔ اتشاہ ۔ جوش۔ خوشی۔ دھیاہا۔ دھیان توجہ ۔ رنگ ۔ پریم ۔ گاہا۔ گاو۔ ہر جس گھر پاوہو۔ الہٰی صفت پر خوش ناچ کود کر گاؤ (2) سکھی ۔ ساتھی۔ ہرمل۔ ملاپ ۔ ہر کھتا نام۔ الہٰی نام کی کہانی (3) کیرت۔ صفت ۔ صلاح۔ کھن کھن۔ بار بار۔ ہر وقت۔ گواہا۔ گاؤ۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے انسانوں خدا کی یادوریاض کرؤ۔ مرید مرشد کے وسیلے سے ہمیشہ الہٰی نام سچ وحقیقت کا منافع کماؤ۔ الہٰی پیار دلمیں مستقل طور پر بسا لو الہٰی نام سے انسان کے دل کو سکون ملتا ہے (1) الہٰی نام میں اپنی توجہ دو مہربان اور پریم پیار سے صفت صلاح کرؤ۔ الہٰی نام دل میں جوش و خروش پیدا کرتا ہے اور پاکدامن انسانوں کی صحبت و قربت میں۔ روحانی وزہنی سکون پاؤ (2) اے سچے ساتھیؤ آؤ ملکر خدا کو یاد کریں اور الہٰی صفت صلاح سنکر الہٰی نام کا منافع کمائیں۔ اے خدا کرم وعنایت فرما مرشد سے ملا الہٰی ملاپ سے سچے ستاھیو خوش حاصل ہوتی ہے سکون ملتا ہے (3) اے اسنان انسان کی عقل و ہوش اور رسائی سے بعدیس سنجیدہ خدا کی صفت صلاح کرؤاور ہر وقت یاد خدا کرؤ۔ مجھ پر کرم و عنایت کیجیئے تاکہ میرے دل میں الہٰی پریم کے لئے جوش و خروش بنا رہے نانک کے دلمیں (4)

جیَتسریِ مਃ੪॥
رسِ رسِ رامُ رسالُ سلاہا ॥
منُ رام نامِ بھیِنا لےَ لاہا ॥
کھِنُ کھِنُ بھگتِ کرہ دِنُ راتیِ گُرمتِ بھگتِ اوُگماہا رام ॥੧॥
ہرِ ہرِ گُنھ گوۄِنّدجپاہا॥
منُ تنُ جیِتِ سبدُ لےَ لاہا ॥
گُرمتِ پنّچ دوُت ۄسِآۄہِمنِتنِ ہرِ اوماہا رام ॥੨॥
نامُ رتنُ ہرِ نامُ جپاہا ॥
ہرِ گُنھ گاءِ سدا لےَ لاہا ॥
دیِن دئِیال ک٘رِپاکرِمادھوہرِہرِنامُاوُاماہارام॥੩॥
جپِ جگدیِسُ جپءُ من ماہا ॥
ہرِ ہرِ جگنّناتھُ جگِ لاہا ॥
دھنُ دھنُ ۄڈےٹھاکُر پ٘ربھمیرےجپِنانکبھگتِاوماہارام॥੪॥੩॥੯॥
لفظی معنی:
رس رس ۔ مزے سے ۔ رسال۔ لطف کا خزانہ ۔ بھینا۔ تربتر۔ کھن کھن۔ ہر وقت۔ گرمت۔ سبق وواعظ مرشد (1) گوبند ۔ مالک عالم۔ من تن جیت ۔ دل وجان پر فتح حاصل کرکے ۔ پنچ ودت ۔ پانچ روحانی یااخلاقی دشمن ۔ شہوت ۔ غسہ ۔ لالچ ۔ محبت یا عشق ۔ غرور یا تکبر ۔ سبد۔ کلام۔ سبق ۔پندو نصائح (2) جپاہا۔ ریاض (3) جگدیش ۔ مالک ۔ عالم۔ من ماہا۔ دلمیں۔ جگناتھ ۔ دنیا کا مالک
ترجمہ معہ تشریح:
ہم پر لطف لطف کے خزانے خدا کی حمدوچناہ کرتے ہیں اور دل نام کے لطف سے ترہہ ہے اور اسکا منافع کما رہے ہیں۔ ہر وقت روز و شب خدا سے پیار کرؤ ۔ سبق مرشد الہٰی پریم پیار کا جوش اور ولولے پیدا ہوتے ہیں (1) ہم الہٰی صفت صلاح کر رہے ہیں۔ دل وجان کو زہر یا تابع کر کے کلام یا سبق مرشد کا مانفع کما رہے ہیں ۔ سبق مرشد پانچوں روحانی واخلاقی احساسات بد پر عبور حاصل ہوجاتا ہے اور دل و جان میں جوش و خرورش پیدا ہوتا ہے (3) اے نانک۔ تادے کہ قابل ستائش و حمدوثناہ جو عالم میں سب سے اعلے مالک ہے اس خدا کو ہر وقت دل میں یاد کرتا ہوں۔ الہٰی یاد ہی اس عالم میں منافع بخش ہے کرم وعنایت فرماییئے کہ میرے دل میں تیرے پریم پیار کا جوش و خروش بنا رہے ۔
SGGS p. 699

جیَتسریِ مہلا ੪॥
آپے جوگیِ جُگتِ جُگاہا ॥
آپے نِربھءُ تاڑیِ لاہا ॥
آپے ہیِ آپِ آپِ ۄرتےَآپےنامِاوُنماہارام॥੧॥
آپے دیِپ لوء دیِپاہا ॥
آپے ستِگُرُ سمُنّدُ متھاہا ॥
آپے متھِ متھِ تتُ کڈھاۓجپِنامُرتنُاوُبھماہارام॥੨॥
سکھیِ مِلہُ مِلِ گُنھ گاۄاہا॥
گُرمُکھِ نامُ جپہُ ہرِ لاہا ॥
ہرِ ہرِ بھگتِ د٘رِڑیِمنِبھائیِ ہرِ ہرِ نامُ اوُہماہا رام ॥੩॥
آپے ۄڈدانھاۄڈ ساہا ॥
گُرمُکھِ پوُنّجیِ نامُ ۄِساہا॥
ہرِ ہرِ داتِ کرہُ پ٘ربھبھاۄےَگُنھنانکنامُاوُُماہارام॥੪॥੪॥੧੦॥
لفظی معنی:
جوگی ۔ جوطریقہ الہٰی ملاپ جانتا ہے ۔ جگت ۔ طریقہ ۔ جگاہا۔ دیا کے ہر دور ۔ نر بھؤ۔ بیخوف۔ تاڑی ۔ سمادھی ۔ اندرونی ۔ دھیان لگانا۔ آپ درتے ۔ خود بستا ہے ۔ نام اماہا۔ نام کا جوش و خروش خوشی (1) دیپ ۔ جزیرہ ۔ لوہ ۔ روشنی ۔ لؤ۔ لوگ۔ دیپاہا۔ روشنی کرنے والا۔ متھاہا۔ ستگر۔ سچا مرشد ۔ سمند۔ سمند را۔ متھاہا۔ بلونا۔ تت۔ اصلیت۔ حقیقت ۔ سکھی ۔ ساتھیؤ ۔ دوستوں۔ گاواہا۔ گائیں۔ بھگت ۔ پریم۔ درڑ ۔ مستقل یاد (3) وڈدانا۔ بھاری عقلمند۔ گورمکھ ۔ مرشد کے وسیلے سے ۔ نام وساہا۔ نام خریدا۔
ترجمہ معہ تشریح:
خدا خود ہی جوگی اور خودہی طریقہ جوگ ہے ہر دور زماں میں ار خودہی بیخوفی سے اپنے ذہن میں ذہن نشین ہوتا ہے خود ہی ہر جگہ بستا ہے خودہی انسان کو الہٰی نام اپنا کر یاد کے لئے جوش پیدا کرتا ہے (1) خدا خود ہی ایک جزیرہ اور خود ہی جزیروں کا مجموعہ اور خود ہی روشنی کا منارا خود ہی سچا (سمند) مرشد خیالات کے سمندر سے نتیجہ اخذ کرنے والا اور خود ہی سوچ سمجھ کر حقیقت دریافت کرتا ہے ۔ اورخود ہی قیمتی ہیرے جیسا نام کا انسان کے دل میں یاد کا شوق پیدا کرتا ہے (2) آو ساتھیؤ ملکر الہٰی حمدوچناہ کریں ۔ مرشد کے وسیلے سےا لہٰی نام کی ریاض ہی منافع بش ہے اے انسان الہٰی پریم دل میں مستقل بنا اس سے الہٰی نام کا شوق پیدار ہوتا ہے (3) خود ہی ھاری دانشمند اور شاہوکار ہے ۔ اے انسان مرشد کے ذریعے الہٰی نام کا سرمایہ جمع کر ۔ اے خدا اپنے نام کی نعمت عنایت کر اگر تیری رضا ہو نانک کے دل میں تیرا نام بسے اور تیرے اوصاف شوق سے یاد کریوں۔

جیَتسریِ مہلا ੪॥
مِلِ ستسنّگتِ سنّگِ گُراہا ॥
پوُنّجیِ نامُ گُرمُکھِ ۄیساہا॥
ہرِ ہرِ ک٘رِپادھارِمدھُسوُدنمِلِستسنّگِاوُئوماہارام॥੧॥
ہرِ گُنھ بانھیِ س٘رۄنھِسُنھاہا॥
کرِ کِرپا ستِگُروُ مِلاہا ॥
گُنھ گاۄہ گُنھ بولہ بانھیِ ہرِ گُنھ جپِ اوُگماہا رام ॥੨॥
سبھِ تیِرتھ ۄرتجگپُنّنتد਼لاہا ॥
ہرِ ہرِ نام ن پُجہِ پُجاہا ॥
ہرِ ہرِ اتُلُ تولُ اتِ بھاریِ گُرمتِ جپِ اوُہماہا رام ॥੩॥
سبھِ کرم دھرم ہرِ نامُ جپاہا ॥
کِلۄِکھمیَلُپاپدھوۄاہا॥
دیِن دئِیال ہوہُ جن اوُپرِ دیہُ نانک نامُ اوماہا رام ॥੪॥੫॥੧੧॥
لفظی معنی:
سنگ گراہا۔ مرشد کے ساتھ ۔ پونجی نام۔ الہٰی نام کا سرمایہ ۔ گورمکھ ۔ مرشد کے وسیلے سے ۔ ویساہا ۔ اکھٹا کرؤ۔ مدوھ سودن ۔ خدا (1) ہر گن۔ الہٰی اوصاف۔ بانی ۔ کلام ۔ سرونی ۔ کانوں ۔ سناہا ۔ سنیئے ۔ گن جپ۔ اوصا ف کی ریاض۔ اماہا۔ خوشی (2) تیرتھ۔ زیارت گاہ۔ درت۔ پرہیز گاری ۔ پن۔ ثواب۔ توالاہ۔ تولیں۔ پجیہہ۔ برابری۔ اتل۔ چوتولیانہ جا سکے ۔ گرمت۔ سبق مرشد (3) کرم دھرم۔ اعمال و فرائض ۔ کل وکھ میل۔ گناہوں کی ناپاکیزگی ۔ دین دیال۔ غریب پرور۔ جن ۔خادم۔ اوماہا۔ ہلارا۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے خدا کرم و عنایت فرما سچی صحبت و قربت سے خوشیاں ار جوش و خروش پیدا ہوتا ہے ۔ مرش داور پاکدامنوں کی صحبت وقربت سےا ور مرشد کے ساتھ سےا لہٰی نام سچ حق وحقیقت کا سرامیہ جمع کیجیئے (1) اے خدا رحمت فرما گرو سے ملاپ کراؤ تاکہ تیرے اوصاف کا کلام کانوں سے سنیں اور تیری حمدوثناہ کریں کیونکہ تیری حمدوثناہ سے ذہن میں خوشی کی رو چلتی ہے (2) ساری زیارت گاہوں کی زیارت پرہیز گاری یگ ثواب کا تول یا قدروقیمت الہٰی نام سچ حق وحقیقت کے برابر نہیں۔ خدا کی قدروقیمت والا ہے سبق مرشد سے ریاض و یاد سےد ل میں ولولے اور مزید ریاض کے لئے جوش و خروش پیدا ہوتا ہے (3) اے نانک کہہ۔ اےخدا اپنے خادموں و غلاموں کو الہٰی نام عنایت کر اور رضآ بخشش تاکہ تیرے نام کی ریاض رکیں۔ سارے عامل و فرائض انسانی الہٰی نام کی ریاض ہی ہے اس سے گناہوں کی ناپاکیزگی دور ہوجاتی ہے ۔

جیَتسریِ مہلا ੫ گھرُ ੩
ੴ ستِگُر پ٘رسادِ॥
کوئیِ جانےَ کۄنُایِہاجگِمیِتُ ॥
جِسُ ہوءِ ک٘رِپالُسوئیِبِدھِبوُجھےَتاکیِنِرملریِتِ॥੧॥ رہاءُ ॥
مات پِتا بنِتا سُت بنّدھپ اِسٹ میِت ارُ بھائیِ ॥
پوُرب جنم کے مِلے سنّجوگیِ انّتہِ کو ن سہائیِ ॥੧॥
مُکتِ مال کنِک لال ہیِرا من رنّجن کیِ مائِیا ॥
ہا ہا کرم بِہانیِ اۄدھہِتامہِسنّتوکھُنپائِیا॥੨॥
ہستِ رتھ اس٘ۄپۄنتیجدھنھیِبھوُمن چتُراںگا ॥
سنّگِ ن چالِئو اِن مہِ کچھوُئےَ اوُٹھِ سِدھائِئو ناںگا ॥੩॥
ہرِ کے سنّت پ٘رِءپ٘ریِتمپ٘ربھکےتاکےَہرِہرِگائیِئےَ॥
نانک ایِہا سُکھُ آگےَ مُکھ اوُجل سنّگِ سنّتن کےَ پائیِئےَ ॥੪॥੧॥
جیَتسریِ مہلا ੫ گھرُ ੩ دُپدے
لفظی معنی:
ہاجگ۔ اس دنیا میں۔ میت ۔ دوست۔ بدھ طریقہ ۔ نرمل۔ پاک۔ ریت۔ طرز زندگی (1) رہاؤ۔ بنتا۔ بیوی ۔ بندھپ۔ رشتہ دار۔ اسٹ میت۔ عقیدت دوت ۔ پورب ۔ پچھلے ۔ سنجوگی ۔ قدرتی ۔ انتیہہ۔ بوقت اخرت ۔ سہائی ۔ مددگار (1) مکت مال۔ موتیوں کی مالا۔ کنک ۔ سونا۔ من رنجن کی مائیا۔ دلی خوشنودی حاصل کرنے والی دولت ۔ بہانی ۔ گذرتی ہے ۔ اودھیہہ۔ عمر۔ سنتوکھ ۔ صبر (2) ہست۔ ہاتھی ۔ اسب۔ پون تیج ۔ ہوا کی مانند تیز دوڑنے والے ۔ بھومن۔ زمینوں کے مالک ۔ چترانگا۔ ہاتھی ۔ گوڑے ۔رتھ اور پیدل فوج کا مالک ہو۔ اوٹھ سیدھا ہونا لگا ۔ آخر خالی جائیگا (3) پر یہ پریتم ۔ پیارے کے پیارے ۔ تاکے ۔ انکے ساتھ۔ ایہا سکھ ۔ یہاں آرام ۔ مکھ اجل۔ سرخرو ۔ سنگ سنتن ۔ خدا رسیدہ ۔ پاکدامن روحانی رہبرو ں کی صحبت و قربت
ترجمہ معہ تشریح:
شاذ و نادری ہی کوئی سمجھتا ہے اس دنیا میں کون انسان دوست ہے جس پر الہٰی رحمت و کرم و وعنایت ہوتی ہے (سوئی ) وہی اسکا طریقہ کار سمجھاتا ہے ۔ ج سمجھتا ہے اسکی طرز زندگی پاک و پائس ہو جاتی ہے ۔رہا ؤ۔ ماں باپ ۔ بیوی بیٹے اور رشتہ دار اور پیارے دوست اور بھائی پہلے رشتوں کی جوہ سے ملتے ہیں مگر بوقت آخرت کوئی مددگار نہیں بنتا (1) موتیوں کی مالا۔ سونا ۔ لعل ہیرا اور دل کی خوشنودی حآصل کرنے والا سرامیہ کی خواہش کی گرفت میں ہائے ہائے ۔ معر گذرجاتی ہے ۔ مگر دل صبرنہیں کرتا (2) ہاتھی ۔ اتھ ہواں کی مانند تیز رفتار گھوڑے دولتمند۔ زمینوں کے مال زمیندار اور چار قسموںکی فوج کے مالک (ہاتھی ) وگیرہ ان مں سے کوئی چیز بوقت موتساتھ نہیں جاتی ۔ اخر اس دنیا سے خالی جاتا ہے (3) الہٰی ولی اللہ خدا رسیدہ پاکدامن روحانی رہبر خدا کے پیارے ہوتے ہیں۔ ان کی صحبت و قربت میں الہٰی حمدوچناہ کیجیئے ۔ اے نانک ۔ اس سے دنیا میں آرام و آسائش اور مستقل میں سرخروئی حاصل ہوتی ہے سنتوں کی صحبت و قربت میں ملتی ہے ۔

ستِگُر پ٘رسادِ॥
دیہُ سنّدیسرو کہیِئءُ پ٘رِءکہیِئءُ॥
بِسمُ بھئیِ مےَ بہُ بِدھِ سُنتے کہہُ سُہاگنِ سہیِئءُ ॥੧॥ رہاءُ ॥
کو کہتو سبھ باہرِ باہرِ کو کہتو سبھ مہیِئءُ ॥
برنُ ن دیِسےَ چِہنُ ن لکھیِئےَ سُہاگنِ ساتِ بُجھہیِئءُ ॥੧॥
سرب نِۄاسیِگھٹِگھٹِۄاسیِلیپُ نہیِ الپہیِئءُ ॥
نانکُ کہت سُنہُ رے لوگا سنّت رسن کو بسہیِئءُ ॥੨॥੧॥੨॥
لفظی معنی:
سند یسرؤ۔ پیغام۔ سنہیا۔ بسم۔ حیران۔ بہوبدھ۔ بہت سے طریقے ۔ سہاگن ۔ خدا پرست ۔ خدا رسیدہ ۔ سہیؤ۔ ساتھیوں (1) رہاؤ۔کو کہنو ۔ کوئی کہتاہے ۔ مہیؤ۔ اندر۔ برن۔ رنگ۔ چہن۔ نشان۔ شکل و صورت۔لکھیئے ۔ دیکھائی دیتا ۔ سہاگن ۔ خدا پرست۔ خدا رسیدہ ۔ سات۔ سچ۔ بجھہو ۔ سمجھاو (1) سرب نواسی۔ سب میں بستا ہے ۔ گھٹ گھٹ ۔ ہر دلمیں ۔۔الپہیو۔ بیلاگ۔ سنت رسن۔ خدا رسیدہ پاکدامن روحانی رہبروں کیزبان پر۔ بیہیؤ۔ بستاہے ۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے خدا پرست ساتھیوں میں مختلف قسم کی باتیں سنکر حیران ہوں مجے الہٰی پیغام کے معلق بتاو ۔ رہاؤ۔ کوئی گہتاہے کہ خدا باہر ہے کوئی کہتاہے سب میں بستا ہے نہ اسکی کوئی نشانیہے نہ رنگ ہے جو نظر آئے ۔ اے خدا ہر ستو مجھے حقیقت سمجھاؤ (1) نانک کہتا ہے ۔ اے لوگو سنو خدا دل میں بستا ہے تاہم بھی وہ بیلاگ ہے دنیاوی دؤلت اس پر اپنا تاثر نہیں ڈالتی ۔ وہ خدا رسیدہ پاک دامن روحانی رہبروں کی زبان پر بستاہے ۔

جیَتسریِ مਃ੫॥
دھیِرءُ سُنِ دھیِرءُ پ٘ربھکءُ॥੧॥ رہاءُ ॥
جیِء پ٘رانمنُ تنُ سبھُ ارپءُ نیِرءُ پیکھِ پ٘ربھکءُنیِرءُ॥੧॥
بیسُمار بیئنّتُ بڈ داتا منہِ گہیِرءُ پیکھِ پ٘ربھکءُ॥੨॥
جو چاہءُ سوئیِ سوئیِ پاۄءُآسامنساپوُرءُجپِپ٘ربھکءُ॥੩॥
گُر پ٘رسادِنانکمنِ ۄسِیادوُکھِن کبہوُ جھوُرءُ بُجھِ پ٘ربھکءُ॥੪॥੨॥੩॥
لفظی معنی:
دھیرؤ۔ تحمل۔ سکون۔ جیئہ ۔ پران۔ من تن۔ دل وجان اور زندگی۔ ارپؤ۔ بھینٹ کردوں۔ نیرؤپیکھ پرھ کو ۔ خدا کو نزدیک دیکھ کر (1) مینہگہیرؤ۔۔ دلکی گہرائی میں (2) آسا۔ امید۔ منسا۔ ارادے ۔ پورو۔ پوری کرلوں (3) گرپرساد۔ رحمت مرشد سے ۔ دوکھ نہ کہو جھورؤ۔ عذابمیں کبھی نہی پچھاؤں
ترجمہ معہ تشریح:
میرے دل کو الہٰی باتوں کے سننے سے دل کو تسکین حاسل ہوتی ہے (1) دل و جان اور جسم غرض یہ کہ سب کچھ اس کی بھینٹ چڑھادو ں اور خدا کو نزدیک سے دیکھ لوں دیدار پالوں (1) خدا بیمشار بھاری نعمتیں عطا کرنے والا بھاریسخیہے اسکے دیدار سے دل کو بھاری تکسین حاصلہوتی ہے (2) جو چاہتا ہوں وہی ملتاہے اورمیری امید یں اور ارادے مکمل ہوتے ہیں اس کی یادوریاض سے (3) اے نانک۔ رحمت مرشد سے میرے دلمیں بس گیا اور اسے سمجھنے سے نہ عذآب آتا ہے نہ کبھی افسوس ہوتاہے ۔

جیَتسریِ مہلا ੫॥
لوڑیِدڑا ساجنُ میرا ॥
گھرِ گھرِ منّگل گاۄہُنیِکےگھٹِگھٹِتِسہِبسیرا॥੧॥ رہاءُ ॥
سوُکھِ ارادھنُ دوُکھِ ارادھنُ بِسرےَ ن کاہوُ بیرا ॥
نامُ جپت کوٹِ سوُر اُجارا بِنسےَ بھرمُ انّدھیرا ॥੧॥
تھانِ تھننّترِ سبھنیِ جائیِ جو دیِسےَ سو تیرا ॥
سنّتسنّگِ پاۄےَجونانکتِسُبہُرِنہوئیِہےَپھیرا॥੨॥੩॥੪॥
لفظی معنی:
لوڑیدڑ۔ ضرورت ہے ۔ ساجن۔ دوست۔ منگل۔خشی۔ نیکے ۔ اچھے ۔ گھٹگھٹ۔ ہر دل میں۔ بسیرا۔ ٹھکانہ (1) رہاؤ۔ ارادھن۔ یاد۔ گاہو بیرا۔ کبھی بھی ۔ نام جپت۔ الہٰینام سچ حق وحقیقت کی ادوریاض ۔ کوٹ سور۔ کروڑوں ۔ سورجوں اجیارا۔ روشنی۔ ونسے بھرم اندھیرا۔ شک و شبہات اور وہم و گمان کا اندھیرامتتا ہے ۔ (1) تھان تھننتر۔ ہرجگہ۔ ست سنگ۔ صحبت و قربت پاکدامن ۔ حائی ۔ جگہ تس۔ اسے ۔ بہور۔ دوبار۔
ترجمہ معہ تشریح:
میرے دوست خدا سے ملاپ کی ہر دلمیں خواہش ہے ہر گھر میں خوشیو کے گیت اور ہر دل میں اسکا بسیرا یاٹحکانہ ہے (1) رہاو ۔ آرام و آسائش میں اور نہ عذاب و تکلیفات مں کبھی بھی نہ بھولے ۔ اسکے نام سچ حق وحقیقت کی یادوریاض سے کروڑوں سورجوں جتنی روشنی سے انسانی ذہن دل و دماغ روشن ہو جاتا ہے اور وہم و گمان دلکی بھٹکن بے سمجھی ار جہالت ختم ہوجاتی ہے (1) اے نانک۔ کل علاممیں ہرجگہ جو بھی نظرآرہا ہے تیرا ہے تیری ملکیت ہے ۔ جسے خدا رسیدہ پاکدامن روحانی واخلاقی رہبروں کی صحبت و قربت حاصلہوجائے اسے تناسخمیں نہیں آنا پڑتا ۔

جیَتسریِ مہلا ੫ گھرُ ੪ دُپدے
ੴ ستِگُر پ٘رسادِ॥
اب مےَ سُکھُ پائِئو گُر آگ٘ز٘زِ॥
تجیِ سِیانپ چِنّت ۄِساریِاہنّچھوڈِئوہےَتِیاگ٘ز٘زِ॥੧॥ رہاءُ ॥
جءُ دیکھءُ تءُ سگل موہِ موہیِئءُ تءُ سرنِ پرِئو گُر بھاگِ ॥
کرِ کِرپا ٹہل ہرِ لائِئو تءُ جمِ چھوڈیِ موریِ لاگِ ॥੧॥
ترِئو ساگرُ پاۄککوجءُسنّتبھیٹےۄڈبھاگِ॥
جن نانک سرب سُکھ پاۓموروہرِچرنیِچِتُلاگِ॥੨॥੧॥੫॥
لفظی معنی:
گر آگ۔ مرشدکے پاس۔ تجی ۔ چھوڑی ۔ سیانپ۔ دانشمندی ۔ جنت بساری۔ فکر ۔ تشویش بھلائی۔ اہا۔ تکبر۔ غرور۔ تیاگ ۔ ترک (1) رہاؤ۔ سگل۔ ساری ۔ موہ موہیؤ۔ محبت میں جکڑی ہوئی گرفتار۔ سرن۔ پناہ۔ ٹہل۔ خدمت۔ جسم۔ موت۔ لاگ ۔ پیچھا(1) ساگرپاوک۔ آگ کاسمندر۔ سنت بھیٹے ۔خدا رسیدہ پاکدامن روحانی رہبر سے ملاپ ہوا۔ وڈبھاگ۔ بلند قسمت سے ۔ سرب سکھ ۔ ہر طرح کے آرام و آسائش ۔ ہر چرنی ۔ پائے خدا۔
ترجمہ معہ تشریح:
اب میں فرامن مرشد سے سکون حاصل کرلیا ہے اب میں نے اپنی دانشمندی اور چالا کی چھوڑ دی فکر و تشویش بھلا دی خود ی اور تکبر مٹادیا (1) رہاؤ۔ جدھر نظر جاتی ہے سارے محبتمیں گرفتارہیں۔ تب بھی بھاگ کر مرشد کے زیر سایہ اس کیپناہ لی ۔ اس نے اپنی کرم وعنایت سے الہٰی خدمت میںلگائیا اور خدمتگار خدا ہو تو روحانی موت نے میرا پیچھا چھو (1) جب بلند قسمت سے سنت کے ملاپ کا شرف حاصل ہوا تو دنیاوی زندگی ایک آگ کا سمندر ہے کامیابی سے عبورکرلیا ۔ اے خادم خدا نانک اب مجھے ہر طرح کا آرام و اسائش حاصل ہوگیا ہے جب سے میرے دلمیں خدا کی محبت پیداہوگئی ۔

جیَتسریِ مہلا ੫॥
من مہِ ستِگُر دھِیانُ دھرا ॥
د٘رِڑ٘ہ٘ہِئوگِیانُمنّت٘رُہرِناماپ٘ربھجیِءُمئِیاکرا॥੧॥ رہاءُ ॥
کال جال ارُ مہا جنّجالا چھُٹکے جمہِ ڈرا ॥
آئِئو دُکھ ہرنھ سرنھ کرُنھاپتِ گہِئو چرنھ آسرا ॥੧॥
ناۄروُپبھئِئوسادھسنّگُبھۄنِدھِپارِپرا॥
اپِءُ پیِئو گتُ تھیِئو بھرما کہُ نانک اجرُ جرا ॥੨॥੨॥੬॥
لفظی معنی:
دھیان دھرا۔ توجہ کی ۔ درڑیؤ گیان۔ علم کو دلمیں پختہ کیا۔ روحانیت کا علم دل میںپختہ بنائیا۔ منتر ہرناما۔ الہٰی نامکاکلام ۔مئیا کر۔ مہربانی فرمائی (1) رہاؤ۔ کال۔ جال۔موت کا پھندہ۔ مہاجنو الا۔ بھاری پھندہ۔ چھٹکے ۔ نجات۔ ملی ۔ جھہڈر۔موت کا سہم۔ خوف ۔ کرناپت۔ رحمان الرحیم۔ رحمکے مالک۔ گہیؤ۔ پکڑا لیا۔ چرن اسرا۔ پاؤں کا سہارا (1) ناروپ ۔ کشتی کی شکل۔ بھیؤ۔ ہوا۔ سادہو سنگ۔ صحبت و قربت پاکدامن ۔ بھو ندھ۔ خوفناک سمندر ۔ اپیؤ۔ اب حیات۔ ایساپانی ۔ جس کے پینے سے زندگی روحانی اور صدیوی ہوجاتی ہے ۔ گت تھیؤ بھرما۔ بھٹکن اور گمراہی ختم ہوئی ۔ اجر جرا۔ وہکام جو بردااشت نہ ہہو سکے برادشت کیا۔
ترجمہ معہ تشریح:
جب خدا نے رحمت فرمائی اور سچے مرشد نے دھیان کیا تو دل میں الہٰی نام کا کلام دل میں بس گیا اور روحانیتکی سمجھ دل میں پختہہوگئی ۔رہاؤ (1) میں رحمان الرحیم خدا کی پناہ لی جس سے روحانی موت کا پھندہا ور دنیاوی دولت کیبھاری پھندے اور فرشتہ موت کا خوف دور ہوگیا (1) کشتی یسی صحبت پاکدامن اس خوفناک دنیاوی سمدنر عبور کیا اور روحانی زندگی عنایت کرنے والا آبحیات نوشکیاجس سے دل کی بھٹکن دورہوگئی ۔ اور وہ روحانی رتبہ حاصل ہو ا جو بوسیدہ نہیں ہو سکتا ۔ اے نانک بتادے

جیَتسریِ مہلا ੫॥
جا کءُ بھۓگوۄِنّدسہائیِ॥
سوُکھ سہج آننّد سگل سِءُ ۄاکءُبِیادھِنکائیِ॥੧॥ رہاءُ ॥
دیِسہِ سبھ سنّگِ رہہِ الیپا نہ ۄِیاپےَاُنمائیِ॥
ایکےَ رنّگِ تت کے بیتے ستِگُر تے بُدھِ پائیِ ॥੧॥
دئِیا مئِیا کِرپا ٹھاکُر کیِ سیئیِ سنّت سُبھائیِ ॥
تِن کےَ سنّگِ نانک نِستریِئےَ جِن رسِ رسِ ہرِ گُن گائیِ ॥੨॥੩॥੭॥
لفظی معنی:
گوبند۔ مالک عالم۔ سکوھ ہنچ۔ آنند۔ روحانی یا ذہنی سکون کے سکھ یا خوشیاں۔ سگل۔ سارے ۔ بیادھ ۔ رکاوٹ (1) رہاؤ۔ دلسیہہ۔ دکھائی دیتا ہے ۔ سب سنگ ۔ سب کے ساتھ۔ ایسپا۔ بیلاگ۔ دیاپے ۔ تاثر۔ ایکے رنگ ۔ واحد خدا کے پریم میں۔ تت کے بیتا۔ حقیقت و آصلیت سمجھنے والے ۔ بدھ۔ عقل۔ میا۔ مرہبانی۔ ٹھاکر ۔ مالک۔ سیئی ۔ وہی ۔ سنت سبھائی۔ نیک سیرت۔ نسترییئے ۔ کامیابی حاصلہوتی ہے ۔ناجتملتی ہے ۔ رس رس۔ ہر گن گائی ۔ جنہوں نے پر لطف مزے سے الہٰی حمدوثناہ کرتے ہیں ۔
ترجمہ معہ تشریح:
جن کا ہوتا ہے مددگار خودخڈا وہ ہر قسمکے ذہنی و روحانی سکونا ور خوشیوں میں گذرتی ہے زندگی کسی کوئی رکاوٹ اور بیماری نہیں آٹی نہیں (1) رہاؤ۔ وہ دکھائی تو سب کے ساتھ برتتے دکھائی دیتے ہیں مگر دنیاوی دولت سے بیلاگ رہتے ہیں اور دنیاوی دؤلت ان پر اپنا تاثر نہیں ڈال سکتی وہ حقیقت و اصلیت کو سمجھتے ہیں انہیں واحد خداکا پریم پیار ہوتاہے یہ سمجھ انہیں مرشد سے ملتی ہے (1) بلند قسمت سے خدا کی کرم وعنایت سے وہ نیک سیرت خدا رسیدہ پاکدامن روحانی رہبر ہوجاتے ہیں۔ اے نانک۔ ان کے ساتھ ان کی صحبت و قربت میں رہ کر زندگی کامیاب ہوجاتی ہے اور ہمیشہ ایسے انسان الہٰی حمدوثناہ میں مصروف رہتے ہیں۔

جیَتسریِ مہلا ੫॥
گوبِنّد جیِۄنپ٘راندھنروُپ॥
اگِیان موہ مگن مہا پ٘رانیِانّدھِیارےمہِدیِپ॥੧॥ رہاءُ ॥
سپھل درسنُ تُمرا پ٘ربھپ٘ریِتمچرنکملآنوُپ॥
انِک بار کرءُ تِہ بنّدن منہِ چر٘ہاۄءُدھوُپ॥੧॥
ہارِ پرِئو تُم٘ہ٘ہرےَپ٘ربھدُیارےَد٘رِڑ٘ہ٘ہُکرِگہیِتُم٘ہ٘ہاریِلوُک॥
کاڈھِ لیہُ نانک اپُنے کءُ سنّسار پاۄککےکوُپ॥੨॥੪॥੮॥
لفظی معنی:
گوبند۔ خدا۔ جیون۔ زندگی۔ دھن۔ دولت۔ سرمایہ ۔ اگیان ۔ لا علمی ۔بے سمجھی ۔ مگن۔ محؤ ومجذوب۔ اندھیارے ۔ اندھیرے ۔ جہالت ۔ دیپ ۔ چراگ۔ روشنی (1) رہاؤ۔ سپھل ۔ کامیاب براور ۔ انوپ ۔ انوکھے ۔ نرالے ۔ ایک بار۔ بیشمار دفعہ ۔ بندھن۔ عرض گذارنا ۔ منہ ۔ من اچراوؤ۔ بھینٹ (1) درڑ۔ مستقل۔ اردے سے ۔ گہی ۔ پکڑی ۔ لوک۔ چھگاہ۔ پاوک کے کوپ۔ آگ کے کوئیں سے ۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے خدا تو ہی انسان کے لئے زندگی دؤلت اور شنگار و سجاوٹ ہے ۔ انسان دنیاوی محبت میں محو ومجذوب رہتا ہے اسکے لئے تو ہی اندھیرے میں چراگ کی مانند لا علمی وجاہت میں روشنی کی رکن ہے (1) رہا ؤ۔ اے پیارے خدا تیرا دیدار و وصل زندگی کا مقصد حل کرنے والا اور کامایب بنانے والا ہے ۔ تیرے پاؤں بیشمار بے مثل اور انوکھے ہیں ۔ میں بیشمار بار سجدہ کرتاہوں۔ اور دل بھینٹ کرتا ہوں۔ (1) اب ٹھکا ماندہ اے خدا تیرے در پر پناہگیر ہوا ہوں تمہارے چھپگاہ میں آئیو ہوں۔ اے نانک۔ اے خدا پانے نانک کو اس دنیاوی آگ کے کوئیں سے نکال لو ۔

جیَتسریِ مہلا ੫॥
کوئیِ جنُ ہرِ سِءُ دیۄےَجورِ॥
چرن گہءُ بکءُ سُبھ رسنا دیِجہِ پ٘راناکورِ॥੧॥ رہاءُ ॥
منُ تنُ نِرمل کرت کِیارو ہرِ سِنّچےَ سُدھا سنّجورِ ॥
اِیا رس مہِ مگنُ ہوت کِرپا تے مہا بِکھِیا تے تورِ ॥੧॥
آئِئو سرنھِ دیِن دُکھ بھنّجن چِتۄءُ تُم٘ہ٘ہریِاورِ॥
ابھےَ پدُ دانُ سِمرنُ سُیامیِ کو پ٘ربھنانکبنّدھنچھورِ॥੨॥੫॥੯॥
لفظی معنی:
دیوئے جور۔ رشتہ بنادے ۔ اشتراک پیدا کردے ۔ چرن گہو ۔ پاوں پکڑوں۔ بکو ۔ سب رسنا۔ زبان سے استدعا کر وں۔ دیجہہ پرران ۔ کور ۔ زندگی بھینٹ کردو (!) رہاؤ۔ من تن۔ دل و جان۔ نرمل۔ پاک۔ کیارو۔ کھیت۔ نرمل۔ پاک ۔ سچے ۔ آبپاشی ۔ استدھا۔ انمرت۔ آبحیات۔ ایسا پانی جس سے زندگی صدیوی روحانی اور پاک ہوجاتی ہے ۔ سنجور ۔ آبپاشی کرؤ۔ یارس ۔ اس لطف میں۔ مگن ہوت۔ محو ومجذوب ہونے سے ۔ مہاروکھیا۔ بھاری زہر ۔ نور ۔ توڑ کر ختم کرکے (1) دین دکھ بھنجن۔ غریب پرور۔ غریبوں کے عذآب مٹانے والے (1) چنؤ تمری اور۔ تیرا ہی خیال ہے ۔ ابھے پد۔ بیخوفی ۔ سمرن سوآمی ۔ آقا کی یاد۔ بندھن چھور۔ غلامی سے نجات دلانے والا۔
ترجمہ معہ تشریح:
اگر کوی خدا سے میرا رشتہ اور اشتراک بنا دے تو میں اس کے پاوں پکڑوں زبان سے شکر ادا کروں اور احسانمند ہوں اور اپنے دل وجان کو ایک پاک کھیت بناو اور اس میں آبحیات کی آبپاشی کرؤ اس میں محو ومجذوب ہوکر اس دنیاوی دؤلت کی زہر سے نجات پاؤ (1) اے غریب پرور دکھوں کے درد مٹانے والے میں تیرا پناہگیر بنا ہوں ۔ تیری پناہ لی ہے اور دل میں تیرا ہی خیال ہے ۔ اے خدا مجھے بیخوفی اوریاد خدا اے نانک ۔ غلامی سے نجات ملے ۔

جیَتسریِ مہلا ੫॥
چات٘رِکچِتۄتبرستمیݩہ॥
ک٘رِپاسِنّدھُکرُنھاپ٘ربھدھارہُہرِپ٘ریمبھگتِکونیݩہ॥੧॥ رہاءُ ॥
انِک سوُکھ چکۄیِنہیِچاہتاندپوُرنپیکھِدیݩہ॥
آن اُپاۄنجیِۄتمیِنا بِنُ جل مرنا تیݩہ॥੧॥
ہم اناتھ ناتھ ہرِ سرنھیِ اپُنیِ ک٘رِپاکریݩہ॥
چرنھ کمل نانکُ آرادھےَ تِسُ بِنُ آن ن کیݩہ॥੨॥੬॥੧੦॥
لفظی معنی:
چاترک۔ حقیقت۔ پپیہا ۔ چاہتا ہے ۔ کر پابندھ۔ رحمان الرحیم ۔ مہربانیوں کا سمندر۔ کرنا۔ رحم۔ ترس۔ دھاریہو۔ ابناو ۔ نیہہ۔ شوق (1) رہاؤ۔ چاہت۔ چاہتی ۔ پیکھ ۔ دیکھ ۔ دیدار۔ دینہہ۔ دن ۔ آن آپاو۔ دوسری کوششوں سے ۔ تینہہ ۔ اسے (1) اناتھ ۔ بے مالک۔ ناتھ ہر سرنی ۔ مالک خدا کے زیر سایہ زہر پناہ۔ ارادے ۔ دھیان کرنا۔ توجو دینا۔ کینہہ ۔ کوئی ۔
ترجمہ معہ تشریح:
جس طرح پپیہا ہر وقت چاہتا ہے کہ برسات ہوتی رہے ۔ اسطرح سے اے رحمان الرحیم مہربانیوں کے سمند رایسے ہی اپنے پیارے پریمی کو پانا پیار عنایت کیجیئے (1) رہاؤ۔ جیسے چکوی کوئی سکھ یا آرام نہیں چاہتی صرف سورج کو دیکھ کر ہی اسے سکون اور خوشی حاصل ہوتی ہے جس طرح سے کسی بھی کوشش سے پانی کے بغیر مچھلی زندہ نہیں رہتی اس کی موت واقع ہو جاتی ہے (1) اے میرے آقا خدا۔ مجھے اپنا سایہ اپنی پناہ عنایت فرما۔ نانک تیرے پاوں کا گرویدہ رہے مجھے تیری یاد کے بغیر کچھ اچھا معلوم نہیں ہوتا۔

جیَتسریِ مہلا ੫॥
منِ تنِ بسِ رہے میرے پ٘ران॥
کرِ کِرپا سادھوُ سنّگِ بھیٹے پوُرن پُرکھ سُجان ॥੧॥ رہاءُ ॥
پ٘ریمٹھگئُریِجِنکءُپائیِتِنرسُپیِئءُبھاریِ॥
تا کیِ کیِمتِ کہنھُ ن جائیِ کُدرتِ کۄنہم٘ہ٘ہاریِ॥੧॥
لاءِ لۓلڑِداسجناپُنےاُدھرےاُدھرنہارے ॥
پ٘ربھُسِمرِسِمرِسِمرِسُکھُپائِئو نانک سرنھِ دُیارے ॥੨॥੭॥੧੧॥
لفظی معنی:
من تن۔ دل وجان۔ میرے پران۔ میری زندگی ۔ سادہو سنگ بھیٹے ۔ پاکدامن خدا رسیدہ کی صحبت وملاپ ۔ پورن پرکھ ۔ کامل انسان۔ سجان ۔ دانشمند۔ (1) رہاؤ۔ پریم ٹھگوری ۔ پیار بھرا دہوکا ۔ رس ۔ لطف۔ مزہ ۔ قدرت ۔ طاقت۔ قوت (1) سرن دوآرے ۔ اپنے در کی پناہ۔ لڑ ۔ دامن۔ داس۔ خادم۔ خدمتگار۔
ترجمہ معہ تشریح:
خدا میرے دل و جان میں بس گیا ہے ۔ وہ سارے اوصاف سے مخمور ہر جائی سب کے پوشیدہ راز دلی سمجھنے والے اپنی کرم وعنایت سے صحبت و قربت پاکدامن خدا رسید ہ (سادہو) مال جو کامل دانشمند انسان ہے (1) رہاؤ۔ جنہیں پریم پیار کا دہوکا دینے والی بوتی یا پودا جنہوں نے پالیا ۔ انہوں نے آبحیات زندگی کو روحانی روحآنیت پر ست بنانے والے پانی نوش کر لی الہٰی نام سچ حق وحقیقت اپنائی جو صدیوی زندگی ہے ۔ کی قدروقیمت بتانے کی مجھ میں کہاں طاقت و قوت ہے کہ بتا سکوں (1) اے نانک۔ خدا اپنے خدمتگاروں کو اپنا دامن دیتا ہے اور بچانے کی توفیق رکھنے والا اپنی توفیق سے بچاتا ہے اور وہ الہٰی یادویراض سے ہمیشہ آرام و آسائش پاتے ہیں۔

جیَتسریِ مہلا ੫॥
آۓانِکجنمبھ٘رمِسرنھیِ॥
اُدھرُ دیہ انّدھ کوُپ تے لاۄہُاپُنیِچرنھیِ॥੧॥ رہاءُ ॥
گِیانُ دھِیانُ کِچھُ کرمُ ن جانا ناہِن نِرمل کرنھیِ ॥
سادھسنّگتِ کےَ انّچلِ لاۄہُبِکھمندیِجاءِترنھیِ॥੧॥
سُکھ سنّپتِ مائِیا رس میِٹھے اِہ نہیِ من مہِ دھرنھیِ ॥
ہرِ درسن ت٘رِپتِنانکداسپاۄت ہرِ نام رنّگ آبھرنھیِ ॥੨॥੮॥੧੨॥
لفظی معنی:
انک جنم۔ بیشمار ۔ زندگیوں ۔ بھرم ۔ بھٹکن کر۔ گمراہ ہوکر۔ سرنی ۔ زیر سایہ۔ ادھر ۔ بچاؤ۔ اندھ کوپ۔ اندھیرے کوئیں ۔ مراد گمراہ زندگی اچرنی ۔ پاؤں (1) رہاؤ۔ گیان ۔ علم ۔ سمجھ ۔ دھیان ۔ توجہ ۔ کرم۔ اعمال۔ ناہن۔ نرمل۔ پاک۔ کرنی ۔ اعمال۔ سادھ سنگت۔ صحبت و قربت پاکدامناں ۔ انچل۔ گود۔ وکھم ندی ۔ ریائے دشوار (1) سنپت ۔ جائیداد۔ سرمایہ ۔ مائی رس۔ سرمائے کا لطف۔ دھرتی ۔ بسانے ۔ بیٹھائے ۔ ہردرسن ۔ الہٰی دیدار ۔ ترپت۔ تسلی ۔ تسکین ۔ ہر نام رنگ ۔ الہٰی نام ۔ سچ حق وحقیقت کے ۔ رنگ ۔ رپیم پیار۔ آبھرنی ۔ زیور
ترجمہ معہ تشریح:
انسان بیشمار زندگیوں سے گذر کر خدا کے زیر سایہ آئیا ہے اس لئے اے خدا گمراہیوں کے اندھیرے کوئیں سے بچاے اور اپنے پاؤں کا کرویدہ بنا۔ رہاؤ۔ اے خدا نہ روحانی حقیقی زندگی کی سمجھ ہے نہ ہی امعال نیک ہیں پاک ہیں اے خدا صحبت قربت پاکدامناں کا دامن عنیات رما تاکہ دریائے دشوار زندگی عبور کر سکوں (1)
اے نانک۔ آرام و آسائش دنیاوی دؤلت کے پر لطف ضائقے خادمان خدا نہیں دل میں بساتے ۔ دیدار خدا سے انہیں صبر تتسکین و تسلی حاصل ہوتی ہے اور الہٰی نام سچ حق و حقیقت ہی ان کی زیبائش کا زیور ہے ۔

جیَتسریِ مہلا ੫॥
ہرِ جن سِمرہُ ہِردےَ رام ॥
ہرِ جن کءُ اپدا نِکٹِ ن آۄےَپوُرنداسکےکام॥੧॥ رہاءُ ॥
کوٹِ بِگھن بِنسہِ ہرِ سیۄانِہچلُگوۄِددھام॥
بھگۄنّتبھگتکءُبھءُکِچھُناہیِآدرُدیۄتجام॥੧॥
تجِ گوپال آن جو کرنھیِ سوئیِ سوئیِ بِنست کھام ॥
چرن کمل ہِردےَ گہُ نانک سُکھ سموُہ بِسرام ॥੨॥੯॥੧੩॥
لفظی معنی:
اپد۔مصیبت۔ پورن ۔ مکمل (1) ۔ رہاو۔ کوٹ ووگھن۔ کروڑوں کا و۔ دشواریاں۔ ونسے ۔ مٹ جاتی ہیں۔ نہچل گوبند دھام۔ خدا کا مستقل ٹھکانہ ۔ بھگونت بھگت ۔ الہٰی عاشق ۔ پر ماتما کا پیار ۔ بھو۔ خوف۔ ادر۔ عزت (1) تج گوپال۔ خدا چھوڑ ۔ ان جو کرنی ۔ دوسر اعامل ۔ سوئی سوئی ۔ دنست خام۔ وہ کچا اور مٹ جانے والا ہے ۔ گہہ ۔ پکڑ۔ سکھ سموہدسرام۔ تمام آرام و آسائش کا ٹھکانہ
ترجمہ معہ تشریح:
اے عاشقان الہٰی اپنے دل میں خدا کو یاد کیا کرو کوئی بھی مصیبت خادماں خدا کے نزدیک نہیں بھٹکتی سارے کام مکمل ہوتے ہیں (1) رہاؤ۔ الہٰی خدمت سے کروڑوں دشواریاںا ور راکوٹیں دور ہو جاتی ہیں اور الہٰی ٹھکانہ حاصل ہوجاتا ہے خدا پرستوں الہٰی رپمیوں کوکوئی خوف نہیں رہتا فرشتہ موت بھی قدر کرتا ہے (1) اے نانک۔ خدا کو چھوڑ کر بھلا کر جو بھی کام پائے الہٰی کا گرویدہ ہو جا دل میں بسا تمام آرام وآسائش کا گھر ہیں۔

جیَتسریِ مہلا ੯
ੴ ستِگُر پ٘رسادِ॥
بھوُلِئو منُ مائِیا اُرجھائِئو ॥
جو جو کرم کیِئو لالچ لگِ تِہ تِہ آپُ بنّدھائِئو ॥੧॥ رہاءُ ॥
سمجھ ن پریِ بِکھےَ رس رچِئو جسُ ہرِ کو بِسرائِئو ॥
سنّگِ سُیامیِ سو جانِئو ناہِن بنُ کھوجن کءُ دھائِئو ॥੧॥
رتنُ رامُ گھٹ ہیِ کے بھیِترِ تا کو گِیانُ ن پائِئو ॥
جن نانک بھگۄنّتبھجنبِنُبِرتھاجنمُگۄائِئو॥੨॥੧॥
لفظی معنی:
بھولیؤمن۔ گمراہ من ۔ مائیا اربھائیوں۔ مائیا۔ دنیاوی دولت ۔ اربھائیو۔ پھنسا رکھا ہے ۔ کرم۔ اعمال۔ آپ بندھاہؤ ۔ اپنے آپ کو غلام بنا رکھا ہے (1) رہاو۔ وکھے رس رجیؤ۔ برائیو کے لطف میں مجذوب ۔ جس حمدوثناہ ۔ وسرایؤ۔ بھلا کر۔ سنگ سوآمی ۔ خدا کی صحبت ۔ جانیؤ نائن۔ نہیں جانتا۔ بن کھوجن کو دھیائیو ۔ خڈا کو تلاش کرنے کے لئے جنگل کی طرف دوڑتا ہے (1) رتن رام۔ قیمتی ہیرا ۔ گھٹ ہی کے بھیتر ۔ دل میں ہی ۔ کوگیان نہ پایو۔ اسکو نہیں سمجھا۔ بھگونت بھجن۔ الہٰی بندگی کے بغیر ۔ برتھا جنم گوایو ۔ زندگی بیکار چلی جائیگی ۔
ترجمہ معہ تشریح:
گمراہ من دنیاوی دؤلت نے گمراہ کر رکھا ہے ۔ جو جو کام اسکے لالچ میں کرتا ہے اپنے آپ کو اسکا غلام بناتا ہے (1) رہاؤ۔ برائیوں اور بدکاریون کے لطف میں محصور ہوکر خدا کو بھلا دیتاہے ۔ خدا جو ساتھ ہے نزدیک بستا ہے اسے سمجھتا نہیں جنگلوں میں تالش کرنے لئے دوڑتا ہے ۔ اے خادم خدا نانک۔ الہٰی بندگی عبادت وریاضت کے بغیر بیکار بیفائدہ زندگی گذارتا ہے ۔

. جیَتسریِ مہلا ੯॥
ہرِ جوُ راکھِ لیہُ پتِ میریِ ॥
جم کو ت٘راسبھئِئواُرانّترِسرنِگہیِکِرپانِدھِتیریِ॥੧॥ رہاءُ ॥
مہا پتِت مُگدھ لوبھیِ پھُنِ کرت پاپ اب ہارا ॥
بھےَ مربے کو بِسرت ناہِن تِہ چِنّتا تنُ جارا ॥੧॥
کیِۓاُپاۄمُکتِ کے کارنِ دہ دِسِ کءُ اُٹھِ دھائِیا ॥
گھٹ ہیِ بھیِترِ بسےَ نِرنّجنُ تا کو مرمُ ن پائِیا ॥੨॥
ناہِن گُنُ ناہِن کچھُ جپُ تپُ کئُنُ کرمُ اب کیِجےَ ॥
نانک ہارِ پرِئو سرناگتِ ابھےَ دانُ پ٘ربھدیِجےَ॥੩॥੨॥
لفظی معنی:
پت ۔ عزت ۔ جم کوتواس۔ موت کا خوف۔ ارانتر۔ دل میں۔ کراپاندھ ۔ رحمان الرحیم ۔ مہربانیوں کا خزانہ (1) رہاؤ۔ ہاپتت۔ بدچلن ۔ بد اخلاق ۔ مگدھ ۔ بھاری ۔ بیوقوف۔ لوبھی ۔ لالچی ۔ فن ۔ تاہم ۔ پھر بھی ۔ کرت پاپا۔ گناہ کرکے ۔ ہارا۔ تھکا ماندہ ۔ بھے خوف ۔مربے ۔ مرنے کا ۔ دسرت ناہن ۔ بھولتا نہیں۔ چنتا ۔ فکر ۔ تن جا۔ جم جل رہا ہے ۔ اپاؤ ۔ کوش ۔ تردو مکت۔ آزادی ۔ نجات ۔ اوپہرا ۔ ہر طرف ۔ دھائیا۔ دوڑ دہوپ ۔ گھٹ ہی بھتر۔ دمیں ہی ۔ بسے نرنجن۔ بیداغ پاک خدا بستا ہے ۔ مرم ۔ بھید ۔ راز (2) گن ۔ وصف۔ جپ ۔ تپ۔ ریاضت و بندگی ۔ کون کرم ۔ کونسے اعمال ۔ سر ناگت۔ زیر پانہ آئیا ہوں۔ ابھے دان۔ بیخوفی کی بھیک ۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے خدا بچاییئے عزت میری میرے دل میں موت کا خوف بسا ہوا ہے ۔ اے رحمان الرحیم اب تیرے زیر سایہ زیر پناہ آئیا ہوں۔(1) رہاؤ۔ اے خدا میں بھاری بد چلن بد خالق ۔ بیوقوف۔ جاہل ۔ لالچی اور ناہ کرکے ماند پڑ گیا ہوں تھک گیا ہوں ۔ مگر موت کا غم نہیں بھولتا اس فکر و تشویش میں ل رہا ہوں (1) اسکے لئے بہت جدوجہد اور کوشش کی اور ہر طرف دوڑ دہوپ کی ہے مگر ج و خدا دلمیں ہی بس رہا ہے ۔ اسکا راز معلوم نہ ہوا (2) اے نانک۔ نہ کوئی میرے اندر وصف ہے نہ ریاضت و بندگی اسلئے کونسا کام کیا جائے ؟ اب آخر کا ر تیری زیر پناہ زیر سیاہ آیا ہوں اے خدا آب روحانی موت کے خوف سے نجات دیجیئے ۔

جیَتسریِ مہلا ੯॥
من رے ساچا گہو بِچارا ॥
رام نام بِنُ مِتھِیا مانو سگرو اِہُ سنّسارا ॥੧॥ رہاءُ ॥
جا کءُ جوگیِ کھوجت ہارے پائِئو ناہِ تِہ پارا ॥
سو سُیامیِ تُم نِکٹِ پچھانو روُپ ریکھ تے نِیارا ॥੧॥
پاۄننامُجگتمےَہرِکوکبہوُناہِسنّبھارا॥
نانک سرنِ پرِئو جگ بنّدن راکھہُ بِردُ تُہارا ॥੨॥੩॥
جیَتسریِ مہلا ੫ چھنّت گھرُ ੧
لفظی معنی:
ساچا گہو وچار۔ خیالات ۔ سوچ سمجھ پاک ۔ حقیقت پر مبنی اصلیت ۔ متھیا۔ جھوٹے ۔ سگرو ۔ ایہہ سنسار ۔ یہ سارا عالم ۔ ساری دنیا (1) رہاؤ۔ ا کو جوگی کھوجت ہارے ۔ جس کی تلاش میں ڈہونڈتے ڈہونڈتے خدا کے متلاشی ماند پڑ گئے ۔ پائیو نا ہے تیہ ہ پارا۔ اسکا کوئی کنارا نہ پا سکے آخرت معلوم نہ کر سکے ۔ سوسوآمی ۔ اس مالک ۔ نکٹ۔ نزدیک۔ روپ ریکھ ۔ شکل وصورت ۔ نیر۔ انوکھا ۔ (1) پاون ۔ پاک ۔ قابل ستائش ۔ کہو ۔ کبھی ۔ سنبھا ر۔ سنبھالا۔ یاد کیا۔ جگ بندھن۔ سجد ہ کے لائق ۔ نمسکار کے لائق۔ راکھہو ہر دھ ۔ نہارا ۔ اپنی قدیمی عادت کے مطابق چلو ۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے دل اپنے خیالات سوچ سمجھ پاک سچ حق حقیقت و اصلیت صدیوی اپنا الہٰی نام سچ حق و حقیقت کے بغیر اس سارے عالم کو مٹ جانے والا سمجھ (1) اے دل جوگی حق متلاشی خدا کو ڈہونڈتے ڈہونڈتے ماند پڑ گئے تھک ہار گئے اس کی آخرت اور کنارا نہ پ ا سکے اے انسان اس کو خدا کو پانے ساتھ حاضر و نزدیک سمجھ تاہم اسکی کوئی نشانی شکل و صورت بتائیا نیں ا سکتا (1) اے دل خدا کا نام پاک و پائس ہے جس کو تو نے سنبھال کر نہیں رکھا مراد یاد نہیں کیا کبھی ۔ اے نانک ۔ اے انسان سارے عالم کے لئے قابل تعظیم و آداب سجدہ ونمسکار ہے ۔ میں اسکے زیر سایہ زیرہ پناہ آئیا ہوں۔ اور تیری کہ پناہ گر کی حفاظت کرتا ہے ۔ اس لئے میری حفاظت کیجیئے ۔

ستِگُر پ٘رسادِ॥
سلوکُ ॥
درسن پِیاسیِ دِنسُ راتِ چِتۄءُاندِنُنیِت॥
کھول٘ہ٘ہِکپٹگُرِمیلیِیانانکہرِسنّگِمیِت॥੧॥
چھنّت ॥
سُنھِ زار ہمارے سجنھ اِک کرءُ بیننّتیِیا ॥
تِسُ موہن لال پِیارے ہءُ پھِرءُ کھوجنّتیِیا ॥
تِسُ دسِ پِیارے سِرُ دھریِ اُتارے اِک بھوریِ درسنُ دیِجےَ ॥
نیَن ہمارے پ٘رِءرنّگرنّگارےاِکُتِلُبھیِنادھیِریِجےَ॥
پ٘ربھسِءُمنُلیِناجِءُجلمیِناچات٘رِکجِۄےَتِسنّتیِیا॥
جن نانک گُرُ پوُرا پائِیا سگلیِ تِکھا بُجھنّتیِیا ॥੧॥
لفظی معنی:
پیاسی ۔ خواہشمند۔ چتوؤ۔ یاد کرنا۔ اندن۔ ہر روز۔ نیت ۔ برروز کپٹ۔ دردازہ ۔ ہر سنگ یت۔ خدا دست کے ساتھ (1) چھنت۔ یار۔ دوست۔ کھوجنتا ۔ ڈہونڈتا۔ سردھری ۔ سر پر بیٹھا ؤں ۔۔ بھوری درسن ۔ تھوڑ اسا دیدار۔ اتارنے ۔ کاٹ کر ۔ رنگ رنگارے ۔ پیارے کے پریم میں۔ تل ۔ تھوڑاسا۔ دھریجے ۔ وشواش۔ چاترک ۔ پیپہا۔ تشتیا۔ پیاسا۔ تکھا بجھشتیا۔ پیاس بجھی
ترجمہ معہ تشریح:
میرے دلمیں دیدار خدا کی ہر روز روز و شب خواہش اور چاہ امنگ رہتی ہے ۔ اے نانک۔ میرے مرشد نے میرے ذہن کے وہم وگمان کے پروے دور کرکے ملاپ کرائیا۔ میرے دوست خدا سے (2) چھنت۔ اے میرے دوست سن ایک عرض گذارا تا ہوں۔ میں اس میرے پیارکی تلاش کرتاپھرتا ہوں۔ اس پیارے کا کوئی پتابتاؤ اپنا سر کاٹ کر رکھ دوں اگر تھوڑ اسا دیدار بھی دیدے میری آنکھیںاس پیارے کے دیدار میں منتطر اور سر شار ہیں اور دل میں تھوڑے سے وقفے کے لئے بھی چین نہیں۔ میرا دل اس طرح سے خدا میں محو ومجذوب ہے ۔ جس طرح سے پانی کے بگیر مچھلی بیقرار رہتی ہے اور پپیہا اس آسمانی قطرہ اب کے لئے اسی طرح مریا دل بیقرار بے چین رہتا ہے ۔ اے نانک۔ کامل مرشد ساری پیاس بجھا دیتا ہے ۔

زار ۄےپ٘رِءہبھےسکھیِیاموُکہیِنجیہیِیا॥
زار ۄےہِکڈوُنّہِکِچاڑےَہءُکِسُچِتیہیِیا॥
ہِک دوُنّ ہِکِ چاڑے انِک پِیارے نِت کردے بھوگ بِلاسا ॥
تِنا دیکھِ منِ چاءُ اُٹھنّدا ہءُ کدِ پائیِ گُنھتاسا ॥
جِنیِ میَڈا لالُ ریِجھائِیا ہءُ تِسُ آگےَ منُ ڈیݩہیِیا॥
نانکُ کہےَ سُنھِ بِنءُ سُہاگنھِ موُ دسِ ڈِکھا پِرُ کیہیِیا ॥੨॥
لفظی معنی:
پریہ۔ پیارے ۔ ہتھے ۔ سبھے ۔ سارے ۔ سکھیا۔ ساتھی ۔ مو ۔ میں ۔ گہی نہ جیہیا۔ میں کئے جیسا نہیں۔ بک ڈوہک چاڑھے ۔ ایک سے ایک اعلے ۔ بڑھیا ۔ ہوں کس چیتہیا ۔ میں کسے یاد ۔ انک پیارے ۔ بیشمار پیارے ۔ نت کردو بھوگ ۔ بلاسا ۔ ہر روز ۔ ملاپ کا سکنو حاسل کرتے ۔ چاؤ۔ خوشی ۔ گن تاسا۔ اوآسف کا خزانہ ۔ ریچائیا۔ خوش کیا۔ من ڈینہیا۔ دل و بدوں ۔ سہاگن خدا پرست ۔ خاوند والی ۔ دکھا ۔ دیکھا ۔ پر ۔ پتی ۔ خاوند۔ ۔ خدا۔ کیہیا ۔ کیسا ہے ۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے دوست سارے پیارے ساتھی ہیں مگر میں کسی جیتا نہیں ۔ یہ اعلے سے اعلے روحانی زندگی والے ہیں میں کسی شمار میں نہیں اور وہ ہر روز الہٰی ملاپ کی خوشی اور سکون حاصل کرتے ہیں۔ انکو دیکھ کر میرے د ل میں امنگیں اور خواہشات پیدا ہوتی ہیں۔ کہ کبھی اوصاف کے خزانے خدا کا وصل مجھے بھی ہوگا۔ جنہوں نے الہٰی خوشنودی حاصل کرلی ہے ۔میں اپنا دل اسے بھینٹ کرنا چاہا ہوں۔ نانک پکارتا ہے ۔ کہ اے خدا والوں خدا پرستوں میری عرض سنیئے مجھے بتاؤ کہ خدا کیسا ہے تاکہ میں دیدار پاؤں کہ خدا کیساہے ۔

زار ۄےپِرُآپنھبھانھاکِچھُنیِسیِچھنّدا॥
زار ۄےتےَراۄِیالالنُموُدسِدسنّدا॥
لالنُ تےَ پائِیا آپُ گۄائِیاجےَدھنبھاگمتھانھے॥
باںہ پکڑِ ٹھاکُرِ ہءُ گھِدھیِ گُنھ اۄگنھنپچھانھے॥
گُنھ ہارُ تےَ پائِیا رنّگُ لالُ بنھائِیا تِسُ ہبھو کِچھُ سُہنّدا ॥
جن نانک دھنّنِ سُہاگنھِ سائیِ جِسُ سنّگِ بھتارُ ۄسنّدا॥੩॥
لفظی معنی:
پرپتی ۔ خاوند مراد ۔ خدا۔ بھانا۔ پیارا۔ نیک۔ نیسی ۔ نہیں۔ چھندا۔ محتاجی ۔ دست نگر۔ راویا۔ وصل حاسل ہوا ۔ مو۔ مجھے ۔ دس دسندا۔ بتا دیتا ہے ۔ لالن ۔ خدا۔ آپ گوائیا۔ خودی مٹائی ۔ بھاگ مٹھانے ۔ جس کی پیشنای پر ہے اس کی تقدیر و مقدر میں۔ بانہہ پکڑ تھا کر نیو گھدی ۔ یا زو سے پکڑ اپنا بنائای۔ گن ہار۔ اوصا ف تیس ۔ اوصاف کی ملا۔ رنگ لال۔ خوبصورت۔ تس سبھو کچھ سوہندا۔ اس کی ہر چیزو خوبصورت ۔ بھدار ۔ خاوند مرادخدا۔ سند۔ بستا ہے
ترجمہ معہ تشریح:
جسکا ہو پیار خدا سے محتاجی اسے کسی کی نہیں رہتی اے دوست تو نے وصل الہٰی پالیا میں پوچھتا ہوں مجھے بھی بتا دیتا ۔ تو نے پاک خدا کوپا لیا ہے ارو خود ی مٹا دی ہے جس کی پیشانی پر اسکا مقدر بیدار ہوتا ہے ۔ خدانے از خود مجھے اپنالیا اور میرے نیک و بد چلن کا خیال نہیں کیا اے نانکہ کہہ۔ خوش قسمت ہے وہ انسان جس کے دل میں بستا ہے خدا ۔

زار ۄےنِتسُکھسُکھیدیِسامےَپائیِ॥
ۄرُلوڑیِداآئِیاۄجیِۄادھائیِ॥
مہا منّگلُ رہسُ تھیِیا پِرُ دئِیالُ سد نۄرنّگیِیا॥
ۄڈبھاگِپائِیاگُرِمِلائِیاسادھکےَستسنّگیِیا ॥
آسا منسا سگل پوُریِ پ٘رِءانّکِانّکُمِلائیِ॥
بِنۄنّتِنانکُسُکھسُکھیدیِسامےَگُرمِلِپائیِ॥੪॥੧॥
لفظی معنی:
سکھ ۔ سکھبدی ۔ جس کے لئے دعا کرتا تھا ۔ سا۔ وہ ۔ در۔ خاوند۔ مراد۔ خدا۔ وجی ودھائی۔ مبارکباد۔ ہامنگل۔ بھاری ۔ خوشیاں۔ رہس تھیا۔ سکون ۔ملا۔ نور رنگیا۔ نیے پیار۔ وڈباگ۔ بلند قسمت سادھ ۔ پاکدامن ۔ جس نے زندگی اخالقی ۔ وروحانی راہ راست پر مبنی بنالی ۔ ست سنگیا۔ سچے ساتھی ۔ اسا۔ منسا۔ امیدیں اور ارادے ۔ سگل ۔ ساری ۔ انک انک ۔ ملائی ۔ یکسو ہوا ۔ سکھ سیکھدی ۔ جس کے لئے دل میں تمنا تھی ۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے دوست جس کے لئے تمنا تھی اور دعا کرتاتھا وہ میرا مدعا الہٰی ملاپ حاصل ہو گیا ۔ اب دل میں جوش و خروش اور پیار بھرے روحانی و لوے پیدا ہو رہے ہیں ہمیشہ نئے انداز و پیار مہربان دل میں بس رہا ہے جس سے بھاری سکون مل رہا ہے ۔ بلند قسمت سے الہٰی وصل حاصل ہوا ہے اور مرشد نے صحبت و قربت پکدامناں میں اس سے ملاپ و وصل کرا دیا اور اب میں اس سے سیکسو ہوگیا ہوں اور تمام تمنائیں پوری ہوگئیں ہیں۔ نانک عرض گذارتا ہے کہ جس کے لئے عائیں کرتا تھا مرشد کے ملاپ سے پوری ہوگئیں ہیں۔

جیَتسریِ مہلا ੫ گھرُ ੨ چھنّت
ੴ ستِگُر پ٘رسادِ॥
سلوکُ ॥
اوُچا اگم اپار پ٘ربھُکتھنُنجاءِاکتھُ॥
نانک پ٘ربھسرنھاگتیِراکھنکءُسمرتھُ॥੧॥
چھنّتُ ॥
جِءُ جانہُ تِءُ راکھُ ہرِ پ٘ربھتیرِیا॥
کیتے گنءُ اسنّکھ اۄگنھمیرِیا॥
اسنّکھ اۄگنھکھتےپھیرےنِتپ٘رتِسدبھوُلیِئےَ॥
موہ مگن بِکرال مائِیا تءُ پ٘رسادیِگھوُلیِئےَ॥
لوُک کرت بِکار بِکھڑے پ٘ربھنیرہوُتےنیرِیا॥
بِنۄنّتِنانکدئِیادھارہُکاڈھِبھۄجلپھیرِیا॥੧॥
لفظی معنی:
اگم۔ انسانی ذہنی سوچ سمجھ سے باہر۔ اکتھ ۔ جو بیان نہ ہو سکے ۔ سرناگتی ۔ پانہگیر ۔ سمرتھ ۔ توفیق رکھتا ہے (1) چھنت ۔ جیؤ۔ جس طرح ۔ کیتے گنو ۔ کتنے گنوں۔ اسنکھ ۔ بیشمار۔ اوگن۔ بداوصاف ۔ کھتے ۔ خطا ۔ غلطیاں۔ نت۔ پرت۔ ہر روز۔ بھولئے ۔ بھول۔ مگن۔ محو۔ وکراں۔ خوفناک ۔ تؤ پر سادی۔ تیری رحمت سے ۔ گھولئے ۔ بچتے ہیں۔ لوک ۔ چھپ کر ۔ وکا ۔ برائیاں۔ بدیاں۔ وکھرے ۔ دشوار۔ بھوجل۔ خوفناک دنیاوی زندگی کے سمندر۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے نانک۔ یا خدا میں تیری پنہا آئیا ہوں تو میری حٖاظت کی توفیق رکھتا ہے تو انسانی سوچ و سمجھ اور تخمیل سے بلند تر ہے اور اعداد و شمار سے باہر ہے اور بیان سے باہر نا قابل بیان ہے 1) چھنت۔ اے خدا جیسے تیری رضا ہے جیسے تو اچھا سمجھتا ہے حفاظت کر بچا تیرا ہوں ۔ میں کتنے گنوں بیشمار میرے اندر بداوصاف ہیں اور ہر روز خطا ئیں کرتا ہوں۔ ہمیشہ اس خوفناک دنایوی دولت میں محو رہتا ہوں تیری رحمت و عنایت سے بچتا ہں۔ اے نزدیک ترین خدا انسان پوشیدہ طور پر پردے میںب ھاری برائیاںا ور بدیاں کرتے ہیں نانک عرض گذارتا ہے ۔ اے خدا۔ اپنی رحمت و کرم و عنایت سے دنیاوی خوفناک زندگی کے سمند رسے اسکے بھنور سے باہر نکال لے ۔

سلوکُ ॥
نِرتِ ن پۄےَاسنّکھگُنھاوُچاپ٘ربھکاناءُ॥
نانک کیِ بیننّتیِیا مِلےَ نِتھاۄے تھاءُ ॥੨॥
چھنّتُ ॥
دوُسر ناہیِ ٹھاءُ کا پہِ جائیِئےَ ॥
آٹھ پہر کر جوڑِ سو پ٘ربھُدھِیائیِئےَ॥
دھِیاءِ سو پ٘ربھُسدااپُنامنہِچِنّدِیاپائیِئےَ॥
تجِ مان موہُ ۄِکارُدوُجا ایک سِءُ لِۄلائیِئےَ॥
ارپِ منُ تنُ پ٘ربھوُآگےَآپُسگلمِٹائیِئےَ॥
بِنۄنّتِنانکُدھارِکِرپاساچِنامِسمائیِئےَ॥੨॥
لفظی معنی:
نرت۔ آزمائش ۔ تشریح ۔ اسنکھ گن ۔ بیشمار اوصاف۔ ناؤں ۔ نام۔ ٹھا ٹھکانہ ۔ کاپیہہ ۔ کس پاس ۔ نتھاوے ۔ جسکا کوئی ٹحکانہ نہ ہو (2) چھنت۔ آٹھ پہر۔ ہر وقت۔ رک جوڑ۔ ہاتھ باندھ کر ۔ دھیایئے ۔ توجہ کریں۔ منیہہ چندیا۔ دل کی خواہش کیمابق ۔ تج ۔ چھوڑکر۔ مان ۔ وقار ۔ وکار۔ برائی۔ دوجا۔ دوئی ۔ دوئش ۔ ارپ من تن ۔ دل و جان بھینٹ۔ آپ۔ خودی۔ ساچ نام۔ خدا کے سچے نام سچ حق وحقیقت ۔ سماییئے ۔ سنبھالئے ۔
ترجمہ معہ تشریح:
خدا بیشمار اوصاف کا مالک ہے جس کی تشریح نہیں ہو سکتی اتنا بلند ترین اسکا نام ہے نانک عرض گزارتا ہے کہ بے سہارا کو سہارا اور ٹھکانہ حاصل ہو (2) اے خدا دوسرا کوئی ٹھکانہ نہیں جس کے پاس جا سکیں ہمیشہ دست بستہ ہر وقت اس میں اپنا دھیان لگائیں اور توجہ دیں۔ ایسے خدا کی یادوریاض سے دل کی خواہش کے مطابق نتیجے برآمد ہوتے ہیں۔ وقار۔ عزرت۔ دنیاوت محبت ۔ برائیاں۔ دوئی دوئش چھوڑ کر واحد خدا سے پیار کرؤ۔ دل و جان خدا کو سونپ بھینٹ کر کے خودی کو متاؤ۔ نانک عرض گذارتا ہے ۔ اے خدا رحمت کر کرم وعنایت فرما سچا نام سچ حق و حقیقت میں محؤ ومجذوب ہو جاؤں۔

سلوکُ ॥
رے من تا کءُ دھِیائیِئےَ سبھ بِدھِ جا کےَ ہاتھِ ॥
رام نام دھنُ سنّچیِئےَ نانک نِبہےَ ساتھِ ॥੩॥
چھنّتُ ॥
ساتھیِئڑا پ٘ربھُایکُدوُسرناہِکوءِ॥
تھان تھنّنترِ آپِ جلِ تھلِ پوُر سوءِ ॥
جلِ تھلِ مہیِئلِ پوُرِ رہِیا سرب داتا پ٘ربھُدھنیِ॥
گوپال گوبِنّد انّتُ ناہیِ بیئنّت گُنھ تا کے کِیا گنیِ ॥
بھجُ سرنھِ سُیامیِ سُکھہ گامیِ تِسُ بِنا ان ناہِ کوءِ ॥
بِنۄنّتِنانکدئِیادھارہُتِسُپراپتِنامُہوءِ॥੩॥
لفظی معنی:
تاکو ۔ اسے ۔ سب بدتھ ۔ سارے طریقے ۔ ہاتھ ۔ زہر احتیارات۔ رام نام۔ الہٰی نام۔ سچ حق وحقیقت ۔ دھن سرمایہ۔ سنچئے ۔۔ اکھٹا کریں۔ نیہے ساتھ۔ ساتھ دیتا ہے (3) ساتھیئڑا۔ ساتھی ۔ پربھ ایک ۔ واحد خدا۔ تھان تھنتر۔ ہر جگہ زمین و آسمان وخلا میں ۔ مہئل ۔ درمیان۔ سرب داتا۔ سب کو دینے والا۔ سخی۔ دھنی۔ مالک۔ گنی ۔گناں۔ گوپال۔ پروردگار۔ گوبند۔مالک زمین یا علام ۔ بھج سرن۔ سوآمی ۔ الہٰی پناہگیر ی ۔ یاد رکھ ۔ سکھد گامی ۔ آرام و آسائش بخشنے والے ۔ ان ۔ دیگر ۔ دوسرا ۔ تس۔ اسے ۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے دل اسکو یاد ہر طرح کی زندگی گذارنے کے طریقے اس کی طاقت اور وفیق میں ہیں اس کی یادوریاض کرنی چاہییے اے نانک ۔ الہٰی نام سچ حق و حﷺیقت کی دولت اور سرامیہ الکٹھا کرنا چاہیے جو ہمیشہ ساتھ دیتا ہے (1) چھنت) واحد خدا ہی انسان کا ساتھ دینے وال ہے اسکے علاہو کوئی ساتھی نہیں ہر جگہ دہی بستا ہے زمی نا ور پانی میں وہی ہے زمین آسمان سمندر اور کلاص میں بس رہا ہے اور سب کو نعمتیں عطا کرتا ہے رازق ہے اور مالک ہے وہ مالک اراضی مالک عاملمبیشمار اوصاف والا ہے جنکا شمار نہیں ہو سکتا۔ اے انسان اسکا پناہگیر ہوجاؤ ہی ہر قسم کے آرام و آسائش پہنچانے وال اہے ۔ اسکے بگیر دوسر اکوئی ایسا نہیں نانک عرض گذارتا ہے ۔ اے خدا رحمت وعنایت کر جس پر تیری رحمت و عنایت ہوتی ہے اسے ہی الہٰی نام سچ حق و حقیقت حاصل ہوتی ہے ۔

سلوکُ ॥
چِتِ جِ چِتۄِیاسومےَپائِیا॥
نانک نامُ دھِیاءِ سُکھ سبائِیا ॥੪॥
چھنّتُ ॥
اب منُ چھوُٹِ گئِیا سادھوُ سنّگِ مِلے ॥
گُرمُکھِ نامُ لئِیا جوتیِ جوتِ رلے ॥
ہرِ نامُ سِمرت مِٹے کِلبِکھ بُجھیِ تپتِ اگھانِیا ॥
گہِ بھُجا لیِنے دئِیا کیِنے آپنے کرِ مانِیا ॥
لےَ انّکِ لاۓہرِمِلاۓجنممرنھادُکھجلے॥
بِنۄنّتِنانکدئِیادھاریِمیلِلیِنےاِک پلے ॥੪॥੨॥
لفظی معنی:
چت جو چتوئیا۔ دل میں جو سو چا۔ سکھ سبائیا۔ بھاری آرام و آسائش۔ (چھنت) چھوٹ ۔ نجات۔ ازادی ۔ سادہو سنگ۔ صحبت پاکدامن ۔گورمکھ ۔ مرشد کے وسیلے سے ۔ جوتی جوت ۔ نور میں نور ۔ کل وکھ ۔ گناہ۔ دوش۔ پاپ۔ تپت۔ جلن۔ اگھانیا ۔ تسکی ۔ تسلی ۔ کہہ بھجالینی ۔ بازور پکڑا۔ دیاکینے ۔ مہربانی کی ۔ منایا۔ قدرومنزلت ۔ انک۔ گود۔ دکھ جلے ۔ عذاب مٹے ۔ اک پلے ۔ تھوڑے سے وقفے میں۔
ترجمہ معہ تشریح:
سلوک اے نانک۔ نام سچ وحقیقت وحقیقت کی یاد سے از حداآرام و آسائش ملتا ہے میں نے دل میں جس کے لئے دعا کی خواہش کی وہی حاصل ہوا ( چھنت) اب پاکدامن صحبت اور ساتھ ملا اب دل کو دنیاوی زندگی کو دنیایو ڈولت کی محبت سے نجات حاصل ہوئی ۔ مرشد کے وسیلے سے نام الہٰی حاصل ہوا لہٰی نور سے انسانی نور یکسو ہوا۔ انسانی نور اور الہٰی نور کا آپسی فرق مٹ کر یکسوئی ہوئی ۔ الہٰی نام کی یاد سے گناہ ختم ہوجاتے ہیں ۔ تلفی مٹ جاتی ہے ۔ تسکین ملتی ہے ۔ جن پرا لاہٰی رحمت و عنایت ہوتی ہے ۔ انہیں بازور سے پکڑ کر اپنالیتا ہے انہین عزت و وقار بخشش کرتا ہے ۔ تناسخ مٹا دیتا ہے ۔ نانک عرض گذارتا ہے کہ انہیں اپنی رحمت و کرم و عنائت سے ایک پل بھرم میں اپنا ملاپ دیتا ہے ۔

جیَتسریِ چھنّت مਃ੫॥
پادھانھوُ سنّسارُ گاربِ اٹِیا ॥
کرتے پاپ انیک مائِیا رنّگ رٹِیا ॥
لوبھِ موہِ ابھِمانِ بوُڈے مرنھُ چیِتِ ن آۄۓ॥
پُت٘رمِت٘ربِئُہاربنِتا ایہ کرت بِہاۄۓ॥
پُجِ دِۄسآۓ لِکھے ماۓدُکھُدھرمدوُتہڈِٹھِیا॥
کِرت کرم ن مِٹےَ نانک ہرِ نام دھنُ نہیِ کھٹِیا ॥੧॥
لفظی معنی:
پادھانو۔ پاندھی ۔ مسافر۔ سنسار۔ عالم ۔ گارب ، گربھ ۔ غرور ۔ تکبر ۔ اتیا۔ بھر اہوا۔ مائیا رنگ۔ دنایوی دولت کی محبت پریم ۔ رمٹیا۔ ملبوس۔ لوبھ ۔لالچ۔ ابھیمان۔ غرور۔ بوڈے ۔ غرقاب ۔ دوبا ہوا ۔ مرن۔ چیت۔ نہ آوئے ۔ موت کا دل میں خیال تک نہیں۔ پتر بیٹے ۔ متر ۔ دوست۔ بنتا۔ بیوی ۔ بیوہار۔ کاروبار۔ بہاوئ ۔ گذرجاتی ہے ۔ پچ دوس آئے ۔ آخر وہ وقت گھڑی اور دن آگئے ۔ اے ماں جو تحریر ہیں۔ وکھ دھرم دوتیہہ ڈھٹیا۔ تو جب منصب الہٰی کے کر یچاریوں کو دیکھ کر عذا بمحسوس ہوتاہے ۔ اے نانک۔ کیرت کرم ۔ کئے ہوئے اعمال۔ ہر نام دھن نہیں کھتیا جس نے الہٰی نام۔ سچ حق وحقیقت کا نفع نہیں کمائیا۔
ترجمہ معہ تشریح:
یہ عالم ایک مسافر کی حیثیت رکھنا مگر غرور اور تکبر سے بھر اہوا ہے ۔ بیشمار گناہ دنیاوی دولت کے پریم میں کرتا ہے ۔ لالچ بیٹے ۔ دوست بیی کے کاروبار میں وقت گذارتا ہے ۔ آخر تحریر ہوئے زندگی کے اوقات ختم ہوجاتے ہیں اور الہٰی منصف کا عملہ دیکھ کر بھاری تکلیف محسوس کرتا ہے ۔ اے نانک۔ کئے وئے اعمال کا حساب ختم نہیں ہوتا۔ جب کہ الہٰی نام سچ حق اور حقیقت کی دولت کا منافع کمائیا ہی نہیں۔

اُدم کرہِ انیک ہرِ نامُ ن گاۄہیِ॥
بھرمہِ جونِ اسنّکھ مرِ جنمہِ آۄہیِ॥
پسوُ پنّکھیِ سیَل ترۄرگنھتکچھوُن آۄۓ॥
بیِجُ بوۄسِبھوگبھوگہِکیِیااپنھاپاۄۓ॥
رتن جنمُ ہارنّت جوُئےَ پ٘ربھوُآپِنبھاۄہیِ॥
بِنۄنّتِنانکبھرمہِبھ٘رماۓکھِنُایکُٹِکنھُنپاۄہیِ॥੨॥
لفظی معنی:
ادم۔ کوشش ۔ انیک بیشمار۔ ہر نام۔ الہٰی نام ۔ بھرمیہہ ۔ بھٹکے ۔ جنم۔ زندگی۔ اسنکھ ۔ لا انتہا۔ پستو۔ حیوان۔ نکھی ۔ پرندے ۔ سیل پتھر۔ نرور ۔ شجر درخت۔ گنت ۔ گنتی ۔ شمار۔ سچ ۔ بودس ۔ جیسا سہج بوتا ہے ۔ بھوگ بھوگیہہ۔ ویسا پھل نتیجہ پات اہے ۔ کیا پان پاوئے ۔ پنا کیا پات اہے ۔ رتن جنم۔ قیمتی زندگی ۔ ہارنت ۔ جوئے ۔ خدا کو اچھے نہہیں لگتے ۔ خدا انہیں نہیں چاہتا۔ بھر میہہ ۔ بھٹکتے ہیں۔ بھرمائے ۔ گمراہ کئے ہوئے ۔ کھن ایک۔ تھوڑے سے وقفے کے لئے ۔
ترجمہ معہ تشریح:
جو شخص مادیاتی کوششیں تو بہت کرے ہیں مگر خدا کا نام یاد نہیں کرتے وہ بیشمار زندگیوں میں بھٹکت رہتے ہیں اور تنا سخ پاتے ہیں۔ حیوان پرندے پتھر شجر کوئی شمار نہیں جیسا کوئی سچ پبوتا ہے ویسا ہی اسکا پھل او رنتیجہ پات اہے ۔ جو انسان اس قیمتی زندگی کو بیکار بیفائدہ گذار دیتے ہیں الہٰی خوشنودی حاصل نہیں کر سکتے ۔ نانک عرض گذارتا ہے کہ جو گمراہ ہو جاتے ہیں وہم و گمان میں تھوڑے سے وقفے کے لئے بھی تکسین نہیں پاتے ۔

جوبنُ گئِیا بِتیِتِ جرُ ملِ بیَٹھیِیا ॥
کر کنّپہِ سِرُ ڈول نیَنھ ن ڈیِٹھِیا ॥
نہ نیَنھ دیِسےَ بِنُ بھجن ایِسےَ چھوڈِ مائِیا چالِیا ॥
کہِیا ن مانہِ سِرِ کھاکُ چھانہِ جِن سنّگِ منُ تنُ جالِیا ॥
س٘ریِرامرنّگ اپار پوُرن نہ نِمکھ من مہِ ۄوُٹھِیا॥
بِنۄنّتِنانککوٹِکاگربِنسبارنجھوُٹھِیا॥੩॥
لفظی معنی:
جوبن گیا۔ جوانی گذر گئی ۔ حبر۔ بڑھاپا۔ مل۔ قبضہ کر لیا۔ گر کنیہہ۔ ہاتھ کانپنے لگے ۔ سرڈوے ۔ سر ڈگمگاتا ہے ۔ نین ۔ آنکھیں۔ ڈیٹھیا ۔ دکاھئی نہیں دیتا۔ بن بھجن۔ ایسے ۔ بغیر الہٰی بندگی ۔ راکھ ڈالتے ہں۔ من تن جالیا۔ جن کے ساتھ عمر گذارتا ۔ سر پرام ۔ خدا رنگ۔ پریم۔ نمکھ ۔ تھوڑی سی دیر۔ دوٹھیا۔ بسائیا۔ کوٹ کاگر۔ کاغذوں کا قلعہ ۔ ونس۔ مٹتے۔ بار ۔ دیر ۔ جھوٹھیا۔ جوٹھے کو
ترجمہ معہ تشریح:
جونای گذری بڑھاپے نے انسان پراپان قبضہ جما لیا ہاتھ کانپنے لگے سرڈگمگانے لگا آنکھوں سے دکھائی نہیں دیتا آنکھوں سےبغیر الہٰی بندگی کے جس دولت کے لئے بندگی نہ کی چھوڑ چلا جن کے لئے اپنا دل وجان جلاتا رہا اپنے متعلقین کے لئے کہانہیں مانتے سر میں کا ڈالتے ہیں۔ خدا کی محبت پریم پیار کبھی بھی دل میں بسائیا ۔ نانک۔ عرض گذارتا ہے ۔ کاغذوں کے قلعے اور قابل فناہ جسم کو ختم ہوتے دیر نہیں لگتی ہے ۔

چرن کمل سرنھاءِ نانکُ آئِیا ॥
دُترُ بھےَ سنّسارُ پ٘ربھِآپِترائِیا॥
مِلِ سادھسنّگے بھجے س٘ریِدھرکرِانّگُپ٘ربھ جیِ تارِیا ॥
ہرِ مانِ لیِۓنامدیِۓاۄرُکچھُنبیِچارِیا॥
گُنھ نِدھان اپار ٹھاکُر منِ لوڑیِدا پائِیا ॥
بِنۄنّتِنانکُسدات٘رِپتےہرِنامُبھوجنُکھائِیا॥੪॥੨॥੩॥
لفظی معنی:
چرن کمل۔ پائے پاک۔ سرن۔ پناہ ۔ زیر سایہ۔ دتر۔ جو عبور نہ کیا جاسکے ۔ بھے ۔ خوف۔ سنسار۔ علام۔ دنیا ۔ جہان ۔ سادھ سنگے ۔ صحبت پاکدامن ۔ سر بدھر۔ خدا۔ بھجے ۔ یاد کئے ۔ کر انگ ۔ مدد کرے ۔ مان۔ وقار ۔ عزت۔ نام دییئے ۔ سچ حق وحقیقت سمجھائی ۔۔ گن ندھان۔ اوصاف کا خزانہ ۔ اپارٹھاکر۔لا محدود خدا من لوڑیدا۔ دلی خواہش کی مطابق۔ سدا۔ ہمہش۔ ترپتے ۔ تکسین پائے ہوئے ۔ ہر نام بھوجن کھائیا۔۔ الہٰی نام سچ وحقیقت و حق کو لدمیں بطور کھان بسانے سے ۔
ترجمہ معہ تشریح:
نانک پائے پاک وبار ک خدا کے زیر سایہ و پناہ آئیا ہے اس ناقابل عبور زندگی کے دنیاوی خوفانک سمندر کو خدا خود عبور کرئیا ۔ پاکدامن ادہوں کی صحبت و قربت میں الہٰی یادوریاض اور بندگی کرکے خدا کی مدد سے مدد کرکے خود عبور کرائیا۔ خدا نے عزت و وقار بخشش کیا اور نام خدا عنایت کیا اور کسی قسم کی نیکی بدی کا خیال نہ کیا۔ نانک عرض گذارتا ہے کہ جنہوں نے روحانیت کے لئے الہٰی نام کا کھنانا کھائیا مراد سچ حق و حقیقت دل میں بسائا انہیں دلی تکسین روحانی سکون پائی اور اوصاف کے خزانے خدا لا محدود آق اپالیا اور دلی تمنا پوری ہوئی۔

جیَتسریِ مہلا ੫ۄارسلوکانالِ
ੴ ستِگُر پ٘رسادِ॥
سلوک ॥
آدِ پوُرن مدھِ پوُرن انّتِ پوُرن پرمیسُرہ ॥
سِمرنّتِ سنّت سربت٘ررمنھنّنانکاگھناسنجگدیِسُرہ॥੧॥
پیکھن سُنن سُناۄنومنمہِد٘رِڑیِئےَساچُ॥
پوُرِ رہِئو سربت٘رمےَنانکہرِرنّگِراچُ॥੨
پئُڑیِ ॥
ہرِ ایکُ نِرنّجنُ گائیِئےَ سبھ انّترِ سوئیِ ॥
کرنھ کارنھ سمرتھ پ٘ربھُجوکرےسُہوئیِ॥
کھِن مہِ تھاپِ اُتھاپدا تِسُ بِنُ نہیِ کوئیِ ॥
کھنّڈ ب٘رہمنّڈپاتالدیِپرۄِیاسبھلوئیِ॥
جِسُ آپِ بُجھاۓسوبُجھسیِنِرملجنُسوئیِ॥੧॥
لفظی معنی:
آد۔ آعاز۔ مدتھ ۔ درمیان۔ پورن ۔ مکمل ۔ انت۔ آخر۔ پر مسریہہ۔ خدا۔ سمرت سنت۔ خدا رسیدہ پاکدامن روحانی رہبر کی اد سے ۔ سربتر رمن ۔ جو سب میں بستا ہے ۔ اگھ ناسن۔ ناہوں کو مٹانے والا۔ جگدیسر یہہ ۔ مالک عالم (1) سنت) خدا رسیدہ پاکدامن روحآنی رہبر اس ہرجائی ۔ پیکھن۔ دیکھنے والا۔ سنن سناونو ۔ سننے اور سنانے ۔ درڑبیئے ۔ پکا گرسیے ۔ ساچ۔ حقیقت الہٰی نام جو سچ اور صدیوی ہے ۔ پور رہیو سریتر۔ جو سب میں بستا ہے ۔ ہر رنگ راچ۔ اس کے پریم پیا رمیں مجذو ب ہو ۔
ترجمہ معہ تشریح:
خدا پرست خدا رسیدہ پاکدامن روحانی واخلاقی بہر ( سنت ) ہر جائی خدا کی بندگی یادوریاضت کرتے ہیں جو آغاز عالم سے درمیان میں اور موجود دورمیں ہر جگہ موجود ہے اور بوقت آخرت ہر جگہ موجود ہے رہیگا۔ اے نانک۔ مالک کل عالم گناہوں کو مٹان والا ہے (1) اس صدیوی خدا کو جو سچ وحقیقت ہے وہ خود ہی دیکھنے سننے اور سنانے وال اہے اے نانک۔ اس خدا کی پیاری یاد میں محو ومجذو ب
لفظی معنی:
ایک نرنجن۔ واحد بیداغ خدا۔ کرن کارن ۔ سمرتھ ۔ سب سبب بنانے والا اور ہر قسم کی توفیق کا مالک ۔ کھن ۔منہ ۔ انکھ جھپکنے کی دیر میں ۔ تھاپ۔ پیدا کرکے ۔ اُتھاپیدا۔ مٹاتا ہے ۔ تس بن۔ اسکے بغیر۔ کھنڈ۔ زمین کے حصے ملک وغیرہ ۔ برہمند ۔ سارا علام۔ ساری قائنات قدرت ۔ پاتلا۔ زیر زمین۔ دیپ۔ جزیرہ ۔ سب لوئی ۔ سارے لوگوں میں۔ نرمل۔پاک ۔
ترجمہ:
واحد بیداغ پاک خدا کی حمدوثناہ کرنی چاہیئے جو سب میں بستا ہے وہ سبب پیدا کرنے بنانے کی توفیق رکھت اہے جو کرتا ہے وہ ہوتا ہے آنکھ جھپکنے کی دیر میں پیدا کرکے مٹا دیت اہے اسکے بغیر دوسرا یسا کوئی نہیں ملک۔ عالم قائنات قدرت زیر زمین اور ہر جزیرے میں ساریے آبادیوں اور گلوں میں بستا ہے جسے خدا خود سمجھاتا وہی ۔ اسکو سمجھت اہے وہ پاک و پائش ہو جاتاہے ۔

سلوک ॥
رچنّتِ جیِء رچنا مات گربھ استھاپننّ ॥
ساسِ ساسِ سِمرنّتِ نانک مہا اگنِ ن بِناسننّ ॥੧॥
مُکھُ تلےَ پیَر اُپرے ۄسنّدوکُہتھڑےَتھاءِ॥
نانک سو دھنھیِ کِءُ ۄِسارِئواُدھرہِجِسدےَناءِ॥੨॥
لفظی معنی:
رچنت ۔ بنائیا۔ جیئہ ۔ جاندار۔ رچنا۔ بناوؤ۔ مات گربھ ۔ ماں کے پیٹ ۔ استھاپ۔ ٹکائیا۔ ساس ساس سمرت ۔ ہر سانسیا دسے ۔ مہا اگن نہ وناسن ۔ پیٹ بھاری آگ اسے ختم نہیں کرتی (1) مکھ تلے ۔منہ پنچے ۔ پیرااپرے ۔ پاؤں اوپر۔ وسندو۔ بستا ہے ۔ کہھتڑے ۔ کوجھے ۔ بھیڑے ۔ برے ۔ تھائے ۔ جگہ ۔ سودھنی ۔ ایسا ملاک ۔ کیؤکس لئے ۔ دساریؤ ۔ بھلاو۔ ادھریہہ جسد ے نائے ۔ جس کے نام کے ذریعےبچتا ہے ۔
ترجمہ معہ تشریح:
خدا جانداروں کی جب بناوٹ کرتا ہے تو اسے ماں کے پیٹ میں ٹکات اہے وہاں سانس ساسن الہٰی یاد کرنے کی وجہ سے ما کے پیٹ کی بھاری آگ اے ناکن انہیں ختم نہیں کرتی () اے نانک بتادے کہ اے انسان جب ماں کے پیٹ میں تیرا منہ نیچے اور پاؤں اوپر تھے اور کوہجے اور دشوار جگہ تیرا ٹھکانہ تھاتو الہٰی نام کی برکت سے تو بچا رہا اب اس مالک کیوں بھلا رکھا ہے ۔

پئُڑیِ ॥
رکتُ بِنّدُ کرِ نِنّمِیا اگنِ اُدر مجھارِ ॥
اُردھ مُکھُ کُچیِل بِکلُ نرکِ گھورِ گُبارِ ॥
ہرِ سِمرت توُ نا جلہِ منِ تنِ اُر دھارِ ॥
بِکھم تھانہُ جِنِ رکھِیا تِسُ تِلُ ن ۄِسارِ॥
پ٘ربھبِسرتسُکھُکدےناہِجاسہِجنمُہارِ॥੨॥
لفظی معنی:
خون اور بیج سے ماں کے پیت کی آگ میں پیدا ہوا ۔ منہ نیچے مراد الٹا تھا اور ناپاک تھا پریشان حال۔ رکت ۔ خون۔ بند ۔ بیج۔ اور۔ پیٹ۔ مجھار۔ میں ۔ اردھ مکھ ۔ الٹا۔منہ نیچے ۔ کچل۔ ناپاک ۔ بکل۔ پریشان۔ نرک گھور۔ بھاری دوزخ ۔ ہر سمرت۔ الہٰی یاد۔ ناجلیہہ۔ نہ جلا۔ اردھار۔ دلمیں بسا کر۔ وکھسم تھانو۔ دشوار جگہہ ۔ دسار۔بھال ۔ جنم ہار۔ زندگی گنوا ۔
ترجمہ معہ تشریح:
خون اور سچ کے لاپ سے ماں کے پیٹ کی آگ میں پیدا ہوا ج بکہ منہ نیچے الٹا تھا اور تو ناپاک پریشان حال اور بھاری دوزخ میں تھا اس وقت جس خدا کی یاد سے تو نہ جلا اسے دل وجان سے یاد کر جس نے تجھے دشوار جگہوں میں بچائیا ۔ ہے اسے ذرا بھر نہ بھلاؤ ۔ خداکو بھلا کر کبھی آرما نہیں ملتا۔ انسانی زندگی بیکار چلی جائیگی۔

سلوک ॥
من اِچھا دان کرنھنّ سربت٘رآساپوُرنہ॥
کھنّڈنھنّ کلِ کلیسہ پ٘ربھسِمرِ نانک نہ دوُرنھہ ॥੧॥
ہبھِ رنّگ مانھہِ جِسُ سنّگِ تےَ سِءُ لائیِئےَ نیہُ ॥
سو سہُ بِنّد ن ۄِسرءُ نانک جِنِ سُنّدرُ رچِیا دیہُ ॥੨॥
لفظی معنی:
من اچھا ۔ دلی ۔ خواہش۔ دان کرن ۔ خیران کرنا ( سربت آسا۔ ساری امیدیں۔ پورنیہہ۔ مکمل ۔ کھنڈن۔ مٹانا۔ کل کلیسیہہ۔ ۔ عذاب اور جھگڑے ۔ دونبہ ۔ دور نہیں۔ ہب۔ سب۔ رنگ ۔ خوشیاں پریم۔ نیہو۔ پیار۔ بند۔ تھوڑی سی دیر کے لئے ۔ سندر۔ خوبصورت ۔ دیہہ۔ جسم۔
ترجمہ معہ تشریح:
جو انسان کو اسکی دلی تمناؤں کے مطابق نعمتیں خریات میں دیتا ہے اور تمام اُمیدیںپوری کرتا ہے اور جھگڑے اور عذآب مٹاتا ہے اے نانک اسے یاد کر وہ دور نہیں (1) اے نانک۔ جس کی برکت و عنیات سے ہر طرح کی خوشنودی حاصل کرتا ہے اس سے پیا رکر ۔ اے نانک۔ جس نے اتنا خوبصور تجسم عنایت کیا ہے بنائیا ہے اسے ایکلمحہ بھر کے لئے بھی بھلاؤ۔

پئُڑیِ ॥
جیِءُ پ٘رانتنُدھنُدیِیادیِنےرسبھوگ॥
گ٘رِہمنّدررتھاسُدیِۓرچِبھلےسنّجوگ॥
سُت بنِتا ساجن سیۄکدیِۓپ٘ربھدیۄنجوگ॥
ہرِ سِمرت تنُ منُ ہرِیا لہِ جاہِ ۄِجوگ॥
سادھسنّگِ ہرِ گُنھ رمہُ بِنسے سبھِ روگ ॥੩॥
لفظی معنی:
جیؤ۔ زندگی۔ رس بھوگ ۔ پر لطف نعمتیں ۔ گریہہ۔ گھر ۔ سندر۔ مگان۔ اس ۔ گھوڑے ۔ رچ۔ پیدا کر۔ بھلے سنجوگ۔ خوش بخت۔ اچھ قسمت ۔ ست۔ بیٹا ۔ بنتا۔ بیوی ۔ ساجن۔ دوست۔ سیوک۔ خدمتگار۔ پربھ دیون جوگ۔ خدا دینے کی توفیق رکتھا ہے ۔ ہر سمرت۔ الہٰی یاد سے ۔ پریا۔ خوش۔ وجوگ۔ جدائی ۔ ہرگن رمیو۔ الہٰی وصف یاد رکھو۔
ترجمہ معہ تشریح:
خدا نے انسان کو زندگی جسم اور دولت عنایت کی ہے اور پر لطف نعمتیں عنایت کی ہیں ۔ گھر مکان رتھ گہوڑے اور خوشی بختی عنیات کی ہے ۔ بیٹا ۔ بیوی ۔ دوست ۔خادم دیئے جس کی خدا توفیق رکھتاہے الہٰی اید دل و جان تروتازہ وہجات اہے اور جدائی ختم ہوتی ہے ۔ اے انسان پاکمن کی صحبت میں یاد خدا کرؤ ۔ ا سے تمام بیماریاں مٹ جاتی ہیں۔

سلوک ॥
کُٹنّب جتن کرنھنّ مائِیا انیک اُدمہ ॥
ہرِ بھگتِ بھاۄہیِنھنّنانکپ٘ربھبِسرت تے پ٘ریتتہ॥੧॥
تُٹڑیِیا سا پ٘ریِتِجولائیِبِئنّنسِءُ॥
نانک سچیِ ریِتِ ساںئیِ سیتیِ رتِیا ॥੨॥
لفظی معنی:
کٹب۔ قبیلہ ۔ جتن۔ کوشش۔ انیک۔ بیشمار۔ اومیہہ۔ ترود۔ بھگت بھاو۔ الہٰی عبادت و بندگی کی تمنا۔ ہین۔ خالی ۔ پربھ ۔ وسرت۔ خدا کو بھلا کر۔ پر یتیتہہ۔ انسان بد روح جن اور ۔ بھوت۔ (1) تٹڑیا سا پریت۔ وہ محبت وہ پیار ٹوٹ جات اہے ۔ بیئن سیؤ۔ جو غرور سے ۔ ریت۔ رسم۔ رواج ۔ سائیں۔ مالک ۔ آقا۔ خدا۔ رتیا۔ محو ومجذوب۔
ترجمہ معہ تشریح:
انسان اپنے قبیلے خاندان و پروار کے لئے دولت کے لئے کوشش اور ترود کرتا ہے مگرا لہٰی عبادت بندگی وریاضت کے پیار کے بغیر اے نانک۔ خدا کو بھلا کر انسان بد روح جن ار بھوت کی ماندن ہے (1) آخر وہ پریم پیار ختم ہوجات اہے جو غرورں سے کیا جات اہے ۔ اے نانک سچ او صدیوی الہٰی پریم پیار ہی زندگی گذارنے کا راہ راست ہے ۔

پئُڑیِ ॥
جِسُ بِسرت تنُ بھسم ہوءِ کہتے سبھِ پ٘ریتُ॥
کھِنُ گ٘رِہمہِ بسن ن دیۄہیِجِنسِءُسوئیِہیتُ॥
کرِ انرتھ دربُ سنّچِیا سو کارجِ کیتُ ॥
جیَسا بیِجےَ سو لُنھےَ کرم اِہُ کھیتُ ॥
اکِرتگھنھا ہرِ ۄِسرِیاجونیِبھرمیتُ॥੪॥
لفظی معنی:
بھسم۔ راکھ ۔ پریت۔ جن۔ بھوت۔ کھن۔ تھوڑے سے وقفے کے لئے ۔ گریہہ۔ گھر ۔ ہیت۔ پیار۔ انرتھ ۔ برائیوں۔ درب ۔ دولت ۔ سنچیا۔ اکھٹا کیا۔ سو کاارج کیت۔ کس کام۔ جیسا پیچے سولنے ۔ جیسا بوتا ہے ویس اکٹتا ہے ۔ کرم اعمال۔ اکرت گھن۔ احسان فرا موش۔ وسیرا۔ بھلائیا۔ جوتی بھر میت ۔ تناسخ میں بھٹکتے ہیں۔
ترجمہ معہ تشریح:
جسے بھلا کر یہ جسم رکاھ بن جاتا ہے اور سارے جن بھوت پکارتے ہیں جن کی اس سے محبت تھی اسے گھر میں رہنے نہیں دیتے ۔ برے کاموں سے اکھٹا کیا ہوا سرمایہ کسی کام نہ آئیا ۔ اعملا انسانی ایک ایسا کھیت ہے اس میں اعملا کا جیسا سچ بویا جات اہے ویسا ہی کاٹا جاتاہے احسان فراموش خا کو بھلا کر تناسخ میںپرٹے ہیںا ور بھٹکتے ہیں۔

سلوک ॥
کوٹِ دان اِسناننّ انِک سودھن پۄِت٘رتہ॥
اُچرنّتِ نانک ہرِ ہرِ رسنا سرب پاپ بِمُچتے ॥੧॥
ایِدھنھُ کیِتوموُ گھنھا بھوریِ دِتیِمُ بھاہِ ॥
منِ ۄسنّدڑوسچُسہُنانکہبھےڈُکھڑےاُلاہِ॥੨॥
لفظی معنی:
کوٹ۔ کروڑوں۔ دان۔ خیرات۔ اسنان۔ گصل۔ زیارت۔ انک سودھن۔ بیشمار ۔ صفائی۔ پوتر تیہہ۔ پاکیزگی ۔ اچرنت۔ الہٰی نام کا بیان۔ رسنا۔ زبان۔ پاپ۔ گناہ۔ پمچتے ۔ کٹ جاتے ہیں (1) ایندھن۔ ایندھن۔ آگ جلانے والی لکڑیاں۔ گھنا۔ زیادہ۔ بھوری وتم بھاہے ۔ ذراسی آگ کی چنگاری ۔ من وسنڈڑو۔ دل میں بس جائے ۔ سچ سوہ۔ سچا ملاک۔ ہیبھے ۔ ڈکھڑے الا ہے ۔ تما دکھ دور ہوجاتے ہیں۔
ترجمہ معہ تشریح:
اے نانک۔ جو انسان جو زبان سے خدا کا نام لیتے ہیں عبادت دریاضت و بندگی کرتے ہیں انکے تمام گناہ عافو ہوجاتے ہیں سمجھو انہیوں نے کروڑوں رپیہ بطور خیرات اور کروڑوں ہی زیارگ اہوں کی زیارت اور بیشمار صفائی اور پاکیزیگ کے طور طریقے زیر کار اور زیر عمل لائے ہیں (1) جیسے مین نے بہت سا ایندھن اکھٹا کیاذار اسی آگ کی چنگاری چند لمحو میں جلا کر رکاھ بنا دیتی ہے ۔ اے نانک۔ اگر دل میں سچا خدا بس جائے تو عذاب مٹ جاتے ہیں عافو ہو جاتے ہیں گناہ ۔

پئُڑیِ ॥
کوٹِ اگھا سبھِ ناس ہوہِ سِمرت ہرِ ناءُ ॥
من چِنّدے پھل پائیِئہِ ہرِ کے گُنھ گاءُ ॥
جنم مرنھ بھےَ کٹیِئہِ نِہچل سچُ تھاءُ ॥
پوُربِ ہوۄےَلِکھِیاہرِچرنھسماءُ॥
کرِ کِرپا پ٘ربھراکھِ لیہُ نانک بلِ جاءُ ॥੫॥
لفظی معنی:
کوٹ اگھا ۔ کروڑوں جرم ۔ گناہ۔ دوش۔ بھے ۔ خوف۔ نہچل۔ مستقل۔ جنم مرن۔ تناسخ۔ سچ تھاؤ۔ سچا ٹھکانہ ۔ پورب۔ پہلے سے ۔ ہر چرن۔ پائے الہٰی۔ سماؤ۔ وسو۔ کرپا۔ رکم وعنایت سے ۔ بل جاؤ۔ قربان ہو۔
ترجمہ معہ تشریح:
الہٰی یادوریاض سے کروڑوں گنہا الہٰی نام لینے سے مٹ جاتے ہیں اور الہٰی صفت صلاح سے دلی تمناؤں کے مطابق نتیجے برآمد ہوتے ہیںا ور پھل ملتے ہیں تناسخ کا خوف مٹ جات اہے صدیوی اور سچا رتبہ حاسل ہوتا ہے ۔ اگر پہلے سے تحریر ہو تو پائے الہٰی میں ٹھکانہ ملتا ہے مراد انسان الہٰی محبت پیار میں محو ومجذوب رہت اہے ۔ اے نانک۔ خدا سے عرض کرکہ مجھے بچاؤ میں تجھ پر فدا ہوں۔

سلوک ॥
گ٘رِہرچنااپارنّمنِبِلاسسُیادنّرسہ॥
کداںچ نہ سِمرنّتِ نانک تے جنّت بِسٹا ک٘رِمہ॥੧॥
مُچُ اڈنّبرُ ہبھُ کِہُ منّجھِ مُہبتِ نیہ ॥
سو ساںئیِ جیَں ۄِسرےَنانکسوتنُکھیہ॥੨॥
لفظی معنی:
گریہہ۔ گھر ۔ رچنا۔ سجاوٹون ۔ اپار۔ بیشمار۔ بلاس۔ خوشیوں ۔ سواد۔ لطف ۔ مزے ۔ رسیہہ۔ محو۔ کرانچ۔ کبھی ۔ سمرنت۔ یاد۔ جنت۔ جاندار مراد انسنا ۔ بسٹا گندگی ۔ کرمینہہ۔ کڑے (1) مچ اڈنیر۔۔ بھاری پسار۔ سچ دھج۔ ہب ۔ سب۔ منجھ ۔ میں۔ نیہہ۔ پیار۔ ۔ سو سائیں وہ مالک ۔ بے وسریہہ۔ اگر ۔ بھلائیا ۔ جائے ۔ سوتن۔ وہ چسم۔ کھیہہ۔ خاک ۔
ترجمہ معہ تشریح:
گریلو آرائش اور پر لطف مزے اور دلی خوشیوں میں محصور جو انسان کبھی بھی خدا کو یاد نہیں کرتا اے نانک وہ گندگی کا کیڑا ہے (1 جب ہر طرح کی آرائش و آسائش کا ساز و سمان اور اس سے محبت ہو اور کشش ہو انکی وجہ سے اے نانک۔ جو خدا کو بھلادے وہ جسم خاک کی مانند ہے ۔
SGGS p. 707

پئُڑیِ ॥
سُنّدر سیج انیک سُکھ رس بھوگنھ پوُرے ॥
گ٘رِہسوئِنچنّدنسُگنّدھلاءِموتیِہیِرے॥
من اِچھے سُکھ مانھدا کِچھُ ناہِ ۄِسوُرے॥
سو پ٘ربھُچِتِنآۄئیِۄِسٹاکےکیِرے॥
بِنُ ہرِ نام ن ساںتِ ہوءِ کِتُ بِدھِ منُ دھیِرے ॥੬॥
لفظی معنی:
سندر۔ سیچ۔ خوبصور خواہگاہ ۔ انیک سکھ ۔ بیشمار آرام و آسائش ۔ رس بھوگن پورے ۔ مکمل لطف اور مزے لے ۔ گریہہ سوئن ۔ گھر میں سونا۔ چندن سوگند ۔ چندن کی خوشیوں من ۔ اچے۔ دلی خواہشات کی مطابق ۔ سکھ ماند۔ آرام پاتا۔ وسورے ۔ تشویش۔ فکر ۔ چت۔ دل ۔ سانت۔ تسکی ۔ تسلی ۔ کت پدتھ ۔ کس طور ۔کس طریقے سے ۔ من دھیرے ۔ دل کی تسلی ۔
ترجمہ معہ تشریح:
اگر خوبصورت خواہبگاہ ہو بیشمار آرام و آسائ شسب قسم کے لذیز کھانے کے لئے کھانے ہوں اور ہیروں موتیوں ڑے سنہری مکان ہوں جس میں چندن کی خوشیبو ہو ااور انسان دلی تنمناؤ ں کے مطابق خوشیوں بھری زندگی گذارتا ہو اور کسی قسم کا فکر اور تشویش ہ ہو اگر اسکے دل میں ہ ہو یاد خدا تو سمجھو گندگی کے کپڑے ۔ اے انسان الہٰی نام کے بگیر سکون نہیں ملتا ہے نہ دل کو تسلی ہوتی ہے ۔

سلوک ॥
چرن کمل بِرہنّ کھوجنّت بیَراگیِ دہ دِسہ ॥
تِیاگنّت کپٹ روُپ مائِیا نانک آننّد روُپ سادھ سنّگمہ ॥੧॥
منِ ساںئیِ مُکھِ اُچرا ۄتاہبھےلوء॥
نانک ہبھِ اڈنّبر کوُڑِیا سُنھِ جیِۄاسچیِسوءِ ॥੨॥
لفظی معنی:
چرن کمل۔ پاک پاؤں۔ پرتیگ ۔ ملاپ کی کشش ۔بیراگی ۔ عاشق ۔پریمی ۔ دیہ دسیہ۔ ہر طر۔ تیا گنت ۔ چھوڑ کر ۔ کپٹ ۔ جھگڑے ۔ انند روپ ۔ پر سکون ۔ سادھ سنگھیہہ۔ پاکدامن کا ساتھ (1) سائیں۔ آقا۔ خدا اچر کہنوں۔ دتا۔ تالش ۔ پبتے لو۔ سارے لوگوں اور عالم میں۔ ہب۔ سب۔ ادنبر۔ پسارے ۔ کوڑے ۔ جھوٹے ۔ سچی سوئے ۔ سچی شہرت باخبر سے ۔
ترجمہ معہ تشریح:
الہٰی عاشق الہٰی عشق اور پاوں کا گرویدہ بھنور اسکے عشق کی کشش میں ہر طرف ڈہونڈتا اور تلاش کرتا ہے اس جھگڑے کی اور دہوکے بنیاد دنیاوی دولت کو چھوڑ کر ہی پر سکون صحبت و قربت ملتی ہے (1) میرے دلمیں الہٰی عشق ہے زبان سے اسکا اظہار کرتا ہوں اور سب جگہ اسے تالش کرتا ہوں اے نانک دیا کے تمام پسارے جھوٹے ہیں ۔ اس کی اچھی شہرت سنکر مجھے زندگی کا احساس ہوتاہے ۔

پئُڑیِ ॥
بستا توُٹیِ جھُنّپڑیِ چیِر سبھِ چھِنّنا ॥
جاتِ ن پتِ ن آدرو اُدِیان بھ٘رمِنّنا॥
مِت٘رناِٹھدھنروُپہیِنھکِچھُساکُنسِنّنا॥
راجا سگلیِ س٘رِسٹِکاہرِنامِمنُبھِنّنا॥
تِس کیِ دھوُڑِ منُ اُدھرےَ پ٘ربھُہوءِسُپ٘رسنّنا॥੭॥
لفظی معنی:
بستا۔ رہتا۔ توٹی جھونپڑی ۔ ٹوٹی پھوٹی جھونپڑی ۔ چییر کڑے ۔ چھنا ۔ پھٹے ہوئے ۔ جات نہ پت نہ آدرو ۔ نہ اسکا اچھا خاندان ہو ہ تو قیر و عزت و آبرو ۔ اودھیان بھرمنا جنگل میں بھٹکتا پھرتا ہو۔ متسر ۔ دوست۔ اٹھ ۔ پیارا ۔ سینا۔ رشتہ دار۔ سگلی سرشٹ ۔ سارے علام کا ۔ ہر نام ن بھنا۔ اسکا دل الہٰی نام سچ حق وحقیقت سے متاثر ہو ۔ دہوڑ۔ دہول۔ من ادھرے ۔ دل بچتا ہے ۔ پربھ ہوئے پرسنا ۔ خدا خوش ہوتا ہے ۔
ترجمہ معہ تشریح:
اگر کوئی انسان خستہ ٹوٹی ہوئی جھونپڑوں میں رہائش پذیر کیوں نہ ہو کیڑے بھی بھیٹے ہوئے ہوں نہ اچھے خاندان اور قبیلہ سے تعلق رکھتا ہو نہ اسکی عزت و آبرو ہو جنگل میں بھٹکتا پھرتا ہو نہ اسکا کوئی دوست ہو نہ کوئی پیار ہو نہ اسکے پاس سرمایہ ہو نہ خوبصورت ہو نہ اسکا کوئی رشتہ دار ہو ایسا ہونے کے باوجود اگر اسکا دل الہٰی نام حق سچ وحقیقت سے متاثر ہے تو اسے سارے جہاں کا بادشاہ سمجھو اسکے پاوں کی دہول سے انسان کا من بچتا ہے اور الہٰی خوشنودی حاصل ہوتی ہے ۔

سلوک ॥
انِک لیِلا راج رس روُپنّ چھت٘رچمرتکھتآسننّ॥
رچنّتِ موُڑ اگِیان انّدھہ نانک سُپن منورتھ مائِیا ॥੧॥
سُپنےَ ہبھِ رنّگ مانھِیا مِٹھا لگڑا موہُ ॥
نانک نام ۄِہوُنھیِیاسُنّدرِ مائِیا دھ٘روہُ॥੨॥
لفظی معنی:
انک ۔ بیشمار۔ لیلا۔ تماشے ۔ راج رس۔ حکمرانی کے مزے ۔ روپ ۔ خوبصورتی ۔ چھتر۔ سر پر چھتری ۔ چمر۔ جور۔ تخت ۔ آسننگ ۔ تکت پر جلوہ افروزی ۔ رچنت۔ اسمیں ملوث۔ مڑھ ۔ سوقوف۔ اگیان ۔ لا علم ۔ اندھیہہ۔ اندھیرے میں سپن ۔ خواب ۔ منورتھ ۔ دلی خواہش کی ایشا (1) ہب رنگ ۔ سارے پریم دہونیا۔ بغیر۔ دھددہ ۔ دہکا ۔
ترجمہ معہ تشریح:
بیشمار تماشے حکمرانی کا مز لطف خوبصورتی سر پر چھتد اور چور تخت پت جلوہ افروزی ا نعمتوں میں محبوس نا عاقبت اندیش لا علم بیوقوف یہ دنیاوی دولت کے تماشے اے نانک ایک خواب کی ایش اہیں (1) اے نانک اگر الہٰی نام سچ و حق و حقیقت کی حصول کے بغیر یہ سماوینی دنیاوی دولت ایک فریب اور دہوکا ہے خواب میں ہر طرح کی خبر طرح کی خر ہستیاں اور ان کی محبت کی کشش ۔